سیاستہندوستان

اچھی ہے گائے، رکھتی ہے کیا نوک دار سینگ! 

طلحہ منان 

بچپن میں اکثر ہم لوگ گائے پر ایک مضمون لکھا کرتے تھے. ہماری بہت ساری نسلیں یہی مضمون لکھ کر بڑی ہوئی ہیں . شاید اب بھی بچے وہی مضمون لکھتے ہوں گے کہ گائے ایک پالتو جانور ہے. گائے کی چار ٹانگیں ، ایک دم اور دو سینگ ہوتی ہیں . میری معلومات میں ابھی تک ان حقائق میں کوئی بھی تبدیلی نہیں آئی ہے. لیکن جیسے جیسے وقت گزرا، گائے کے ساتھ بہت سے نئے حقائق جڑتے چلے گئے. جیسے اب گائے انتخابات میں ووٹ حاصل کرنے کا ذریعہ بن گئی ہے. دودھ، گوبر، گائے کے پیشاب تو گائے صرف جیتے جی ہی دیتی ہے لیکن ووٹ تو اس کے مرنے کے بعد بھی ملتے ہیں . یہی نہیں ، اس کی موت کی جھوٹی خبر سے بھی ووٹ برستے ہیں . ووٹ حاصل کرنے کے لئے گائے کا ہونا ضروری نہیں ہے، اس کی محبت ہی کافی ہے. امید ہے کہ طلبہ اور نام نہاد گورکشک اس جانب توجہ دیں گے اور گائے کے مضمون میں مناسب بہتری لائیں گے.

بات صرف یہیں پر ختم نہیں ہوتی. اس سے بڑھ کر بھی گائے کا استعمال الگ الگ ریاستوں میں الگ الگ قسم سے ووٹ بینک کو دیکھتے ہوئے ہوتا ہے. ابھی یوپی کو ہی لے لیجئے موجودہ وزیر اعلی نے تخت سنبھالتے ہی کئی بڑے فیصلے لے ڈالے. شاید انہیں اس بات کا احساس تھا کہ پولیس آئین تو بچا نہیں پائی، لہذا اس کو تہذیب و ثقافت بچانے کا کام سونپ دیا اور اینٹی رومیو اسكواڈ قائم کر دیا. ساتھ ہی غیر قانونی طور پر چل رہے مذبح پر بھی فوری اثر سے روک لگا دی گئی. ان کے اس فیصلے کا تمام حلقوں میں خیر مقدم بھی ہوا کیونکہ تمام لوگ چاہتے ہیں کہ غیر قانونی طور پر چل رہے تمام کام بند ہوں لیکن بغیر کسی پیشگی اطلاع اور وارننگ کے، گوشت کاروباریوں سے ان کا روزگار چھیننے کے اس فیصلے پر حکومت کی تنقید بھی ہوئی. فی الحال یہ کہا جا سکتا ہے کہ اتر پردیش میں روزگار کی تلاش میں بیٹھے ہوئے ایک بڑے طبقے کو نام نہاد حب الوطنی سکھانے کا اچھا موقع مل گیا ہے.

لیکن دیکھا جائے تو اتر پردیش کی تاریخ بھی گائے کو لے کر ہوئے تنازعات سے خالی نہیں ہے. 28 ستمبر 2015 کو دادری کے بساهڑا گاؤں میں گائے کے گوشت کے شک میں ہوئے بزرگ اخلاق کے قتل نے قومی سطح پر لوگوں کی توجہ اپنی طرف کھینچی تھی . اس کے بعد 9 اکتوبر 2015 کو مین پوری میں ہوا تنازعہ، 30 جولائی 2016 کو مظفرنگر میں گؤ ركشا ٹیم کی طرف سے مچائی گئی افراتفری اور نئی حکومت کے قیام کے بعد 22 مارچ 2017 کو ہاتھرس میں ہوئی آگ زنی کے واقعہ پردیش کی تصویر پر بدنما داغ کی مانند ہیں . یہی نہیں اگر آپ مرکز میں بی جے پی حکومت آنے کے بعد گؤركشا کے نام پر ہوئے واقعات پر نظر ڈالیں تو ایک لمبی فہرست سامنے آئے گی جو یہ بتاتی ہے کہ گائے کو صرف تشدد اور ووٹ بینک کا ذریعہ بنایا گیا ہے. گائے کی حفاظت کے نام پر انسانوں کی جانیں لی گئیں اور عام لوگوں کے عقائد سے کھلے عام کھلواڑ کیا گیا.

صرف اتر پردیش ہی نہیں بلکہ ملک کی راجدھانی دہلی سے لے کر کیرالہ، کرناٹک، کشمیر، ہماچل پردیش، ہریانہ، مدھیہ پردیش، گجرات  اور چھتیس گڑھ تک گؤركشا کے نام پر مختلف معاملے سامنے آئے ہیں . گزشتہ دنوں راجستھان کے الور میں نام نہاد گؤركشكوں کی طرف سے جو واقعہ انجام دیا گیا، وہ انتہائی قابل مذمت ہے. ایک آئینی اور جمہوری ملک کے لئے ایسے واقعات انتہائی مہلک ہیں . حد تو یہ ہے کہ اس واقعہ میں آر ایس ایس کی طلبہ تنظیم اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد کے ارکان کا نام بھی قصورواروں کی فہرست میں شامل ہیں .

یہ تو ہوئی گائے پر عقیدے کی آڑ میں تشدد کے واقعات کو انجام دینے کی بات، اب ذرا سکے کا دوسرا پہلو دیکھیے. چونکہ شمال مشرق میں اگلے سال انتخابات ہونے ہیں لہذا بی جے پی کا گوركشا فارمولا ان ریاستوں میں نافذ نہیں ہو گا. ناگالینڈ بی جے پی صدر کا کہنا ہے کہ اگر بی جے پی اگلے سال ریاست کے اندر اقتدار میں آتی ہے تو اتر پردیش جیسے قوانین وہاں نافذ نہیں ہوں گے کیونکہ یہاں کی صورت حال اتر پردیش سے مختلف ہے اور مرکزی رہنماؤں کو اس بات کا احساس ہے. میزورم بی جے پی صدر کے بھی بول بگڑے ہوئے نظر آتے ہیں انہوں نے کہا ہے کہ میزورم میں بی جے پی کے اقتدار میں آنے پر ریاست کے عیسائی اکثریتی علاقوں میں گوشت بند نہیں ہوگا. میگھالیہ بی جے پی صدر کہتے ہیں کہ اتر پردیش میں غیر قانونی مذبح پر پابندی لگی ہے لیکن ہمارے اقتدار میں آنے پر ریاست میں گائے کی قربانی پر پابندی نہیں ہوگی بلکہ ہم قانونی اور جائز طریقے سے جانوروں کی قربانی اور ان کے گوشت کی فروخت کو یقینی بنائیں گے. اتنا ہی نہیں کیرل ضمنی انتخابات میں مالاپورم سے بی جے پی کے ایک امیدوار نے عوام کو یقین دلایا ہے کہ اگر لوگ انہیں ووٹ کریں گے تو وہ لوگوں کے لئے بہترین کوالٹی کا گائے کا گوشت فراہم کرنے کے لئے کوشش کریں گے. معلوم ہو کہ عیسائی اکثریتی صوبہ ہونے کے سبب شمال مشرق کی زیادہ تر ریاستوں میں گائے کے گوشت پر پابندی نہیں ہے. لیکن اب جبکہ اگلے ہی سال انتخابات ہیں تو بی جے پی اپنا رنگ بدلتی ہوئی نظر آ رہی ہے. اسی درمیان حیدرآباد سے ایم پی اسدالدين اویسی نے چٹکی لیتے ہوئے کہا ہے کہ بی جے پی کا ڈھونگ یہ ہے کہ ان کے لئے اتر پردیش میں گائے ممی ہے لیکن شمال مشرق میں یمی ہے. اویسی کے اس بیان سے سیاسی گلیاروں میں ماحول کی گرمی تیز ہو گئی ہے.

پوزیشن واضح ہے، بی جے پی کشمیر میں پی ڈی پی کے ساتھ حکومت بنا کر اپنے اصولوں سے پہلے ہی سمجھوتہ کر چکی ہے اور اب شمال مشرق میں انتخابات کی آمد پر موقع کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے اپنی عقائد سے بھی سمجھوتہ کرنے کے لئے تیار ہے. ایسے میں گائے کے مضمون میں مناسب بہتری لانے والی بات کی اہمیت اور بھی بڑھ جاتی ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

طلحہ منان

کالم نگار علی گڑھ مسلم یونیورسٹی، علی گڑھ میں گریجویشن (ایجوکیشن، آنرز) کے طالب علم ہیں. سیاسی، سماجی و تعلیمی میدان سے جڑے موضوعات پر لکھنے میں دلچسپی رکھتے ہیں. اتر پردیش کے ضلع بدایوں سے تعلق ہے.

متعلقہ

Back to top button
Close