نقطہ نظر

غصہ جائز ہو سکتا ہے گالی نہیں

رویش کمار

ہماری سیاست کی دو مادری زبانیں ہیں. پریس کانفرنس یا ایگزیکیٹو کی زبان نیم جمہوری ہوتی ہے اور دھرنا مظاہروں تک آتے آتے اس کی زبان جاگیردارانہ ہونے لگتی ہے. کئی بار بڑے بڑے لیڈر بھی زبان کے لحاظ سے فیل ہوئے ہیں. اب ایک نیا رجحان آیا ہے. لیڈر اپنے حامیوں کو خاص طرح کی مرد پسندی، خواتین مخالف، جاگیردارانہ اور فرقہ وارانہ زبان کے لئے اکسا رہے ہیں. پارٹیاں ایسی زبانوں کے لئے آئی ٹی سیل کے نام سے کارخانہ لگا رہی ہیں. حامی اور ماہر تک غنڈہ گردی کے اس کارخانے کو اپنی فعال اور خاموش حمایت دے رہے ہیں. یہ اس لئے ہو رہا ہے کیونکہ سختی اور نگرانی کے تمام اقدامات کی وجہ سے سیاست میں غنڈا ہونا اور رکھنا ناممکن ہوتا جا رہا ہے، اس وجہ سے میں غنڈے پیدا کئے جا رہے ہیں. ایسے گنڈی، جو اپنے لیڈر کے لئے غنڈئی کی زبان بولنے سے زیادہ لکھتے ہیں.

لکھنؤ کے حضرت گنج چوراہے پر بہوجن سماج پارٹی کے کارکنوں نے جس زبان کا استعمال کیا ہے وہ شرمناک ہے. ٹھیک وہی زبان ہے جس کا استعمال بی جے پی لیڈر دياشنكر سنگھ نے کیا ہے. دياشنكر سنگھ اور ان کی بیٹی کے بارے میں جاگیرداریت اور مرد پسندی کے الفاظ استعمال کرنا درست نہیں تھا. بی ایس پی کو بھی بی جے پی کی طرح اس پر کچھ رائے دینی چاہئے. مجھے مایاوتی کی بات ٹھیک لگی کہ ان کے سماج کے لوگ دیوی سمجھتے ہیں اور جس طرح سے دوسرے لوگ اپنی دیوی کے خلاف نازیبا الفاظ استعمال ہونے پر غصہ ہو جاتے ہیں اسی طرح سے یہ ان کا غصہ ہے. لیکن اسی جواب میں ایک مسئلہ بھی ہے. مایاوتی جس گالی کی مخالفت کر رہی تھیں اسی گالی کو جائز بھی ٹھہرانے لگیں. غصہ جائز ہو سکتا ہے، گالی جائز نہیں ہو سکتی ہے.

حضرت گنج چوراہے پر جو زبان بولی گئی وہ مخالفت کی زبان نہیں ہے. اندھ غصہ ہے. یہ وہی زبان ہے جو جاگیرداریت کی زبان ہے. کوئی سیاسی جماعت اس وقت تک نیا متبادل نہیں بن سکتی جب تک وہ زبان کے معاملے میں بھی متبادل نہ تیار کرے. دياشنكر سنگھ نے مایاوتی کو طوائف بول کر اس حد کو چھو دیا جس کے بعد صبر کا بندھن ٹوٹ جاتا ہے لیکن جب جواب میں اسی زبان کا استعمال کرکے بی ایس پی کارکنوں نے بتا دیا کہ وہ بھی غصے میں کچھ مختلف نہیں ہیں.

یہ واقعہ بتاتا ہے کہ ہندوستانی سیاست میں عورت مخالف ذہنیت ایک پیٹرن ہے. یہ ذہنیت بائیں بازو میں بھی ہے، دائیں   بازو میں بھی ہے اور لبرل سوچ میں بھی ہے اور دلت آندولن میں بھی ہے. مایاوتی کے لئے لکھنؤ کی سڑکوں پر بی ایس پی کی خاتون کارکنوں کا ہجوم ہوتا تو شاید وہاں دياشنكر جیسی زبان مخالفت کی زبان مانی جا سکتی تھی مگر مردوں کے ہجوم نے اسی زبانی روایت کو ہڑپ لیا جس سے دياشنكر جیسے مرد آتے ہیں. وہ گالی دیتے ہوئے مخالف کم کر رہے تھے اپنی زبانی ثقافت کا مظاہرہ زیادہ کر رہے تھے.

اعلی ذات کو گالی دینا اور دلت کو گالی دینا یکساں نہیں ہوتا ہے. صدیوں سے سنتے سنتے دلت جب گالی سنا دیتا ہے تو یہ اعلی ذات کی زبان میں اس کا جواب ہوتا ہے. ہو سکتا ہے مایاوتی کے حامیوں کا غصہ ویسا ہی ہو. مایاوتی کو گالی دینے کی ثقافت درست ہوتی جا رہی تھی. عام بات چیت میں بہت کم لیڈروں کو ان کے بارے میں عزت سے بولتے سنا ہے. ان لیڈروں میں ذات کا غرور آ ہی جاتا ہے. پھر بھی لکھنؤ میں ایک پارٹی کے بینر کے تحت یہ سب کچھ ہوا. وہاں زبان سے زیادہ تعداد بڑی تھی لیکن زبان کے غلط استعمال نے تعداد چھوٹا کر دیا.

ابھی تک دلت آندولن کی بنیادی طور پر یہی پہچان رہی ہے کہ ان کا تیور تشدد سے خالی اور دستوری ہوتا ہے. تشدد پسند آندولن بھی ہوئے ہیں مگر دلت آندولن اس بات کو لے کر خاص طور سے ذی ہوش رہا ہے کہ تشدد نہ ہو اور اپنی طاقت کا اظہار شرافت سے کیا جائے. ایک لفظ کے استعمال سے بی جے پی کے لئے دياشنكر سنگھ کی ذات سے متعلق افادیت ختم ہو گئی. ایسے کئی الفاظ کے لئے بی ایس پی کو بھی اپنی افادیت کے بارے میں سوچنا چاہئے. بی جے پی نے دياشنكر سنگھ کو نکال کر ٹھیک کام کیا. بی ایس پی کو بھی کچھ ایسا ہی ٹھیک کام کرنا چاہئے. افسوس کرنا چاہئے.

پارلیمنٹ میں تمام سیاسی جماعتوں نے مایاوتی کا ساتھ دیا. بی جے پی نے بھی ایوان کا احساس سمجھا. حالیہ دنوں میں گالم گلوچ کی زبان کو خوب فروغ دیا گیا ہے. اس کے رد عمل میں دوسرے لوگ بھی اسی قسم کی زبان بول رہے ہیں. خاص کر خواتین رہنماؤں کے خلاف اس طرح کی زبان مسلسل بولی جا رہی ہے. کمزور لوگوں کے خلاف ایسی زبان بولی جا رہی ہے. گجرات کے دلت نوجوانوں کو کار سے باندھ کر مارنا بھی ایک قسم کی زبان ہے. میڈیا نے مارنے کا منظر ہی ریکارڈ کیا ہے. مارتے مارتے ان جوانوں کو کیا گالی دی گئی یہ کون جانتا ہے. المونيم کی لاٹھی سے مارتے وقت گئو رچھک غنڈے منتر کا جاپ تو نہیں ہی کر رہے ہوں گے.

بی ایس پی کے حامیوں نے دياشنكر سنگھ کی بیوی اور بیٹی کو گالی دے کر ٹھیک نہیں کیا. اس کے انتقام میں دياشنكر سنگھ کی بیوی بھی وہی زبان بول رہی ہیں جس سے انہیں اعتراض ہونا چاہیے. ان کی بارہ سالہ بیٹی کی تو یہ زبان نہیں ہو سکتی جو ٹائمز آف انڈیا میں شائع ہوئی ہے. دياشنكر سنگھ کی بیٹی کا بیان چھپا ہے کہ نسیم انکل، مجھے بتائیے کہاں آنا ہے آپ کے پاس پیش ہونے کے لئے؟ ظاہر ہے ان کی بیٹی نے یہ زبان گھر سے سیکھی ہوگی. شاید واقعہ کے ردعمل میں گھر والوں کو بولتے سنا جائے گا.

سواتی لکھنؤ یونیورسٹی میں لیکچرر رہی ہیں. کیا یہ ان کی زبان ہے جسے بیٹی نے حاصل کی ہے کہ "نسیم انکل بتائیے کہاں پیش ہونا ہے.” کیا ایک قاری کو اس میں کچھ بھی عجیب نہیں لگتا. سواتی نے کسی نامعلوم مقام سے انگریزی کے ایک اخبار کو انٹرویو دیا ہے. سواتی کو بی ایس پی کے حامیوں کی زبان سے تکلیف ہو رہی ہے لیکن اپنے شوہر کی زبان سے تکلیف کیوں نہیں ہو رہی ہے. وہ جس طرح سے بی ایس پی رہنماؤں کی نازیبا زبان کے لئے مذمت کرتی ہیں اس طرح سے اپنے شوہر کی مذمت نہیں کرتی ہیں. وہ بی ایس پی رہنماؤں کی گالی سے ہمدردی تو پانا چاہتی ہیں مگر مایاوتی کو ویشیا کہا گیا اس سے انہیں کوئی ہمدردی نہیں لگتی. کم سے کم اس ایک انٹرویو سے تو یہی لگتا ہے. کیا سواتی اپنے شوہر کے خلاف ایف آئی آر کرانے جائیں گی یا وہ بھی اس کی آڑ میں بتكچن کا فائدہ اٹھانے کی کوشش کریں گی. کوئی کہے گا کیا بی ایس پی اپنے کارکن کے خلاف ایف آئی آر درج کرے گی. لہذا اس تو تو میں میں سے کوئی فائدہ نہیں ہے.

عورت مخالف زبانی ثقافت میں ہماری عورتیں بھی پھنسی ہیں جیسے جاگیرداریت اور نسل پرستی کے ڈھانچے میں ہمارے دلت بھی پھنسے ہیں. اسمرتی ایرانی، مایاوتی، سواتی اور ہم سب دونوں جگہ پھنسے ہیں. کانگریس، بی جے پی، بی ایس پی، ایس پی اور آر جے ڈی سب پھنسے ہیں. اس ڈھانچے سے روز توڑ کر تھوڑا تھوڑا سا باہر آنا پڑتا ہے. اسمرتی، مایاوتی اور سواتی تینوں کو بھی باہر آنا ہوگا. ورنہ ہمارا غصہ ہمیں لمحہ بھر میں ہمارے اندر بیٹھی جاگیریت کی چھت پر لے آتا ہے اور ہم وہی کرنے لگتے ہیں جس کے خلاف ہمیں غصہ آتا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close