نقطہ نظر

ٹرمپ اور مودی بادشاہوں اور شیخوں کے محبوب نظر کیوں ہیں؟

امریکی صدر کے دورہ سعودی عرب سے قبل ایک سعودی عالم دین نے امریکی صدر ٹرمپ کو’’ اللہ کا خادم‘‘ قرار دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سعودی عالم دین نے امریکی ٹرمپ کو اللہ کا خادم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ مسلمانوں کے مفادات میں بہتر کام کریں گے ۔سعد بن غنیم نے جمعہ کے روز ایک ٹویٹ میں کہا ہے امید ہے کہ اللہ پاک ڈونلڈ ٹرمپ پر اپنے پروں کا سایہ کرتے ہوئے انہیں صحیح سمت میں کام کرنے کی توفیق عطا فرمائے گا

مزید پڑھیں >>

ہیں پاسبان حرم خود ہلاکوو چنگیز

موجودہ عہد میں اسلام کی صورت حال کو ماضی کے انھیں تاریخی کڑیوں سے اگر آپ ملا کر دیکھیں تو آج کے شاہی اسلام اورعہد قدیم کے ملوکیت والے اسلام کی ہی ایک شکل ہے ۔جس کی کفالت بادشاوں کے بڑے بڑے محلات اور تخت واقتدار کے زیر نگرانی ہوئی،اور عالم اسلام کا ایک بڑا طبقہ ان بادشاہوں کی طرف سے پیش کئے جانے والے اسلام کو ہی اصلی اسلام سمجھ بیٹھے ۔

مزید پڑھیں >>

مسلکی اختلافات اور اعتدال کی راہ!

اعتدال کی را ہ اسی وقت نکل سکتی ہے جب تمام مسلمان خواہ وہ دیوبندی ہوں یا بریلوی ،وہابی ہو ں یا سلفی فرعاتی مسائل میں اختلاف کو نظر انداز کریں اور اس بات پر متفق ہوجائیں کہ ہر وہ شخص جو اللہ تعالی کی وحدانیت کا اقرار کرتا ہواور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا ہو اور اس کے رسولوں پر ایمان رکھتا ہو اور اس کی کتابوں کے منزل من اللہ ہونے کا اقرار کرتا ہو اور یوم آخرت پر کامل یقین ہووہ مسلمان ہے اب خواہ وہ عظمت صحابہ کا قائل ہو یا نہ ہو خواہ وہ رسول اللہ ﷺ کے لئے علم غیب کو مانتا ہو یا نہ مانتا ہو ہمیں اس سے کوئی تعلق نہیں رکھنا چاہئے بلکہ ہم دنیا کی نگاہ میں کل بھی مسلمان تھے اور آج بھی مسلمان ہونگے فرق اتنا ہوگا کہ کل تک ہم باہم دست و گریباں تھے اور آج ایک دوسرے کے لئے مخلص ۔

مزید پڑھیں >>

ہاشم پورہ سانحہ: تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو!

مظفرنگر فساد آپ کی حکومت میں ، اخلاق کا قتل آپ کی حکومت میں ، سہارنپور فساد آپ کے دور حکومت میں ،لیکن مسلمان آپ ہی کا دیوانہ ہے ،مسلمان کو کیا دیا سماج وادی نے لاشوں کی قیمت کے سوا اور چند خوبصورت وعدوں کے سوا؟ مگر محبت میں کوئی کمی نہیں ۔

مزید پڑھیں >>

چوہوں کے دیس میں بلّی کا حج!

ڈونالڈ ٹرمپ نے سرزمین وحی پر مسلمانوں کو امن و آشتی کا درس دیکر یہ واضح کردیا کہ جس اسلامی حکومت کا دعویٰ سعودی عرب کرتاہے وہ ڈھونگ ہے ۔ڈوب مرنے کی بات ہے کہ مسلمانوں کو دہشت گردی کے بانی دہشت گردی سے لڑنے کے طریقے بتارہے ہیں ۔ظالم ظلم کے خلاف لیکچر دے رہے ہیں اورسعودی مسلمان مظلومیت کے ساتھ ظالموں کی لن ترانیاں سن رہے ہیں ۔اسرائیل اور امریکہ دہشت گردی کے خاتمہ کا منصوبہ تیارکررہے ہیں اور مسلمان اس منصوبہ پر عمل کرنے کے لئے کمربستہ ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

تقسیم کے زخم: مولانا محمد مسلم ؒ کی باتیں

یہ زمانہ گزر گیا لیکن اب بھی جب ان واقعات کی یاد آتی ہے تو یہی جی چاہتا ہے کہ ملت میں اپنی کمزوریوں کا احتساب کرنا اور باہمی ارتباط اورخدمت کے جذبے کو بڑھانا صرف ایک دینی ضرورت ہی نہیں بلکہ باعزت انسان کی طرح زندگی گزارنے کے لئے بھی یہ ضروری ہے۔

مزید پڑھیں >>

ہمارا لائحہ عمل (دوسری قسط)

ہر شخص جو کچھ بھی عقل رکھتا ہے ، اِن حالات کو دیکھ کر خود یہ اندازہ کرسکتا ہے کہ جب تک یہ طریقِ انتخاب جاری ہے ، کبھی قوم کے شریف اور نیک اور ایمان دار آدمیوں کے ابھرنے کا امکان ہی نہیں ہے ۔ اس طریقے کا تو مزاج ہی ایسا ہے کہ قوم کے بدتر سے بدتر عناصر چھٹ کر سطح پر آئیں اور جس بداخلاقی و بدکرداری سے وہ انتخاب جیتتے ہیں اسی کی بنیاد پر وہ ملک کا انتظام چلائیں ۔

مزید پڑھیں >>

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کا دورۂ عرب!

سپر پاور امریکہ کے صدر ڈونالڈ ٹرمپ اپنے پہلے غیر ملکی دورے پر سعودی عرب میں ہیں ، ان کے ساتھ ان کی بیوی ملانیا ٹرمپ ، بیٹی ایوانکا ٹرمپ ، داماد اور اعلیٰ سرکاری عہدے دار شامل ہیں - وہی ڈونالڈ ٹرمپ جس نے سعودی عرب کو دھمکی دی تھی اور نائن الیون حملے کا ذمہ دار سعودی عرب کو ٹہرا کر کہا تھا کہ سعودی عرب کو بھاری قیمت چکانی پڑے گی-

مزید پڑھیں >>

ایک مجلس میں تین طلاق!

"تین طلاقوں کا واقع ہوجانا اکثر اہل علم کی رائے یے۔حضرت عمر۔عثمان علی ابن عباس ابن مسعود ابن عمر وغیرہ صحابہ نیز امام ابو حنیفہ ۔مالک شافعی احمد بن حنبل ابن ابی لیلی اوزاعی اسی کے قائل ہیں ۔ابن عبد الہادی نے ابن رجب حنبلی سے نقل کیا ہے کسی صحابی۔تابعی اور ایسے امام وعالم سے جن کا فتوی حرام حلال میں قابل ذکر ہے ،مدخول بہا عورت کو ایک لفظ میں دی گئی تین طلاقوں کے ایک شمار کئے جانے کی بابت کوئی صریح قول منقول نہیں ہے''۔

مزید پڑھیں >>

ملک میں فروغ پذیر متشدد قوتیں اور رمضان المبارک کا پیغام !

آج بھی مسلمان ملک کی دیگر اقوام کے مقابلے معاشی ،تعلیمی اور معاشرتی بنیادوں پر کمزورہیں ۔لیکن اگر مثبت انداز میں تجزیہ کیا جائے تو یہ بات وثوق سے کہی جا سکتی ہے کہ مسلمان وہ قوم ہے جو اندھیروں کو چیر کر روشنی تلاش کرتی ہے۔سخت ترین حالات میں پروان چڑھتی ہے۔اوراس کو اپنی بقا و تشخص کا احساس اسی وقت جاگزیں ہوتا ہے جبکہ وہ مٹائی جا رہی ہو۔بصورت دیگر پر سکون حالات عموماً یہ لوگ کمزور ہوئے ہیں ،اپنے دین اور اپنے عقیدے میں کمزور پڑتے نظر آئے ہیں ،اور اُن اقوام کی سازشوں کا زیادہ شکار ہوئے ہیں جو ان پر تسلط برقرار رکھنا چاہتی ہیں ۔ٹھیک اسی طرح کی صورتحال مسلمانوں کی اُن ممالک میں دیکھی جا سکتی ہے

مزید پڑھیں >>