سیاستہندوستان

اتر پردیش میں بی جے پی لہر کے 5 اہم وجوہات!

مسیح الزمان انصاری

انتخابی رجحانات اور نتائج نے صاف کر دیا ہے کہ بھارتی جنتا پارٹی اب ملک کی سب سے مضبوط پارٹی کے طور پر ابھر کر سامنے آئی ہے اور وزیر اعظم نریندر مودی اور پارٹی صدر امت شاہ کی قیادت کسی بھی پارٹی کی قیادت سے زیادہ انتخابات ونر ہے. تاہم جمہوریت کی ٹیم نے یہ اندازہ کیا تھا کی بی ایس پی کی واپسی ممکن ہے جس کا اندازہ بی ایس پی کے اچھے انتخابی مہم سے لگایا جا سکتا ہے جو 2014 کی مہم سے کہیں زیادہ بہتر تھا لیکن ایسا لگتا ہے کہ بی ایس پی قیادت مودی امت کے 2014 میں بنائے گئے سوشل انجینئرنگ کے جال سے باہر نہیں نکل سکیں.

جیت کے پانچ بنیادی وجہ

  1. نوٹبدي کے سیاسی اثر کو سمجھنے میں تمام پارٹیاں ناکام رہیں. ایک ایسے ملک میں جہاں پیسہ بچانے کی ثقافت، خرچ کرنے سے زیادہ مضبوط ہے، نوٹ بندي نے مڈل کلاس کو پیسہ صحیح خرچ کرنے اور بچانے کا موقع دیا.

2۔  بی جے پی کے پاس ایک خطرناک حد تک اثر دار مثلث ہے. ایک، مودی کا عوام سے براہ راست بات چیت کرنے کی طاقت، دوسرا امت شاہ کا بے حد باریک تنظیم کی قیادت، جسے پردیش کی ہر علاقے اور کمیونٹی کی معلومات ہے. تیسرا آر ایس ایس کا بوتھ سطح تک پہنچنے کی قابلیت رکھنے والا نیٹ ورک.

3۔  مایاوتی کی تمام ریلیاں بہت جوش سے بھرے ہونے کے باوجود دلت ووٹر 2014 کے انتخابات مساوات سے باہر نہیں نکل پائے اور دلت ووٹر کی گھر واپسی بڑے پیمانے پر نہیں ہوئی.

4۔  2014 امت شاہ کی سوشل انجینئرنگ پہلے سے زیادہ مؤثر ثابت ہوئی ہے جبکہ مسلم ووٹ پہلے سے زیادہ تقسیم ہوا ہے.

5۔ سماج وادی پارٹی اور کانگریس کا اتحاد کا اثر بالکل الٹا پڑا ہے. اتحاد نے عوام اور سماج وادی پارٹی کے کارکنوں کو صاف میسج دیا کہ اکھلیش یادو کا کام بولنے کے قابل نہیں ہے اس لیے انہیں کانگریس جیسی پارٹی سے سمجھوتہ کرنا پڑا ہے.

تنظیم طاقت، عوام سے مودی کا براہ راست بات چیت، یونین خاندان کے نظریات، پولرائزیشن اور منڈل سیاست کو بدلنے والی سوشل انجینئرنگ. مودی اور امت شاہ ہندوستان میں ایک نئی اور طویل دوڑ والی سیاست کی بنیاد رکھ چکے ہیں. بہار ایک غلطی تھی جسے اتر پردیش میں درست کر لیا گیا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close