ہندو مسلم ڈبیٹ پرو جکٹ کا سنہری دور

0

رویش کمار

انڈین ایکسپریس میں ماہر اقتصادیات کوشِک باسو کا مضمون پڑھیے. بتا رہے ہیں کہ بھارت کی جی ڈی پی کا تیس سال کا اوسط نکالنے پر 6.6 فیصد آتا ہے. اس وقت بھارت اس اوسط درجے سے نیچے آگیا ہے. پہلی دو سہ ماہی میں ترقی 5.7 فیصد اور 6.3 فیصد رہی ہے. حکومت کا ہی اندازہ ہے کہ 2017-18 میں گروتھ ریٹ 6.5 پرتشت رہے گا.

ہم تیس سال کے اوسط سے بھی نیچے چلے آئے ہیں. اب وقت کم ہے. لہذا آپ کو کبھی پدماوت تو کبھی کسی اور بہانے فرقہ وارانہ سُر کے ابھار کا سامنا کرنے کے لئے مجبور کیا جاتا ہے۔ کیونکہ اب ملازمتوں پر جواب دینے کے لئے کم وقت ملتا ہے. 2014 کے انتخابات میں پہلی بار کے ووٹروں کو خوب پوچھا گیا. ان کا اب استعمال ہو چکا ہے وہ اب بسوں کو جلانے اور فلم کی حمایت اور مخالفت میں بچھائے گئے فرقہ وارانہ جال میں پھنس چکے ہیں. اقتدار کو نئی خوراک چاہئے تو پھر 2019 میں ووٹر بننے والے نوجوانوں کی تلاش ہو رہی ہے.

نوٹ بندي نے معیشت کی کمر توڑدی ہے کیونکہ یہ عقل سے پرے  فیصلہ تھا. ہم اس کے برے اثر سے یقیناً باہر نکل آئے ہیں اور ہو سکتا ہے کہ آگے جاکر اچھا ہی ہو لیکن ان تین سالوں کی ڈھلان میں لاکھوں کی نوکری چلی گئی، بہتوں کو نوکری نہیں ملی، وہ کبھی لوٹ کر نہیں آئیں گے. اسی لیے ایسے نوجوانوں کو مصروف رکھنے کے لئے فرقہ واریت کا اعلان زور شور سے اور شان سے جاری رہے گا کیونکہ اب یہی شان دوسرے سوالات کو کنارے لگا سکتی ہے.

کوشِک باسو نے لکھا ہے کہ ہر سیکٹر میں کمی ہے. بھارت اپنی لیاقت سے بہت کم کارکردگی کا مظاہرہ کر رہا ہے. کم از کم بھارت برآمد کے معاملے میں اچھا کر سکتا تھا. بھارت میں عدم مساوات تیزی سے بڑھ رہی ہے اور ملازمتوں کے امکانات اتنی ہی تیزی سے کم ہوتے جارہے ہے. ادھر ادھر سے خبریں جٹا کر ثابت کیا جا رہا ہے کہ روزگار بڑھ رہے ہیں جبکہ حقیقت یہ ہے کہ مودی حکومت اس محاذ پر فیل ہو چکی ہے. اس کے پاس صرف اور صرف انتخابی کامیابی کا شاندار ریکارڈ بچا ہے. جسے ان سب سوالوں کے بعد بھی حاصل کیا جا سکتا ہے.

کوشک باسو نے لکھا ہے کہ 2005-08 میں جب گروتھ ریٹ زیادہ تھا تب بھی نوکریاں کم تھیں، لیکن اس دوران کاشت اور اس سے منسلک سرگرمیوں میں تیزی آنے کی وجہ سے کام کرنے کی آبادی کے 56.7 فیصد حصہ کو کام مل گیا تھا. دس سال بعد یہ فیصد گھٹ کر 43.7 فیصد پر آ گیا. اس میں مسلسل گراواٹ آتی جا رہی ہے.

لہذا اب آنے والے دنوں میں بھانت بھانت کے ہندو مسلم پروجیکٹ کے لئے تیار ہو جائیں. آپ اس میں پھسیں گے، بحث کریں گے، دن اچھا کٹے گا، جوانی خوب بيتےگي. پدماوت کے بعد اگلا کون سا مسئلہ ہو گا کہہ نہیں سکتے۔

تمام طرح کے انتخابی کمیشنز کے سامنے لاچار کھڑے نوجوان بھی اسی میں مصروف ہو جائیں. وہی بہتر رہے گا. فرقہ وارانہ تشدد اس عمر میں خوب جچتا ہے. وہ نوکریوں کے لیے فارم بھرنا بند کر دیں اور  ہندو مسلم ڈبیٹ پراجیکٹ میں شامل ہو جائیں.

میں ضمانت دیتا ہوں کہ دس بارہ سال بغیر کام کے مزے میں کٹ جائیں گے. افسوسناک بات  ہے لیکن کیا کر سکتے ہیں. میرے کہنے سے آپ ركیں گے تو نہیں، کریں گے ہی اور کر بھی رہے ہیں.

نوٹ- آئی ٹی سیل والے اب آجائیں تبصرہ کرنے. 600 کروڑ ووٹ آپ کے نیتا  کو ہی مل سکتے ہیں. آبادی کا چھ گنا. واقعی بھارت نے ہی ’صفر‘ کی دریافت کی تھی.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


تبصرے