آج کا کالم

کیا رافیل سودے میں کہیں کچھ چھپایا جا رہا ہے؟

رافیل طیارہ سودا صرف حکومت کے لیے ہی ٹیسٹ نہیں ہے، بلکہ میڈیا کے لیے بھی امتحان ہے۔

رويش کمار

رافیل طیارہ سودا صرف حکومت کے لیے ہی ٹیسٹ نہیں ہے، بلکہ میڈیا کے لیے بھی امتحان ہے۔ آپ ناظرین میڈیا کے کردار کو لے کر کئی سوال کرتے بھی رہتے ہیں۔ یہ بہت اچھا ہے کہ آپ میڈیا اور گودی میڈیا کے فرق کو سمجھ رہے ہیں۔ ہم سب کو پرکھ رہے ہیں۔ ناظرین اور قارئین کو بدلنا ہی ہوگا، کیونکہ میڈیا کے ذریعے جو کھیل ہو رہا ہے، اس کے نتیجے میڈیا کو نہیں، آپ کو بھگتنے ہوں گے۔ میں نے آپ کے لیے ایک میڈیا ٹیسٹ کٹ بنایا ہے۔ آپ گھر بیٹھے میڈیا کو بدل  سکتے ہیں۔ سب سے پہلے آپ ایک ڈیڈ لائن طے کریں۔ 21 ستمبر 2018 کو فرانس کے سابق صدر فرانسوا اولاند کا بیان آیا تھا کہ انل امبانی کی کمپنی کو فائدہ پہنچانے کے لیے حکومت ہند کی جانب سے شرط رکھی گئی تھی۔ اس دن کے بعد سے کوئی ایک یا دو ہندی کے اخبار اٹھائیں۔ ان اخبارات میں رافیل پر چھپی ہر خبر کو کاٹ کر ایک فائل بنائیں۔ فائل جب بن جائے تو احتیاط سے ایک ایک خبر کو پڑھیں اور کچھ سوالات بنائیں۔

دیکھیے کہ رافیل کی خبر کب کب فرنٹ پیج پر شائع ہوئی ہے؟ کیا تبھی شائع ہوئی جب کسی وزیر نے یا رافیل بنانے والی کمپنی نے سودے میں انل امبانی کی کمپنی کو فائدہ پہنچانے سے انکار کیا ہے؟ گھوٹالہ نہ ہونے کا دعوی کیا ہے؟ یا تب بھی رافیل کی خبر فرنٹ پیج پر شائع ہوئی  جب راہل گاندھی نے رافیل کو لے کر الزام لگائے ہیں؟ اس طرح آپ ٹیسٹ کریں گے کہ یہ خبر آپ کے  اخبار کے لیے اہم کب ہے۔ اہمیت کا ٹیسٹ کرنے کے بعد آپ ڈٹیل کا ٹیسٹ کریں۔ رافیل طیارے میں گھوٹالہ ہوا، اس سلسلے میں جتنے الزام لگے ہیں، کیا انہیں تفصیل سے چھاپا گیا ہے؟ رافیل طیارے میں گھوٹالہ نہیں ہوا، کیا اس خبر کو مکمل تفصیل کے ساتھ چھاپا گیا ہے؟ آپ فرق سمجھ جائیں گے۔ رافیل معاملے میں صرف راہل گاندھی الزام نہیں لگا رہے ہیں۔

حفاظتی معاملات کو کَوَر کرنے والے کئی صحافی جیسے بزنس سٹینڈرڈ میں اجے شکلا، وائر میں روہنی سنگھ، ایکسپریس میں سشانت سنگھ، این ڈی ٹی وی میں وشنو سوم اور اسکرول میں سائكت دتہ کی رپورٹنگ دیکھ سکتے ہیں۔ روہنی سنگھ نے تو اپنی رپورٹ میں دستاویز بھی لگائے ہیں۔ ان صحافیوں کی رپورٹ سے بھی بہت سے سوالات اٹھے ہیں، کیا آپ کے ہندی اخباروں نے ان سوالات کو آپ تک پہنچایا ہے، کیا آپ کو پتہ ہے کہ اجے شکلا نے تین قسطوں میں رپورٹ لکھی ہے کہ کس طرح رافیل طیارے کا سودا پہلے سودے سے 40 پرسینٹ زیادہ دام پر کیا گیا ہے۔ اگر آپ کو یہ سوال نہیں معلوم تو پھر آپ رافیل سودے کو نہیں سمجھ پائیں گے۔ اس کے علاوہ پرشانت بھوشن، یشونت سنہا، ارون شوری نے کورٹ میں عرضی دی ہے۔ سوال اٹھائے ہیں۔ یہ لوگ کئی جگہوں پر پریس کانفرنس بھی کرتے رہتے ہیں۔ کیا ان اٹھائے گئے سوالوں کو ڈٹیل میں چھاپا جاتا ہے۔ آپ کے سوالات کے جواب آپ کو بتائے گا کہ رافیل سودے کو لے کر آپ کے اخبار نے کتنا اپ ڈیٹ کیا ہے۔ یہی ٹیسٹ آپ چینلز کے ساتھ کر سکتے ہیں۔ کوئی ایک بلیٹن چن لیں اور پھر اس کا تجزیہ کر لیں۔

سپریم کورٹ میں رافیل جہاز پر تین بار سماعت ہو چکی ہے۔ 14 نومبر کو قریب ساڑھے تین گھنٹے کی سماعت جاری رہی۔ چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی بنچ اس کیس کی سماعت کر رہا ہے۔ جسٹس سنجے کشن کول اور جسٹس جوژف بھی اس بینچ کا حصہ ہیں۔ ڈپٹی چیف آف ایئر اسٹاف بھی اس معاملے میں اپنا موقف رکھنے آئے تھے تب عدالت میں چٹکی بھی لی گئی کہ ایئر مارشل اب جا سکتے ہیں، یہ مختلف قسم کی وار روم ہے۔ ایئر فورس کے تین بڑے حکام نے اپنا موقف رکھا ہے۔ یشونت سنہا، ارون شوری اور سنجے سنگھ، ونت ہانڈا، ایم ایل شرما درخواست گزار ہیں، جو اس معاملے کی ایس آئی ٹی جانچ کی مانگ کر رہے ہیں۔ حکومت کی طرف سے کے کے وینو گوپال جواب دے رہے تھے۔ حکومت کا کہنا ہے کہ اس کا تجزیہ کورٹ کو نہیں کرنی چاہئے۔لیکن سماعت کے بعد کیا فیصلہ آئے گا انتظار کیا جا سکتا ہے۔ کیس کور کرنے گئے صحافیوں کا کہنا ہے کہ بینچ کی جانب سے حکومت اور درخواست گزار دونوں سے مشکل سوال پوچھے گئے۔ ہمارے ساتھی آشیش بھارگو نے مسلسل رپورٹنگ  کی ہے۔ انہی کی بھیجی خبر کا حصہ پیش کر رہا ہوں۔

  • – پرشانت بھوشن کا سوال تھا کہ دو ممالک کی حکومت کے درمیان معاہدہ کیا گیا تاکہ ٹینڈر نہ جاری کرنا پڑے۔
  • – حکومت نے یہ نہیں بتایا کہ اگر داسسو رافیل نہیں دے پاتی ہے تو کون ذمہ دار ہوگا۔
  • – حکومت نے فرانس سے سوورن گارنٹی نہیں لی، انٹر گورنمیٹل ایگریمنٹ میں آگے بڑھ گئی۔
  • – قانون وزارت نے تشویش ظاہر تھی کہ اگر تنازعہ ہوا تو فیصلہ جِنیوا میں ہوگا جو بھارت کے لیے اچھا نہیں ہو گا۔
  • – اس پر عدالت نے حکومت سے پوچھا کہ کیا فرانس نے بھارت کو ضمانت دی ہے؟
  • – اٹارنی جنرل نے کہا کہ کوئی خود مختار ضمانت نہیں ہے، لیٹر آف كمفرٹ ہے۔
  • – چیف جسٹس نے پوچھا کہ تو آپ کے پاس کوئی ضمانت نہیں ہے؟
  • – حکومت کہتی ہے کہ یہ حساس معاملہ ہے۔ ملک کی سلامتی کا معاملہ ہے۔

اس کے بعد آف سیٹ پارٹنر کو لے کر بحث چھڑی۔ آپ جانتے ہیں کہ داسسو نے آف سیٹ پارٹنر کے طور پر انل امبانی کی کمپنی کو اپنا پارٹنر کیا ہے۔ کمپنی کے مطابق اس نے امبانی سمیت تیس کمپنیوں کو پارٹنر کیا ہے۔ اس سوال کا حوالہ ہے کہ ڈیل ہونے کے کچھ دن پہلے تک ہندوستان ايرونوٹكس لمیٹڈ کا نام اس کے لیے تھا، مگر ڈیل ہونے کے بعد پتہ چلتا ہے کہ آف سیٹ پارٹنر کے طور پر انل امبانی کی کمپنی کو جگہ ملی ہے۔ راہل گاندھی مسلسل الزام لگا رہے ہیں کہ انل امبانی کی کمپنی کو فائدہ پہنچایا گیا ہے۔ آف سیٹ پارٹنر کے سوال پر بھی حکومت نے خفیہ رکھنے کی شرائط کا حوالہ دیا۔ پرشانت بھوشن نے سوال اٹھائے۔

  • – پرشانت بھوشن نے کہا کہ حکومت کہتی ہے کہ وہ آف سیٹ پارٹنر کے بارے میں نہیں جانتی ہے، جو طے کیے گئے عمل کے خلاف ہے۔
  • – پرشانت بھوشن نے الزام لگایا کہ آف سیٹ طے کرنے کے عمل کو بدل کر بیک ڈیٹ سے لاگو کر دیا گیا۔
  • – اٹارنی جنرل نے کہا ہے کہ  معاہدہ  خفیہ ہے تو باتیں خفیہ رکھنی ہی ہوں گی۔
  • – پھر جسٹس کے ایم جوزف نے پوچھا کہ اگر آف سیٹ پارٹنر بھاگ گیا تب کیا ہوگا؟
  • – پھر حکومت نے کہا کہ کنٹریکٹ کی شرائط آف سیٹ پارٹنر پر بھی لاگو ہوتی ہیں۔
  • – پرشانت بھوشن نے کہا کہ حکومت کیسے کہہ سکتی ہے کہ پتہ نہیں جبکہ عمل سے صاف ہے کہ وزیر دفاع کی اجازت کے بغیر نہیں ہو سکتا۔
  • – اٹارنی جنرل کہتے ہیں کہ آف سیٹ پارٹنر کا فیصلہ ہونے سے پہلے ہی سودے پر دستخط ہو گئے تھے۔
  • – ہمیں 36 طیارے فورا چاہیے تھیےلہذا ڈیل بدل دی۔

سپریم کورٹ کے فیصلے سے ہی پتہ چلے گا کہ آف سیٹ پارٹنر کے لیے ڈیل تبدیل کی گئی یا پھر واقعی جلدی طیارے چاہئے تھے اس کے لئے ڈیل بدلی گئی۔ اس پر درخواست گزاروں کا کہنا ہے کہ 2019 سے 22 کے درمیان ہی جہاز آئیں گے۔ سودے کے ساڑھے تین سال ہو گئے مگر ابھی تک ایک بھی طیارہ نہیں آیا ہے۔ 25 مارچ 2015 کے پریس کانفرنس میں داسسو کے سی ای او نے کہا کہ ڈیل جلد فائنل ہوگی۔ سودے کے 95 فیصد پر رائے ہو گئی ہے۔ ٹیکنالوجی ٹرانسفر کے ذریعہ ایچ اے ایل بہت سے آلات بنائے گا۔ مگر ایچ اے ایل سودے سے باہر ہو گئی۔ کسی سے نہیں پوچھا گیا۔ وزیر دفاع کو بھی پتہ نہیں تھا۔ حکومت جانتی ہے کہ ایئر فورس کے لئے 36 طیارے کافی نہیں ہیں تو پھر 126 سے کم کرکے 36 کیوں کیے گئے۔ وزیر اعظم نے کس طرح اعلان کردیا۔ ڈیل اس لیے بدلی گئی کیونکہ وزیر اعظم امبانی کو شامل کرنا چاہتے تھے۔ اب ہم آپ کو دو بیان دکھانا چاہتے ہیں۔ 25 مارچ 2015 یعنی ڈیل ہونے کے ایک مہینہ پہلے اور 13 نومبر 2018 کو، دونوں ایک ہی شخص کےہیں۔ داسسو کے سی ای او کا۔ 25 مارچ کو یہی شخص ایچ اے ایل کا نام لے رہا ہے مگر کیا اے این آئی کی سمیتا پرکاش  کو بتا رہا ہے کہ اسے تب کیا معلومات تھی، اس نے کیوں ایچ اے ایل کا نام لیا تھا۔ آپ بھی پڑھیں :

After an outstanding amount of work and some discussion, you can imagine my great satisfaction to hear on one hand from the Indian Air Force chief of staff that he wants a combat proven aircraft which could be the Rafale and on the other hand from HAL chairman that we are in agreement for the responsibilities sharing, considering as well our conformity with the RFP (Request for Proposal) in order to be in line with the rules of this competition۔ I strongly believe that contract finalisation and signature would come very soon.”

15 اپریل 2015 کو وزیر اعظم مودی اور سابق صدر اولاند کے درمیان معاہدہ ہوتا ہے۔ سی ای او کا یہ بیان 25 مارچ 2015 کا ہے۔ معاہدہ سے بیس دن پہلے کا۔ اس میں آپ نے پڑھا کہ وہ بول رہے ہیں کہ ایچ اے ایل کے چیئرمین سے سن کر آپ میرے اطمینان کی تصور کر سکتے ہیں۔ چیئرمین نے کہا ہے کہ ایچ اے ایل اس ڈیل سے منسلک ذمہ داریوں کو اٹھانے کے لیے تیار ہے۔ اب وہ 13 نومبر کو کیا کہتے ہیں اے این آئی کی سمیتا  پرکاش سے، وہ بھی پڑھیں:

"As a supplier we were pushing to try to get the deal. We were the winner in 2012. So we really wanted to get the deal. And the deal was that for 126 aircraft. So we were still working on that deal with, as I said, HAL and Indian Air Force. It was true, as I said also, and I believe that the government of India said that it’s too long and too difficult, the 126. So go ahead with 36, supplied by Government of France. This was exactly what happened in 2015.”

13 نومبر کو کہہ رہے ہیں ایک سپلائر کے ناطے ہم یہ ڈیل چاہتے تھے۔ ڈیل 126 طیاروں کی تھی۔ ہم ایچ اے ایل اور بھارتی فضائیہ کے ساتھ کام کر رہے تھے۔ میں نے ایچ اے ایل کے بارے میں کہا تھا، یہ سچ ہے۔ مگر وہ یہ نہیں بتا رہے ہیں کہ ایچ اے ایل ڈیل سے کس طرح باہر ہو گئی۔ وہ یہ بھی نہیں کہہ رہے ہیں کہ ایچ اے ایل کے بارے میں انہوں نے کہا تو تھا مگر جب وہ ڈیل سے باہر ہو گئی تو سن کر حیرانی ہوئی۔ ان کے جواب میں بہت دم نہیں لگتا ہے۔ وہ ایچ اے ایل کی تعریف بھی کرتے ہیں لیکن جواب میں واضح نہیں ہے۔ آپ خود بھی ان کے سارے جواب کو سنیے اور سمجھنے کی کوشش کیجیے۔ تو آف سیٹ پارٹنر کس طرح کیا گیا، اس کے منتخب ہونے کا کیا عمل تھا، کیا اس پر عمل ہوا، پھر رافیل طیارے کی قیمت کو لے کر بحث ہوئی۔ اجے شکلا نے بزنس سٹینڈرڈ میں رافیل کی قیمتوں پر تین قسطوں میں طویل رپورٹ لکھی ہے۔ جس میں  دعوی کیا ہے کہ مودی حکومت کے وقت جو معاہدہ ہوا ہے اس کے مطابق 40 فیصد زیادہ قیمت دی جا رہی ہے۔ آپ کو پتہ دیں کہ اے این آئی کی سمیتا  پرکاش سے داسسو کے سی ای او نے دعوی کیا ہے کہ ڈیل پہلے سے 9 فیصد سستی ہے۔ 28 اگست کو وزیر خزانہ اور سابق وزیر دفاع ارون جیٹلی بلاگ لکھتے ہیں کہ این ڈی اے کی ڈیل یو پی اے سے 9 فیصد سستی ہے۔ جیٹلی بیسک ہوائی جہاز کے بارے میں 9 فیصد سستی ڈیل کی بات کر رہے ہیں۔ پھر جیٹلی کہتے ہیں کہ بھارت کی ضرورتوں کے مطابق اس ہوائی جہاز کو لیس کیا جاتا ہے وہ بھی یو پی اے کے مقابلے میں 20 فیصد کم ہے۔ داسسو کے سی ای او نے یہ تو کہا ہے کہ موجودہ ہوائی جہاز 9 فیصد سستا ہے لیکن ان کے جواب سے صاف نہیں ہوتا کہ وہ ببیسک ہوائی جہاز کی بات کر رہے ہیں یا پھر جیٹلی کے مطابق بھارت کی ضروریات سے لیس ہوائی جہاز کی قیمت کی بات کر رہے ہیں۔

  • – حکومت نے رافیل طیارے کی قیمت سیل بند لفافے میں سپریم کورٹ کو سونپی ہے۔
  • – پرشانت بھوشن کی دلیل تھی کہ قیمت سے قومی سلامتی کو خطرہ نہیں ہے۔
  • – رافیل طیارے کی ساری معلومات عوامی ہیں۔
  • – پارلیمنٹ میں بھی رافیل طیارے کی قیمت بتائی جا چکی ہے۔
  • – اٹارنی جنرل نے کہا کہ پارلیمنٹ میں بغیر ہتھیار اور سامان سے لیس جیٹ کی قیمت بتائی گئی۔
  • – بغیر فرانس کی منظوری کے پوری طرح تیار جیٹ کی قیمت نہیں بتا سکتے ہیں۔

ویسے 8 مارچ انڈیا ٹوڈے سے فرانس کے صدر میكرو ن نے کہا تھا کہ مودی حکومت چاہے تو رافیل طیارے کے ڈیٹیلس اپوزیشن سے اشتراک کر سکتی ہے۔ کے کے وینو گوپال نے کہا کہ اگر فرانس کی معلومات کے بغیر خفیہ معلومات عوامی کی گئی تو یہ انٹر گورنمینٹل ایگریمنٹ کی خلاف ورزی  ہوگی۔ حکومت نے رافیل ڈیل کی عدالتی جانچ کی مخالفت کی ہے۔ کے کے وینو گوپال نے کہا کہ انہوں نے بھی سیل بند رپورٹ نہیں دیکھی ہے۔ تو قیمت کے بارے میں کچھ نہیں کہہ سکتے ہیں۔

  • – چیف جسٹس نے پوچھا کہ کیا 2007 کی پرانی ڈیل میں بھی قیمت ظاہر نہیں کی گئی تھی؟
  • – کیا اس وقت بھی ہتھیاروں اور آلات کی معلومات کو خفیہ رکھا گیا تھا؟
  • – اٹارنی جنرل نے کہا کہ اس وقت بھی خفیہ تھا۔

اس پر پرشانت بھوشن نے مداخلت کی اور کچھ رپورٹ دکھانے کی کوشش کی، لیکن اس وقت چیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے وقت پر یہ رپورٹ داخل نہیں۔ اب دو گھنٹے کی سماعت نہیں ہو سکتی ہے۔ سماعت کے دوران جب کے کے وینو گوپال نے کہا کہ اگر رافیل طیارے کارگل جنگ کے دوران بھارت کے پاس ہوتا تو بہت سے فوجیوں کی جان بچائی جا سکتی تھی۔ اس پر چیف جسٹس رنجن گوگوئی نے اٹارنی جنرل کو ٹوکتے ہوئے کہا کہ کارگل جنگ 1999-2000 میں ہوئی تھی  اور رافیل طیارہ 2014 میں آیا ہے۔ اس طرح کے بیان مت دیجیے۔

اسے لے کر صحافیوں کے درمیان بھی خوب سوال جواب ہو رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ داسسو کے سی ای او نے سوالات کا جوابات ٹھیک  نہیں دیے اور ان سے بہت سے سوالات نہیں پوچھے جا سکے۔ لا موند کے ایک صحافی ہیں جولین بسّاں نے اے این آئی کو انٹرویو کے بعد کئی سوال اٹھائے ہیں۔

سی ای او: ہم نے 2011 میں ہی ریلائنس گروپ سے بات چیت شروع کر دی تھی، تب اولاند صدر نہیں تھے۔ مودی وزیر اعظم نہیں تھے۔

– جولين: داسسو کی تب مکیش امبانی کے ریلائنس گروپ سے بات ہو رہی تھی نہ کہ انل امبانی کے ریلائنس گروپ سے۔ وہ مختلف کمپنی تھی۔

رافیل کے سی ای او کی طرف سے پوچھے گئے سوالات اور ان کے جواب :

Question: "The reason I am asking this because the former president Holland said :Dassault was not given an option, they had to pic the off set partners which the Indian govt told them whereas the Indian govt says that nothing of that sort happened.”

Answer: "It’s totally untrue and that the former president Holland made a correction of what he said, he said clearly that two partners found themselves together so it not at all the decision of french govt or the govt of India that Dassault selected Reliance . I have good example, if i started discussion with reliance group in 2011. in 2100 president was not Holland in France  and the Prime Minister in India was different from the existing Prime Minister of today. we set an agreement in 2012.”

Question: ” But the reliance at that time was different , it was the other brother so I mean the president was different the only common factor is you. I mean the Prime Minister was different the French President was different , you are the only one who is common.”

Answer- "That’s what I said that we decided to go ahead we decided to hoop with reliance , within the group as they are two brothers and  the son of the former leader Ambani so it was totally in line it was in a group with one or the other company.

اب آپ اس جواب کو دوبارہ پڑھیےگا۔ ہنسی بھی آئے گی اور رونا بھی آئے گا۔ سی ای او کے اس جواب سے لگتا ہے کہ وہ داسسو ایوی ایشن کے سی ای او نہیں ہیں، ستّو کی پیکنگ کرنے والی کمپنی کے سی ای او لگتے ہیں۔ میں ہندی میں بتا رہا ہوں کہ سی ای او انگریزی میں یہ کہہ رہے ہیں کہ ‘ہم نے آگے بڑھنے کا فیصلہ کیا تو ریلائنس کے ساتھ ہی منسلک رہنے کا فیصلہ کیا۔ ایک ہی گروپ کے اندر اندر دونوں بھائی ہیں اور سابق لیڈر امبانی کے بیٹے ہیں، لہذا یہ اسی لائن میں تھا، ایک گروپ کے اندر اندر ایک یا دوسری کمپنی سے تھا۔ ‘

کیا داسسو کے سی ای او کو یہ لگتا ہے کہ بھارت میں لوگوں کو انگریزی نہیں آتی۔ کچھ بھی بول دیں گے۔ 2005 میں مکیش امبانی اور انل امبانی الگ ہو گئے تھے۔ ہم سب جانتے ہیں کہ مکیش امبانی کی کئی کمپنیاں ہیں، اسے ریلائنس گروپ کہتے ہیں۔ انل امبانی کی کئی کمپنیاں ہیں جسے انل دھیرو بھائی امبانی گروپ کہتے ہیں۔ یعنی دونوں الگ الگ گروپ ہیں۔ نہ کہ ایک گروپ کی دو الگ الگ کمپنیاں۔ مکیش امبانی گروپ  اپنے بیلنس شیٹ میں کئی ہزار کروڑ کے فائدے  دکھاتا ہے۔ انل امبانی کا گروپ کئی ہزار کروڑ کے خسارے میں بتایا جاتا ہے۔ اگر یہ دونوں ایک ہی گروپ کے ہوتے تو ان کا کل منافع بھی ایک ہوتا اور کل خسارہ بھی ایک ہوتا۔ کیا ایسا ہے۔ نہیں ہے۔ کیا داسسو اے ویشن کا سی ای او، جو بھارت کے ساتھ کئی ہزار کروڑ کا سودا کر رہا ہے، اسے اتنا بھی نہیں معلوم ہے کہ مکیش امبانی اور انل امبانی ایک ہی گروپ کے نہیں ہیں۔

عدالت سے جو فیصلہ آئے گا، وہ آئے گا مگر یہ جو بیان آ رہے ہیں، ان کا کیا کیا جائے۔ ریلائنس کے تجربہ کار نہ ہونے کے جواب میں کہتے ہیں کہ صفر سے شروع ہونا اچھا ہوتا ہے۔ تو داسسو بتائے کہ اس نے جو تیس آف سیٹ پارٹنر منتخب ہیں اس میں سے کتنی ایسی کمپنیاں ہیں جو انل امبانی کی کمپنی کی طرح صفر سے شروع کر رہی ہیں۔ یعنی جو پہلے شادی بیاہ کے پلیٹ بناتی تھیں اور اب انہیں رافیل کے پرذے بنانے کا ٹھیکہ دیا گیا ہے۔ اے این آئی کی سمیتا پرکاش سے سی ای او ٹریفک کہتے ہیں کہ میری کمپنی کلین ہے۔ لیکن 1998 میں داسسو کے ڈائریکٹر کو رشوت لینے کے معاملے میں 18 ماہ کی سزا ہوئی تھی۔ اس نے کانٹریکٹ لینے کے لئے 1998 میں بیلجیم کے نیتاؤں کو رشوت دی تھی۔

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close