ہندوستان

شمسی صاحب آپ کامیاب ہوگئے

روزنامہ انقلاب کے مدیر شکیل شمسی کے مداحوں میں میں بھی شامل ہوں۔ ہر صبح چائے کی چسکیوں کے ساتھ ان کا اداریہ نہ صرف حالات حاضرہ سے باخبر کرتا ہے بلکہ ان پر ایک متوازن رائے بھی دیتا ہے۔ موصوف شیعہ سنی یکجہتی اور اتحاد ملت کے لیے کوشاں رہتے ہیں۔ ان کے کالم گہرے مطالعے اور سیاسی بصیرت کے حامل ہوتے ہیں۔ تاہم انہوں نے اپنے روزنامے میں ڈاکٹر ذاکر نائیک کے خلاف ایک  دل آزار اداریہ رقم کیا ہے (ماخذ: روزنامہ انقلاب)۔ یہ بات ان کے مداحوں کے لیے کسی صدمے سے کم نہیں تھی۔ صدمہ اس لیے نہیں  تھا کہ انہوں نے ذاکر نائیک کے خلاف لکھا بلکہ ایسے وقت میں لکھا جب  تمام الیکٹرانک  اور پرنٹ میڈیا  نے ڈاکٹر ذاکر نائیک کے خلاف کمر کس لی ہے اور ایک طوفان بے تمیزی میں برپا کر رکھا ہے ۔   یہ حملہ بظاہر ڈاکٹر ذاکر کی ذات پر ہے لیکن ان کے نشانے پر تمام دعوتی اور دینی ادارے ہیں، اگرچہ ابھی ان کا نمبر آنا باقی ہے۔

شمسی صاحب کااداریہ کیا ہے جھوٹ اور بے بنیاد الزامات کا پلندہ ہے۔  پورا مضمون معروضیت سے خالی ہے۔ خیر ہم حسن ظن سے کام لیں گے۔ اخباری اداریوں میں اتنی جگہ نہیں ہوتی کہ الزامات اور دعووں کی دلیل میں ماخذ بیان کیے جاسکیں۔ تاہم شمسی صاحب نے ڈاکٹر ذاکر نائیک جیسی شخصیت پر جب بہتان طرازی کا ارادہ کیا تھا تو کم سے کم وہ اتنا تو کرہی سکتے تھے کہ اتنا اشارہ کردیتے کہ یہ باتیں انہیں آیا ان کے استعماری میڈیا کے دوستوں نے بتائیں یا خود انہوں نے براہ راست ڈاکٹر ذاکر نائک کی تقریروں  اور کتابوں سے استفادہ کیا۔ لیکن آخرالذکر سے استفادہ اگر وہ کرتے تو شاید ان کے مضمون کا رخ اور تیور وہ نہ ہوتا جو ہے۔ ان کی پیش کردہ کم و بیش تمام آراء وہی ہیں جو ان دنوں میڈیا ڈاکٹر ذاکر نائیک کے خلاف اگل رہا ہے۔ حتی کہ ان پر دہشت گردوں کی حمایت کا الزام بھی شمسی صاحب نے میڈیا سے اچک لیا ہے جس کی تردید خود ڈاکٹر ذاکر نائیک بھی کرچکے ہیں (ماخذ: یوٹیوب) ۔

شمسی صاحب کہتے ہیں  کہ ڈاکٹر ذاکر نائیک ایک خاص مسلک کے ترجمان ہیں اور مسلمانوں کے درمیان مختلف فرقوں کے درمیان اختلافات کو بڑھاوا دے رہے ہیں۔ یہ بہتان ایک ایسے شخص کے بارے میں ہے جس نے اپنی پوری زندگی اتحاد امت اور دین حق کی سر بلندی کے لیے وقف کردی ہے۔ (ماخذ: یوٹیوب ویڈیو، اتحاد امت پر ملیشیا میں خطاب) حقیقتاً ڈاکٹر ذاکر نائیک اپنی تقریروں میں کسی بھی مخصوص فرقے کی ترجمانی نہیں کرتے بلکہ قرآن اور احادیث کی بات کرتے ہیں۔  اگر قرآن اور احادیث سے بعض فرقوں کے مزعومہ عقائد مجروح ہوتے ہوں تو ہوں۔ اگر یہ مسلکی افتراق کو ہوا دینا ہے تو ہاں ڈاکٹر ذاکر نائیک اس کے مرتکب ہیں، وہ کسی مسلک کی طرف نہیں بلاتے بلکہ خالص دین اسلام کی دعوت دیتے ہیں۔

شمسی صاحب رقم طراز ہیں کہ آج ڈاکٹر ذاکر پر جو حملے ہو رہے ہیں ان کے لیے خود ذاکر نائیک ذمہ دار ہیں۔ غالباً شمسی صاحب نے اسلامی تاریخ نہیں پڑھی جو ایسی بہکی بہکی باتیں کررہے ہیں۔ ہاں ، داعیان اسلام اپنے اوپر آنے والی ابتلاء و آزمائش کے لیے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ لیکن کیا ان پر یہ مصائب اس بنا پر آتے ہیں کہ دعوتی مشن سے ان کا ذاتی مفاد وابستہ ہوتا ہے یا پھر اس پاداش میں کہ وہ اعلائے کلمۃاللہ کے لیے کھڑے ہوتے ہیں اور باطل قوتوں کو یہ بات ناپسند ہوتی ہے اور وہ طاغوت کی سازشوں اور ریشہ دوانیوں کے سبب گرفتار مصیبت ہوتے ہیں؟

اپنے اداریے کی دوسری قسط  (ماخذ: سنڈے انقلاب) میں (جی ہاں، یہ اداریہ انہوں نے دو قسطوں میں لکھا ہے، گویا ایک قسط میں ان کی بھڑاس پوری طرح نہیں نکل پائی۔ ) شمسی صاحب  لکھتے ہیں کہ” میرےاس مضمون کی پہلی قسط پڑھ کر اردو کے کچھ صحافی، قلمکار اور ذاکر نائیک کے حامی میری پوسٹ پر ٹوٹ پڑے۔ لیکن نہ تو کوئی ذاتی ، مسلکی اور نظریاتی الزامات سے آگے بڑھ سکا اور نہ کوئی تردید کرسکا۔”

مزے کی بات یہ ہے کہ شمسی صاحب نے اپنے اوپر تنقید کرنے والوں پر تو یہ الزام لگایا ہے کہ ان میں سے کوئی نظریاتی و مسلکی الزامات سے آگے نہ بڑھ سکا اور نہ ان کی کسی بات کی تردید نہیں کرسکا لیکن خود ڈاکٹر ذاکر نائیک جیسے مبلغ اسلام پر نکتہ چینی کرتے ہوئے تمام معروضیت کو بالائے طاق رکھ دیا۔ حالانکہ اگر وہ آنکھیں کھول کر ان تبصروں کو ہی پڑھ لیتے جو ان کی فیس بک پر پوسٹ پر کیے گئے تھے تو انہیں ان میں اپنی باتوں کی مدلل تردید مل جاتی۔  لیکن اگر قارئین ان کے فیس بک وال پر جائیں گے تو حقیقت کھل جائے  گی کہ شمسی صاحب کتنے روادار واقع ہوئے ہیں۔ ان تمام تبصروں کو انہوں نے اپنی پوسٹ سے ہٹا دیا  ہے جو ان کے خلاف تھے اور صرف انہیں کو باقی رہنے دیا جو ان کی تائید میں ہیں۔

بلادلیل شمسی صاحب فرماتے ہیں کہ ذاکر نائیک میں فکر صالح نہیں ہے (اگرچہ یہ ایک ذاتی نوعیت کا معاملہ ہے جس کا صحیح علم اللہ رب العزت ہی کو ہے ، شمسی صاحب جیسے منجھے ہوئے قلمکار کی طرف سے یہ بات عجیب ہی نہیں بلکہ بچکانہ بھی ہے)۔  وہ ان کے ‘مسلمانوں کو دہشت گرد ہونا چاہیے ‘ والے تبصرے کو بھی اسی انداز میں سیاق و سباق سے ہٹاکر پیش کرتے ہیں جس طرح ان کے سنگھی یار لوگوں اور میڈیا نے کیا ہے۔ اس کی تردید ڈاکٹر ذاکر نائک کی ویڈیو میں کی گئی ہے کہ ان کا یہ جملہ سیاق  سے ہٹا کر پیش کیا جارہا ہے جس میں انہوں نے مسلمانوں کو غیر سماجی عناصر کے خلاف  سخت گیر رویہ اپنانے کی ہدایت کی تھی۔ اگرا یسا کہنا جرم ہے تو شمسی صاحب اقبال کے اس شعر کو کس زمرے میں رکھیں گے:

ہو حلقہ یاراں تو بریشم کی طرح نرم

رزم حق و باطل و ہو تو فولاد ہے مومن

انہوں نے ڈاکٹر ذاکر نائیک پر مختلف فرقوں کے درمیان اختلافات کو بڑھاوا دینے کا الزام بھی عائد کیا ہے لیکن دلیل ندارد۔ حالانکہ ذاکر نائیک کی متعدد ویڈیوز انٹرنیٹ پر موجود ہیں جن میں وہ اتحاد اسلام کی دعوت دیتے ہیں اور مسلکی اختلافات سے گریز کرتے ہیں۔ تاہم جہاں بات قرآن و حدیث سے متصادم ہوتی ہے وہ حق بات کہنے سے کبھی نہیں چوکتے۔ ان کی اسی صفت سے اہل بدعت نالاں ہیں اور موقع پرستوں کے ہاتھ آخر ایک موقع لگ ہی گیا ہے چنانچہ وہ کھل کر ڈاکٹر ذاکر کی مخالفت میں آگئے ہیں۔ کیا سنگھی، کیا کارپوریٹ میڈیا اور کیا ملت فروش یہ تمام ایک داعی دین کے مقابلے میں متحد و صف آرا ہو گئے ہیں۔

ڈاکٹر ذاکر نائیک کی آڑ میں سنگھی استعماری میڈیا  اسلام کو بدنام کرنے کا کھیل کھیل رہا ہے۔ یوپی میں انتخابات سرپر ہیں۔ مسلم ووٹ کی تقسیم اور فسادات کروانا  فرقہ پرست پارٹیوں کا آزمودہ انتخابی حربہ ہے جسے وہ ان حالات میں خوب خوب کیش کریں گی۔ کنورژن کے خلاف تو برسراقتدار پارٹی  کا موقف جگ ظاہر ہے اور وہ  اور پورا سنگھ پریوار تبدیلی مذہب کے خلاف قانون سازی کے لیے رائے عامہ ہموار کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔ ڈاکٹرذاکر کی دعوتی سرگرمیاں بھی انہیں ایک آنکھ نہیں بھاتیں۔ ڈھاکہ حملوں کے پس منظر میں بنگلہ دیشی میڈیا کی آڑ میں آخر انہیں ایک سنہری موقع مل گیا ہے کہ ڈاکٹر ذاکر نائیک ، ان کے ادارے آئی آر ایف اور پیس ٹی وی کے خلاف شکنجہ کسا جاسکے۔ حالانکہ بنگلہ دیشی اخبار ڈیلی اسٹار نے اپنی پہلی رپورٹوں کی تردید کردی ہے جس میں حملہ آوروں کے ڈاکٹر ذاکر نائیک سے متاثر ہونے کی بات کہی گئی تھی۔ لیکن جھوٹ اور بہتان پر پرورش پانے والا ہندوستانی میڈیا اپنا طوفان کہاں روکنے والا ہے۔ یہ دلیل بھی کہ حملہ آور ڈاکٹر ذاکر نائیک کا فین تھا کتنی بودی ہے۔ کیا بابری مسجد کو شہید کرنے والے لال کرشن ایڈوانی کے فین نہیں تھے؟ کیا مہاتما گاندھی کو قتل کرنے والا آر ایس ایس سے متاثر نہیں تھا؟ کیا آئین اسٹائین کے فارمولوں سے انسپائر ہوکر پہلا ایٹم بم نہیں بنایا گیا تھا جس کے ذریعے لاکھوں بے گناہ جاپانیوں کی جان لی گئی؟ تو کیا اس بنیاد پر یہ تمام ادارے اور افراد بھی قابل گردن زدنی نہیں قرار پاتے؟ محض کسی کا فین ہونے کی بنیاد پر میڈیا ٹرائل اور پوری حکومتی مشنری کا حرکت میں آجانا ایسا خطرناک رجحان ہے جس کی زد سے کوئی نہیں بچ سکتا۔

 شکیل شمسی اگر سطحیت سے اٹھ کر اس زاویے سے بھی سوچتے تو شاید ان کا تعصب انہیں ڈاکٹر ذاکر نائیک پر ہرزہ سرائی کرنے سے باز رکھتا۔ لیکن افسوس عصبیت اور جانب داری اچھے اچھوں کی عقل خبط کردیتی ہے۔

شمسی صاحب کے بعض مداحوں نے سوشل میڈیا کے ذریعے انہیں پرخلوص انداز میں درخواست کی تھی انہوں نے جو لکھا ہے وہ مناسب نہیں خصوصاً ان حالات میں جب پورا استعماری میڈیا، سنگھ پریوار اور حکومت ڈاکٹر ذاکر نائیک کے پیچھے پڑ گئے ہیں،  اس اداریے کی ضرورت کیا تھی؟ کیا یہ موقع پرستی نہیں ہے؟

ہم نہیں جانتے شمسی صاحب ، آپ کے اوپر کیا دباؤ رہا  ہو گا یا آپ نے کس مصلحت کے تحت یہ اداریہ رقم کیا ہے؟  یہ "اوپر والوں” کو خوش کرنے کی کوشش تھی  یا آپ محض اس طوفان بے تمیزی میں جذباتی طور پر  بہہ گئے!  لیکن ہاں ۔  یہ بات طے ہے کہ آپ جیت گئے۔ آپ کے اس اداریے سے "اوپر والے” تو خوش ہوئے ہی ہوں گے، اس سے کارپوریٹ میڈیا کی حمایت بھی ہوگئی، سنگھی ایجنڈے کو بھی آگے بڑھانے میں مدد ملی اور ملت اسلامیہ کو مسلکی بنیاد پر تقسیم کرنے کی جو مذموم کوششیں کی جا رہی ہیں انہیں بھی تقویت ملی۔  شمسی صاحب ، یقیناً آپ اپنے مقاصد میں کامیاب ہوگئے۔ آپ نے  یہ اداریے لکھ کر ان تمام اہدافات کو حاصل کرلیا۔ ایسے نازک وقت میں جب ملت  کے سپوتوں پر ہر چہار جانب سے یلغار ہورہی ہو، آپ کے ان مضامین کو  بدبختانہ اور موقع پرستی نہ کہا جائے تو کیا کہا جائے؟

(irfan@mazameen.com)

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

عرفان وحید

عرفان وحید کا تعلق پنجاب کے شہر مالیر کوٹلہ سے ہے۔ آپ پیشے سے انجینیر ہیں۔ عرفان نے اردو اور انگریزی میں قریباً ۲۰ کتابیں ترجمہ کی ہیں۔ آپ انگریزی ماہنامے 'دی کمپینیئن' اور انگریزی پورٹل 'ہیڈلائنز انڈیا' کے ایڈیٹر بھی رہ چکے ہیں۔

متعلقہ

Close