ہندوستان

آخر ہماری فوج کس کے خلاف لڑ رہی ہے؟ 

 نتن ٹھاکر

یہ چٹکلہ نہیں ہے اس لئے اس پر لائک کم آئیں گے. کوئی بات نہیں. ضروری بات پھر بھی لکھی جانی چاہئے. سننے والا ہو نا ہو لیکن کہنے کا فرض پورا کیا جانا چاہئے. آپ بغیر پڑھے براہ مہربانی لائک کرکے احسان بھی نہ کریں کیونکہ مجھے واقعی جاننے میں دلچسپی ہے کہ میری بات کتنے لوگوں نے واقعی پڑھی. کشمیر میں حزب کا 21 سالہ کمانڈر برہان وانی مارا گیا.

برہان باقی دہشت گردوں کے مقابلے میں زیادہ نامی چہرہ تھا. وجہ یہی سوشل میڈیا. وہ اکثر لادن کے اسٹائل میں چیلنج دیتے ہوئے ویڈیو اپ لوڈ کرتا تھا. ایک ویڈیو تو گزشتہ دنوں چینل پر بھی چلا. اس میں وہ انڈین آرمی پر حملہ کرنے کا اعلان کر رہا ہے. کشمیر پولیس کو اپنے ساتھ مل جانے کی دعوت دے رہا ہے. کشمیری ہندو کو واپس گھر لوٹ آنے کے لئے کہہ رہا ہے. یہ بھی کہہ رہا ہے کہ امرناتھ جانے والے مسافروں پر ہم حملہ نہیں کریں گے کیونکہ وہ صرف اپنے مذہبی رواج کو ادا کر رہے ہیں. وہ کشمیر کو آزاد کرانا چاہتا تھا.

کچھ ہی دنوں پہلے ایک دستاویزی فلم بناتے ہوئے ہندوستان ٹائمز کی ہریندر باویجا کشمیر میں برہان کے گھر پہنچیں. برہان کے والد نے صاف کہا کہ اسلام، قرآن اور محمد صاحب پہلے ہیں، بیٹا بعد میں. مطلب یہی کہ اگر بیٹا مر بھی گیا تو غم نہیں. وہ سچ مچ مر ہی گیا. یقینا غم اور غصہ دونوں ہے اس لیے پلواما، اننت ناگ اور شوپیاں میں کرفیو ہے. اس کے لئے لگنے والے نعرے مذہبی بھی ہیں اور کشمیر کی آزادی کے سیاسی رنگ میں رنگے ہوئے بھی.

یہ عجیب سا کوکٹیل ہے جس کا نشہ کشمیریوں پر وقت گزرنے کے ساتھ حاوی ہو رہا ہے. ہندوستان ٹائمز کی ہی ایک دستاویزی فلم بتا رہی ہے کہ سال 2013 میں اگر 31 مقامی لڑکے بندوق اٹھاتے تھے تو 2015 میں یہ تعداد 66 ہو گئی ہے. اعداد و شمار کا ذریعہ جموں و کشمیر کی پولیس ہے. اب سوال آپ سے ہے .. اگر تین دہائیوں میں ہندوستانیوں کا بے شمار پیسہ اور فوج جھونک کر ہندوستانی حکومت جموں و کشمیر میں دہشت گردی ختم کرنا تو دور جہاں کا تہاں روک بھی نہیں سکی تو پھر کیا کہیں کوئی غلطی نہیں ہو رہی ہے؟

اگر ہر دہشت گرد کی آخری رسوم کے بعد عام کشمیری سڑکوں پر اتر رہا ہے تو کب تک ہم ان مظاہروں کو پاکستانی سازش کا نام دے کر اپنی پالیسیوں کی صحت کا جواز پیش کرتے رہیں گے؟ انکاؤنٹر میں آرمی افسروں کا کورٹ مارشل بھی پرانی بات نہیں ہوئی. گوگل کیجئے اور پڑھئے کہ ہندوستانی فوج کے بے شک سب نہیں لیکن کچھ جوان وہاں پہرہ دینے کے ساتھ ساتھ اور بھی بہت کچھ کرتے پائے گئے ہیں.

جنرل وی کے سنگھ نے بھی تو بتایا تھا کہ کشمیر میں رہنماؤں کو الگ سے بھی پیسہ دیا جاتا ہے. وہ کیوں دیا جاتا ہے یہ بات ہندوستانی حکومت میں وزیر بننے کے بعد وہ اب کھل کر بتائیں گے اس میں مجھے شبہ ہے. مجھے معاف کیجئے گا کیونکہ اتنی طویل تحریر میں میں نے ٹیکنیکل ہوکر اب تک یہ نہیں بتایا کہ کیوں کشمیر کو ہندوستان کا حصہ ہونا چاہئے یا کیوں آزاد رہنا چاہئے یا کیسے ہری سنگھ سے دستخط لئے گئے یا قبائلی سری نگر کی چھاتی پر چڑھ آئے وغیرہ وغیرہ .. جیسا کہ کشمیر پر مبنی ہر تحریر میں داخل کرنے کا رواج ہے.

میں تو بس حکومت سے کشمیر پالیسی پر ایک نظر ثانی چاہتا ہوں جسے وہ کرے گی نہیں .. کچھ نظریاتی ضد میں اور کچھ ، سالوں سے طے شدہ پالیسی پر چلنے کی مجبوری میں. کشمیر پر مبنی کوئی بھی رپورٹ اٹھا کر پڑھنا سننا شروع كيجئےمعلوم پڑے گا کہ مشتعل لوگ ہندوستان میں کہیں مسلمان کے خلاف ہوئے واقعہ یا کشمیر میں فوج کے ہاتھوں ہوئی ناانصافی کو ‘نئی ملیٹینسی’ کی وجہ بتاتے ہیں. جی ہاں، نئی ملیٹینسی. یہ وہ ملیٹینسی ہے جو روایتی ملیٹینسی سے چار قدم آگے ہے.

اب گولی چلانے والے سرحد پار سے نہیں آتے. خاصے اچھے گھروں سے تعلق ركھنے والے اور جدید تعلیم سے لیس کم عمر کے کشمیری لڑکے اب براہ راست سکیورٹی پر دھاوا بولتے ہیں اور اپنی تصاویر اور ویڈیو سوشل سائٹوں پر ڈالتے ہیں. برہان یہی کرتا تھا، اس لئے کشمیر کے چھوٹے چھوٹے بچوں کا رابن ہڈ بن گیا. بازار کا قانون ملیٹینسی پر بھی حاوی ہے .. لگتا ہے وہ بکتا ہے. کیا حکومت کشمیر میں بڑھ رہے اس نئے ملیٹینسی انفیکشن کو روکنے لے گی؟ مشکل ہے .. کیونکہ پاکستان کا پیسہ، مقامی لوگوں کی حمایت (چونکہ اب تو ان کے اپنے بچے ہی بندوق اٹھائے کھڑے ہیں)، مذہبی جنون اور ملک (ان کی نظر میں کشمیریت) کی آزادی کا جوش انہیں پہلے سے زیادہ پاگل بنائے دے رہا ہے . کہنے کی ضرورت نہیں کہ اس سے وہ صرف اپنا گھر جلا رہے ہیں لیکن اس وقت تک نہیں سمجھیں گے جب تک سب راکھ نہ ہو جائے.

دوسری طرف ایک اور کشمیر ہے .. اسے ہم بلوچستان کے نام سے جانتے ہیں. پاکستان دہائیوں سے اس سے نپٹ رہا ہے. تقسیم کے کئی سالوں بعد بلوچستان پاکستان کے ساتھ آیا تھا اور وہ بھی ہزار پیچیدگیوں کے ساتھ. کشمیر کے ساتھ ہندوستان کا ناطہ جتنا پیچیدہ ہے اتنا ہی پاکستان کا بلوچستان سے رشتہ ہے. تھوڑا فرق یہی ہے کہ ہندوستان نے کشمیر پر فضائی حملے کرکے بڑی جمہوریت ہونے کا وہم برقرار رکھا ہے جبکہ پاکستان کے ساتھ ایسا کوئی اخلاقی کشمکش نہیں. وہ جم کر بم گراتا ہے اور جیسے جی چاہے ویسی زیادتی بلوچو کے ساتھ کرتا ہے.

ہیومن رائٹس کے اعداد و شمار بتاتے ہے کہ 2011 میں تین سو سے زیادہ بلوچو کو قتل کر دیا گیا وہیں درجنوں لاپتا ہیں. ویسے پاکستانی میڈیا اس تعداد کو لاکھوں میں بتاتا ہے. بم دھماکے ہونا اور ہزاروں لوگوں کا مارا جانا بھی وہاں عام ہے. اب تو ویسے 2016 چل رہا ہے اور بدقسمتی سے حالات خراب ہی ہو رہے ہیں. 85 فیصد آبادی کے پاس وہاں پانی نہیں ہے، 80 فیصد کے پاس بجلی نہیں ہے اور 70 فیصد بلوچی بچے اسکول سے باہر گھوم رہے ہیں. اب یہ بھی سن لیجئے کہ اكیلے 2011 میں پاکستان نے بلوچستان پر 27 ارب روپے کا پیکیج خرچ کیا لیکن حالات سدھرے نہیں. ہندوستان کی طرح پاکستان میں بھی پیکیج سیاست چلتی ہے. حال ہی میں وزیر اعظم مودی نے بھی کشمیر کے لئے پیکیج کا اعلان کیا تھا.

بہر حال پاکستان میں بلوچستان کے باغیوں کو دبانے کے لئے پانچ ناکام فوجی آپریشن انجام دیئے جا چکے ہیں. امریکہ خود بلوچستان کے معاملات پر تشویش کا اظہار کرتا رہا ہے. ویسے آپ کو معلوم ہونا چاہئے کہ بلوچو کے سارے بڑے لیڈر تقسیم کے بعد ہندوستان کے ساتھ رہنا چاہتے تھے. اسی وجہ سے آج بھی پنجاب اور سندھ کا پاکستانی بلوچو پربھروسہ نہیں کرتا اور بلوچ خود کو ہندوستان کے قریب مانتے ہیں. پاکستانی حکومت کو تو مکمل اعتماد ہے کہ بغیر را کی حمایت کے بلوچستان میں باغی دھڑے چل ہی نہیں سکتے. بلوچو کی تنظیمیں پاکستان کے لئے دہشت گرد ہیں. پاک آرمی کے حملے کے بعد چند منٹوں میں دم توڑ دینے والا ایک بلوچ آخری لمحات میں کیا کہہ رہا ہے یہ دیکھ کر میرے رونگٹے کھڑے ہو گئے. وہ اپنی ماں سے بتا کر مر رہا ہے کہ میں ملک کے لئے لڑ کر شہید ہو رہا ہوں. میرے بچے مجھ پر فخر کریں گے.

صاف پتہ چل رہا ہے کہ کشمیر اور بلوچستان ابھی اور جوجھیں گے۔ دونوں ممالک کی حکومتیں ابھی اور تلملائیں گی. دونوں ہی سمجھ نہیں پا رہے کہ اگر ان جگہوں پر بغاوت بڑھنے لگا ہے تو ضرورت اب رک کر غور کرنے کی بھی ہے. صرف پیسہ پھینک کر، ہتھیاروں سے دبانے اور پڑوسی کے سر الزام رکھ کر کسی بھی قوم کو آپ آخر کب تک دبائے رکھ سکیں گے؟

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close