ہندوستان

‘پدماوت’ کی مخالفت، مگر کس کے اشارے پر؟

منورنجن بھارتی

پدماوت فلم کی مخالفت جاری ہے. کرنی سینا کے لوگوں نے احمد آباد میں ایک مال کے باہر قریب 50 موٹر سائیكلوں کو جلا ڈالا. اسی طرح اب سب کی نگاہیں گڑگاؤں اور نوئیڈا پر ہیں، جہاں بڑی تعداد میں اور بڑے- بڑے مال ہیں اور ان سب کے درمیان سب سے زیادہ حیران کرنے والی بات یہ ہے کہ کرنی فوج کے کسی بھی نمائندے نے اس فلم کو نہیں دیکھا ہے. یہ صرف آپ کے ملک میں ہو سکتا ہے کہ بغیر فلم دیکھے، بغیر کتاب پڑھے لوگ اس پر پابندی لگانے کا مطالبہ کرتے ہیں، آندولن کرتے ہیں، گاڑیاں جلاتے ہیں اور بین کا مطالبہ کرتے ہیں. جنہیں پدماوت دیکھنے کا موقع ملا ہے، ان کے مطابق اس فلم میں راجپوتانہ ٹھاٹھ کو دکھایا گیا ہے. خاص طور پر راجپوتوں کی عزت اور ان کی زبان کے پکے ہونے کی عادت کو.

فلم میں خلجی اور پدماوتي کا ایک بھی سین ساتھ میں نہیں ہے. خلجی کو بہت ہی برے کردار کا دکھایا گیا ہے. اس کا رول کافی حد تک منفی ہے. یہاں تک کی فلم میں خلجی کی بیوی کو پدماوتي کی مدد کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے. اب سوال اٹھتا ہے کہ جب فلم میں کچھ ہے ہی نہیں، تب بھی مخالفت کیوں ہے؟ دیكھنےوالي بات یہ ہے کہ پدماوت کی سب سے زیادہ مخالفت راجستھان، ہریانہ اور گجرات میں ہو رہی ہے، جہاں لوگ سڑکوں پر اتر آئے ہیں.اگر آپ غور كریں گے تو دیکھیں کہ ان تمام ریاستوں میں بی جے پی اقتدار پر قابض ہے. راجستھان کی وسندھرا حکومت کی تو مجبوری ہے کہ وہاں پر دو لوک سبھا سیٹوں کے لئے ضمنی انتخابات ہونے ہیں- اجمیر اور الور میں. جبکہ بھیلواڑا کے مانڈل گڑھ میں اسمبلی کے لئے ضمنی انتخابات ہیں. لہذا وسندھرا حکومت سے کسی بھی قسم کی کارروائی کی توقع کرنا ہی بے معنی ہے. اگر وسندھرا کو کارروائی کرنی ہوتی تو کرنی سینا کے سربراہ كالوي پر اسی دن مقدمہ کر دیتی، جس دن ان لوگوں نے پدماوت کے سیٹ کو توڑا تھا اور بھنسالی کو تھپڑ لگائے تھے. اگر اس وقت كالوي پر مقدمہ ہو جاتا تو آج یہ نوبت ہی نہیں آتی. مگر کرنی فوج کو چھوٹ ملتی گئی اور وہ عوام کے لئے ایک مصیبت بن گیا. جبکہ راجستھان حکومت کو یہ سب سوٹ کرتا ہے.

کیا پدماوت آندولن کے بہانے تشدد پسندی کو بڑھاوا دینے کی کوشش نہیں ہو رہی ہے؟ آخر حکومتوں کی یہ خاموشی کس کو پسند آ رہی ہے. گوركشا کے بہانے تشدد، پدماوت کے بہانے توڑ پھوڑ یہ سب اسی متشدد ہندوتوا کی طرف اشارہ کر رہا ہے، جس کا اندازہ سماج کو حالیہ دنوں میں ہوا ہے. مگر حکومتیں کارروائی کے بجائے خاموش تماشائی بنی ہوئی ہیں۔ اور اظہار رائے کی آزادی کا کیا، وہ تو آئین میں ہی ہے، مگر اس وقت تک جب تک حکومتیں اس کی اجازت دیں.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close