ملی مسائل

طلاق کے معاملے میں بھی اسلامی ہدایات سراپا رحمت ہیں!

ندیم احمد انصاری

انسانی زندگی میں نکاح و شادی کی ضرورت و اہمیت سے کسی کو انکار نہیں، ان لوگوں میں سے اکثریت بھی اس کی اہمیت کا اعتراف کیے بغیر نہیں رہ سکتی، جو کسی بنا پر مجرد زندگی گزارتے ہیں۔ انسانی زندگی کو صحیح طور پر چلانے کے لیے یہ بھی ضروری ہے کہ جن چیزوں کو زندگی میں اختیار کیا جائے، ضرورتِ شدیدہ کے موقعے پر اس سے خلاصی و نجات کی بھی گنجائش ہو، ایسا نہ ہونے کی صورت میں انسان بعض دفعہ زندگی سے ہاتھ ہی دھو بیٹھتا ہے، جس سے کوئی دانا ناواقف نہیں،اسی کے پیشِ نظر مذہب نیز قانون میں نکاح کے ساتھ طلاق کا اختیار بھی رکھا گیا ہے اور اسلام نے دیگر معاملات کے ساتھ طلاق کے باب میں بھی ایسی ہدایات دی ہیں جو سراپا رحمت ہیں۔جو انسان نکاح کو ضروری سمجھتا ہے،وہ طلاق کی ضرورت سے بھی انکار نہیں کرسکتا اور خاص بات یہ کہ کوئی بھی نکاح و طلاق کو عام معاملات؛ اجارہ و بیع و شرا پر قیاس نہیں کرتا بلکہ اکثر انسانی آبادی ایسا سمجھنے والوں کو اچھی کی نگاہ سے نہیں دیکھتی، اسی لیے اکثریت کے نزدیک نکاح و طلاق کے مقررہ اصول و ضوابط ہیں، جن کی پابندی لازم و ضروری ہے، جس سے ظاہر ہے کہ سماج و معاشرہ صحت مند رہتا ہے۔معاملۂ ازدواج کی درستگی عام نسلِ انسانی کی درستگی کی ضامن ہوتی ہے، اس لیے قرآن مجید او ر شریعتِ اسلامی نے ان معاملات کو بہت وضاحت و اہتمام کے ساتھ بیان کیا ہے اور نکاح کو صرف ایک عام انسانی معاملہ نہ مان کر اسے عبادت میں داخل کر دیا تاکہ عمرانی مسائل اور اولاد کی تربیت جیسے اہم موضوعات کا حل آسانی سے ہو سکے۔
اس مختصر تمہید کے بعد عرضِ مسئلہ یہ ہے کہ سماج میں ہر طرح کے افراد پائے جاتے ہیں، وہ بھی جو مذہب کو جان سے زیادہ عزیز رکھتے ہیں، وہ بھی جو دیکھا دیکھی یا کسی مجبوری کے تحت مذہب پر عامل ہوتے ہیں اور وہ بھی جنھیں مذہب سے کوئی سروکار نہیں ہوتا نیز وہ بھی جو مذہب کو نیست و نابود یا بدنام کرنے کی ہر ممکن کوشش و سعی کرتے رہتے ہیں۔ خیر اس بابت ہمیں اس سے زیادہ کچھ عرض نہیں کرنا کہ دنیا کی اکثر آبادی کسی نہ کسی مذہب پر عمل کرنے والی ہے، پھر بھی مشاہدہ ہے کہ جو لوگ مذہب پر فقرے کستے اور اس کا مذاق اڑانے کی ادھیڑ بُن میں لگے رہتے ہیں ،ان کی دل چسپی کا خاص موضوع اسلام کے نکاح و طلاق کے مخصوص مسائل ہیں، جنھیں وہ گاہ بہ گااچھالنے کی کوشش کرتے ہیں اور سوئے اتفاق سے اس کے لیے انھیں ایسے مہرے بھی مل جاتے ہیں جو ان کے کام کو مزید آسان کر دیں۔یہ کوئی نیا واقعہ نہیں کہ سائرہ بانو نامی ایک عورت کے حوالے سے میڈیا میں ایک بار پھر ’طلاق‘ کو موضوعِ بحث بنایا گیا اور ہر جگہ ’طلاق، طلاق، طلاق‘ کا موضوع زیرِ بحث آگیا، جس پر ہر اہل و نا اہل رائے زنی کر رہا اور مندرجۂ ذیل سرخیاں ’’مسلمان مرد اپنی بیوی کو ایک لمحے میں تین مرتبہ لفظ طلاق بول کر نکال سکتا ہے اسے اپنی زندگی سے باہر‘‘۔ ’’تہری طلاق کے متنازع مسئلے کو شدید چیلنج کا سامنا‘‘۔’’ہندستان میں سپریم کورٹ تہری طلاق کو غیر آئینی قرار دینے کی لیے کر رہی ہے غور‘‘لگا کر بحث کو مزید دل چسپ بنانے کی کوششیں کر رہا ہے۔
دراصل گذشتہ ایک سال یعنی اکتوبر2015 میں ایک 35 سالہ خاتون، دو بچوں کی ماں ’سایرہ‘ شمالی ریاست اُتراکھنڈ میں علاج کے سلسلے میں اپنے والدین کے گھر گئی ہوئی تھی کہ اُسے اپنے شوہر کی جانب سے ایک خط موصول ہوا، جس میں لکھا تھا کہ وہ اس سے علاحدگی اختیار کر رہاہے۔فروری میں مایوس سایرہ بانو نے سُپریم کورٹ میں درخواست دایر کی، جس میں تہری طلاق پر مکمل پابندی کا مطالبہ کیا، جو ان کے مطابق مسلمان مَردوں کو اجازت دیتی ہے کہ وہ اپنی بیویوں کے ساتھ ’ذاتی سامان‘ جیسا سلوک کریں۔جب کہ مسلمان ہندستان کی سب سے بڑی اقلیتی برادری ہے اور اُن کی شادیاں اور علیحدگیاں اسلامی قوانین کے مطابق ہوتی ہیں،اس کے بعد سے مسلسل وہ لوگ آگ میں گھی ڈالنے کا کام کر رہے ہیں جو بہ زعمِ خود اسے اسلامی قانون ماننے کو تیار نہیں، ان کا ماننا ہے کہ اگرچہ معاشرے میں آج تک اس پر عمل کیا جاتا رہا ہے لیکن یک طرفہ فوری طلاق کا شریعت یا قرآن سے کوئی ثبوت نہیں،اس لیے ان کا مطالبہ ہے کہ ’زبانی طلاق‘ اور طلاقِ بدعی‘ کو ممنوع بلکہ منسوخ قرار دیا جائے۔ ان میں سے بعض افراد تو ایسے بھی ہیں جو ہند میں مسلمانوں کے عائلی قوانین کی حفاظت میں سرگرم مسلم پرسنل لا بورڈ کو ہی سرے سے کالعدم قرار دینے کا مطالبہ کرنے لگے ہیں، بہ ایں وجہ کہ ان کی سطحی معلومات کے پیشِ نظر جب ’طلاقِ بدعی حرام ہے تو وہ نافذ کیوں کر ہو سکتی ہے؟ ‘موقع کا فایدہ اٹھاتے ہوئے انھوں نے طلاقِ سکران و طلاقِ غضبان جیسے حساس ترین مسئلوں کو بھی اچھالنے کی کوشش کی ہے۔ظاہر ہے کہ ان تمام دعووں یا مطالبوں میں ایسا کچھ بھی نہیں جن پر علمی گفتگو کی از سرِ نو ضرورت ہو، اس لیے کہ ان تمام اعتراضات کے جوابات اپنے مقام پر دیے جا چکے ہیں اور اگر ضرورت و موقع ہواتو ہم بھی اس پر تفصیل سے گفتگو کریں، اس وقت مختصراً عرض ہے کہ تیسری طلاق کے غیر مستحسن ہونے کی طرف خود اسلوبِ قرآن میں واضح اشارہ پایا جاتا ہے اور حدیث میں رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک ارشاد سے تیسری طلاق کا خصوصیت سے مبغوض و مکروہ ہونا بھی ثابت ہوتا ہے۔ ایک شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا کہ اللہ تعالیٰ نے ’الطلاق مرتان‘ فرمایا، تیسری طلاق کا یہاں کیوں ذکر نہیں؟[جیسا کہ پندرہ صدیاں گزرنے کے بعد بھی آج تک بعض ناواقف اعتراض کرتے ہیں، تو اس کے جواب میں] آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرما:’تسریحٌ باحسان‘ جو بعد میں مذکور ہے، وہی تیسری طلاق ہے۔مطلب اس کا جمہور علماء کے نزدیک یہ ہے کہ جو کام تعلقاتِ زوجیت کے کُلّی انقطاع کا تیسری طلاق سے ہوتا ہے، وہی کام اس طرزِ عمل سے ہو جائے گا۔۔۔یعنی اگر کسی نے تیسری طلاق دے ہی ڈالی تو اب اس نے شریعت کی دی ہوئی تمام آسانیوں کو نظر انداز کر کے از خود ختم کر دیا، جس کی سزا یہ ہے کہ اب وہ رجعت کر سکتا ہے نہ بیوی کے نکاحِ ثانی و علیحدگی کے اُس سے نکاح کر سکتا ہے۔
رہا یہ اعتراض کہ جب یہ عمل سرے سے ناپسندیدہ و حرام یا مکروہ ہے تو اس پر عمل کیوں جائز رکھا گیا تو نہ معلوم یہ اعتراض کرنے والوں کے یہ بات کیوں سمجھ میں نہیں آتی کہ کسی فعل کا جرم و گناہ ہونا اس کے مؤثر ہونے میں کہیں بھی مانع نہیں ہوتا۔ مثال کے طور پر قتلِ نا حق جرم و گناہ ہے مگر جس کو گولی یا تلوار وغیرہ مار کر قتل کیا گیا ہو، وہ قتل ہو ہی جاتا ہے، اس کی موت اس کا انتظار نہیں کرتی کہ یہ گولی جائز طریقے سے ماری گئی ہے یا ناجائز طریقے سے۔ چوری کرنا باتفاقِ مذاہب جرم و گناہ ہے مگر جو مال اس طرح غایب کر دیا گیاہو وہ تو ہاتھ سے نکل ہی جاتا ہے۔ اسی طرح تمام معاصی اور جرائم کا حال ہے کہ ان کا جرم و گناہ ہونا اُن کے مؤثر ہونے میں مانع نہیں ہوتا۔اس اصول کا مقتضی یہی ہے کہ شریعت کی دی ہوئی آسانیوں کو نظر انداز کرنا اور بلا وجہ اپنے سارے اختیاراتِ طلاق کو ختم کرکے تین طلاق تک پہنچنا اگرچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ناراضی کا سبب ہوا اور اسی لیے یہ فعل غیر مستحسن اور بعض کے نزدیک ناجائز ہے، مگر ان سب باتوں کے باوجود جب کسی نے ایسا اقدام کر لیا تو اس کا وہی اثر ہونا چاہیے جو جائز طلاق کا ہوتا یعنی تین طلاق واقع ہو جائیں اور رجعت کا اختیار نہ رہے اور بغیر ایک خاص صورت کے نکاحِ جدید کا اختیار بھی سلب ہو جائے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فیصلہ اس پر شاہد ہے کہ اظہارِ غضب کے باوجودآپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تینوں طلاقوں کو نافذ فرمادیا، جس کے بہت سے واقعات کتبِ حدیث میں مذکور ہیں اور جن علماء نے اس مسئلے پر مستقل کتابیں لکھی ہیں ان میں ان واقعات کو جمع کر دیا ہے۔ (مستفاد از معارف القرآن:1/563)
البتہ موجودہ حالات میں شریعت و قرآن کو بدلنے کی کوشش کرنے کے بجائے معاشرے و سماج کی اصلاح کی فکر کرنی چاہیے، جس میں طلاق کو ایسا امر بنا دیا گیا ہے کہ اس کے بعد مَرد ہو یا عورت، اس کا جینا محال ہو کر رہ جاتا ہے۔ مسئلہ یہ نہیں کہ ’تین طلاق جائز ہی کیوں قرار دی جائیں‘ ہمارے خیال میں اصل مسئلہ یہ ہے کہ ’طلاق شدہ عورت یا مَرد کو سماج و معاشرے میں مناسب مقام دیا جائے‘۔ یہ امر نہایت افسوس ناک ہے کہ طلاق شدہ مَرد اور خصوصاً عورت کے ساتھ ہمارے معاشرے میں ایسا برتاؤ کیا جاتا ہے کہ وہ طلاق لینے یا دینے سے بہتر اپنی جان دینا آسان سمجھنے لگتے ہیں۔ انھیں اپنی اور اپنے بچوں کی زندگی اور خاندان کی عزت کے حوالے سے اس درجے ٹارچر کیا جاتا ہے کہ اس شرعی رخصت کو وبالِ جان تصور کیا جانے لگا ہیں، اگر ایسا نہ ہو تو ہمیں نہیں لگتا کوئی مسلم مرد یا عورت اسلامی قانون کو چھوڑ کر عدالت کی طرف نظر اٹھا کر دیکھے۔آخری بات یہ کہ معاشرے میں چوں کہ دینی مسائل سے جہالت و عدمِ واقفیت عام ہے اس لیے بہتر اور اصل تو یہی ہے کہ نکاح سے کچھ وقت پہلے نکاح و طلاق کے مسائل معتبر دینی کتابوں یا جاننے والوں سے سیکھے جائیں ورنہ کم سے کم نکاح کے موقع پر ہی یہ معمول بنایا جائے کہ مجلسِ نکاح میں مَردوں کو اس حق ’طلاق‘ کو استعمال کرنے کی شرائط کی بتلا دی جائیں اور اس کے قیود و حدود کسی حد تک ذہن نشین کروا دیے جائیں تاکہ جہالت یا عدم واقفیت کے سبب اس طرح کے مسائل پیدا نہ ہوں۔ شوہر پر یہ واضح کیا جانا چاہیے کہ یہ اس کا حق ضرور ہے لیکن اُس وقت جب کہ اِس کے سوا کوئی راستہ ہی موجود نہ ہو، نیز اگر طلاق کی نوبت آہی جائے تو اس پر عمل درآمد کرنے کے لیے صحیح اسلامی طریقۂ طلاق کو اختیار کرنا چاہیے جس کی تعلیم خود پروردگار نے قرآنِ کریم میں دی ہے، غصّے کے نشے میں چور ہو کر اپنی اور اپنی بیوی بچوں کی زندگی تباہ کر لینا یقیناً مذموم عمل ہے، جس کی حوصلہ شکنی کی جانی چاہیے۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

ندیم احمد انصاری

ڈائریکٹر الفلاح اسلامک فاؤنڈیشن، انڈیا اسلامی اسکالر و صحافی

متعلقہ

Close