نقطہ نظر

گرگن کی کتاب پر آیا فیصلہ آزادی اظہار کے معاملات میں نظیر بنے گا؟

رویش کمار

بے لگام اظہار کی آزادی وہ معاملہ ہے جس کے پیمانے پر ہمارے ادارے فیل بھی ہوئے ہیں اور کبھی کبھار پاس ہوکر ہمیشہ ٹاپر بنے رہنے کا خوشنما بھرم بھی پیدا کرتے رہے ہیں. اظہار کی آزادی کون طے کرتا ہے، اس کا بھی فیصلہ ہونا چاہئے. کبھی کوئی مذہبی تنظیم آجاتی ہے، کبھی کوئی سیاسی تنظیم آ جاتی ہے تو کبھی نیوز چینل بھی آجاتا ہے. تمام فیصلے کے بعد بھی اظہار کی آزادی کا معاملہ ابھی تک سلجھا نہیں ہے. قابل مجروح جذبات صدیوں سے ہمارے اظہار پر پہرہ دے رہے ہیں. انتخابات آتے ہی مذہبی کتابوں کے موازنہ سے لے کر اہانت تک کا معاملہ اظہار کی آزادی کا امتحان لیتا رہتا ہے. موجودہ تناظر میں تمل ناڈو کے مصنف پیرومل مرگن کا معاملہ ہے جن کے بارے میں چنئی ہائی کورٹ کا ایک فیصلہ ہے.

گزشتہ سال جنوری میں پی مرگن نے فیس بک پر لکھا تھا کہ مصنف پی مرگن مر گیا ہے. وہ خدا نہیں ہے کہ دوبارہ زندہ ہو گا. چنئی ہائی کورٹ میں ان کے خلاف پٹیشن دائر کی گئی کہ مرگن کی کتابوں کو واپس لے لیا جائے اور ان پر مجرمانہ معاملہ چلے کیونکہ اس سے ذات پات اور مذہبی جذبات نام کے دو جذبات کو ٹھیس پہنچی ہے. چنئی ہائی کورٹ نے دونوں عرضیاں خارج کر دیں اور اپنے فیصلے میں جو لکھا اسے سنگ میل بتایا جا رہا ہے. چیف جسٹس سی جیكول اور جسٹس پشپا ستیہ نارائن نے یہ فیصلہ لکھا ہے. مرگن کی ایک تخلیق ون پارٹ وومن کو لے کر تنازع ہوا تھا. اس کہانی کا کردار بچہ نہ ہونے کے سماجی دباؤ میں ہے. معاشرے کے دباؤ میں ایک مذہبی موقع پر عورت کسی پرائے مرد سے تعلق بناتی ہے. اس کہانی کو لے کر کچھ لوگ بھڑک گئے کہ یہ فحش ہے اور اس سے مقامی ثقافت اور روایت بدنام ہوئی ہے.

چنئی ہائی کورٹ اپنے فیصلے میں اس مرگن کو دوبارہ زندہ ہونے کے لئے کہتا ہے جس نے اپنے مرنے کا اعلان کر دیا تھا. عدالت کہتی ہے اٹھو اور لکھو. ایک زندہ جمہوریت کے شہری کی شناخت یہی ہوتی ہے کہ وہ وقت کے ساتھ اپنے مخالف کے ساتھ چلنا سیکھے. ہر تحریر کسی کے لئے قابل اعتراض ہے اس لئے اسے فحش نازیبا اور غیر اخلاقی نہیں کہا جا سکتا ہے.

بھارت کے آئین کو دنیا کے سب سے زیادہ لبرل اور جدید ہونے کا فائدہ حاصل ہے. ہمارے آئین کا ایک سب سے زیادہ یادگار رائٹ ہے کہ بولو اپنے دل سے اور لکھو اپنے دل کا. اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ اس پر کچھ پابندیاں ہیں لیکن اس کے بعد بھی لکھنے اور بولنے کی حدیں کافی بڑی ہیں.

یہ فیصلہ اپنے مقدمے سے لے کر خاتمہ تک پڑھنے کے قابل ہے. کیا لکھیں اور کس حد تک لکھیں کہ جو ہماری آپ کی سمجھ کو بہتر کرے. ایک ایسے دور میں جب سوشل میڈیا پر موجود ٹرول کے خوف سے بہت سے لوگ لکھنے سے ڈرتے ہیں، بہت سے لوگ عدالت تک جا نہیں پاتے، نہ لکھنے کا ماحول بنانا بھی اظہار کی آزادی کے خلاف ماحول بنانا ہے. اس کے لئے آپ کو عدالت سے پابندی کا مطالبہ نہیں کرنا پڑتا ہے. حکومت اور سیاسی جماعتیں اپنے خفیہ طور پر تیار کئے گئے نامیاتی ردو بدل کی بنیاد پر آپ کو خوفزدہ کر سکتی ہیں. لکھنے پر بدنام کرنے کی مہم چلانا بھی ایک قسم کے اظہار کی آزادی کے خلاف سیاسی کوشش ہے.

فیصلے کے دیباچے میں چیف جسٹس کول لکھتے ہیں کہ معاشرہ کسی کتاب کو پڑھنے کے لئے، کتاب جو کہتی ہے اس سے بغیر مجروح ہوئے، ہم آہنگ کرنے کے لئے تیار ہے یا نہیں. ان سب باتوں پر برسوں سے تنازع ہوتا رہتا ہے. وقت بدل گیا ہے. پہلے جو ناقابل قبول تھا، اب قابل قبول ہے. Lady Chatterleys Lover اس کی کلاسک مثال ہے. پڑھنے کا اختیار قاری کا ہوتا ہے. ادبی ذوق میں فرق ہو سکتا ہے، کسی کے لئے جو صحیح اور قابل قبول ہے، ہو سکتا ہے دوسرے کے لئے نہ ہو. پھر بھی لکھنے کا حق بلا تعطل ہے، بلا روک ٹوک ہے. اگر کوئی مواد آئینی اقدار کو چیلنج دیتا ہے یا اس کے برخلاف ہے، نسلی مسائل کو ابھارتا ہے، ذات کی توہین کرتا ہے، توہین رسالت کی بات ہو، اس میں جنس سے متعلق نا قابل قبول باتیں ہوں، ملک کے خلاف ہی جنگ چھیڑنے کی بات ہو تب تو یقینا ریاست مداخلت کرے گی.

Lady Chatterleys Lover پر ہندوستان کی سپریم کورٹ نے پابندی لگا دی تھی. چنئی ہائی کورٹ کے دو جج ایک کتاب سے پابندی ہٹانے کے لئے اس ناول کا سہارا لیتے ہیں. فیصلے میں یہ بھی لکھا ہے کہ مرگن کو خوف میں نہیں رہنا چاہئے. انہیں لکھنا چاہئے اور اپنی تحریر کے کینوس کو وسیع کرنا چاہئے. ان کا تحریری ادب میں حصہ مانا جائے گا، باوجود اس کے کہ ان سے نا متفق  ہونے والے لوگ بھی ہوں گے. مگر اس کا حل یہ نہیں ہے کہ مصنف خود کو مردہ قرار دے دے. وہ ان کا آزاد فیصلہ نہیں تھا بلکہ ایک بنائی گئی صورتحال میں لیا گیا تھا.

اس فیصلے سے مصنف، آرٹسٹ پرجوش کیوں ہیں. اس سے کیا ایسا بدل گیا ہے کہ انہیں لگتا ہے کہ نامعلوم طاقتوں کے بنائے خوف کے ماحول میں وہ اس سہارے کچھ لکھ پڑھ سکیں گے. کیا یہ فیصلہ آزادی اظہار کے معاملے میں دیے گئے گذشتہ تمام فیصلوں سے زیادہ واضح ہے. زیادہ حوصلہ افزا ہے اور لائن سے ہٹ کر ہے. کیا یہ فیصلہ بندشوں کے دائرے میں ہمیں لامحدود جگہ دیتا ہے جہاں ہم کچھ بھی لکھ سکتے ہیں. کسی کو کچھ بھی بول سکتے ہیں. سدھارتھ بھاٹیہ نے اس پر اپنا ایک نظریہ پیش کیا ہے.

سدھارتھ بھاٹیہ کو اعتراض ہے کہ فیصلے کی بنیاد عقلی نہیں ہے. کتاب مقبول ہے، ناقدین نے سراہا ہے، مصنف کو انعامات ملے ہیں، یہ سب بنیاد کیوں بنا. اس کی بنیاد کیوں نہیں بنا کہ قدامت پسند معاشرے سے بغاوت کرنے کا حق کسی مصنف کو ہے. اس سے تو یہی لگتا ہے کہ قانون اسی مصنف کو تحفظ دے گا جو مرکزی دھارے میں کافی کامیاب رہا ہو. مرگن مقبول یا انعام یافتہ ہیں تو ان کو چھوٹ ملے گی مگر منٹو جیسا مصنف اگر انعام یافتہ نہیں ہے تو ان کو چھوٹ نہیں ملے گی. سدھارتھ کہتے ہیں کہ 50 سال پہلے لیڈی چیٹرلي لور پر لگی پابندی کو سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ایم ہدايت اللہ نے صحیح ٹھہرایا تھا. 50 سال بعد اسے غلط بتایا گیا. ظاہر ہے دونوں ہی فیصلے جج سے متاثر ہیں. اس بات پر انحصار کرتا ہے کہ کوئی جج کسی کیس کے بارے میں کیسا محسوس کرتا ہے.

کیا یہ فیصلہ واقعی مرگن جیسے مقبول یا انعام یافتہ مصنفین کے لئے ہے، کیا اس فیصلے کے بعد بھی قانون کا کوئی مقررہ طریقہ کار قائم نہیں ہوتا ہے جس کی بنیاد پر کوئی بھی مصنف اپنے لئے انصاف مانگ سکے گا. عدالت نے فن ثقافت کے میدان سے منسلک ماہرین کی ایک کمیٹی تشکیل دینے کا حکم دیا ہے جو ایسے معاملات میں کیا کیا جائے، اس کا خاکہ طے کرے گی. ان کی گائڈلائن کو پولیس سے لے کر انتظامی افسران کو بھجوایا جائے. عدالت نے کہا ہے کہ اس طرح کے معاملات میں مقدمہ شروع ہونے سے پہلے سزا دے دی جاتی ہے جو ٹھیک نہیں ہے. لوگوں کا دباؤ رہے گا مگر ریاست اس دباؤ کو مصنف یا آرٹسٹ پر حاوی نہ ہونے دے. مختلف طریقوں سے آزادی اظہار کے حق کو محفوظ رکھے. قانون بنائے رکھنے کے نام پر آرٹسٹ کو اپنے موقف سے مكرنے کے لئے پابند نہیں کیا جائے گا اور نہ ہی نان اسٹیٹ ایکٹر کو اجازت ہوگی کہ وہ طے کرے کہ کیا اجازت کے قابل ہے، کیا نہیں. معاشرے کے ایک طبقے کے ذریعہ جب بھی کسی مصنف یا آرٹسٹ پر حملہ ہوگا، ریاست کو پولیس سیکورٹی دینی ہوگی.

پبلشرز کے کردار کے بارے میں اس فیصلے میں کئی اچھی باتیں ہیں. کئی بار پبلشرز پر حملہ ہو جاتا ہے اور وہ اپنے نقصان سے ڈر جاتے ہیں. حال ہی میں رانا ایوب کی کتاب گجرات فائلز چھاپنے سے بہت سے پبلشرز مکر گئے. رانا ایوب کو خود ہی کتاب چھاپني پڑی. کئی بار شائع شدہ کتاب ناشر واپس لے لیتے ہیں. وینڈی ڈونيئر کی دی ہندوز اینڈ الٹرنیٹیو ہسٹری کو لے کر بھی ایسا ہی کچھ ہوا تھا. اس فیصلے کو جس طرح سے پڑھا جا رہا ہے، اس کے حصوں کو شائع کیا جا رہا ہے، ہمیں لگا کہ اس پر بات کرنی چاہئے. کیا یہ فیصلہ بے لگام اظہار کی آزادی کے معاملے میں بے نظیر ہے یا اس کا حوالہ صرف مرگن کی کتاب تک ہی محدود ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close