نظریاتہندوستان

لینن بھارتی نہیں ہیں، لیکن کیا گاندھی یا بدھ صرف بھارت کے ہیں؟

پریہ درشن

مترجم: محمد اسعد فلاحی

جس وقت شري شري روی شنکر ملک کو بتا رہے تھے کہ ایودھیا میں مندر نہیں بنا تو اس کی حالت سیریا جیسی ہو جائے گی، تقریبا اسی وقت تریپورہ میں ایک بھیڑ لینن کی مورتی گرا رہی تھی. بعد میں اس فعل کی حمایت میں تریپورہ کے گورنر سے لے کر ملک کے وزیر داخلہ تک کے بیان آئے. وزیر داخلہ ہنس راج اہير نے کہا کہ غیر ملکی نظریے کے لئے ملک میں جگہ نہیں ہونا چاہئے.

اس بات پر نظریاتی بحث ہو سکتی ہے کہ مارکس ازم کس حد تک غیر ملکی نظریہ ہے یا پھر کس حد تک بھارت یا دنیا میں متعلق ہے. اس بات پر بھی بحث ہو سکتی ہے کہ ہم جن نظریات کو اپنا مانتے ہیں، وہ کتنی دیسی یا ودیسی ہیں.

لیکن، کم از کم دو باتیں ایسی ہیں، جن پر بحث کی گنجائش نہیں ہے. پہلی بات تو یہ کہ کسی بھی جمہوری معاشرے میں بھیڑ کو اس طرح مجسمے گرانے، ڈھانے کی چھوٹ نہیں دی جا سکتی- اس کی حمایت کرنا تو بالکل جرم ہے. یہ الگ بات ہے کہ اس ملک میں حالیہ دنوں میں قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے کا چلن بڑھا ہے. بھیڑ یہاں وہ فیصلے کرتی ہے، جو قانون کو کرنا چاہئے. یاد دلانے کی ضرورت نہیں کہ اس ‘بھيڑتنتر’ کو فروغ دینے میں BJP اور اس کے اتحادی تنظیموں کی خاص کردار رہا ہے.

دوسری بات یہ کہ ہندوستان کی مارکسی تحریک ان کٹر معنوں میں مارکسی نہیں ہے، جس میں آمریت کا مرکزی کردار ہے. بھارت کا مارکسزم دراصل جمہوریت کے پانی میں پلا ایسا پودا ہے جو مزدوروں مفادات کی بات کرتا ہے، معاشی نظام کو شک سے دیکھتا ہے اور زیادہ سے زیادہ دنیا کے مزدوروں کے ایک ہونے کی بات کرتا ہے. پارلیمانی جمہوریت میں بھروسہ کرنے والا یہ مارکسزم اپنے مخصوص معنوں میں اتنا ہی بھارتی ہے، جتنی بھارتیہ جنتا پارٹی ہے.

لیکن، خود کو ہندوستانی بتانے والی بھارتیہ جنتا پارٹی اپنے افعال میں کتنی جمہوری یا بھارتی ہے- یہ تریپورہ کے تازہ واقعہ اور اس کے بعد کیا جانے والی اس کی حمایت بتاتی ہے. ٹھیک ہے کہ لینن بھارتی نہیں تھے، لیکن کیا وہ صرف روس کے تھے…؟ جیسے کیا گاندھی یا بدھ صرف بھارت کے ہیں…؟ مدر ٹریسا کہاں کی تھیں…؟ ہٹلر بھی صرف جرمنی کا نہیں تھا، اس کے کئی مجسمے بدقسمتی سے ہندوستانی سیاست میں بھی دکھائی پڑتے ہیں. BJP جس نظریے کو پروان چڑھا رہی ہے، وہ بھی ہٹلر کو اپنے مہا پرشوں میں شمار کر رہی ہے – ہندو مہاسبھا کے بڑے لیڈر بی ایس مونجے باقاعدہ ہٹلر سے ملنے گئے تھے اور ساورکر بھارت کو جرمنی کی طرح وطن نہیں، پتری بھومی کہتے تھے.

جو نظریہ آج لینن کو غیر ملکی قرار دیتے ہوئے ان کے مجسمے کو گرانے کی حمایت کر رہا ہے، اس نے ایک دور میں گاندھی کو بھی مارا ہے. گاندھی تو غیر ملکی نہیں تھے. بہرحال، دیسی ودیسی کی اس بحث کو کچھ اور قریب سے دیکھیں. جسے پارلیمانی جمہوریت کہتے ہیں، وہ بھی مغرب سے آیا ہے. جس قوم پرستی پر BJP قربان رہتی ہے، وہ بھی غیر ملکی نظریہ ہے. یہ BJP کبھی غیر ملکی سرمایہ کاری کی مخالفت کرتی تھی، اب فخر کرتی ہے کہ اس کے وقت سب سے زیادہ غیر ملکی سرمایہ کاری ہو رہی ہے. کبھی وہ کہتی تھی کہ آلو کے چپس میں سرمایہ کاری کرے گی، مائیکرو چپس میں نہیں کرے گی، اب وہ دنیا بھر سے تکنیکی لین دین کا جوش دکھا رہی ہے.

بہرحال، تریپورہ میں BJP کے اتحاد کی حکومت بن رہی ہے. حکومت بننے سے پہلے کمیونسٹوں کے ساتھ تشدد کی خبریں آرہی ہیں. مورتی گرائی جا رہی ہے. یہ بھارت کو بھارت نہیں رہنے دینا ہے. افغانستان اور شام میں بدلنا ہے. جو لوگ مارکسزم کی لاشی کے چاروں طرف خوشی سے دانس کر رہے ہیں، انہیں اس سانحے سے ڈرنا چاہئے. یہ سانحہ بھارتی روایت کا حصہ نہیں ہے. لینن کی مورتی گرانے والے وہی لوگ ہیں جو دوسری جگہ گوڈسے کی مورتی لگاتے ہیں. لینن مٹ جائے اور گوڈسے بچ جائے- کم از کم یہ بھارت نہیں چاہتا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

محمد اسعد فلاحی

معاون تصنیفی اکیڈمی، مرکز جماعت اسلامی ہند

متعلقہ

Close