ہندوستان

چکنگنیا کا چیلنج!

رویش کمار

کیا دہلی کی تمام ایجنسیوں کے پاس وائرل سے نمٹنے کے لئے کافی وسائل ہیں؟ جب آپ یہ سوال پوچھیں گے تب آپ کو پتہ چلے گا کہ یہ ہر سال کیوں پھیل رہا ہے اور رک کیوں نہیں رہا ہے. ہم دہلی والے چكنگنيا کو لے کر ایم سی ڈی سے لے کر دہلی حکومت تک سے کافی ناراض ہیں. مرکزی حکومت نے بھی کہا ہے کہ دہلی کو 11 ایڈوائزری جاری ہوئی ہیں. لیکن کیا ہمیں معلوم ہے کہ ملیریا محکمہ کام کس طرح کرتا ہے؟ اس میں کام کرنے والے لوگ ہیں بھی یا نہیں؟ مشینیں ہیں بھی یا نہیں؟ اگر یہ نہیں ہوگا تو ایڈوائزری کو عمل میں کون لے آئے گا؟

28 دسمبر، 2012 کو جنوبی دہلی میونسپل کارپوریشن نے دہلی سب آرڈنیٹ سروسز سلیکشن بورڈ (ڈی ایس ایس ایس بی) کو لکھا کہ اسے 302 اسسٹنٹ ملیریا انسپکٹر چاہئیں اور 108 اسسٹنٹ پبلک ہیلتھ انسپکٹر چاہئیں. ان اسامیوں کو بھرنے کے لئے 2013 میں چار بار، 2014 میں دو بار اور 2015 میں دو بار خط بھیجا گیا، مگر کوئی بھرتی نہیں ہوئی ہے.

ہنگامی اجلاس سے خبروں میں تیزی تو آ جاتی ہے کہ ایجنسياں حرکت میں آ گئیں ہیں، لیکن جب ملازم نہیں ہوں گے تو آپ کی گلی میں فوگنگ مشین لے کر کون آئے گا. پہلے سے احتیاط کون برتےگا؟ ممبر اسمبلی، وزیر یا رکن پارلیمنٹ دکھاوے کے لئے تو ایک دن فوگنگ کر سکتے ہیں، لیکن اس کے بعد معاملہ وہیں پہنچ جائے گا.

جیسے آپ بی جے پی کے رکن اسمبلی اوپی شرما کو فوگنگ مشین کے ساتھ دیکھ سکتے ہیں. کیا آپ نے سیاست شروع ہونے سے پہلے بھی فوگنگ مشین کے ساتھ انہیں دیکھا تھا. اوپی شرما رکن اسمبلی ہیں. ان کے پاس اور بھی ذمہ داریاں ہیں. کیا یہ آپ کے علاقے میں اکیلے فوگنگ کر لیں گے؟ اسی طرح دہلی حکومت کے وزیر کپل مشرا نے بھی فوگنگ کرتے ہوئے تصویر کھنچائی. کیا کپل مشرا اپنی وزارت کا کام چھوڑ کر روز روز فوگنگ کریں گے؟ شام کو دہلی کے سونیا وہار علاقے میں مچھروں نے دو انتہاؤں کی مخالف پارٹیوں کے لیڈروں کو ایک کر دیا. بی جے پی رہنما منوج تیواری اور ‘آپ’ لیڈر کپل مشرا ایک ساتھ فوگنگ کرتے نظر آئے. یہ تصاویر اچھی تو لگتی ہیں، مگر صحیح سوال کو پیچھے کر دیتی ہیں. سوال یہ ہونا چاہیے کہ رکن اسمبلی اوپی شرما، وزیر کپل مشرا اور ایم پی منوج تیواری کو فوگنگ کرنے کی ضرورت کیوں پڑی؟ کیا حکومت اور کارپوریشن کے پاس لوگ نہیں ہیں؟ بلکہ یہی جواب ہے کہ لوگ نہیں ہے، تبھی یہ لوگ تصویری نمائش کر رہے ہیں!

میں نے ترکمان گیٹ وارڈ کے کونسلر عالم محمد اقبال سے بات کی. عالم اقبال اب کانگریس میں ہیں، لیکن آزاد امیدوار جیتے تھے. وہ سٹی زون ایم سی ڈی کے چیئرمین ہیں. ان کی معلومات کی کسی اور نے تصدیق نہیں کی، لیکن انہوں نے اپنی ذمہ داری پر بتایا کہ شمالی ایم سی ڈی میں چھ زون ہیں. سٹی زون ان چھ میں سے ایک زون ہے.سٹی زون میں سات کونسلر آتے ہیں اقبال کے وارڈ میں 45000 ووٹر ہیں. 80 سے 90 گلیاں ہیں اور گھروں کی تعداد ہزاروں میں ہیں.

اقبال نے بتایا کہ ان کے وارڈ کے لئے چار فوگنگ مشینیں ملی ہیں. بہت مشکل سے دو مشینیں لے کر ہی چلنے لائق ملازم مل پاتے ہیں. ایک ڈیڑھ گھنٹے کے بعد مشین کا ڈیزل اور دوا ختم ہو جاتے ہیں. ان دو مشینوں کے دم پر وہ 80 سے 90 گلیوں میں فوگنگ کا کام مکمل کر ہی نہیں سکتے ہیں. میں نے اقبال سے پوچھا کہ ان کے زون میں ملیریا کنٹرول کا ڈھانچہ کیا ہے. جو انہوں نے بتایا وہ اس طرح ہے- سب سے اوپر ڈپٹی ہیلتھ افسر ہوتا ہے. اس کے نیچے اینٹی ملیریا افسر ہوتا ہے جو اس وقت کوئی نہیں ہے. اس کے نیچے سینئر ملیریا افسر ہوتا ہے جو اس وقت کوئی نہیں ہے. اس کے نیچے ایک وارڈ کے لئے 9 ملیریا انسپکٹر چاہئیں مگر ایک ہی ہے. اس کے نیچے اینٹی ملیریا انسپکٹر چاہئیں 40، مگر 12 ہی ہیں.

اگر آپ اپنا وقت دہلی حکومت بمقابلہ ایم سی ڈی، عام آدمی پارٹی بمقابلہ بی جے پی یا مرکز بمقابلہ دہلی میں کھپا دینا چاہتے ہیں تو وہ بھی ٹھیک ہے لیکن سوال یہ ہے کہ جب محکموں میں فیصلے کو لاگو کرنے والے ملازم نہیں ہوں گے تو اس تو تو میں میں کا کیا نتیجہ نکل سکتا ہے. شمالی دہلی میونسپل کارپوریشن میں 129 ملیریا انسپکٹر ہونے چاہئیں لیکن 50 ہی ہیں. مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن میں کوئی بھی سینئر انسپکٹر نہیں ہے. مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن میں 65 ملیریا انسپکٹر ہونے چاہئیں لیکن 19 ہیں.

ہمارے ساتھی رويش رنجن شکلا نے معلوم کرکے بتایا ہے کہ نچلی سطح پر ادویات چھڑکنے کے لئے بیلداروں کو لگایا گیا ہے جبکہ یہ ان کا کام نہیں ہے. ان کی چھٹیاں منسوخ کر دی گئی ہیں. انہیں کہا جا رہا ہے کہ وہاٹس ایپ سے تصویر بھیجیں. یہ سننے میں تو ٹھیک لگتا ہے کہ کام ہو رہا ہے لیکن جب کام کرنے والا نہیں ہوگا تو مکمل کام ہو ہی نہیں سکتا. ایک دو گلیوں کی تصاویر سے خبر شائع ہو جائے گی اور آپ سن کر سو جائیں گے. رويش رنجن شکلا کو ذرائع نے بتایا کہ مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن میں 5 ستمبر کو ہی ادویات آئیں ہیں. ہم کسی ایک اور سورس سے اس خبر کی تصدیق نہیں کر سکے. پرانی دہلی کے سٹی زون کے چیئرمین اقبال سے یہ بھی پتہ چلا کہ اس سال ایم سی ڈی نے ہر وارڈ میں 900 کے قریب میڈیكیٹیڈ مچھردانی تقسیم کی ہے.

کچھ دن پہلے ہم نے اس خاص مچھردانی کے بارے میں بتایا تھا. جب دہلی میں 45000 کی آبادی پر 900 مچھردانی بٹ رہی ہے تو آپ تصور کریں کہ باقی ریاستوں اور دور دراز کے گاؤں شہروں میں کیا حالت ہوتی ہے. میڈیكیٹیڈ مچھردانی  بازار میں نہیں بیچی جا سکتی ہے. اسے حکومت ہی بانٹ سکتی ہے اور حکومت کے پاس ہو سکتا ہے بجٹ ہی نہ ہو. 900 مچھردانی کونسلر کن کن لوگوں میں بانٹےگا. پھر بھی چكنگنيا کور کرنے نکلے تمام صحافیوں کو دیکھنا چاہئے کہ یہ مچھردانی کہاں تقسیم ہوئی ہے. اس کا کیا ہو رہا ہے؟ اگر دہلی کا ہی کوریج ہو رہا ہے تو ذرا ٹھیک سے ہو جائے.

آپ میں سے بہت سے لوگ میونسپل کو فون کرتے ہوں گے کہ ہمارے یہاں فوگنگ کیجئے. وہ نہیں آتے ہوں گے، آپ نیتا سے لے کر وزیر اعظم تک پر اپنی جھنجھلاہٹ ظاہر کرتے ہوں گے. میڈیا کو کوستے ہوں گے، پھر ملک سے مایوس ہو جاتے ہوں گے. کبھی یہ پوچھيے کہ وہ کیوں نہیں آ رہا ہے؟ اسی سوال کا جب جواب نہیں ملا تو مشرقی دہلی کے ویلکم وارڈ اور نوین شاہدرہ وارڈ کے ریزیڈنٹ ویلفیئر ایسوسی ایشن نے فیصلہ کیا کہ اپنی فوگنگ مشین خریدیں. دونوں وارڈ میں قریب قریب دس سے گیارہ ہزار مکان ہوں گے. اس کے لئے اب لوگوں نے اپنے اخراجات سے فوگنگ مشین کا انتظام کیا ہے. بدھ کی شام فوگنگ مشین کا افتتاح ہوا اور ایک ایک رکشے پر لاد کر دونوں مشینیں دو سمتوں میں نکل گئیں. سدیش چودھری نے بتایا کہ اب اور انتظار نہیں کر سکتے ہیں. علاقے کے ہر گھر میں کوئی نہ کوئی وائرل یا چكنگنيا سے بیمار ہے. ایم سی ڈی یا دہلی حکومت کے جھگڑے میں ہم پھنسے رہے تو وبا اور پھیل جائے گی.

آپ پھر سرکاری ایجنسیوں کو ذمہ داری کے سوال سے آزاد کرنے کے لئے سوچیں گے کہ شہریوں کو پہل کرنی چاہئے. یہ بہت اچھا ہے. لیکن پھر ٹیکس کیوں دیا جا رہا ہے؟ پھر ایم سی ڈی کیوں ہے؟ دہلی حکومت کیوں ہے؟ کیا آپ کو معلوم ہے کہ ان مشینوں پر کتنا خرچ آتا ہے؟

ویلکم وارڈ کے لوگوں نے 10 لیٹر ڈیزل والی مشین 59000 میں خریدی ہے. ایک چھوٹی مشین بھی لی ہے، جس کی قیمت 19500 ہے. ایک مشین کو چلانے کے لئے دو لوگ چاہئیں. کیا یہ دو لوگ ملیریا کی دوا کے اثر سے واقف ہیں، تربیت یافتہ ہیں. لیکن لوگ اپنی جان اور جیب پر کھیل کر فوگنگ کا انتظام کر رہے ہیں. کئی ہاؤسنگ سوسائٹی میں لوگوں نے ایسا کیا ہے. اندراپورم اور وسندھرا کی کئی ہاؤسنگ سوسائٹی نے اپنے اخراجات پر مشینیں خریدی ہیں، دوائیں خریدی ہیں. جب حکومتی ایجنسی اپنی ذمہ داری پوری کرنے کی پوزیشن میں ہی نہیں ہے تو ہم ان کے نمائندوں کے بیان پر اپنا وقت ضائع کیوں کر رہے ہیں؟ جب لوگوں کو اپنی جیب سے مشینیں خريدنی پڑ رہی ہیں تو ملیریا محکمہ کے فنڈ کا کیا ہو رہا ہے؟

دہلی میں دھڑا دھڑ یہ مشینیں فروخت ہو رہی ہیں. کیا حکومت کو معلوم ہے کہ ان مشینوں کے ذریعہ کتنے علاقے میں فوگنگ ہوئی ہے؟ کیا حکومت ان کی شراکت کو اپنے اعداد و شمار میں شامل کرتی ہے. ہم نے انڈیا مارٹ ڈاٹ ڈاٹ کام پر جا کر دیکھا تو فوگنگ مشین بیچنے والی کئی دکانوں کا پتہ ملا. ان میں سے ہم نے ایک دو سے بات کی تو نانگلوئی علاقے کے ایک مشین بیچنے والے نے بتایا کہ ان کے زیادہ تر خریدار اسکول والے ہیں. ان کے یہاں جو مشینیں ہیں وہ چار ہزار سے لے کر 30 ہزار تک کی ہیں. اس ایک دکان سے اس سیزن میں تقریبا 100 مشینیں فروخت ہوئی ہیں. پرانی سبزی منڈی کے ایک اور دکاندار نے بتایا کہ اس سال گزشتہ سال کے مقابلے میں زیادہ فروخت ہو رہی ہے. ریزیڈنٹ ویلفیئر سوسائٹی، ہاؤسنگ سوسائٹی اور اسکول والے خرید رہے ہیں. ان کے یہاں بھی اس سیزن میں 100 کے قریب فوگنگ مشینیں فروخت ہوئی ہیں. اس دکاندار کے یہاں 3500 سے لے کر 8000 کی مشینیں ہیں. بڑی مشینیں 20000 سے لے کر 35000 کی آتی ہیں. زیادہ تر خریداری پرائیویٹ ایجنسیاں کرتی ہیں. دواؤں کی قیمت 600 روپے لیٹر سے لے کر 1500 روپے لیٹر تک  ہیں. اب ہم نے مشرقی دہلی کے شاہدرہ کے ایک اور دکاندار سے بات کی ہے تو انہوں نے کہا کہ کافی فروخت ہو رہی ہیں. ان کے یہاں بھی 12000 سے 20000 کی مشینیں ہیں. پٹرول سے چلنے والی مشینیں 17 ہزار سے 70 ہزار تک کی ہیں.

اس کا مطلب ہے کہ دہلی میں پرائیویٹ لوگوں نے بھی بڑی تعداد میں کروڑوں کی فوگنگ مشینیں خریدی ہیں. کیا حکومت کو معلوم ہے کہ عوام اپنے طور پر ایم سی ڈی کا کام کر رہی ہے. دہلی میں چكنگنيا سے مرنے والوں کی تعداد دس ہو گئی ہے. نو اموات اپولو اور سر گنگا رام اسپتال میں ہوئی ہیں اور ایک موت ایم سی ڈی کے اسپتال باڑا ہندو راؤ میں ہوئی ہے. مرکز اور دہلی کے وزیر صحت نہیں مانتے کہ چكنگنيا سے موت ہوتی ہے.

سر گنگا رام اسپتال میں چكنگنيا سے چار اموات ہوئی ہیں، ان کے کریٹکل کیئر کے وائس چیئرمین سمت رے نے کہا کہ چاروں اموات میں ایک مماثلت نظر آئی ہے. دہلی کے مضافات غازی آباد اور نوئیڈا میں بھی مریضوں کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے. نوئیڈا کے سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے لئے جگہ نہیں ہے. ڈی ایم اسپتالوں کا دورہ کر رہے ہیں. چكنگنيا کو لے کر ہنگامہ دہلی میں ہے لیکن مرکزی حکومت کے اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ دہلی سے بھی سات گنا زیادہ چكنگنيا کے مریض کرناٹک – 8941 (75 فیصد سے زیادہ کیس)، مہاراشٹر – 839، آندھرا پردیش – 492، تلنگانہ – 404، مغربی بنگال – 389. پورے ملک میں 12225 کیس سامنے آئے ہیں. دہلی میں 31 اگست تک چكنگنيا کے مریضوں کی تعداد 432 تھی لیکن اب 1400 سے زائد بتائی جا رہی ہے. یہ بات پہلے بھی آ چکی ہے کہ ہمارے ملک میں مچھروں سے ہونے والی بیماری کا ریکارڈ رکھنے کا انتظام مکمل طور درست نہیں ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close