سیاستہندوستان

مجھے مت مارو…میں بھی انسان ہوں!

تحریر:مہر گوتم، ترجمہ: محمد اسعد فلاحی

بھاری بھیڑ … چلتی ٹرین .. کچھ آوازیں اور پھر  پٹایی. جو پٹایی نہیں کر رہے  وہ  تماشایی   زیادہ كھٹكنے لگے ہیں . کیا ملک کے مختلف حصوں میں جاری بھيڑتنتر  جمہوریت کو چیلنج نہیں دے رہا ہے. جسے جہاں دل کرے پکڑو، ایک افواہ اڑاؤ اور پھر مار ڈالو. کسی کی قسمت رہی تو بچ جائے، ورنہ مارنے والے کہاں زندہ رہنے کے لئے پیٹتے ہیں . ایک ٹرین چلتی ہے، سیٹ پر تنازعہ ہوتا ہے. جس سے تنازعہ ہے وہ ایک مذہب کا ہے، تو سب سے آسان کام   افواہ ہے وہ پھیلا دی گئی اور پھر پٹایی شروع ہو گئی. بچانے والا کوئی نہیں تھا لیکن پیٹنے والے بھی کم نہیں تھے. ایک نے دم توڑ دیا اور باقی تین اسپتال میں ہیں . یہ جرم کا نیا طریقہ ہے. صرف گزشتہ ماہ کی بات ہے کہ جھارکھنڈ میں بچہ چرانے کی افواہ اڑا دی گئی. جگہ جگہ  بھیڑ لوگوں کے قتل کرنے لگی. 19 مئی کو تو جھارکھنڈ میں دو جگہوں پر سات لوگوں کو ہجوم نے پیٹ پیٹ کر مار ڈالا. کچھ لوگوں نے رشتہ داروں کے یہاں چھپنے کی کوشش کی تو رشتہ داروں کو کہا گیا انہیں سونپ دو نہیں تو پورے گھر میں آگ لگا دیں گے. آخر کار بھیڑ کو پٹایی کرنے  کے لیے پر مجبور مل گئے اور پھر انہیں مار کر پھینک دیا گیا.

یہ حیران نہیں پریشان  زیادہ کرتا ہے. جانوروں سے بھرے ٹرک پکڑے جانے لگے اور پھر کچھ مبینہ گوركشك پیٹنے لگتے. ہر بار اس طرح پیٹنے کے حق میں دلیل آنے لگتے ہیں . الور میں پہلو خان ​​کو مار دیا گیا. خوب ہنگامہ مچا، انکوائری بٹھا دی گئی، سخت کارروائی کی یقین دہانی مل گیی لیکن کیا کچھ بدلا ہے؟ کم از کم جو حالات ہیں اسے دیکھ کر تو ایسا بالکل نہیں لگتا ہے.

راجستھان میں جون کے  مہینے میں تو تمل ناڈو کے جانوروں کے محکمہ کے عملے تک کو گنڈوں نے نہیں بخشا. ان کے پاس جانور خرید کے سارے کاغذ تھے. لیکن کاغذ دیکھتا کون ہے، جب مقصد صرف پیٹنا اور خوف پیدا کرنا ہو. گزشتہ سال جولائی میں گجرات کے گر سومناتھ میں جس طرح دلتوں کو گاڑی سے باندھ کر پیٹا گیا وہ واقعہ  ہلا دینے والا ہے. وہ چمڑے کا کام کرتے تھے، لیکن انہیں گائے کو مارنے والا بتا دیا گیا اور پھر پیٹنے کا سلسلہ شروع ہو گیا.

ایسا نہیں ہے کہ یہ کسی ایک ریاست تک سمویا  ہوا ہے. دائرہ بڑھ رہا ہے، خوف بڑھ رہا ہے. ان میں نہیں جو جرم کر رہے ہیں ، ان میں جو صحیح ہیں ۔لیکن بھیڑ کہیں بھی پکڑ سکتی ہے، پیٹ سکتی ہے، قتل کر سکتی ہے. یہ بھيڑتنتر خطرہ بن رہا ہے. مجھے گوركشا پر وزیر اعظم کی کہی بات سب سے زیادہ پسند ہے. انہوں نے مبینہ گوركشكو کو آئینہ دکھایا تھا. اگر ریاست اس پر عمل کریں تو یہ واقعات فوری طور پر بند ہو سکتی ہیں . لیکن کیا وہ ایسا کر رہے ہیں ؟ اس وقت تک مجھے مت مارو … میں بھی انسان ہوں .

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

محمد اسعد فلاحی

معاون تصنیفی اکیڈمی، مرکز جماعت اسلامی ہند

متعلقہ

Close