ہندوستان

گوركشا کے نام پر یہ مار پیٹ کب رکے گی؟

رویش کمار

اگر قانون کا معاملہ ہے تو قانون کو اپنا کام کرنا چاہئے. قانون کے بدلے اگر وہ کام کوئی تنظیم کرنے لگے تو ایک دن اس کا حوصلہ بڑھ جائے گا. یہاں تک بڑھ آئے گا کہ وہ یہ بھی طے کرنا چاہے گی کہ آپ کیا پہن کر نکلیں، کس سے محبت کریں، اور کیا کیا کھائیں. حال ہی میں پارلیمنٹ میں گجرات میں نچلی ذات کے چار نوجوانوں کی پٹائی کے بعد بحث ہوئی اور وہاں بھی ان ساری تشویش کا اظہار کیا گیا. اراکین پارلیمنٹ نے کہا کہ مسلم اور دلت سماج کے لوگوں کو اس کے نام پر نشانہ بنایا جا رہا ہے. بحث کے علاوہ گجرات میں اس معاملے میں 20 افراد گرفتار کئے گئے ہیں پھر بھی لگتا ہے کہ ان اشاروں کا اثر ان تنظیموں پر نہیں ہو رہا ہے.

مدھیہ پردیش کے مندسور میں پولیس کے جوانوں کی موجودگی میں دو خواتین کو بری طرح مارا گیا. پولیس ریلوے اسٹیشن پر آئی تھی ان دونوں خواتین کو گرفتار کرنے لیکن بھیڑ میں شامل لوگ ان پر ہاتھ اٹھانے لگے. ایک خاتون کو اتنا مارا کہ گر ہی گئی. پولیس نے نہیں مارنے کی اپیل بھی کی لیکن ہجوم نے اس کی بھی نہیں سنی. بعد میں مندسور کے کوتوالی تھانے کے ایس ایچ او نے کہا کہ انہوں نے ایسے کسی واقعے کے بارے میں نہیں سنا ہے. کسی خاتون نے شکایت ہی نہیں کی ہے. جبکہ ان دونوں عورتوں کو پولیس نے گرفتار کیا ہے. الزام ہے کہ یہ بغیر لائسنس کے 30 کلو گوشت لے کر جا رہی تھیں. پولیس نے مقامی ڈاکٹر سے جانچ کرائی تو گائے کا نہیں، بھینسے کا گوشت نکلا. انہیں عدالت میں پیش کیا گیا ہے اگر الزامات صحیح نکلے تو مدھیہ پردیش کے كیٹل پریوینشن ایکٹ کے مطابق ایک سال کی جیل ہو سکتی ہے. مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ نے کہا ہے کہ کوئی قانون اپنے ہاتھ میں نہیں لے سکتا ہے. جانچ ہوگی. اسے لے کر راجیہ سبھا میں پھر تکرار ہو گئی.

بھیڑ کی پٹائی کے بعد اس خاندان پر جو گزرتی ہے آپ کو اس کے بارے میں سوچنا چاہئے. مار پیٹ سے زخمی ہونے کے بعد اگر یہ خواتین دو دن بھی نہیں کمائیں گی تو خاندان کس طرح چلائیں گی. کسی کی جان چلی جائے تو کیا ہوگا. کرناٹک کے چک منگلور میں كوپا گاؤں کے 53 سال کے بلراج کے گھر میں گھس کر پٹائی کر دی گئی. بلراج نچلی ذات کے ہیں. ان کے گھر میں گائے کا گوشت رکھے ہونے کا شک تھا.

گجرات میں جن چار بھائیوں کو بے رحمی سے مارا گیا ہے ان میں سے ایک رمیش بھائی سرويا کی حالت سنگین ہے. رمیش بھائی کو احمد آباد کے سول اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے. ان چاروں بھائیوں کا راجکوٹ کے اسپتال میں علاج چل رہا تھا جہاں سے منگل کو انہیں چھٹی دے دی گئی. لیکن گاؤں پہنچنے کے بعد رمیش بھائی کے منہ اور کان سے خون آنے لگا جس کے بعد انہیں فوری طور پر احمد آباد کے لئے روانہ کیا گیا. رمیش بھائی سرويا کے ساتھ ساتھ باقی کے تین بھائیوں کو بھی دوبارہ بھرتی کر دیا گیا ہے لیکن ان کی حالت  نارمل ہے. منگل کو چار اور لوگوں کو گرفتار کیا گیا. سی آئی ڈی کی ابتدائی تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ جس گائے کا چمڑہ یہ لوگ اتار رہے تھے اسے شیر نے مارا تھا. جس کے بعد گائے کے مالک نے ان نوجوانوں کو بلا کر دفن کرنے کے لئے کہا. اس کے بعد انہیں مارنے والے پہنچ گئے.

کہیں باپ مارا گیا، کہیں بھائیوں کو مارا گیا، اب عورتوں پر بھی ہاتھ اٹھ رہے ہیں. گائے ایک بہانہ ہے. بہت سے لوگوں کی ذہنیت اب بھی وہیں ہے کہ دلت باورچی کھانا بنائے گا تو اس کے ہاتھ کا نہیں کھائیں گے. لیکن ان ہی مایوس لمحوں کے درمیان کوئی آ جاتا ہے جسے دیکھ کر آپ اطمینان کر سکتے ہیں کہ کوئی تو ہے جو قدم اٹھا رہا ہے.

ravi2

(اورنگ آباد: ڈی ایم (بائیں) نے دلت خاتون باورچی کے ہاتھ کا کھانا کھایا …)

یہ بہار کے اورنگ آباد ضلع کے کلیکٹر کنول تنج ہیں. ان کے ساتھ ضلعی تعلیمی عہدیدار بھی کھانا کھا رہے ہیں. رفیع گنج تھانے کے بٹورا میں واقع ایک اسکول میں بچوں کے ساتھ ضلع مجسٹریٹ کنول تنج نے بیٹھ کر کھانا کھایا تاکہ لوگوں کے ذہن سے یہ بات نکلے کہ کسی کے ہاتھ کا کھانا ناپاک ہوتا ہے. ہمارے دماغ میں ذات اس قدر بیٹھا ہے کہ کلیکٹر کو کھا کر بتانا پڑ رہا ہے کہ ہم کھا سکتے ہیں. ہوا یہ تھا کہ اس اسکول میں باورچی کی موت ہو گئی. اس کے بعد اس کی بیوی کو کھانا بنانا تھا. دونوں نچلی ذات کے ہیں. پرنسپل گووند یادو کو یہ منظور نہیں ہوا کہ بیوہ کھانا بنائے گی. انہوں نے ارمیلا کو اسکول سے نکال دیا. ارمیلا کے ہمت کی بھی داد دینی ہوگی کہ وہ 45 کلومیٹر دور چل کر کلیکٹر سے شکایت کرنے پہنچ گئی. کلیکٹر نے بھی تاخیر نہیں کی اور حکم دے دیا کہ اگلے ہی دن اسکول آ رہے ہیں. ضلع مجسٹریٹ نے اسکول کا دورہ کیا، طلبہ اور گاؤں والوں سے بھی بات کی. الزام صحیح لگا تو پرنسپل صاحب کو معطل کر دیا اور ارمیلا کو پھر سے بحال کر دیا ہے. کلیکٹر نے پورے ضلع کے اسکولوں میں حکم جاری کیا ہے کہ کہیں ایسا معاملہ اور بھی تو نہیں ہوا ہے.

ravi3

(ویزواڑا ولسن)

اس ذات پات کے نظام کے خلاف ہر دن کوئی نہ کوئی جدوجہد کر رہا ہے. ایسے ایک ایک دن جدوجہد کرتے کرتے ایک شخص کے تیس سال گزر گئے. ویزواڑا ولسن نام ہے. ویزواڑا ولسن کو رمن میگسيسے ایوارڈ ملا ہے. ویزواڑا  کا کام آپ کو جاننا چاہئے. ویزواڑا کو جو ایوارڈ ملا ہے اس سے ملک کا ہر صفائی ملازم فخرمند ہو رہا ہوگا. ولسن نے ان کے احترام اور حق کی طویل جنگ لڑی ہے. کرناٹک کے کولار گولڈ فلڈ ٹاؤن شپ میں ایک دلت خاندان میں پیدا ہوئے ویزواڑا ولسن کا خاندان نسلوں سے سر پر میلا اٹھاتا تھا. آج کے کئی ناظرین میلا کو مٹی سمجھ سکتے ہیں. کیچڑ سمجھ سکتے ہیں. دراصل سر پر پخانا اٹھانے کا کام ان کے سر پر لادا گیا. ان کے خاندان نے لوگوں کا پخانا سر پر اٹھایا. اب ہمارا آئین اس کی اجازت نہیں دیتا ہے مگر اب بھی یہ رواج ختم نہیں ہوا ہے. ولسن اپنے خاندان میں پہلے پڑھے لکھے شخص ہیں. اسکولوں میں جب ولسن کے ساتھ چھواچھوت ہوا تو ولسن کو غصہ آیا لیکن ولسن نے اس غصے کو تبدیل کر دیا. وہ گئو رکچھک کی طرح بھیڑ لے کر اسٹیشن پر دو کمزور خواتین کو مارنے نہیں گئے بلکہ لاکھوں صفائی ملازمین کو اس سے نجات دلانے کی جدوجہد کے راستے پر چلے گئے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close