نقطہ نظر

شخصیت پرستی۔مفہوم و مضمرات

محمد اسعد فلاحی

دنیا میں بے شمار انسان رہتے بستے ہیں ۔ ہر ایک کا نظریہ دوسرے سے جدا ہے۔ ہرانسان اپنی پیدائش کے ساتھ کچھ صلاحتیں لے کر پیدا ہوتا ہے، ان کو پروان چڑھاتا ہے اور انہی کی بنیاد پر انسانوں کی بھیڑ میں اپنی ایک الگ پہچان بناتا ہے۔البتہ کچھ لوگ گونا گوں پریشانیوں کی وجہ سے اپنی صلاحتیوں کو پروان چڑھانے میں کام یاب نہیں ہو پاتے،جس کی وجہ سے احساس کم تری کا شکار ہوجاتے ہیںاور جب وہ دوسرے لوگوں کو اپنے سے بہتر دیکھتے ہیں تو اس سے استفادہ کرنے کے بہ جائے اندھی تقلید میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ یہ عقیدت انسان کی سوچنے اور سمجھنے کی قوت کو ختم کر دیتی ہے اور وہ ذہنی طور پر غلام بن کر رہ جاتے ہیں۔ وہ دنیا کی تمام چیزوں پر فیصلہ حق اور باطل، جھوٹ اور سچ،اندھیرے اور روشنی کی بنیاد پر نہیں کرتے بلکہ یہ دیکھتے ہیں کہ ان کا محبوب شخص کس بات کو غلط کہہ رہا ہے اور کس بات کو صحیح؟ اس میں ان کی سوچنے سمجھنے کی ذاتی صلاحیت کا کوئی دخل نہیں ہوتا۔پھر ایسے لوگوں کا حال ایک چلتے پھرتے ڈھانچے کے مانند ہو کر رہ جاتا ہے۔ظاہر ہے کہ انسان اشرف المخلوقات ہے، اس میںاور دیگر جانداروں میں حد فاصل اور فرق امتیاز ’غور فکر ‘ اور ’تدبر‘ ہی تو ہے۔ اگر یہ بھی اس نے ختم کر دیا تو پھر اس کی انسانیت ہی کہاں باقی رہ جائے گی!
اگر غور کیا جائے تو معلوم ہوگا کہ انسان اور دیگر چیزوں کے درمیان حد فاصل ’عقل‘ ہے۔ یہی اللہ تعالیٰ کی طرف سے عطا کردہ وہ نعمت ہے جو اسے دیگر جان داروں سے ممتاز بناتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے انسان کو پیدا کیا، اسے اشرف المخلوقات بنایا اور اسے غوروفکر کی بیش بہا نعمت عطا فرمائی۔ قرآن مجید میں اندھی پیروی سے سخت الفاظ میںمنع کیا گیا ہے اور اس کے مقابلہ میں تدبر و تفکر پر بہت زور دیا گیا ہے۔
شخصیت پرستی کیا ہے؟
شخصیت پرستی بنیادی طور ایک منفی طرز عمل ہے۔جس میں انسان حق و انصاف اور عقل و فکر کے تمام پہلوؤں کو بالائے طاق رکھ کر اپنی زندگی کے تمام گوشوں میں فیصلہ کسی شخصیت کی تقلید اور اس کی اندھی پیروی کی بنیاد پر کرتا ہے۔زندگی کے کسی بھی معاملہ کو شریعت کی کسوٹی پر پرکھنے کے بجائے، آنکھوں پر پٹی چڑھا کر کسی کی پیروی کرناہی شخصیت پرستی کہلاتا ہے۔ دینی مسائل میں قرآن و سنت کو چھوڑ کر ’شخصیتوں‘ کے اقوال کو اختیار کرنا اور ان کو قرآن سنت کی میزان پر نہ تولنا انسان کے اعمال کو تباہ و برباد کر دیتا ہے۔
جب لوگ کسی کی شخصیت پرستی میں مبتلا ہو جاتے ہیںتو وہ سوچنے اور سمجھنے کی اپنی صلاحیتوں کو اس کے ہاتھ میں دے دیتے ہیں۔ پھر وہ ویسا ہی سوچتے ہیں اور ویسا ہی دیکھتے ہیںجیسا کوہ شخص ان کو دکھاتا ہے۔ شخصیت پرستی کے ایک معنیٰ یہ بھی ہیں کہ ہم ایک طرح سے دوسروں کو خودسے بہتر قرار دیتے ہیںاور اپنی کام یابیوں اور ناکامیوں کو دوسروں کے ساتھ مشروط کر لیتے ہیں۔ ہم اپنی سوچ اور سمجھ کو بالائے طاق رکھ کر دوسروں کی مرضی و احکام کے مطابق چلتے ہیں۔
شخصیت پرستی حقیقت میں ’شرک‘ کی ابتدائی سیڑھی ہے۔ تاریخ کا مطالعہ کریں تو معلوم ہوتا ہے کہ شرک کی ابتدا شخصیت پرستی سے ہی ہوئی ہے۔ گزشتہ اقوام میں جب کوئی نبی یا کوئی معزز شخص دنیا سے کوچ کر جاتا تھا تو ان کے پیروکار اس کی یاد میں تصویریں اور مجسمے بناتے تھے اور دھیرے دھیرے ان کی تعلیمات کو بھلا کر صرف انہی مجسموں کی پرستش کرنے لگے تھے۔ قرآن مجید میں سورۂ نوح میں قوم نوح کے جن معبودوں کا تذکرہ آیا ہے : یعود، سواع، یغوث، یعوق، نسر وغیرہ، صحیح بخاری میں حضرت عبد اللہ بن عباس ؓ کی روایت ہے کہ یہ ان کی قوم کے اولیاء و صالحین اور بزرگوں کے نام ہیں۔ ان کی وفات کے بعد شیطان نے انھیں بہکا کر ان کی پرستش میں مبتلا کر دیا تھا۔ (صحیح بخاری:
شخصیت پرستی کے اسباب
شخصیت پرستی کی ایک بڑی وجہ ’ غلو‘ ہے۔ اسے اسلام میں سخت ناپسندیدہ قرار دیا گیا ہے۔کسی شخص کی اتنی تعریف کرنا یا اس کی اتنی مذمت کرنا جس کی وہ مستحق نہ ہو، غلو کہلاتا ہے۔ مثلاً نصرانیوں نے حضرت عیسیؑ کے معاملے میں اتنا غلو کیا کہ انھیں اللہ کا بیٹا قرار دے دیا۔ قرآن مجید میں اس کا تذکرہ ان الفاظ میں کیا گیا ہے:
یَا أَہْلَ الْکِتَابِ لاَ تَغْلُواْ فِیْ دِیْنِکُمْ وَلاَ تَقُولُواْ عَلَی اللّہِ إِلاَّ الْحَقِّ إِنَّمَا الْمَسِیْحُ عِیْسَی ابْنُ مَرْیَمَ رَسُولُ اللّہ(النساء:171)
’’ اے اہل کتاب! اپنے دین کے بارے میں حد سے نہ گزر جائو اور اللہ پر حق کے بجز کچھ نہ کہو۔ مسیح ابن مریم تو اللہ تعالیٰ کے رسول ہیں‘‘
ایک دوسرے مقام پر اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:
قُلْ یَا أَہْلَ الْکِتَابِ لاَ تَغْلُواْ فِیْ دِیْنِکُمْ غَیْْرَ الْحَقِّ وَلاَ تَتَّبِعُواْ أَہْوَاء قَوْمٍ قَدْ ضَلُّواْ مِن قَبْلُ وَأَضَلُّواْ کَثِیْراً وَضَلُّواْ عَن سَوَاء السَّبِیْل(المائدۃ:77)
’’ آپ کہ دیجیے، اے اہل کتاب! اپنے دین میں نا حق غلو اور زیادتی نہ کرو اور ان لوگوں کی نفسانی خواہش کی اتباع نہ کرو ، جو پہلے سے بہک چکے ہیں اور پہلے سے بہتوں کو بہکا چکے ہیںاور سیدھی راہ سے ہٹ گئے ہیں‘‘۔
شخصیت پرستی کی ایک دوسری بڑی وجہ دین سے عدم واقفیت ہے ۔ ہمارے سماج میں، خاص طور پر مسلمانوں میں دین کی بہت سرسری معلوما ت ہوتی ہے۔ وہ سمجھتے ہیں کہ ان کے لیے قرآن و سنت سے براہ راست استفادہ ممکن نہیں ہے،چنانچہ وہ کسی شخصیت کو اپنا مقتدیٰ بنا لیتے ہیں۔ لیکن عموماً ایسا ہوتا ہے کہ وہ اس شخصیت سے استفادہ کے بہ جائے اس کی اندھی تقلید شروع کر دیتے ہیں اور پھر یہ تقلید دھیرے دھیرے دین کی تقلید کے بہ جائے شخصیت کی تقلید اور دین تبلیغ کے بجائے شخصیت اور اس کی ترویج و اشاعت میں تبدیل ہوجاتی ہے۔
اعتدال کی ضرورت
اللہ کے رسول ﷺ کی حیات طیبہ کا جب ہم مطالعہ کرتے ہیں تو وہاں ہمیں یہ بات صاف طور پر دیکھنے کو ملتی ہے کہ آپؐ نے دین کے معاملے میں ہمیشہ اعتدال کی راہ کو اختیار کیا اور اپنے صحابہؓ کو بھی افراط و تفریط اور دین میں غلو کرنے سے منع فرمایا ہے۔ ایک حدیث میں آتا ہے کہ حضرت عبد اللہ بن عباس ؓ کا بیان ہے کہ انھوں نے حضرت عمر فاروق ؓ کو منبر پر کہتے ہوئے سنا کہ میں نے نبیؐ کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے:
’’ تم لوگ میری تعریف میں اس طرح مبالغہ نہ کرنا جس طرح نصرانیوں نے عیسیؑ کے ساتھ کیا، میں فقط اللہ کا بندہ ہوں، لہٰذا مجھے اللہ بندہ اور اس کا رسول کہو‘‘۔ (صحیح بخاری)
اسلام ایک معتدل دین ہے اور اس کے تمام گوشوں میں یہ وصف بہت ابھرا ہوا نظر آتا ہے۔ قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:
وَکَذَلِکَ جَعَلْنَاکُمْ أُمَّۃً وَسَطاً (البقرۃ:142)
’اسی طرح ہم نے تم کو متوسط اور معتدل امت بنایا‘‘۔
اسلام نہ توکسی شخصیت کی اندھی تقلید کو پسند کرتا ہے جہاں سے شرک کی ابتدا ہوتی ہے اور نہ کسی کی پیروی کو سرے سے خارج کرتا ہے۔بلکہ وہ ان دونوں انتہاؤں کے درمیان ایک ’اعتدال‘ کی راہ متعین کرتا ہے، تاکہ وہ راہ راست سے نہ بھٹکے۔مثلاً وہ انفاق کے معاملے میں اعتدال کی روش کو یوں بیان کرتا ہے ۔
وَلاَ تَجْعَلْ یَدَکَ مَغْلُولَۃً إِلَی عُنُقِکَ وَلاَ تَبْسُطْہَا کُلَّ الْبَسْطِ فَتَقْعُدَ مَلُوماً مَّحْسُورا(الاسراء:29)
’’نہ تو اپنا ہاتھ گردن سے باندھ رکھو اور نہ اسے بالکل ہی کھلا چھوڑ دوکہ ملامت زدہ اور عاجز بن کر رہ جائو‘‘۔
اسلام کا یہ امتیاز ی وصف اس کے تمام گوشوں میں پایا جاتا ہے۔ خواہ اس کا تعلق عقائد سے ہویا عبادات سے، اخلاقیات سے ہویا سماجیات سے، معاشیات سے ہو یا کسی اور شعبۂ حیات سے، ہر جگہ اعتدال و توازن نمایاں ہے۔
گزشتہ قوموں کی مثال
گزشتہ قومیں اعتدال کا دامن اپنے ہاتھوں میں نہ تھامے رکھ سکیں۔ عقائد جن پر ساری چیزوں کا انحصار ہوتا ہے، ان میں افراط و تفریط کا شکار ہو گئے۔ یہودیوں اور عیسائیوں کا تو حال یہ تھا کہ وہ اپنے علماء کے احترام میں اس قدر غلو کرنے لگے تھے کہ انھیں خدائی درجہ دے بیٹھے۔ قرآن مجید نے ان کی اس بے راہ روی کو اس طرح بیان کیا ہے:
اتَّخَذُواْ أَحْبَارَہُمْ وَرُہْبَانَہُمْ أَرْبَاباً مِّن دُونِ اللّہ(التوبۃ:30)
’’ انھوں نے اپنے علماء اور درویشوں کو اللہ کے سوا اپنا رب بنا لیا‘‘۔
تقلید کے تعلق سے عوام ہی نہیں بلکہ ایک بڑی تعداد خواص کی بھی ایسی ہے جو غلو میں مبتلا ہے۔ ایسے لوگ اپنے مسلک کی اس حد تک وکالت کرتے ہیں کہ کتاب و سنت کی بھی تاویلیں کر نے سے گریز نہیں کرتے۔
تقلید میں اعتدال
قرون اولی میں مسلمانوں کا یہ عمل رہا ہے کہ وہ مسالک کے تعصبات سے پاک تھے۔ جب انھیں کوئی بات معلوم نہیں ہوتی تھی تو وہ اہل علم سے رجوع کرتے تھے۔ جن مسائل کے بارے میں انھیں علم نہیں ہوتا تھا ، انھیں کسی مستند عالم دین سے پوچھ لیتے تھے ، یہ جانے بغیر کہ اس کا تعلق کس مسلک سے ہے۔لیکن بعد میںلوگ مسلک ککے معاملے میں تعصب سے کام لینے لگے۔ خود کو اس بات کا مکلف بنا لیا جس کا اللہ تعالیٰ نے انھیں مکلف نہیں بنایا تھا۔ مسلک کی اتباع میں انھوں نے اس حد تک غلو کیا کہ اپنے اماموں اور فقیہوں کو رسول کا درجہ دے دیا اور کتاب و سنت کی اتباع کو بالائے طاق رکھ دیا اور اس تعصب کی وجہ سے وہ حق سے کوسوں دور ہوتے جا رہے ہیں۔
بلا شبہ مسلک کی اتباع غلط نہیں ہے، غلط یہ ہے کہ صرف اپنے ہی مسلک کو حق سمجھا جائے اور دوسرے مسالک کو غلط اور باطل ٹہرایا جائے۔ ہمیں یہ بات اچھی طرح اپنے ذہن میں بٹھا لینی چاہیے کہ دنیا میں کوئی بھی انسان معصوم عن الخطأ نہیں ہے۔ ہر انسان سے غلطی ہو سکتی ہے۔ ایک عقل مند آدمی کی یہ پہچان ہے کہ وہ لوگوں میں اچھی باتوں کو لے لے اور بری باتوںکو چھوڑ دے۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

محمد اسعد فلاحی

معاون تصنیفی اکیڈمی، مرکز جماعت اسلامی ہند

متعلقہ

Close