نقطہ نظر

کیا واقعی بدترین جمہوریت، آمریت سے بہتر ہے؟

جواد اکرم

پاکستان میں سیاستدانوں کو یہ  قول کہ "بد ترین جمہوریت بھی آمریت سے بہتر ہے” اتنا پسند ہے کہ وہ دن رات بھی اس کو دہراتے رہیں تو تھکتے نہیں۔ ایسا لگتا ہے جیسے وہ عوام سے شکوہ کناں ہیں کہ عوام اس بات پر صبر و شکر کر کے کیوں نہیں بیٹھ جاتے کہ وہ دیکھو کم از کم ہمارے ملک میں جمہوریت تو ہے ناں-

 اب یہ کیسی جمہوریت ہے، کیا کر رہی ہے، ملک کو کتنا فائدہ اور کتنا نقصان دے رہی ہے، اس سے عوام کو کوئی سروکار نہیں ہونا چاہئے۔ بس اتنا ہی کافی ہے کہ بدترین جمہوریت بھی ڈکٹیٹرشپ (آمریت) سے بہتر ہے۔

لیکن اب کیا کہیں اس بیچاری عوام کا جو اس زمانے میں نیوز چینلز، انٹرنیٹ، سمارٹ فونز، سوشل میڈیا کی بھرمار میں نہ صرف سوچنا سمجھنا شروع ہو گئی ہے بلکہ سیاستدانوں سے کارکردگی سے متعلق الٹے سیدھے سوال پوچھنے کی گستاخی بھی کر گزرتی ہے۔ ایسے میں بدترین جمہوریت پر بھی عوام کو خوش و خرم رکھنے کی سیاستدانوں کی "معصومانہ” خواہش بھی پوری نہ ہو پائے تو یہ کتنی بڑی ناانصافی ہے۔

نہ جانے کیوں ہمارے سادہ لوح افراد یہ سوچنا شروع ہو گئے ہیں کہ جو برائیاں آمریت سے منسوب کی جاتی ہیں وہ تو ہماری اکثر سیاسی جماعتوں میں بھی ہیں۔ اکثر سیاسی جماعتوں میں موروثی سیاستدان بھی تو بادشاہوں کی طرح ہی باپ کے بعد بیٹے والے فارمولے کے تحت تخت نشین ہوتے چلے آ رہے ہیں۔ پھر سیاسی رہنما بھی تو آمروں کی طرح ہی حرف آخر قسم کے ذاتی فیصلے مسلط کرتے رہتے ہیں۔ مزیدبرآں مختلف آمریتوں کے دست و بازو بھی تو یہی ہمارے عظیم سیاستدان رہے ہیں جو جمہوری رہنما ہونے کا بھی دعوٰی کرتے ہیں۔ تو پھر یہ ہماری کس قسم کی جمہوریت ہے جسے ہمارے سیاستدان ثابت کرنے پر تلے ہوئے ہیں کہ یہ جمہوریت آمریت سے بہتر ہے۔

اگر محض ووٹ لے کر حکومت میں آ جانا جمہوریت ہوتا تو جنگ عظیم دوم چھیڑنے والا جرمنی کا ہٹلر اور اٹلی کا مسولینی بھی تو ووٹ کے ذریعے ہی اقتدار میں آئے تھے، لیکن ان جمہوری رہنماوں نے دوسری عالمگیر جنگ چھیڑ کر سارے عالم میں خون کی وہ ندیاں بہائیں کہ اس جنگ کے چھ سالوں میں آٹھ کڑوڑ سے زائد انسان اس دنیا سے گزر گئے۔

حقیقت بات یہ ہے کہ لفظ "جمہوریت”، "آمریت” یا "بادشاہت” اتنے اہم نہیں جتنا کہ اہم لفظ "بدترین” ہے۔ بدترین حکمران چاہے ووٹ لے کر آئے یا آمر ہو یا بادشاہ ہو، ملک تباہ ہی ہو گا اور اگر حکمران اچھا ہو تو وہ ووٹ لے کر آئے یا آمر ہو یا کوئی بادشاہ، ملک و قوم ترقی کریں گے۔ پھر اگر آمریت اور بادشاہت اتنے ہی برے ہوتے کہ جمہوریت کی بدترین شکل بھی ان سے بہتر ہوتی تو کاش کوئی اتنا ہی سمجھا دیتا کہ مصر اور لیبیا کے حالات سابقہ آمریتوں میں بہتر تھے یا عرب بہار کے بعد قائم ہونے والی جمہوری حکومتوں میں بہتر ہیں؟ اسی طرح عراق کے حالات صدام حسین کی آمریت میں زیادہ خراب تھے یا صدام حسین کے بعد امریکی مدد سے قائم ہونے والی جمہوریت میں زیادہ خراب ہیں؟

پھر اگر بادشاہت اتنی ہی خراب شے ہے تو تیل کی دولت سے مالا مال عرب ممالک کے عوام بادشاہت کا نظام ہونے کے باوجود بھی اتنے خوشحال کیوں ہیں؟

مقصد یہ نہیں کہ جمہوریت کوئی بری چیز ہے بلکہ بات یہ ہے کہ اچھے لوگوں کا اقتدار میں ہونا انتہائی اہم ہے۔ ترکی، یورپ، امریکہ اور دیگر ترقی یافتہ ممالک کے جمہوری رہنماوں سے ہم اپنے جمہوری رہنماوں کا موازنہ کریں تو آنکھیں بھی بھیگ جاتی ہیں اور دن میں تارے بھی نظر آنا شروع ہو جاتے ہیں، پھر دل سے یہی صدا نکلتی ہے کہ برے حکمرانوں پر مشتمل جمہوریت بدترین حکومت اور اچھے حکمرانوں پر مشتمل جمہوریت، آمریت یا بادشاہت ہی بہترین حکومت ہوتی ہے، اس لئے زیادہ اہم الفاظ "بدترین” اور "بہترین” ہیں، نہ کہ جمہوریت، آمریت یا بادشاہت۔

مصنف سیاسی، سماجی، قومی اور بین الاقوامی امور کے تجزیہ نگار ہیں۔ مصنف نے بین الاقوامی تعلقات میں ماسٹرز کیا ہوا ہے۔ مصنف سے رابطے کے لئے ای میل ایڈریس اور ٹوئٹر ہینڈل یہ ہیں۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

جواد اکرم

مصنف بین الاقوامی معاملات کے تجزیہ نگار ہیں۔ مصنف نے بین الاقوامی تعلقات میں ماسٹرز ڈگری حاصل کی ہوئی ہے۔

متعلقہ

Back to top button
Close