ہندوستان

راشن کے ضرورت مند غریبوں کو بھاماشاہ اے ٹی ایم نا کہہ دے تو۔۔۔؟

رویش کمار

ہمارے ملک میں کروڑوں لوگ عوامی تقسیم نظام یعنی سرکاری راشن کی دکان سے چاول گندم لیتے ہیں. حکومت مختلف منصوبوں کے تحت ان کو سستا اناج دیتی ہے. کئی بار ہمیں لگتا ہے کہ سب ٹھیک ہی چل رہا ہوگا کیونکہ حکومت بھی ایک لائن میں ساری باتیں کہہ دیتی ہے کہ اب مشین سے راشن مل رہا ہے، اس لئے چوری بند ہو گئی ہے. جسے ملنا چاہئے اسے ہی مل رہا ہے اور سرکاری خزانے میں بھاری بچت ہو رہی ہے. ایسا ہو بھی سکتا ہے لیکن دوسری طرف جہاں لوگ قطار میں کھڑے ہو کر راشن کی دکان کھلنے کا انتظار کر رہے ہیں ان کے ساتھ یہ مشین کیسا برتاؤ کر رہی ہے، ہم نہیں جانتے ہیں. چوری تو رک گئی ہے اگر رکی ہے تو، جنہیں نہیں ملا ان پر کیا گزرتی ہوگی. ٹی وی کے بہت سے شہری ناظرین زمانے سے راشن کی دکان پر نہیں گئے ہوں گے. میں اپنے ایسے بہت سے ناظرین سے ملتا ہوں جو جاتے ہیں. مگر ان کے پاس فیس بک اور ٹویٹر نہیں ہے جو اپنا حال ٹویٹ کر سکیں.

راشن کی مشین سے ملتی جلتی مشین آپ نے شہروں کی دکانوں اور مول میں دیکھی ہوگی، جہاں آپ اپنے ڈیبٹ کارڈ اور کریڈٹ کارڈ سے پیسہ دیتے ہیں. ویسے اس کا انگریزی نام ‘پوائنٹ آف سیل’ مشین ہے. اسے پاس مشین کہتے ہیں. راجستھانی حکومت نے اس کی منصوبہ بندی کی تشہیر کے لئے اس کا نام ‘بھاما شاه اے ٹی ایم’ رکھ دیا ہے. یہ مشین پہلے آدھار کارڈ کو پڑھتی ہے، پھر انگوٹھے کا نشان دینا ہوتا ہے. نشان ملے گا تبھی مشین آدھار کارڈ کے سرور سے ملان کرے گی کہ یہ شخص اصلی ہے. اب کارڈ صحیح نکل گیا تو مشین اسی بنیاد سے جے پور کے ایک اور سرور سے پتہ کرے گی جہاں راشن کارڈ حاملین کی معلومات ہیں. جب دونوں جگہوں پر تصدیق ہو جاتی ہے تو اناج ملے گا. ورنہ مشین کہہ دے گی ٹائم آؤٹ، یعنی آپ کو نہیں ملے گا. حکومت کا دعوی ہے کہ اس مشین سے انقلاب آنے والا ہے کیونکہ راشن کی دکانوں سے چوری رک جائے گی، حکومت کی کروڑوں کی سبسڈی بچ جائے گی. جو حق دار ہوگا اسے ہی اناج ملے گا.

اس مشین کے آنے سے پہلے بھی چھتیس گڑھ اور دیگر کئی ریاستوں نے اپنے یہاں راشن کی دکانوں سے چوری کو روکنے کا دعوی کیا تھا. ان کی کافی تعریف ہم نے پڑھی تھی. اب یہ سوال تو پالیسی نيتا ہی بتائیں گے کہ جب وہ طریقہ کامیاب ہو سکتا تھا تو اس طریقے کی ضرورت کیوں پڑ رہی ہے. مشین کی لاگت، بنانے والی کمپنی اور ٹھیکے وغیرہ کا سوال تو ہے، مگر ہمیں معلوم نہیں ہے اس کے بارے میں، اس وجہ سے کوئی اٹكل بازی نہیں. ویسے اكونامك ٹائمز کی 2012 یعنی چار سال پہلے کی رپورٹ ہے جس میں نندن نيلےكنی کا بیان ہے کہ ایسی ہر مشین کی اوسط قیمت 15 ہزار روپے ہوگی. ہم نے سوچا کہ کیوں نہ جگہ جگہ جا کر دیکھیں کہ غریب لوگ، عام لوگ جب اس مشین کے پاس جاتے ہیں تو ان کا تجربہ کیا ہوتا ہے.

ابھی تيسوں دن راشن کی دکان نہیں کھلتی ہے. اس کے لئے راجستھان حکومت ہر ماہ تقسیمی ہفتے طے کرتی ہے. جولائی میں 10 جولائی سے لے کر 24 جولائی کے درمیان تقسیمی ہفتے رکھے گئے. لہذا جب راشن کی دکان کھلتی ہے تو بھیڑ کافی ہوتی ہے. اب اگر کسی کا انگوٹھا نہیں ملا، کسی کی انگلی کے نشان نہیں ملے تو اسے اناج نہیں ملے گا. نشان ملانے کی بار بار کوشش کی وجہ سے تاخیر بھی ہوتی ہے لہذا راشن کی دکان کے باہر کی بھیڑ کا صبر بھی ٹوٹتا ہو گا. چونکہ غریب اور عام لوگوں کے لئے بھیڑ اور وقت کی کوئی قیمت نہیں ہوتی تو ہم مڈل کلاس لوگوں کو یہ بات سمجھ میں بھی نہیں آئے گی. انہیں اپنی تکلیف ضرور دکھ جائے گی جب انہیں پاسپورٹ آفس میں ایک گھنٹہ لائن میں لگنے کے لئے کہہ دیا جائے. تب وہ ٹویٹ کرکے ہندوستان کو كوسیں گے اور کہیں گے کہ کیا ایسے سپر پاور بنے گا اپنا انڈیا.

راجستھان سے ہماری ساتھی ہرشا کماری سنگھ اور ان کی ٹیم کے ارکان نے سرکاری راشن کی دکانوں پر جا کر عام لوگوں کے تجربے کو ریکارڈ کیا. چار اضلاع سے انہوں نے یہ تجربے جمع کئے ہیں تاکہ آپ کو ہم کو پتا چلے کہ حکومت کتنی بھی بہتر منصوبہ بندی کر لے، جو عام اور غریب ہیں ان کی دشواریوں کا خاتمہ نہیں ہوتا ہے. ہو سکتا ہے کہ مشین سے اس کے خزانے میں بچت ہو رہی ہو لیکن اگر کسی کو اس ماہ کا اناج نہیں ملا تو وہ کیا بچائے گا. اس کا کیا بچتا ہے. بھوک بچتی ہوگی.

بھاماشاه اے ٹی ایم مشین کسی کو نہیں جانتی ہے. وہ صرف آپ کے انگوٹھے کے نشان سے آپ کو پہچانتی ہے. راشن کا دکان دار اب آپ کو بھی نہیں پہنچانےگا کیوں کہ مشین نے آپ کے نشانات کو نہیں پہچانا. اب شاید حکومت نے ایسی صورت حال میں کچھ رعایت دی ہے مگر جو پریشانی ہو رہی ہے وہ بتاتی ہے کہ اگر آدھار کارڈ کو لازمی کر دیا گیا تو کیا ہو گا. دہلی کے اخبارات میں ہم اس کی صرف خوبیاں ہی پڑھتے ہیں لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ جو لوگ محنت مزدوری کرتے ہیں ان کے ہاتھوں کے نشانات مٹ جاتے ہیں. کیا آپ نے کبھی اپنے گھر آئے کسی مزدور کی ہتھیلی اٹھا کر دیکھی ہے؟ دیکھئے گا. مشین سے کیا ہمارے جیوتش لوگ بھی فیل ہو جائیں گے. جیوتش لوگ تو پیشانی پڑھ کر چکما دینے لگیں گے مگر مشین کو چھوٹ نہیں ہے کہ وہ پیشانی دیکھ کر راشن دے. میں کچھ انگلیوں، انگوٹھوں کے نشانات کو دکھا سکتا ہوں جو ہرشا کماری سنگھ نے بھیجے ہیں.

محنت کش لوگوں کے ہاتھوں کے نشانات گھستے گھستے گھس جاتے ہیں. گاؤں دیہات میں عورتوں کی انگلیوں میں کچھ بچتا نہیں ہے. برتن صاف کرتے صاف کرتے ان کی قسمت کی لکیریں بھی مٹ جاتی ہیں. آدھار کارڈ جب آئے گا تو ایسے تمام لوگ کئی منصوبوں سے باہر ہو سکتے ہیں. حکومت بندوبست کر دے گی کہ نشان نہیں ملے تو ڈی ایم، ایس ڈی ایم سے لكھواكر لے آئیں مگر سوچئے کہ کیا اتنے قابل لوگ ہیں جو آسانی سے سرٹیفکیٹ لے آئیں گے. مکھیا کے پاس بھی جائیں گے تو وہ کتنا کھیل کھیلے گا. اس کے بدلے اس کا ان لوگوں کی زندگی پر کتنا کنٹرول ہو جائے گا. ہرشا کا کہنا ہے کہ کتنے لوگوں کی انگلیوں کے نشانات مٹ گئے ہیں، اس کا کوئی سروے نہیں ہے.

مشین سے میرا کوئی بیر نہیں ہے. کیا پتہ ہم آنے والے دور میں مشین کی بنیاد پر رہنے لگیں. میری شکایت مشین سے زیادہ انسانی مسئلے کو لے کر ہے. جب کوئی ایسی مشین نہیں بنی جو انسان کے ہر مسئلے کا علاج کر دے تو راشن کے ہر مسئلے کا علاج کوئی مشین کیسے ہو سکتی ہے. کیا آج کی تاریخ میں ہم اس مشین کے لئے تیار ہیں یا اس وجہ سے بے چین ہیں کہ اسے لاگو کرکے دنیا میں نام کمایا جائے کہ ہم نے کچھ کمال کردیا اور جو عام لوگوں کی تکلیف اور درد ہے، اس کا کیا؟

یہ مشین سم کارڈ سے چلتی ہے. دہلی جیسے شہر میں دو سال سے کال ڈراپ کی وبا پھیلی ہوئی ہے. آئے دن اخبارات میں نکلتا رہتا ہے. حالت یہ کہ اب تو شفافیت کے نام پر ٹیلیفون کمپنی اشتہار ہی دینے لگی ہے کہ اس اپلی کیشن سے پتہ چل جائے گا کہ کہاں نیٹ ورک ہے، کہاں نہیں ہے. لیکن غریب لوگوں کو کہاں سے پتہ چلے گا. جب دہلی میں نیٹ ورک کا پختہ انتظام نہیں ہے تو گاؤں دیہات کی کیا حالت ہوگی؟ جیسے ایک شریف آدمی کو مشین کا نیٹ ورک نہیں ملا. وہ مشین ہاتھ میں لئے ویسے ہی نیٹ ورک ڈھونڈ رہے تھے جیسے 90 کی دہائی سے پہلے کے لوگ چھت پر چڑھ کر اینٹینا کو کبھی نیپال کی طرف موڑ کر تو کبھی بھوٹان کی جانب موڑ کر دوردرشن نیٹ ورک تلاش کرتے تھے. باڑمیر کی راشن کے ایک دکاندار صاحب اپنی مشین لے کر نیٹ ورک ڈھونڈ رہے تھے. ڈھونڈتے ڈھونڈتے دکاندار جيباہر آگئے. باہر آتے آتے سڑک پر آ گئے. اب وہ ہوا میں نیٹ ورک تلاش کرتے رہے، دکان کے باہر کھڑے لوگ وہیں رہ گئے. دکاندار صاحب مشین کا نیٹ ورک تلاش کرتے رہے اور چونکہ غریب لوگوں کے وقت کی کوئی قیمت نہیں ہوتی تو وہ انتظار کرتے رہے. سب سے بڑی بات ہے کہ ٹویٹ نہیں کیا. سوشل میڈیا پر ملک کی ڈیموکریسی شفٹ ہو گئی ہے اور یہ لوگ ہیں کہ ابھی تک راشن کی دکان میں ڈیموکریسی کے اناج کا انتظار کرتے رہے. ہاؤ سیڈ.

قریب سات کروڑ آبادی ہے راجستھان کی. اس میں سے 4 کروڑ 34 لاکھ لوگ حکومت کے سستے اناج منصوبوں پر انحصار کرتے ہیں، جو راشن کی دکانوں سے چاول، گندم، چینی اور مٹی کا تیل لیتے ہیں. یہ لوگ مارکیٹ کی شرح سے گندم نہیں خرید سکتے ہیں. دال نہیں ملتی ہے اس لئے رام جانے کہ یہ غریب لوگ ڈیڑھ سو روپے دال کس طرح کھاتے ہوں گے. کیا صرف روٹی کھاتے ہوں گے، یا چاول اور ماڑ ہی کھا کر رہ جاتے ہوں گے. ہم واقعی نہیں جانتے ہیں کیونکہ ان کا قصور یہ ہے کہ اس سوشل میڈیا میں نہیں ہیں، جہاں ان دنوں ڈیموکریسی رہتی ہے. بہر حال حکومت کا کام یہ بھی ہے کہ اناج اسے ہی ملے جسے ملنا چاہئے. لہذا وہ وقتا فوقتا فہرستوں کی صفائی کرتی رہتی ہے. کیونکہ غریبوں کو اناج دینے کے پروگرام پر کروڑوں روپے خرچ ہوتے ہیں. ہرشا کماری سنگھ نے بتایا کہ اس وقت بھی فہرستوں کی کٹائی چھٹائی چل رہی ہے مگر 15 لاکھ نئے لوگوں کو بھی شامل کر دیا گیا ہے، جنہیں ملنا چاہئے تھا مگر نہیں مل رہا تھا. تحفظ غذا ایکٹ کے تحت جن لوگوں کو ملنا چاہئے، سب کو تو نہیں مل رہا ہے، مگر دعوی کیا جا رہا ہے کہ مل رہا ہے.

کسی بھی منصوبہ میں چیلنج آتا ہے. ہو سکتا ہے کہ یہ ابتدائی چیلنج ہو، لیکن جو غریب 2 روپے سے زیادہ کا اناج خرید نہیں سکتا اسے اناج ملنے میں ایک دن کی تاخیر ہو جائے تو اس کا کیا؟ امید ہے یہ رپورٹ حکومت کو اپنا نظام درست کرنے میں کام آ سکے گی.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close