سیاستہندوستان

دارجلنگ میں کیوں تیز ہوئی علیحدہ ریاست کی گونج؟

رچا جین

دارجلنگ کی وادیاں آج کل تشدد احتجاج اور بدامنی سے گونج رہی ہے. بنگالی زبان کو لازمی کئے جانے کے نام پر گورکھا جن مکتی مورچہ نے الگ گورکھا لینڈ ریاست کی مانگ کو ہوا دی ہے. گورکھا کی علیحدہ ریاست کا مطالبہ آزادی سے بھی زیادہ پرانا ہے. ممتا بنرجی نے اقتدار میں آنے کے بعد خود مختار کونسل کے ذریعہ گورکھا تحریک کو ٹھنڈا کرنے کی کوشش کی لیکن اب یہ مطالبہ پھر سے سر اٹھا رہا ہے. اس آگ کو چنگاری ملی ہے ممتا حکومت کے اس فیصلے سے جہاں پہلی سے دسویں کلاس تک تمام اسکولوں میں بنگالی زبان کو لازمی کر دیا گیا ہے. گورکھا جن مکتی مورچہ بنگالی زبان کی مخالفت کے ذریعہ علیحدہ ریاست کا مطالبہ کے لئے تحریک تیز کرنا چاہتا ہے.

دارجلنگ میں اقتدار میں شریک بنائے گئے گورکھا جن مکتی مورچہ نے پھر سے تحریک کی راہ پکڑ لی ہے. اس کے پیچھے علیحدہ ریاست کا حصول تو ہے ہی لیکن یہ ریاست میں اقتدار اور سیاست کے ذریعہ بھی سمجھنے کی ضرورت ہے. بی جے پی کا ساتھی جن مکتی مورچہ ترنمول کے اقتدار والی حکومت کے ساتھ کس طرح ہو سکتا ہے. آج بنگال میں تسلط کی جنگ میں آمنے سامنے ہیں بی جے پی اور ترنمول کانگریس. اقتدار کی جنگ میں بی جے پی نے اپوزیشن کی جگہ سی پی ایم سے چھین لی ہے. بی جے پی کا ساتھ دینے والے بمل گرونگ کے اس محاذ نے گورکھا لینڈ ٹیريٹوريل ایڈمنسٹریشن چھوڑنے کا اشارہ کیا ہے. ظاہر ہے بی جے پی اس تحریک کو پھر سے ہوا دے رہی ہے لیکن الگ گورکھا لینڈ ریاست بنانے پر کسی حکومت نے ہمت نہیں دکھائی. بی جے پی کے لئے یہ ممتا کو چیلنج ہو سکتا ہے لیکن ممتا بنرجی اسے خوب سمجھتی ہے اور سیاست کے کسی منجھے ہوئے کھلاڑی کی طرح وہ اس سے اچھی طرح نپٹ سکتی ہیں . وہ خود دارجلنگ پہنچی اور گورکھا جن مکتی مورچہ کی تحریک کے ذریعہ ہوئے تشدد سے مقابلے کے لئے فوج بلا لی. فوج نے فلیگ مارچ کیا ہے. بمل گروگ کی قیادت والے اس تحریک کو دبانے کے لئے ممتا نے جمعہ کو بلائے بند کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے تمام سرکاری ملازمین کو آج دارجلنگ کے دفتروں میں رپورٹ کرنے کو کہا.

ممتا نے دارجلنگ کو چلانے والے گورکھا لینڈ ٹیريٹوريل ایڈمنسٹریشن کے اخراجات کا آڈٹ کرنے کا اعلان کیا ہے جس سے محاذ کی تيور چڑھے ہوئے ہیں . ممتا کی ہی قیادت میں سال 2011 میں بمل گرونگ کی قیادت والے محاذ کے ساتھ ایک بڑا معاہدہ ہوا تھا جس کے بعد یہاں کے معاملے میں محاذ کو گورکھا لینڈ ٹیريٹوريل ایڈمنسٹریشن کے تحت بہت سے حقوق ملے. لیکن اس وقت سے لے کر اب تک گنگا میں بہت پانی بہہ چکا ہے اور گرونگ اور ممتا کا سیاسی موہبھنگ ہو چکا ہے. 2014 میں گورکھا جن مکتی مورچہ نے بی جے پی کا ساتھ دیا. تب سے لے کر اب تک بی جے پی نے اہم اپوزیشن کی جگہ سی پی ایم سے چھیننے اور ترنمول کو چیلنج کرنے کے چلتے اگلے انتخابات میں اقتدار میں دعویداری کا دعوی پیش کیا ہے.

اس رسساكشی میں پستے ہیں عام گورکھا جس کے لئے علیحدہ ریاست کی مانگ کو ابھی تک سیاسی طور پر جم کر لیا گیا ہے. گورکھا کی علیحدہ ریاست کا مطالبہ آزادی سے بھی پرانا ہے. انگریزوں نے دارجلنگ کو سکم سے چھینا، قبضہ جمایا اور آزادی کے بعد اس کو بنگال ریاست میں ضم کیا گیا، لیکن ثقافتی، لسانی اور یہاں تک کی سیاسی طور پر بنگال اور دارجلنگ میں مساوات کہیں نہیں ہے. گورکھا اپنی دیسی شناخت، خان پان، آڑ سے لے کر ثقافت ہر چیز میں خود کو بنگال سے مختلف سمجھتے ہیں . اسی لئے بنگالی زبان کو اسکولوں میں لازمی کرنے کو لے کر گورکھا کے جذبات بھڑکے ہوئے ہیں .

دارجلنگ کی وادیوں سے ہر سال ہونے والے ہزاروں کروڑ کے چائے کے کاروبار اور سیاحت سے ہونے والی موٹی آمدنی کولکاتا کو دارجلنگ کا ساتھ چھوڑنے نہیں دیتی. بنگال کی سیاست کے 2 متضاد پارٹیاں ، ممتا اور لیفٹ دونوں ہی الگ گورکھا ریاست کی مانگ کے خلاف رہے ہیں . اگرچہ ریاستی حکومت کی کردار علیحدہ ریاست کی تشکیل میں محدود ہو، یہ معاملہ مرکز سے منسلک ہے۔ لیکن بنگال کو ناراض کر کوئی بھی مرکزی حکومت اتنا بڑا خطرہ مول نہیں لینا چاہے گی. بنگلہ دیش کے ساتھ تعلقات میں کولکتہ کی اہمیت کو دیکھتے ہوئے بنگال کے مت کو نظر انداز کرنا سیاسی طور پر مفید نہیں ہے. تیستا پانی کی تقسیم پر ممتا کے اڑیل رویہ کے چلتے بھارت بنگلہ دیش کے درمیان اس پر عمل نہیں ہو پایا.

علیحدہ ریاست کی تحریک کے لئے لسانی داداگري کا حوالہ دینے والے گورکھا ممتا کے اس جواب کو نظر انداز کر رہے ہیں جس پہاڑی علاقوں میں بنگالی کو لازمی نہیں کرنے کی چھوٹ کا حوالہ دیا گیا ہے. زبان ایک ایسی نبض ہے جس نے جنوب سے لے کر کئی ریاستوں میں تحریکوں کو ہوا دی. اسی کو بیساکھی بنا گورکھا جن مکتی مورچہ اس سیڑھی کو چڑھنے کی کوشش میں ہے جس سے ممتا بنرجی نے انہیں 2011 میں خود مختار کونسل کی ریوڑی دے کر اتار دیا تھا. سیاست کی چکی میں پس رہی علیحدہ ریاست کا مطالبہ بھی مزید پورا ہوگی اس کا امکان مستقبل قریب میں انتہائی کم ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close