دلت آندولن کے بیچ آنندی بین کا استعفی

76

رویش کمار

استعفی لکھ کر فیکس کرنے کی بات تو ہم سب سنتے رہے ہیں مگر یہ ہندوستانی سیاست کا پہلا استعفی ہے جو اسٹیٹس اپ ڈیٹ کی شکل میں آیا ہے. گجرات کی وزیر اعلی آنندی بین نے فیس بک پر اپنے استعفی کا لمبا سا پوسٹ لکھا تو دو گھنٹے کے اندر 3400 سے زیادہ لائک مل گئے اور 1163 شیئر ہو گئے. دو گھنٹے میں 896 کمینٹ آگئے.

فیس بک پر آنندی بین پٹیل کو 3 لاکھ 82 ہزار افراد فالو کرتے ہیں. یہ سب اس لئے بتایا کہ اکثر کہا جاتا ہے کہ وزیر اعظم مودی اور بی جے پی صدر امت شاہ کے درمیان فیصلے کی بھنک کسی کو نہیں لگتی ہے. مرکزی کابینہ میں ردوبدل کے بعد تک کسی کو معلوم نہیں تھا کہ اسمرتی ایرانی کی وزارت تبدیل کی جا سکتی ہے، ایک محض کابینہ وزیر کے طور پر پروموشن پانے والے پرکاش جاوڈیکر کو بھی پتہ نہیں ہو گا کہ وہ اسمرتی ایرانی کی جگہ لینے والے ہیں. یہ فیصلہ ایسا تھا کہ کئی دنوں تک قیاس آرائیاں چلتی رہیں کہ اسمرتی ایرانی کو کیوں ہٹایا گیا. یہ مثال بتاتی ہے کہ وزیر اعظم کے سیاسی فیصلے اپنے وقت اور اپنے انداز میں ہوتے ہیں. وزیر اعظم نریندر مودی کی سیاست کو ان کے ٹوئٹر کے ہینڈل سے سمجھنے والے نادان لوگوں کو ابھی کافی کچھ سیکھنا باقی ہے.

یہ بھی کہ وزیر اعلی آنندی بین پٹیل نے اپنے استعفی کی خبر فیس بک پر پوسٹ کرکے کیوں دی. یہ اور بات ہے پوسٹ کے فورا بعد ریکارڈ بیان آ گیا اور امت شاہ نےمکتوب ملنے کی بات قبول کر لی. پھر بھی کیوں یہ خبر اس طرح سے نہیں آئی جیسے اسمرتی ایرانی کے ہٹائے جانے کی خبر دیر رات آئی تھی. دہلی کے سارے سورماؤں کے ذرائع کہاں بے خبر رہے کہ آنندی بین اپنے استعفی کا اعلان خود کرتی ہیں. کتنا فرق ہے اسمرتی ایرانی کے ہٹائے جانے اور آنندی بین کے ہٹنے کے فیصلے کی خبر عام ہونے میں. دہائیوں تک گجرات کی سیاست میں اکیلے اور کل مختار  دکھائی دینے والے نریندر مودی اتنے بھی اکیلے نہیں تھے. ان کے کچھ قریبی اور معتمد بھی تھے. تبھی تو وزیر اعظم کے دہلی آتے ہی امت شاہ دہلی آ گئے اور آنندی بین کو گجرات کی ذمہ داری سونپی گئی جسے وزیر اعظم مودی بارہ سال تک میرا گجرات کہتے رہے. کوئی اپنے کلیجے کو کسی کے ہاتھ یوں ہی نہیں سونپ دیتا ہے. اس خبر میں جان تب آئے گی جب کوئی یہ راز کھول دے گا کہ کس نے کہا ہوگا وزیر اعظم سے کہ اب آنندی بین پٹیل کا وقت آ گیا ہے یا آنندی بین نے خود اپنا فیصلہ سنا کر دونوں کی الجھنوں کو ختم کر دیا. کیا یہ تینوں کا مشترکہ فیصلہ تھا. سیاست میں رشتے بہت طویل چلتے ہیں اور جب کسی مقام پر پہنچ کر علیحدہ ہوتے ہیں تو وہ صرف ایک خبر نہیں ہوتی ہے. واقعہ ہوتا ہے.

1998 سے آنندی بین پٹیل وزیر ہیں اور دو سال سے وزیر اعلی. 2001 سے گجرات میں سیاسی استحکام ہے. گجرات میں 14 سال میں صرف ایک بار وزیر اعلی کا عہدہ بدلا وہ بھی تب جب اس کے وزیر اعلی وزیر اعظم ہو گئے. موجودہ حکومت وزیر اعظم مودی کی قیادت میں بنی تھی. ایک طرح سے دیکھیں تو 2012 سے لے کر 2016 کے درمیان گجرات کو تیسرا وزیر اعلی سے ملنے والا ہے. زمانے بعد گجرات میں ایسا ہو رہا ہے. فیس بک پر آنندی بین پٹیل نے لکھا ہے کہ گزشتہ تیس سالوں میں مجھے بھارتیہ جنتا پارٹی کے ایک کارکن کے طور پر کئی طرح کی ذمہ داریاں نبھانے کا موقع ملا ہے. میں نے پارٹی اور حکومت میں اہم ذمہ داریاں نبھائی ہیں جسے میں اپنی قسمت سمجھتی ہوں. خواتین مورچہ سے لے کر وزیر اعلی کے عہدے کی ذمہ داری تک، پارٹی نے مجھ پر اعتماد کیا، اس کی میں شکرگزار ہوں. قابل منتظم عظیم الشان دکھنے والے اور جاںفشاں محترم جناب نریندر مودی زیر قیادت پہلے پارٹی میں پھر حکومت میں کام کرنے کا مجھے موقع ملا، جس کی وجہ سے مسلسل میں لائق بنی. گزشتہ 18 سال سے گجرات حکومت میں اہم محکموں میں کام کرتے کرتے مختلف تخلیقی اصلاحات کرتے کرتے لوگوں کے لئے منصوبہ بندی کی عمل داری اور اس میں شفافیت لانے کے لئے میں مسلسل کوشش کرتی رہی ہوں.

‘نریندر مودی نے  پہلی خاتون وزیر اعلی کی ذمہ داری سونپی 2014 میں مجھے. جناب نریندر بھائی گجرات کے وزیر اعلی کے طور پر 12 سال سے زیادہ خدمت گزار رہے اور ان کی جگہ میرا انتخاب ہوا جو آسمان میں تارے گننے جتنا مشکل تھا. لیکن مجھے اس بات کا فخر ہے کہ انہوں نے گجرات کے ترقیاتی کاموں کو جو سمت دی تھی اسے تیز رفتاری سے بڑھانے میں میں پیچھے نہیں رہی ہوں.’

کیا واقعی بی جے پی میں 75 سال کا کوئی بینچ مارک بن گیا ہے جس کی وجہ سے وزیر سے لے کر وزیر اعلی تک کو عہدہ چھوڑنا پڑ رہا ہے. وہ نومبر میں 75 سال کی ہو رہی ہیں. لیکن مودی کابینہ میں کابینہ وزیر کلراج مشرا گزشتہ ماہ 75 سال کے ہوئے ہیں. کیا وہ بھی استعفی دینے والے ہیں. 75 کا یہ بینچ مارک سب کے لئے ہے یا حالات کے مطابق ہے. سیاست تبھی دلچسپ لگتی ہے جب آپ اسے قصوں کی طرح دیکھتے ہیں، جیسے ہی آپ صرف خبر کی نظر سے دیکھتے ہیں، سیاست بے لذت ہو جاتی ہے. گجرات کی سیاست میں جارحیت ایک مستقل جذبہ ہے. کیا جو بھی نیا وزیر اعلی ہوگا وہ پارٹی اور حکومت میں دھمک رکھنے والا ہوگا یا دہلی سے چلنے والا ہو گا. کیا دہلی سے گجرات چلانے کی کوشش ناکام رہی یا آنندی بین احمد آباد سے ہی گجرات چلا رہی تھیں. ان کے فیس بک پوسٹ کے بعد پارٹی صدر امت شاہ کا بھی بیان آیا.

امت شاہ نے آنندی بین پٹیل کے دور کو کامیاب قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے نریندر مودی کی وراثت کو کامیابی سے آگے بڑھایا ہے. اور اب ان کے استعفی پر فیصلہ پارلیمانی بورڈ کرے گا. کیا امت شاہ گجرات کے وزیر اعلی ہو سکتے ہیں. چند ماہ تک میڈیا میں چلنے والی بات چیت میں امت شاہ کا نام بھی خوب آیا کرتا تھا. 5 جون کو اكونامک ٹائمز کی ہیڈلائن ہے کہ نریندر مودی کے گجرات میں سب کچھ ٹھیک نہیں ہے. کیا امت شاہ آنندی بین پٹیل کی جگہ لیں گے. 2 جون کو انڈین ایکسپریس میں گجرات کی سیاست پر گہری نگاہ رکھنے والی شیلا بھٹ کی خبر کی ہیڈلائن ہے کہ بی جے پی گجرات میں وزیر اعلی تلاش کر رہی ہے، اہم سوال ہے کہ کون ہوگا. ان کی بھی اس خبر میں امت شاہ کا نام آتا ہے. شیلا بھٹ نے لکھا ہے کہ بی جے پی کے اندر بہت سے لوگ مانتے ہیں کہ گجرات میں اگر کوئی بدلاؤ لا سکتا ہے تو وہ صرف امت شاہ لا سکتے ہیں. جن ناموں کی بحث ہو رہی ہے ان میں سے کسی کا امت شاہ کی طرح کمانڈ نہیں ہے. یہ جون نہیں ہے. اگست ہے. ان دو مہینوں میں یوپی کا انتخاب قریب آ گیا ہے. یوپی میں بی جے پی کارکنان پارٹی قیادت سے وزیر اعلی کے امیدوار کے اعلان کا انتظار کر رہے ہیں، کیا اب ایسا ہوگا کہ پارٹی قیادت میں سے ایک خود ہی وزیر اعلی بن کر گجرات چلا جائے. یوپی جیسے انتخاب سے پہلے پارٹی میں قومی سطح پر اتنا بڑا بدلاؤ کرنے کا خطرہ کیا وزیر اعظم لینا چاہیں گے. یہ سوال بھی آئے گا کہ قومی سطح پر امت شاہ کا متبادل کون ہوگا؟

گجرات میں بات صرف وزیر اعلی تبدیل کرنے کی نہیں ہے. پٹیل آندولن اور دلت آندولن کی وجہ سے بی جے پی کے بنیاد کو چیلنج مل رہا ہے. دلت آندولن نے جس طرح سے اپنی طاقت کا مظاہرہ کیا ہے اس نے بی جے پی کے خیمے میں گھبراہٹ بڑھا دی ہے. روہت ویمولا کے بعد دلت سیاست میں جو ابال آیا تھا اس سے نمٹنے کے لیے بی جے پی نے کتنے پروگراموں کو لانچ کر دیا تھا. کمبھ میں ساتھ نہانے سے لے کر ساتھ بیٹھ کر کھانا کھانے تک. لیکن اونا کے واقعہ نے ان سارے پروگراموں پر پانی پھیر دیا ہے.

اتوار کو احمد آباد میں تیس سے زیادہ دلت تنظیموں کی اس بڑی ریلی نے پارٹی کو حیران ضرور کیا ہوگا کہ اتنی بڑی سبھا تو کانگریس بھی نہیں کر پائی ہوگی. بغیر ایک لیڈر یا تنظیم کے اتنے دلت دو دو بار احمد آباد میں کیسے جمع ہوگئے. جمع ہی نہیں ہوئے، گئو رکشا کے تشدد اور مشتعل سوالات کا جواب جس طرح سے گجرات کے دلتوں نے دیا ہے اس طرح باقی ہندوستان کے دلت لیڈروں یا کارکنوں کو سوجھا تک نہیں. انہیں روہت ویمولا کے وقت بھی سمجھ میں نہیں آیا اور اسمرتی ایرانی کے جذباتی تقریروں میں بہہ گئے لیکن گجرات کے دلتوں نے اس مسئلے سے جذباتیت کو اکھاڑ پھینکا ہے. اعلان کر دیا کہ اب سے مری ہوئی گائے اٹھانے کا کام ہی نہیں کریں گے اور اٹھانا بند بھی کر دیا.

روہت ویمولا کے وقت مایاوتی نے بھی بولنے کی رسم نبھائی تھی مگر اونا کے واقعہ نے انہیں بھی جارحانہ بنا دیا ہے. ویمولا سے لے کر اونا تک یہ سوال جب زور پکڑا کہ دلت ہراساں پر بی جے پی کے دلت اراکین پارلیمنٹ کیوں آواز نہیں اٹھاتے، اس کا اثر اب ہوا. دہلی میں پسماندہ ذات اور قبائلی فورم کے 160 اراکین پارلیمنٹ نے میٹنگ کرکے وزیر اعظم کو صاف پیغام دیا کہ ایسے واقعات برداشت نہیں کئے جائیں گے. ان 160 ممبران پارلیمنٹ میں سے بی جے پی کے بھی ممبر پارلیمنٹ ہیں. ان سب نے جماعتی عصبیت سے اوپر اٹھ کر گجرات دلتوں کے فیصلوں کی حمایت کر دی اور کہا کہ وہ مری ہوئی گائے ہٹانے سے لے کر ہاتھ سے گٹر صاف کرنے کا کام بند کر دیں. حیدرآباد کے بی جے پی ممبر اسمبلی راجا سنگھ نے بیان دیا کہ اونا میں گائے کے گوشت کے الزام میں دلت کی پٹائی صحیح ہوئی ہے تو بی جے پی رکن پارلیمنٹ ادت راج نے فوری طور پر بیان دے دیا کہ اس ممبر اسمبلی کو پارٹی سے نکال دیا جانا چاہئے. ظاہر ہے گجرات کے دلتوں کی آواز اب سب کے کانوں میں گونج رہی ہے.

اگر دلت آندولن کے ردعمل میں آنندی بین کا استعفی ہوا ہے تو کیا کوئی دلت وزیر اعلی ہوگا. آنندی بین کی جگہ کون لے گا. نتن پٹیل کا نام آگے چل رہا ہے. کیا نتن پٹیل ان سوالوں کا جواب ہوں گے جنہیں لے کر گجرات میں بی جے پی پریشان ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


تبصرے