سیاستہندوستان

نوٹ بندي: اثر بے اثر

گزشتہ سال 8 نومبر 2016 کو رات آٹھ بجے وزیر اعظم نے اچانک 500 اور 1000 کے نوٹوں کو بند کرنے کا اعلان کیا تھا تو یہ ہندوستانیوں کے لیے سب سے بڑا واقعہ بن گیا، جس کی دنیا بھر میں بحث ہوئی. اس فیصلے کی وجہ سے ملک کی 86 فیصد کرنسی ایک ہی جھٹکے میں چلن سے باہر ہو گئی، پورا ملک آپ کے ہزار پانچ سو کے نوٹ بدلوانے کے لیے بینکوں کی طرح ٹوٹ  پڑا اور اے ٹی ایم ہندوستانیوں کے لائن میں کھڑے ہونے کے صبر کا امتحان لینے لگے. وزیر اعظم کی طرف اپنے اس فیصلے کو بدعنوانی، سیاہ دولت، جعلی نوٹ اور دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن اقدامات کی طرح پیش کیا گیا وہیں مخالف اس کا موازنہ تغلقی فرمان سے کرنے لگے.

نوٹ بندي سے عوام کی پریشانی کو دیکھتے ہوئے وزیر اعظم نے پچاس دن کی مہلت مانگتے ہوئے کہا تھا کہ اس کے بعد عام لوگوں کے لیے حالات بہتر ہو جائیں گے. یہ وقت کی حد جس کی 30 دسمبر 2016 تک مکمل ہو چکی ہے اس کے بعد پورے ملک میں نئے سال کے موقع پر وزیر اعظم کے ملک کے نام خطاب کا انتظار تھا. وزیر اعظم نے اپنے زیادہ انتظار تقریر میں عوام کی قربانی کی پراكاشٹھ کی تعریف کرتے ہوئے اسے تاریخی طہارت یشتھ اور ایمانداری کا تحریک بتاتے ہوئے کچھ نئی-پرانی يوجاناو کی گھوشايے بھی کی جس میں رہائش قرض، کسانوں کو سود میں راحت، چھوٹے کاروباریوں قرض کی کریڈٹ گارنٹی اور حاملہ خواتین کے لئے چھ ہزار کی مالی مدد اہم تھیں. لیکن وزیر اعظم اس پر خاموش رہے کہ ان پچاس دنوں میں حکومت کو کیا کامیابی ملی، کتنا کالا دھن واپس آیا اور دہشت گردی پر کتنا لگام لگایا جا سکا ہے، نہ ہی انہوں نے یہ بتایا کہ نوٹبدي کے بعد حکومت کا اگلا قدم کیا ہوگا اور حالت سدھرنے میں اور کتنا وقت لگے گا. انہوں نے گمنام جائیداد کے خلاف بھی کوئی اعلان نہیں کیا ہے. وزیر اعظم کا سر بھی بدلا ہوا نظر آیا.

سال 2014 میں بابا رام دیو نے ملک کی اقتصادی پالیسی میں تبدیلی کو لے کر کئی تجاویز دی تھیں، جس پورے ملک میں واحد ٹیکس نظام نافذ کرنے اور بڑے نوٹوں کو واپس لینے جیسی مانگیں تھیں. دراصل بنیادی خیال "ارتھكرات انسٹی ٹیوٹ” نامی ادارے کا ہے جو موجودہ ٹیکس نظام بند کرنے، بینک ٹرانزیکشن ٹیکس (بيٹيٹي) کی طرف اکلوتا ٹیکس نظام نافذ کرنے، بڑے نوٹ کو بند کرنے، کیش لین دین کی حد طے کرنے اور بڑے ٹرانزیکشن صرف بینکاری نظام کی طرف سے کرنے کی وکالت کرتی رہی ہے. مودی حکومت کی طرف سے حالیہ اٹھائے گئے قدموں میں "ارتھكرات انسٹی ٹیوٹ” کی تجاویز کی جھلک دیکھی جا سکتی ہے. جی ایس ٹی، ہزار اور پانچ سو جیسے بڑے نوٹوں کی caged اور نقد ہین معیشت پر زور اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے.

لیکن گزشتہ پچاس دنوں میں نوٹبدي کو لے کر مودی حکومت بہت ہموار نہیں نظر آئی ہے. جلد بازی، مشکوک اور کافی تیاری کی کمی صاف نظر آئی. ان پچاس دنوں میں حکومت اور ریزرو بینک کی طرف سے 75 ادھسوچنايے جاری کی گئیں اور 11 بار حکم واپس لئے گئے، اس دوران ریزرو بینک کا رتبہ کمزور ہوا. نوٹبدي کے مقصد کو لے کر بھی یہی مشکوک رہی اچانک ‘نقدہین معیشت’ کا ہدف پیش کیا جانے لگا. بلیک منی سے نقدہین کی طرف شفٹ کے دوران یہ توجہ بھی نہیں رکھا گیا کہ ملک میں بڑی تعداد میں لوگوں کے پاس بینک اکاؤنٹ تک نہیں ہیں. بھارت میں فی دس لاکھ آبادی پر 108 بینک شاخیں اور 149 اے ٹی ایم مشینیں ہی ہیں. اس ملک میں 98 فیصد لین دین نقدی میں ہوتا ہے، ملک کی ایک بڑی آبادی ہے جس کا ڈیجیٹل دنیا سے رابطہ نہیں ہے، ڈیبٹ-کریڈٹ کارڈ کی پہنچ بھی محدود ہے. ٹرائی کے مطابق اس وقت ملک کے بیس کروڑ لوگوں کے پاس ہی اسمارٹ فون ہے، انٹرنیٹ کی رسائی بھی تمام ہندوستانیوں تک نہیں ہو پائی ہے. انٹرنیٹ کی رفتار کچھی کی طرح ہے اور اس صورت میں ہم پوری دنیا میں 114 ویں نمبر پر ہیں. ڈیجیٹل خواندگی بھی ایک مسئلہ ہے بے شک ملک کی ایک چوتھائی آبادی آج بھی ان پڑھ ہیں ایسے میں ڈیجیٹل خواندگی دور کی کوڑی لگتی ہے. آن لائن پھراڈ بھی ایک مسئلہ ہے، سائبر سیکورٹی کو لے کر قانون لچر ہے اس لئے ڈیجیٹل ادائیگی غیر محفوظ ہے. ان حالت ہو دیکھتے ہوئے "نقدہین انڈیا” کا نعرہ توجہ بٹانے کی ایک ترکیب ہی نظر آتی ہے.

بھارت میں کالے دھن کا مسئلہ بہت پرانا ہے، 2012 میں یو پی اے حکومت بھی کالے دھن پر وائٹ پیپر جاری کر چکی ہے جس میں بتایا گیا تھا کہ کالے دھن کے معاملے میں دنیا میں بھارت 15 ویں نمبر پر ہے. حکمران بی جے پی کے انتخابی مہم میں کالے دھن کی واپسی ایک بڑا مسئلہ تھا جس کی جڑ انا تحریک میں ہے. مودی حکومت کے آنے کے بعد طویل وقت تک اس پر کوئی آہٹ نہیں دیکھی گئی اور نہ ہی کوئی ٹھوس قدم اٹھایا گیا. گزشتہ سال امت شاہ نے انتخابات کے دوران نریندر مودی کے کالا دھن واپس لانے کے بعد ہر خاندان کے اکاؤنٹ میں 15-15 لاکھ روپے جمع کرنے کی بات کو "انتخابی جملہ” بتا دیا تھا. اب نوٹ اسیر لایا گیا ہے جو بھارت کے عام عوام کے لئے نوٹ بدلی کی قواعد ثابت ہوتی جا رہی ہے. جب نوٹبدي کا اعلان کیا گیا تھا اس وقت ملک میں 500 اور 1000 روپے کے نوٹ چلن میں تھے، اس کا قیمت 15.4 لاکھ کروڑ روپیوں تھا. جس سے تقریبا 14 لاکھ کروڑ کی رقم کے نوٹ بینکوں میں جمع کیا جا چکے ہیں کا مطلب ہے کالا دھن کسی اور شکل میں ہے یا اسے دوسرے طریقوں سے سفید کیا جا چکا ہے.

دراصل ماہرین بتاتے ہیں کہ بھارت میں موجود کالا دھن مکمل طور پر کیشے میں نہیں بلکہ سونے، ریل اسٹیٹ، گمنام مالی سرمایہ کاری، زمین کی لیز، کاروباری اثاثوں اور غیر ملکی بینکوں کے ذخائر اکاؤنٹس میں موجود ہے. اس کا سیدھا تعلق ٹیکس چوری سے بھی ہیں. گزشتہ سال اپریل میں "پاناما پیپرس لیک” سے ٹیکس چوری کا بڑا انکشاف ہوا تھا جس میں بھارت ہی نہیں دنیا بھر کے نامور اور بااثر لوگوں کے ناموں کا انکشاف ہوا تھا. اس فہرست میں 500 سے زیادہ ہندوستانیوں کا نام شامل تھا جس امیتابھ بچن، ایشوریہ رائے بچن، ڈيےلپھ کے مالک کے پی سنگھ اور گوتم اڈانی کے بڑے بھائی ونود اڈانی جیسے نام شامل ہیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close