نقطہ نظر

مغرب میں آزادیٔ اظہار کاتصور اور اسلام

اسلام آزادیٔ اظہار کے خلاف ہے اور اسکا قانون فرد کی آزادی پر قدغن لگاتاہے خلاف عقل اور مبنی بر عصبیت ہے۔ جس طرح دنیا کا ہر قانون فرد اور معاشرہ کی آزادی کے لئے قانون وضع کرتاہے تاکہ امن عامہ برقرار رہے اسی طرح اسلام بھی آزادی کا اپنا تصور پیش کرتاہے تاکہ معاشرہ فساد سے محفوظ رہے۔

مزید پڑھیں >>

جمہوریت

 جمہوریت ایسا نظام حکومت ہے جو عوام کی اکثریت کی رائے سے قائم کیاجاتاہے۔ اس نظام میں انفرادی آزادی اور شخصی مساوات کے تصورات کو اہمیت دی گئی ہے جس کی وجہ سے دنیابھر میں اسے پسندکیاجاتاہے۔ پسندیدہ ترین ہونے کے باوجود جمہوریت صاف شفاف اورغیرجانبدار نظام عدل کے قیام میں ناکام نظر آتی ہے۔ اللہ تعالیٰ سے دُعاہے کہ پاکستان میں جمہوریت قائم رہے اورامن بھی ہو، انصاف بھی ہو، بدعنوانی کاخاتمہ ہواورخوشحالی آئے۔

مزید پڑھیں >>

مقننہ اور انتظامیہ کے لئے صلاحیت وشہادت کی ضرورت

پہلے زمانہ میں کسی بھی کام کے لئے درکارآدمی کے اندرصرف اس کی صلاحیت(Ability)کودیکھ کرہی اسے موزوں یاناموزوں قراردیاجاتاتھا،پھرزمانہ کی ترقی کے ساتھ ساتھ ڈگریاں بھی دیکھی جانے لگیں، یعنی صلاحیت اورشہادت (Certificate) دونوں دیکھنے کے بعدہی یہ طے پاتاہے کہ یہ لائق ہے یانالائق، اوریہ کام کے تقریباً تمام شعبوں میں ان دونوں لازمی قراردیاجاچکاہے، یقیناً یہ ایک خوش آئندبات ہے کہ دونوں کی موجودگی کی وجہ سے طمانینتِ قلب حاصل ہوجاتاہے۔

مزید پڑھیں >>

جامعہ ملیہ اسلامیہ: یوم تاسیس یا یوم برائی

جب ہم یوم تاسیس کے موقع پر جامعہ ملیہ کی طرف نظر ڈالتے ہیں تو پھر دل سے ان بزرگوں کے لئے دعائیں نکلتی ہیں، جنہوں نے مدارس کو قائم کیا تھا، ہم کتنا بھی مدرسوں کو برا بھلا کیوں نہ کہہ لیں، مگر اس حقیقت کو ہر کس و ناکس کو تسلیم کرنا پڑے گا کہ آج جتنی بھی اسلامیت ہندوستان میں دکھائی دیتی ہے، وہ انہیں مدرسوں کی دین ہے، ورنہ اگر امت مسلمہ صرف یونورسٹیوں یا کالجوں کے دم پہ ہوتا تو اس کے افراد وہاں سے صرف بھانڈ، گویا، سنگر، اور ڈانسر بن کے نکلتے.

مزید پڑھیں >>

کھلونے دے کے بہلایا گیا ہوں

وہ ہندو جو شاہجہاں اور ٹیپو سلطان پر الزام لگا رہے ہیں ان کا دھرم ہے کہ مرنے کے بعد جل جائیں گے اور پھر دنیا میں ایم ایل اے، ایم پی، وزیر یا کارپوریٹر بن کر آئیں گے اور اسی طرح آتے جاتے رہیں گے۔ یہ بحث ہے نہیں بنائی گئی ہے صرف اسی لئے کہ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی پر رونا گانا بند ہو لیکن جو زخمی ہیں جن کی تھالی سے دیسی گھی ہٹ گیا جو چار گھنٹے نوٹ گنتے تھے اب 20  منٹ میں گن کر دُکان بند کردیتے ہیں وہ جی ایس ٹی کو کیسے بھول جائیں ؟

مزید پڑھیں >>

جماعت اسلامی ہند: تحریک یا تنظیم؟

جماعت اسلامی کی تشکیل اصلاً 1941 میں ہوئی . یہ انقلابات کا دور تھا.قوموں کی تقدیریں خدائی حکم کے 'تبادلوں ' کی زد پر تھیں . کسی کو معزول کیا جا رہا تھا تو کسی کو مامور.امّت مرحومہ بھی جرم ضعیفی کی سزا یافتہ ہو کر خلافت کی ایک ایک انچ سے محروم کی جا رہی تھی. اس خانہ خرابی کو ٹھیک کرنے کے لئے پورے عالم میں امّت کے فکرمند اکابرین اپنے اپنے طور پر احیاۓ اسلام کی منظّم کوششوں میں لگے تھے. انہی کوششوں کا ایک ٹھوس نتیجہ جماعت اسلامی کا قیام بھی تھا .

مزید پڑھیں >>

کیا آر ایس ایس سے یہ سیکھیں؟

یونین میں کچھ اور بھی مسلم اور اردو صحافی موجود ہیں لیکن جس بے خوفی کے ساتھ اس یونین کے غیر مسلم ارکان اور خاص طورپراس کے صدر ایس کے پانڈے مسلمانوں کے ساتھ ہونے والے امتیازی سلوک کے خلاف آواز اٹھاتے ہیں اس کا کوئی موازنہ نہیں کیا جاسکتا۔ یہ لوگ کسی مالی منفعت یا شہرت کی خاطراپنی جان ہتھیلی پررکھ کر مسلمانوں کے حق میں نہیں بولتے۔ بلکہ ایک مستحکم نظریہ کے تحت اپنا یہ انسانی فریضہ خاموشی سے ادا کئے جارہے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

رفاہی کاموں کے لیے مساجد کا استعمال

حقیقت میں ایک مسجد کو صرف عبادت خانہ ہی نہیں ہونا چاہیے بلکہ اس کی حیثیت ایک کمیونٹی سینٹر کی بھی ہونی چاہیے ,وہ تمام کمیونٹی جو مسجد کے آس پاس رہتی ہے ,مسجد میں پانچ وقت نماز کے لئے آتی ہے جعمہ کے روز عام طور پر زیادہ تعداد میں لوگ آتے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

کیا عمران پرتاپ گڑھی صاحب ان سوالوں کے جواب دیں گے ؟

گزشتہ دنوں ناندیڑ بلدیاتی انتخابات میں شاعر اور نصف سیاست داں عمران پرتاپ گڑھی نے کانگریس کی حمایت میں انتخابی تشہیر چلائی۔  ہمارا ماننا ہیکہ ناندیڑ میں عمران پرتاپ گڑھی نے نہ صرف ایم آئی ایم بلکہ مسلم قیادت کی مخالفت کی ہے۔ موصوف نے انتخابی تشہیر کے دوران ناندیڑ میں کی گئی تقریر سے صاف ظاہر ہو رہاتھا کہ انہیں کانگریس کی حمایت میں کم اور مسلم قیادت ایم آئی ایم کے بارے میں زیادہ بولنا ہے۔ انہوں نے جو کیا، وہ ان کا اپناذاتی فیصلہ تھا اور ان کاسیاسی نظریہ شاید مسلم قیادت کو قبول نہ کرتا ہو۔ لیکن ملک کے عوام اور قوم کے مستقبل کی خاطر ہم سب کو اپنے نظریہ اور فیصلے پر نظرثانی کرنی چاہئے۔

مزید پڑھیں >>

کانگریس کے اچھے دنوں کا آغاز

مہاراشٹر کے وزیراعلی کے دورے ناکام ثابت ہوئے۔ تیر کا نشانہ چوک گیا، گھڑی کے کانٹے رک گئے، پتنگ کٹ گئی، "شعلہ بیانی" دھری کی دھری رہ گئی۔ قابل مبارکباد ہیں ناندیڑ کے عوام جنہوں نے اس مرتبہ کانگریس کی حمایت میں ووٹ دیا اور بی جے پی سمیت تمام فرقہ پرست طاقتوں کے خلاف اپنا متحدہ محاذ تیار کیا۔

مزید پڑھیں >>