ہندوستان

"بہانہ گائے کا فسانہ کرسی کا”

  مھدی حسن عینی نصیرآبادی

    یوں تو گائے ہماری ماتا ہے کا جاپ ہم بچپن سے سنتے آئے ہیں، پر یہ نعرہ ایک دن آتنک کی آواز بن جائےگا اس کا اندازہ ہرگز نہیں تھا، یہی نعرہ بےگناہوں کی جان لےلےگا، یہی بول عورتوں کی عصمت تو کمزوروں کی انسانیت کو پامال کردےگا ایسا کبھی ہم نے سوچا بھی نہیں تھا، ہمارے گھر کے سامنے  منوہر نامی ایک دلت ہیں جو گائے پالتے تھے ہم بڑی پابندی سے صبح کو اٹھ کر اس گائے کو کھانا کھلاتے تھے، تو شام میں اس کے لئے کچھ نا کچھ بازار سے خرید کر لاتے تھے،

پر جب بڑے ہوئے تو میڈیا نے بتایا کہ گائے تو ہمارا جانور ہے ہی نہیں اس پر تو ایک خاص طبقہ کا ہی تصرف ہے.اور یوں دیکھتے ہی دیکھتے گائے کی رکشا و تحفظ کے نام پر ملک بھر میں جو کچھ ہونے لگا اس نے تو اب گائے کے دودھ پینے کا بھی حوصلہ کھودیا اور اگر یہی حالات رہے تو کہیں گائے ہمارے لئے شجر ممنوعہ نا بن جائے، گائے کےتقدس کے حوالے سے تو اکثریتی طبقہ ہمیشہ سے سرگرم رہا ہے، پر 2014 ﻣﯿﮟ ﻣﺮﮐﺰ ﻣﯿﮟ ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﯽ ﺳﺮﮐﺎﺭ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺗﻘﺪﺱ ﮐﮯ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺍﮨﮯ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﮔﺎﺋﮯﮨﻤﯿﺸﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ، ﮔﺌﻮﻣﺎﺗﺎ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﻼﺗﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ، ﻣﺎﺩﺭ ﻣﻘﺪﺱ ﺑﮭﯽﮐﮩﺎ ﮔﯿﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﻨﺎﺗﻦ ﺩﮬﺮﻣﯽ ﮨﻨﺪوﺅﮞ ﻧﮯﮨﻤﯿﺸﮧ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﯽ ﭘﻮﺟﺎﮐﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﮯ ﺫﺑﯿﺤﮧﮐﻮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺗﻨﺎﺯﻋﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺗﻀﺎﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ﺑﮭﯽﭼﻼﮨﮯ۔ ﺗﺒﮭﯽ ﺳﮯ ﮔﺎﺋﮯ ﭘﺮ ﺑﺤﺚ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽﺭﮨﯽ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺟﺲ ﮐﯽﺑﮭﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﺍﺱ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮨﯽ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﮯ ﺍﺱﺗﻘﺪﺱ ﮐﻮ ﻣﻠﺤﻮﻅ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﭘﺮﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺭﮐﮭﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﻐﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﻮﺭﮮﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﭘﺮ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﺭﮨﯽ، ﺣﺘﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺳﺨﺖ ﮔﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﺣﮑﻤﺮﺍﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺑﺪﻧﺎﻡ ﮐﯿﮯ ﮔﺌﮯ ﻋﺎﺩﻝ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﺗﺮﺱ ﻣﻐﻞ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺍﻭﺭﻧﮓﺯﯾﺐ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺳﺨﺘﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﺌﻮﺫﺑﯿﺤﮧ ﭘﺮ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﯽ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﮐﮯﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺮﻣﯽﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﯽ ﮔﺌﯽ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﻡﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﮐﺎ ﭼﻠﻦ ﻧﮩﯿﮟﺭﮨﺎ ﯾﺎ ﺍﻥ ﻣﻘﺎﻣﺎﺕ ﭘﺮ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺭﮨﺎﮨﮯ ﺟﮩﺎﮞﮨﻨﺪﺅﻭﮞ ﮐﯽ ﺁﺑﺎﺩﯾﺎﮞ ﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﮨﯿﮟ ﯾﺎ ﮔﺎﺋﮯ ﭘﺮﺍﻥ ﮐﯽ ﺁﺳﺘﮭﺎ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺜﻼ ﺑﻨﮕﺎﻝ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺗﻤﺎﻡ ﺷﻤﺎﻝ ﻣﺸﺮﻗﯽﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﭘﺮ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼﻟﮕﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧﮐﯿﺎﮔﯿﺎ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺟﻨﻮﺑﯽ ﮨﻨﺪ ﮐﯽ ﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺪﯾﺪ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ۔ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﮨﻨﺪﯼ ﺑﻮﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﮔﺎﺋﮯ ﭘﺮ ﺑﺤﺚ ﺷﺪﯾﺪ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺁﺯﺍﺩ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﯽ ﺗﺪﻭﯾﻦ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺟﻤﻮﮞﻭﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﯽ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﭘﺮﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﻣﯿﮟﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺁﺑﺎﺩ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﻤﺎﻟﯽ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﮯﺳﻨﺎﺗﻦ ﺩﮬﺮﻣﯽ ﮨﻨﺪﺅﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﻗﺎﺑﻞﻋﺒﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺳﺒﻖ ﺁﻣﻮﺯ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺴﻠﻢ ﺍﮐﺜﺮﯾﺘﯽﻋﻼﻗﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖﺑﻨﺎﮐﺴﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﮯ ﻣﺤﺾ ﮨﻨﺪﺅﻭﮞ ﮐﮯ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﺯ ﺧﻮﺩ ﮔﺌﻮ ﺫﺑﯿﺤﮧ ﭘﺮ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎﮐﮯ ﻓﺮﻗﮧ ﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﺭﻭﺍﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮕﯽ ﮐﮯ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯽ ﺟﺮﺍﺀﺕ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻭﺳﯿﻊ ﺍﻟﻘﻠﺒﯽ ﮐﺎ ﻣﻈﺎﮨﺮﮦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﯾﮑﮯ ﺑﻌﺪ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺑﯿﺸﺘﺮ ﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﭘﺮﮐﺴﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻣﮑﻤﻞ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﮨﮯ ﮐﮩﯿﮟﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﻋﻤﺎﻝ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﺍﻭﺭ ﻻﺋﺴﻨﺲ ﮐﮯﺫﺭﯾﻌﮯ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮨﮯ۔ ﮐﮩﯿﮟ ﮔﺎﺋﮯﮐﺎﭨﻨﺎ ﺗﻮ ﺟﺮﻡ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﺎ ﮔﻮﺷﺖ ﺭﮐﮭﻨﺎﯾﺎﮐﮭﺎﻧﺎ ﺟﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﺨﺘﻠﻒﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺳﺰﺍﺋﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﺨﺘﻠﻒﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺩﮨﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﮔﺠﺮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮﮐﺸﯽ ﭘﺮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺳﺨﺖ ﺳﺰﺍﺋﯿﮟ ﻗﺎﻧﻮﻥﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ۔ ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦﺳﺮﮐﺎﺭ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﮏ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮﮐﺸﯽ ﮐﺴﯽ ﺗﻨﺎﺯﻉ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﻭﻗﺘﺎ ﻓﻮﻗﺘﺎ ﺁﺭﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﺍﻭﺭ

ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﮯ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﯾﮧ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﺍﭨﮭﺘﺎﺭﮨﺎﮨﮯ ﮐﮧ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮﮐﺸﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﯾﮑﺴﺎﮞ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻻﯾﺎﺟﺎﺋﮯﻟﯿﮑﻦ ﺷﻤﺎﻝ ﻣﺸﺮﻕ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﻮﺑﯽ ﮨﻨﺪ ﮐﯽﺭﯾﺎﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽﻗﺒﻮﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ۔ ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﻧﻈﻢ ﻭﻧﺴﻖﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺭﯾﺎﺳﺘﯽﺳﺮﮐﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﺤﻘﺎﻕ ﮨﮯ۔ ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﮏﮐﮯ ﻗﺒﺎﺋﻠﯽ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﮐﺎ ﭼﻠﻦﺑﻘﯿﮧ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﮐﺜﺮ ﻗﺒﺎﺋﻞ ﮨﻨﺪﻭﻣﺬﮨﺐ ﭘﺮ ﮨﯽ ﺁﺳﺘﮭﺎﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﯽﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺳﺮﮐﺎﺭ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﮧ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺟﺰﻭﯼﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﻗﻔﮯ ﻭﻗﻔﮯ ﺳﮯ ﺗﮭﻮﮌﮮ ﻋﺮﺻﮯ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺩﺏ ﮔﯿﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺮﮐﺰﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺳﺮﮐﺎﺭ ﮐﮯ ﻗﯿﺎﻡ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱﻣﺴﺌﻠﮯ ﻧﮯ ﺷﺪﺕ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻟﯽ ﮨﮯ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧﺍﺱ ﺷﺪﺕ ﮐﻮ ﻣﮩﻤﯿﺰ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﮐﻮﺋﯽﻭﺟﮧ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﺨﺖ ﮔﯿﺮﮨﻨﺪﻭﻋﻨﺎﺻﺮ ﺍﺱ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺛﻘﺎﻓﺘﯽﮈﮬﺎﻧﭽﮯ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﻧﮩﺞ ﭘﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯﺑﮩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﯾﮧ ﻣﻘﺼﺪ ﺑﮭﯽﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎ ﮨﻮﮐﮧ ﺍﺱ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟﮔﺌﻮ ﮐﺸﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﯾﮑﺴﺎﮞ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻻﻧﮯ ﮐﮯﺣﺎﻻﺕ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺳﮑﯿﮞﺠﻮ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻗﺎﺑﻞﻋﻤﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﺎ۔ ﮔﺎﺋﮯ ﭘﺮ ﺍﺱ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﺎﺩﻭﺳﺮﺍ ﭘﮩﻠﻮﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﻓﺮﻗﮧﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﺧﻄﻮﻁ ﭘﺮ ﻭﻭﭨﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﺑﮭﯽﮨﻮﺗﺎﮨﮯ، ﯾﮧ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻡ ﮨﻨﺪﻭﮐﮯﺟﺬﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﻋﻘﺎﺋﺪ ﮐﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﮐﯽﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﺎﻭﺭ ﮐﺮﺍﯾﺎﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﮨﻨﺪﺅﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽﻋﻘﯿﺪﮦ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞﮐﻮ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﻻﯾﺎﺟﺎﺋﮯ ﺟﻮ ﮨﻨﺪﻭﻋﻘﺎﺋﺪﻭﺍﻗﺪﺍﺭ ﮐﮯ ﺗﺤﻔﻆ ﮐﻮ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺑﻨﺎﺳﮑﯿﮟ۔ ﮨﻨﺪﻭﺍﺣﺴﺎﺱ ﺗﻔﺎﺧﺮ ﺑﭙﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺘﻨﮯ ﺣﺮﺑﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﮯﮔﺌﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔

اب جبکہ اسی گائے کے نام پر اخلاق و نعمان کو بلی چڑھنا پڑا تو گجرات کے چند دلتوں کو گئورکشکوں کے ظلم و تشدد کا سامنا کرنا پڑا ہے، ایسے میں سوال پیدا ہورہا تھا کہ ملک کے وزیر اعظم کی خاموشی چہ معنیدارد؟؟؟

تو بالآخر مودی جی بولے پر سب کچھ صوبائی سرکاروں کے سر منڈھ دیا، مودی جی نے کہاکہ۸۰ فیصد گئورکشک فرضی ہوتے ہیں وہ رات میں اینٹی سوشل کام کرتے ہیں اور دن میں گئو رکشا کا کچھا پہن لیتے ہیں، پر اس پر وہ کیا کارروائی کرینگے اس پر ان کی زبان نہیں ہلی، کیونکہ گائے کے سہارے وہ خود اترپردیش آنا چاہتے ہیں، بی.جے.پی و آر.ایس.ایس کے کارندے گائے پر سوار ہوکر ملک کا بھگوا کرن کرنے کی کوشش کررہے ہیں، گجرات کے اونا میں مری گائے کا کھال اتارنے والے دلتوں کے ساتھ مارپیٹ در اصل دلت قیادت کو توڑ کر، دلت ووٹ بینک بکھیرکر، گائے کے بہانے دلتوں وپچھڑوں کا استحصال کرکے دیش بھر میں برہمن نیتی و پالیسی کو فروغ دینے کی منظم کوشش ہے جس کے ذمہ دار بھاگوت توترجمان خود وزیر اعظم ہیں، کیونکہ  ﮔﺎﺋﮯ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮﺩﻟﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﭙﺎ ﮐﯿﮯ ﮔﺌﮯحالیہ  ﺗﺸﺪﺩ کے واقعات  ﻣﯿﮟﻣﺤﺾ ﮨﻨﺪﻭ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺗﻔﺎﺧﺮ ﺑﭙﺎﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎﺟﺬﺑﮧ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮭﯽﺯﯾﺎﺩﮦ ﺩﻟﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽﮐﻮﺷﺶ ﺍﻭﺭ ﺩﻟﺖ ﻗﯿﺎﺩﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﺭﮐﻨﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺟﺬﺑﮧ ﺑﮭﯽ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﺎﮨﮯ، ﻣﻠﮏ ﮐﮯﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻣﻨﻈﺮ ﻧﺎﻣﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞﺁﺭﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺋﻨﺪﮦ ﺳﯿﺎﺳﯽﻭﺳﻤﺎﺟﯽ ﺗﻨﻈﯿﻤﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﯿﺎﺳﯽﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺑﮯ ﻣﺤﻞ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﻭﻗﻌﺖ ﺛﺎﺑﺖﮐﺮﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ، ﻣﻌﺎﺷﯽ، ﺳﻤﺎﺟﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﮐﻮ ﻣﻠﮏ ﮐﮯﻓﯿﺼﻠﮧ ﺳﺎﺯ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺍﺛﺮ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﮐﮯ ﺟﺎﺋﺰﮮ ﻟﯿﮯ ﺟﺎﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺑﮍﯼ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻗﻮﺕ ﯾﻌﻨﯽ ﺩﻟﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮦ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺣﺎﺷﯿﮯ ﭘﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﮩﻼﻧﺸﺎﻧﮧ ﺩﻟﺖ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮨﮯ۔ ﺩﻟﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﺍﮔﺮﺗﻮﮌ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﯾﺎ ﺑﮯ ﺍﺛﺮ ﮐﺮﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﯾﺎﻣﺸﮑﻮﮎ ﺑﻨﺎﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡﺩﻟﺖ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﮐﻮ ﺑﮯ ﻭﺯﻥ ﮐﺮﺩﯾﻨﺎ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞﮐﻮ ﺑﮯ ﻭﻗﻌﺖ ﮐﺮﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺁﺳﺎﻥﮐﺎﻡ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﺎﯾﺎﻭﺗﯽ ﺍﺱﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﯾﺪﺍﺭ ﮨﯿﮟ۔

اسی لئے مایاوتی کو گالی دی گئی، اب  ﺍﺗﺮﭘﺮﺩﯾﺶ ﻣﯿﮟﺁﺋﻨﺪﮦ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﯾﺎﻭﺗﯽ ﮐﯽﭘﺎﺭﭨﯽ ﺑﯽ ﺍﯾﺲ ﭘﯽ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﮐﻮﺷﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﺍﻣﯿﺪ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ، اور ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﻣﺎﯾﺎﻭﺗﯽ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮﺍﺗﺮﭘﺮﺩﯾﺶ ﮐﺎ ﺗﺎﺝ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎﺗﻮ ﯾﮧ ﺩﻟﺖ

ﻗﯿﺎﺩﺕ ﺍﻭﺭ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮨﻮﮐﺮ ﺍﺑﮭﺮﮮ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﮯ ﺍﻣﮑﺎﻧﺎﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻄﺮﮦ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯﺁﺭﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﺍﻭﺭ ﺑﯽ ﺟﮯ ﭘﯽ ﮐﮯ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺍﺫﮨﺎﻥﺍﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﻓﯿﺖ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧﺍﺱ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﻣﺎﯾﺎﻭﺗﯽ ﮐﻮﺷﮑﺴﺖ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﮐﻤﺮ ﺗﻮﮌ ﺩﯼﺟﺎﺋﮯ۔ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﯾﺎﻭﺗﯽ ﮐﮯ ﻗﺪﮐﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺩﻟﺖ ﻗﯿﺎﺩﺕﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺩﻟﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﻘﻄﮧﺍﺭﺗﮑﺎﺯ ﺑﻦ ﺳﮑﮯ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺱ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﮯﭨﻮﭨﺘﮯ ﮨﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻟﺖ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺗﺎﺵ ﮐﮯ ﭘﺘﻮﮞﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﮑﮭﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﻠﮏﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺳﺎﺯ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﻣﺤﺾ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺫﺍﺕﮨﻨﺪﺅﻭﮞ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﮯﮔﯽ۔ ملک ﮐﻮ ﻗﺪﯾﻢ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺁﺭﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﺍﻥ ﺍﮨﺪﺍﻑ ﮐﻮ ﺍﮔﻠﮯ ﻋﺎﻡ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻟﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻮﺷﺎﮞ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮩﯽﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﮩﺎﮞ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺍﺱﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮔﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﺮﯼ ﻣﺴﺠﺪ، ﻟﻮﺟﮩﺎﺩ، ﺭﯾﺰﺭﻭﯾﺸﻦ ﺟﯿﺴﮯ ﺣﺴﺎﺱ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﭘﺮﺑﺤﺚ ﮐﻮ ﮨﻮﺍﺩﯼ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﭘﺎﻟﯿﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﺣﺴﺐﺩﻟﺨﻮﺍﮦ ﺗﺒﺪﯾﻠﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺰﺍﺝ ﮐﮯﻭﺯﺭﺍﺀ ﺍﻭﺭ ﺍﻓﺴﺮﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﯿﻨﺎﺗﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﮯ، ﻧﺌﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﭘﺎﻟﯿﺴﯽ ﻭﺿﻊ ﮐﺮﮐﮯ ﻧﺼﺎﺏ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﻗﺪﯾﻢ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﺳﮯ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮓ ﺗﺒﺪﯾﻠﯿﺎﮞ ﭘﯿﺪﺍﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ

ﮨﯿﮟ، ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﻮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﻟﮑﮭﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯﺍﻋﻼﻧﺎﺕ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺗﻤﺪﻥ ﻭﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﮯﻧﺎﻡ ﭘﺮﯾﻮﮔﺎ ﺟﯿﺴﯽ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﮍﮬﺎﯾﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﻨﺎﺗﻦ ﮨﻨﺪﻭﺩﮬﺮﻡ ﮐﻮ ﺑﯿﻮﺭﻭﮐﺮﯾﺴﯽ ﺣﺘﯽ ﮐﮧ ﻓﻮﺝ ﺗﮏ ﺳﺮﺍﯾﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺻﺎﻑ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﮐﮧﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﻭﻗﺖ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮨﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽﺳﺮﭘﺮﺳﺖ ﺁﺭﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﮨﻨﺪﻭﺭﺍﺷﭩﺮ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥﮐﺮﮮ ﯾﺎﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﻟﯿﮑﻦ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻠﮏ ﮐﯽﺗﮩﺬﯾﺐ، ﺛﻘﺎﻓﺖ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺪﻥ ﮐﻮ ﺳﯿﮑﻮﻟﺮﺯﻡ ﺳﮯﮨﭩﺎﮐﺮ ﮨﻨﺪﻭﺍﺯﻡ ﮐﻮ ﺭﺍﺋﺞ ﮐﺮﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﯿﮑﻮﻟﺮﺯﻡ، ﺳﻤﺎﺝ ﻭﺍﺩﯼ ﺍﻭﺭﻗﻮﻡ ﭘﺮﺳﺘﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﺩﺳﺘﻮﺭﯼ ﻋﻨﻮﺍﻧﺎﺕ ﮐﻮﺑﮭﯽ ﺑﺤﺚ ﮐﮯ ﺯﻣﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻻﮐﺮ ﺭﮐھ ﺩﯾﺎﮔﯿﺎﮨﮯ۔

اس کا واحد مقصد ملکی عوام کو کنفیوژن میں ڈال کر ہندوتو کو استحکام بخشنا ہے.

ایسی صورت میں قائدین و دانشوران اور عوام و خواص کی ذمہ داری بنتی ھیکہ  ﻭﮦ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﮐﯽ ﺳﻨﮕﯿﻨﯽ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱﮐﺮیں ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻣﺤﺾ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺒﺪﯾﻠﯽ اﻭﺭ ﻋﺎﻡ ﺳﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﺴﺖ ﻭﺧﯿﺰ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﮔﻨﮕﺎ ﺟﻤﻨﯽ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺍﻭﺭﻓﺮﻗﮧ ﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﻣﻔﺎﮨﻤﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻢ ﻗﺎﺗﻞﺗﺼﻮﺭ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺧﻄﻮﻁ ﭘﺮ ﺧﻮﺩ ﮐﻮﻣﺠﺘﻤﻊ ﮐﺮیں ﺟﻦ ﺧﻄﻮﻁﭘﺮ ﺍﮐﭩﮭﺎ ﮨﻮﮐﺮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺟﻨﮓ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﮧ ﻣﺸﺘﺮﮐﮧﺗﮩﺬﯾﺐ، ﺍﻣﻦ ﻭﺳﮑﻮﻥ، ﺍﺧﻮﺕ ﻭﺑﮭﺎﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦﺍﻭﺭ ﮨﻤﮧ ﺟﮩﺖ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﻻﺯﻡ ﮨﮯ ﮐﮧﺩﻟﺖ، ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﻗﻠﯿﺘﯿﮟ ﻣﺘﺤﺪ ﮨﻮﮐﺮﺩﺳﺘﻮﺭ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻘﯿﻘﯽﺍﻧﻄﺒﺎﻕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺒﯿﻨﮧﮨﻨﺪﻭﻗﻮﻡ ﭘﺮﺳﺘﯽ ﮐﮯ ﻧﻌﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﯽﻣﺨﺎﻟﻔﺖ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﯿﻮنکہ ﯾﮧ ﻧﻌﺮﮦ ﻣﻠﮏ ﮐﮯﻣﺰﺍﺝ ﺳﮯ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮓ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺎ۔ ﮔﺎﺋﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﺭﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺭﻧﮓ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺳﺎﺯﺷﯽ ﭨﻮﻟﮯ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮨﮯ۔

اس سمت میں قائدین امت اسلامیہ ھند کو فوری اقدام کرنا چاہئے اور مسلم دلت سیاسی و سماجی اتحاد کے وژن پر جنگی پیمانہ پر کام کرنا چاہئے تاکہ وطن عزیز منووادیوں کے زہر سے محفوظ رہ سکے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close