ملی مسائل

ملت اسلامیہ ہند عروج و زوال کے آئینہ میں

مہدی حسن عینی

    کسی بھی قومی کی ترقی یا تنزلی کی بات کریں تو اولاً یہ مدنظر رہنا چاہئے کہ یہ دونوں اوصاف اضافی  ہوتےہیں،

عالم انسانیت کے کسی بھی طبقہ کے ترقی یافتہ یا انحطاط پذیر ہونے کا اگر ذکر کیا جاتا ہے تو موازنہ اس کے ماضی سے کیا جاتا ہے، اب ہم ملت اسلامیہ کا جائزہ لیتے ہیں تو اس کے اضی سے موازنہ کے کئی صورتیں بن سکتی ہیں،

(01)آج کی ملت اسلامیہ ہند بمقابلہ ملت اسلامیہ کا اولین دور.

(02) آج کی ملت اسلامیہ ہند کی حالت بمقابلہ ہندوستان میں ملت کے ماضی کا کوئی  دور

(03)ملت اسلامیہ ہند بمقابلہ مغربی تہذیب کی علم بردار قوم.

(04)ملت اسلامیہ کی کیفیت بنام ایک خاص عہد کی حالت

جہاں تک ملت اسلامیہ کے اولین دور کا سوال ہے تو وہ دور تو ہمیشہ کے لئے ملت کے سامنے مشعل راہ اور منارہ نور ہے، دور نبوی، و دور خلفائے راشدین تک محیط یہ دور ایک تاریخی حقیقت ہے، اس لئے اسے خیالی نہیں کہا جاسکتا، اس دور میں ملت اسلامیہ جس بلند مقام پر فائز ہوئی اس کو دوبارہ حاصل کرنا نا ممکن ہے، ﺗﺎﮨﻢ ﯾﮧ ﺩﻭﺭ ﺍﻭﻟﯿﻦ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻣﻠﺖ ﮐﺎ ﺳﻤﺖ ﺳﻔﺮ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﻣﻄﻠﻮﺏ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ۔ اب ہمارے تجزیہ کا نقطہ ارتکازآخری صورت ہے، اب آخری صورت میں متعین طور پر ہمیں  ﭨﯿﭙﻮ ﺳﻠﻄﺎﻥ شہید کے دور کو مد نظر رکھنا پڑےگا، کیونکہ ملت اسلامیہ کی موجودہ حالت کا تقابل ایک دور خاص یعنی انگریزوں کے مقابلہ میں شکست سے ملک کی آزادی تک کا زمانہ پیش نظر ہے، اب انیسویں صدی عیسوی کے اوائل سے 1947 تک کو ماضی کے خانہ میں رکھا جائے اور 1947 کے بعد سے آج تک کے احوال کو حال مانا جائے، اور ان ماضی و حال کا موازنہ کرکے مسقبل کی صورت گری کا بیڑہ اٹھایا جائے.

اب اگر ماضی کی بات کریں تو ٹیپو سلطان شہید کے 04 مئی 1799 کو   سرنگاپٹنم میں انگریزوں سے لڑتے ہوئے نام جاں آفریں کے سپرد کردی، شیر دکن کی اس شکست کے بعد ہی ملک عزیز پر انگریزوں کا بلاشرکت غیر تسلط ہوگیا، ویسے تاریخی حقیقت تو یہ ہے کہ 1857 کے انقلاب میں ناکامی کے بعد سے ہی انگریزی عروج کا سفر شروع ہوگیا تھا،

انگریزوں کی حکومت اور ہندوستانیوں کی غلامی چونکہ حقیقی سیاسی اقتدار سے محرومی کے سبب تھا اس لئےعلمائے حق سر بکفن ہوکر اس میدان میں کود پڑے، ہندوستان کے شجرہ طوبی  ﺷﺎﮦ ﻭﻟﯽ ﺍﻟﻠﮧ محدث دہلوی کے فرزند ارجمند شاہ عبدالعزیز دہلوی نے فتوی دیا کہ یہ بر اعظم اب دارالاسلام نہیں رہا، اس کے باوجود کہ اسلام کے شعائر میں صریح مداخلت نہیں کی گئی تھی اور سابقہ بادشاہوں کے افراد خاندان کو اقتدار کی کرسیوں پر بحال رکھا گیاتھا، لیکن حقیقی طاقت انگریزوں کے ہاتھ میں جاچکی تھی، شاہ عبد العزیز نے اپنے ایک تربیت یافتہ  شاگرد سید احمد شہید رائے بریلوی کو جہاد اور اصلاح و ارشاد کے کام کے لئے تیار کیا، سید احمد شہید نے دہلی کے اطراف ﻧﮯ ﺩﮨﻠﯽ ﮐﮯ ﺍﻃﺮﺍﻑ، اور دیگر شہروں کے سفر کئے، اور بڑے وسیع پیمانہ پر بیعت و اصلاح کا سلسہ شروع کیا، موصوف نے کچھ ہی عرصہ میں چار سو افراد کے ساتھ سفر حج کیا اور اور دیڑھ سال کے بعد کلکتہ کے راستہ سے واپسی کی، اس درمیان آپ نے بیعت و ارشاد کا سلسلہ دراز کیا، اور پھر سکھوں کے خلاف جہاد کا فیصلہ کیا، اور اس فیصلہ پر عمل درآمد کیا.ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻗﺎﺑﻞ ﺫﮐﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺮﺩﺍﺭ ﺭﻧﺠﯿﺖ ﺳﻨﮕﮫ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﺍﺳﯽ ﺳﺎﻝ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﺟﺲ ﺳﺎﻝ سلطان  ﭨﯿﭙﻮ ﮐﯽ ﻭﻓﺎﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﻧﺼﻒ ﺻﺪﯼ ﺗﮏ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺳﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻨﮓ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﯽ ﺍﻭﺭ 1831ﻣﯿﮟ ﺳﯿﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﮦ ﺍﺳﻤﺎﻋﯿﻞ ﺑﺎﻻﮐﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﯿﺪ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺣﯿﺎﺋﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﺭﻭﺡ ﭘﮭﻮﻧﮏ ﺩﯼ۔ ﯾﮧ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﺴﯽ ﻓﺮﺩ ﯾﺎ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﺖ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﻣﻌﺰﻭﻝ ﺑﺎﺩﺷﺎ ﮦ ﮐﯽ ﺑﺤﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﺧﺎﻟﺺ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﺍﺣﯿﺎﺀ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﮭﯽ۔ ، ﺍﻥ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﯽ ﺑﮍﯼ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻧﮯ ﺟﺎﻡ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﻧﻮﺵ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﮮ ﻋﻼﻗﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺣﯿﺎﺋﮯ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺭﻭﺡ ﭘﮭﻮﻧﮏ ﺩﯼ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ۔ اس کے بعد ماضی کا قابل ذکر قابل توجہ انقلاب یعنی 1857ﮐﯽ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﯽ ﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻤﺮ ﺗﻮﮌ ﺩﯼ، ﺑﮍﯼ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﻋﻠﻤﺎءﺍﻭﺭ ﻣﺠﺎﮨﺪﯾﻦ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﯾﺎ ’’ ﮐﺎﻻ ﭘﺎﻧﯽ ‘‘ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺍُﻥ ﮐﻮ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ۔

ایسے  ﻧﺎﻣﺴﺎﻋﺪ ﺣﺎﻻﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺻﻼﺡ ﺣﺎﻝ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭ ﻣﺘﻮﺍﺯﯼ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﯾﮏ ﮔﻮﻧﮧ ﻣﺘﻀﺎﺩ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﻗﯿﺎﻡ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﺁﯾﺎ۔ 21 مئی 1866ﮐﻮ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﻗﺎﺳﻢ ﻧﺎﻧﻮﺗﻮﯼ ﻧﮯ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺭﮐﮭﯽ، ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ 1875 ﻣﯿﮟ ﺳﯿﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﺧﺎﻥ ﻧﮯ

” مدرسۃ ﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﺎﻥ ﮨﻨﺪ” ﻗﺎﺋﻢ ﮐﯿﺎ ﺟﻮ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﻤﮉﻥ ﺍﯾﻨﮕﻠﻮ ﺍﻭﺭﯾﻨﭩﻞ ﮐﺎﻟﺞ‏( Mohammadan Anglo Oriental College ‏) ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ 1920ﻣﯿﮟ ﻋﻠﯽ ﮔﮍﮪ ﻣﺴﻠﻢ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﻣﻮﺳﻮﻡ ﮨﻮﺍ۔

ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﮐﮯ ﻗﯿﺎﻡ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﮐﺮﺍﻧﮯ ﮐﺎ ﺟﺬﺑﮧ ﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎ ﺗﮭﺎ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﺳﯿﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﺧﺎﻥ ﮐﺎ ﺭﺟﺤﺎﻥ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﺗﻌﺎﻭﻥ ﮐﺮﮐﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻣﻮﺍﻗﻊ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﮐﮯ ﻓﺎﺭﻏﯿﻦ ﻧﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﮐﻮﻧﮯ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻨﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﮐﺎ ﺟﺎﻝ ﺑﭽﮭﺎ ﺩﯾﺎ، اور ملک کوآزاد کرانے کے ساتھ ساتھ مسلمانوں کو زندگی گزارنے کے لئے لائحہ عمل دیا.

ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮ ﻑ ﻋﻠﯽ ﮔﮍﮪ ﻣﺴﻠﻢ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﺯﯾﺮ ﺍﺛﺮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺑﯿﺪﺍﺭﯼ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ۔ اور آگے بڑھنے کا جذبہ پیدا ہوا.

ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ

شیخ الہندﻣﻮﻻﻧﺎ ﻣﺤﻤﻮﺩ ﺣﺴﻦ ﮐﯽ ﺭﯾﺸﻤﯽ ﺭﻭﻣﺎﻝ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﭨﮭﯽ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺣﺴﯿﻦ ﺍﺣﻤﺪ ﻣﺪﻧﯽ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﮐﮯ ﺣﻠﻘﮯ ﻧﮯ ﻣﺸﺘﺮﮐﮧ ﻗﻮﻣﯿﺖ ﮐﮯ ﻧﻌﺮﮦ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﮐﺎﻧﮕﺮﯾﺲ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ جنگ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﻣﯿﮟ بگل  پھونکا.

1920ﺳﮯ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﭘﺎﻧﭻ ﺑﺮﺳﻮﮞ ﺗﮏ تحریک خلافت ﮐﺎ ﻏﻠﻐﻠﮧ ﺑﻠﻨﺪ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺵ ﻭ ﺧﺮﻭﺵ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﻮ ﮨﻮﺵ ﻭ ﺣﻮﺍﺱ ﺳﮯ ﯾﮑﺴﺮﻋﺎﺭﯼ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺳﮯ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﭘﺎﮐﺮ ﻣﺎﻻ ﺑﺎﺭ ﮐﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﺟﻮ ﻣﻮﭘﻠﮧ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺧﻼﻓﺖ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﺎ ﮔﺎﻧﺪﮬﯽ ﺟﯽ ﻧﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﻧﻔﻮﺫ ﮐﺎ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ۔

ﺟﺬﺑﺎﺗﯽ ﻧﻌﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺘﺎﺛﺮ، ﻣﻨﻈﻢ ﺍﻭﺭ ﻣﺘﺤﺮﮎ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﺤﺮﯾﮑﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﮐﯽ ﺧﺎﮐﺴﺎﺭ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﻮ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ 1930 ﺳﮯ 1947  ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻃﻮﻝ ﻭ ﻋﺮﺽ ﻣﯿﮟ بے ﻣﻘﺼﺪ ﮨﻨﮕﺎﻣﮧ ﺁﺭﺍﺋﯽ ﮐﺎ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯿﺎ، ﺗﻘﺴﯿﻢ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻮﺍﻗﻊ ﭘﺮ ﺑﮯ ﺳﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯽ ﺭﺟﺤﺎﻧﺎﺕ ﮐﻮ ﮨﻮﺍ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﺧﺎﮐﺴﺎﺭ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﮯ ﺑﺎﻗﯿﺎﺕ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ..

ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﮐﮯ ﺗﺬﮐﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺍﻟﯿﺎﺱ کاندھلوی ﮐﯽ ﺗﺒﻠﯿﻐﯽ ﺗﺤﺮﯾﮏ  ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﺪﮬﯽ ﮐﺮﻥ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﺗﺮﮎ ﺍﺳﻼﻡ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﺭﯾﮧ ﺳﻤﺎﺝ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺸﯿﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍِﻥ ﮐﻮﺷﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺍﺛﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﮯ ﻣﯿﻮﺍﺕ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮧ ﻣﯿﮟ ﻋﻮﺍﻡ ﺍﻟﻨﺎﺱ ﮐﯽ ﺩﯾﻦ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮕﯽ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮍﺍ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﯿﺎ۔

ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮓ 1906 ﻣﯿﮟ ﺗﺸﮑﯿﻞ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ 1913  ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮉﻭﮐﯿﭧ ﻣﺤﻤﺪ ﻋﻠﯽ ﺟﻨﺎﺡ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻮﻟﯿﺖ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻣﺎﻡ ﮐﺎﺭ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﯽ۔ اور ﺍِﺱ  ﺗﻨﻈﯿﻢ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﺍﯾﮏ ﻣﺎﮨﺮ ﻭﮐﯿﻞ ﮐﮯ ﺳﭙﺮﺩ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ ﻣﻠﺖ ﮐﺎ ﻣﻘﺪﻣﮧ ﻟﮍﺍ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﯿﺖ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﮐﮧ ﻣﻮﮐﻞ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﺣﺸﺮ ﮨﻮﺍ۔ ﺑﺮ ﺻﻐﯿﺮ ﮐﮯ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﻠﺖ ﮐﯽ ﺟﺎﻥ ﻭ ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﻋﺰﺕ ﻭ ﺁﺑﺮﻭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﺸﺎﮨﺪﮦ ﺑﭽﺸﻢ ِﺳﺮ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﭼﻨﺪ ﺍﺳﺘﺜﻨﺎﺋﯽ ﺻﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮓ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﻧﻮﺍﺏ ﺯﺍﺩﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺭﺋﯿﺲ ﺯﺍﺩﻭﮞ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﻧﻮﺍﺯﯼ ﺍﺱ ﻃﺒﻘﮧ ﮐﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﺛﺎﻧﯿﮧ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﻧﻮﺍﺯﯼ ﭼﻮﮞ ﮐﮧ ﻋﻠﯽ ﮔﮍﮪ ﻣﺴﻠﻢ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﺧﻤﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﺍﺩﺍﺭﮦ ﺍِﺱ ﻃﺒﻘﮯ ﮐﻮ ﺭﺍﺱ ﺁﯾﺎ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﺭﻣﯿﺎﻧﯽ ﻃﺒﻘﮧ ﺍﺱ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺯﺩﮦ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻞ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﻮ ﻣﺴﺘﺮﺩ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔

ﺍﻟﺒﺘﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻃﺒﻘﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺯﺩﮦ ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮕﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﺳﺤﺮ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﺭﮨﺎ، ﺷﺎﯾﺪ ﺍﮐﺒﺮ ﺍﻟٰﮧ ﺁﺑﺎﺩﯼ ﮐﺎ ’’ ﺟﻤّﻦ ﻣﯿﺎﮞ ‘‘ ﺍﺳﯽ ﻃﺒﻘﮧ ﮐﺎ ﻧﻤﺎﺋﻨﺪﮦ ﮨﻮ.

ﺟُﻤّﻦ ﻣﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﺣﻀﺮﺕ ﮔﺎﻧﺪﮬﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯿﮟ

ﮔﻮ ﻣﺸﺖ ﺧﺎﮎ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺁﻧﺪﮬﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯿﮟ.

نام نہاد ﺍﻭﻧﭽﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﮨﻨﺪﻭﻭٔﮞ  ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻈﻢ ﮔﺮﻭﮦ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻗﻮﺕ ﮐﮯ ﺧﺎﺗﻤﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺳﺮﮔﺮﻡ ﻋﻤﻞ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﮔﺮﻭﮦ ﮐﮯ ﻣﻔﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﻨﺪﻭ ﺳﻤﺎﺝ ﻭﺭﻥ ﺁﺷﺮﻡ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﻗﺮﺍﺭ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺱ ﻓﺎﺳﺪ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﯾﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻋﺎﻡ ﻧﻔﺮﺕ ﮐﺎ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﺱ ﮔﺮﻭﮦ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺸﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺣﺼﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻗﮧ ﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﭼﻠﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﺎﻥ ﻭ ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﻋﺰﺕ ﻭ ﺁﺑﺮﻭ ﺩﺍﻭٔ ﭘﺮ ﻟﮕﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﻭ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮐﺎ ﻭﻗﺖ ﻗﺮﯾﺐ ﮨﻮﺗﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﻓﺮﺕ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻧﻨﮕﺎ ﻧﺎﭺ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ۔

بالآخر ان تمام اتار چڑھاؤ کے بعد ملک آزاد ہوگیا.اور تقسیم بھی ہوگیا.

اب حال یعنی آزادی کے بعد سے اب تک کے احوال پر نظر کرتے ہیں تو یقینی طور پر

ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﻭ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﺧﻮﻥ ﺧﺮﺍﺑﮧ ﮐﮯجس  ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﺮﺍ ﺍﺛﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﺎﻥ ﮨﻨﺪ ﭘﺮ ﭘﮍﺍ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﺑﺮﺁﻭﺭﺩﮦ ﻃﺒﻘﮧ ﮐﺎ ﻣﻌﺘﺪﺑﮧ ﺣﺼﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﻥ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻓﺮﻗﮧ ﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺑﮍﯼ ﺑﮍﯼ ﺁﺑﺎﺩﯾﺎﮞ ﮔﺎﻭٔﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻣﻼﮎ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﯾﺎﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﻧﮯ ﭘﻮﻧﮯ ﺑﯿﭻ ﮐﺮ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮨﻮﮔﺌﯿﮟ ﯾﺎ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺻﻮﺑﮧ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﻋﻼﻗﮧ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺲ ﺳﮑﮯ ﯾﺎ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻗﺪﻡ ﺟﻤﺎﻧﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﻟﻮﮒ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺍﺱ ﻋﻼﻗﮧ ﮐﮯ ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﺑﻦ ﺟﺎﻧﮯ ﺗﮏ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﺎ۔ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺑﮩﺎﺭ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﮩﺎﺭﯼ ﮐﮩﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺭﮨﮯ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﯾﮩﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﺍﻥ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﮩﺎﺟﺮ ﮐﮩﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﮐﮯ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﻋﻼﻗﻮﮞ کی ﺯﻣﯿﻦ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﻨﮓ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔

ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﴿ﺳﺎﺑﻘﮧ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ﴾

ﻋﻤﻼًﺍﯾﮏ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﯾﺎﺳﺖ ‏( Failed State ‏) ﺑﻦ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔

ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﴿ﺳﺎﺑﻘﮧ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ﴾

ﺧﺎﻧﮕﯽ ﮨﻨﮕﺎﻣﮧ ‏( Civil war ‏) ﮐﮯ ﺩﮨﺎﻧﮧ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﭽﺮ ﮐﻤﯿﭩﯽ ﮐﺎ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ۔

ﺟﻨﻮﺑﯽ ﮨﻨﺪﮐﮯ ﻭﮦ ﻋﻼﻗﮯ ﺟﻮ ﻓﺮﻗﮧ ﻭﺍﺭﺍﻧﮧ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺁﮒ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺭﮨﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻧﺴﺒﺘﺎً ﺑﮩﺘﺮ ﺭﮨﯽ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﮔﻠﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎﺭِ ﻋﺮﺏ ﻣﯿﮟ ﻣﻌﺎﺷﯽ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﮯ ﻣﻮﺍﻗﻊ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﻠﮯ۔

ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﺳﻤﺎﺝ ﮐﻮ ﻭﺭﻥ ﺁﺷﺮﻡ ﮐﯽ ﺗﻔﺮﯾﻖ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺰﺭﻭﯾﺸﻦ ﮐﯽ ﭘﺎﻟﯿﺴﯽ ﻧﮯ ﺍﮨﻢ ﺭﻭﻝ ﺍﺩﺍ ﮐﯿﺎ۔ ’’ ﭘﮍﻭﺳﯿﻮﮞ ‘‘ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺁﮒ ﺳﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮦ ﺳﮑﮯ۔

ﮨﻤﺴﺎﺋﯿﮕﯽ ﮐﮯ ﺟﻮﺵ ﻣﯿﮟ ﺷﻌﻠﮯ ﻟﭙﭧ ﻧﮧ ﺟﺎﺋﯿﮟ

ﻣﺖ ﺗﺎﭘﺌﮯ ﯾﮧ ﺁﮒ ﭘﮍﻭﺳﯽ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﮨﮯ.

مسلمانوں میں ﭘﯿﺸﮧ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺟﻤﻌﯿﺘﻮﮞ و تنظیموں ﮐﯽ ﺗﺸﮑﯿﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﺮﻭﮨﯽ ﻣﻔﺎﺩﺍﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻏﺮﺽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺭﻭﻝ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ۔ ﻗﺮﯾﺸﯽ، ﻋﺮﺍﻗﯽ، ﻣﻨﺼﻮﺭﯼ، انصاری، ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮦ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﺟﻤﻌﯿﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻗﯿﺎﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺁﺝ ﯾﮧ ﺳﺮﮔﺮﻣﯽ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﻤﺎﺝ بڑے پیمانہ پر ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻣﻮﮨﻮﻣﮧ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺣﺮﮐﺘﯿﮟ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺍﻣﺖ ﮐﯽ ﻭﺣﺪﺕ ﮐﮯ ﻣﻨﺎﻓﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﺎﮎ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺭﯾﺰﺭﻭﯾﺸﻦ ﮐﮯ ﻣﺒﯿﻨﮧ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﮐﮯ ﭘﯿﺶ ﻧﻈﺮ ﻣﻠﮏ ﮔﯿﺮ ﺩﯾﻨﯽ ﻭ ﻣﻠﯽ ﺟﻤﺎﻋﺘﯿﮟ ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﮐﻮﻋﻤﻼً ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﻭﺑﺎﺋﯽ ﻣﺮﺽ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻋﻼﺝ ﮐﮯ ﺍﻣﮑﺎﻧﺎﺕ ﮐﻢ ﮨﯿﮟ۔

ﻣﺮﺽ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﮔﯿﺎ ﺑﻐﯿﺮ ﺩﻭﺍ کی !!

جہاں تک بات میدان سیاست کی ہے تو ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺳﻤﺘﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﻋﺮﺻﮧ ﺗﮏ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﺎﻧﮕﺮﯾﺲ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﺎ ﻭﻭﭦ ﺑﯿﻨﮏ ﺑﻨﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﮐﺎﻧﮕﺮﯾﺲ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﻮﺋﯽ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮﺩﻭﺳﺮﯼ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﭘﺎﺭﭨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﮐﻮ ﻣﺰﯾﺪ ﻣﮑﺪﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺭﺟﺤﺎﻥ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﺩﺭﺍ ﺻﻞ ﺍﺱ ﭘﻮﺭﯼ ﺑﮯ ﺳﻤﺘﯽ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﻮ ﻣﺤﺾ انتخابی ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺗﮏ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺭﺟﺤﺎﻥ ﮨﮯ۔ ﻗﻮﺕ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﺮﺍﮐﺰ ﭘﺮ ﺍﺛﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮨﻮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﺩﺭ ﭘﯿﺶ ﻣﺠﻤﻮﻋﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﭘﺮ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﭘﺮﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔

جس کی وجہ سے اس ملک کا  مسلمان عملی طور پر دوسرے درجہ کا شہری بن چکا ہے.

اس میں بنیادی وجہ حکمت عملی کا نا ہونا ہے.اور دوسروں پر اندھا اعتماد کرنا ہے.

ساتھ ہی ملی قیادتوں کا ملت کے مابین اعتمادکو کھودینا ہے.

اب ماضی اور حال کے تجزیہ کے بعد اگر مستقبل کی بات کریں تو

ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺧﺮﺍﺑﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺟﻦ ﮐﺎ ﺍﻭﭘﺮ ﺫﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﭼﻨﺪ ﻣﻈﺎﮨﺮ ﺍﻣﯿﺪ ﺍﻓﺰﺍ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﯽ ﺗﺸﺨﺺ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺑﮍﮬﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﯾﻦ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ :

ﺧﺎﺹ ﮨﮯ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﻗﻮﻡ ﺭﺳﻮﻝ ﮨﺎﺷﻤﯽﷺ.

ﺍﻧﯿﺴﻮﯾﮟ ﺻﺪﯼ ﮐﯽ ﺍﺑﺘﺪﺍء ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻣﻠﺖ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﮐﮭﻮﮐﺮ ﺯﻭﺍﻝ پذﯾﺮ ﮨﻮﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ۔ 1857 ﮐﯽ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﺳﮯ ﺩﻭﭼﺎﺭ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺍِﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﻠﺖ ﻧﮯ ﮨﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﮭﻮﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﻭﻗﺎﺭ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﺸﺨﺺ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﺳﻌﯽ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﻭﺗﻘﺴﯿﻢ ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺨﺖ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﻠﺖ ﺍﺳﻼﻣﯿﮧ ﮨﻨﺪ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﻓﻨﺎ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺧﺼﻮﺻﺎً ﻣﻠﺖ ﺍﺳﻼﻣﯿﮧ ﮨﻨﺪ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﯾﮏ ﻧﯿﺎ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ۔ ﺍِﺳﯽ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺭﮦ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﻮ ﺑﮩﺘﺮ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﭘﺨﺘﮧ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻭ ﻣﻌﯿﺸﺖ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮑﺴﻮﺋﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﺗﮏ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﻭ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮﺟﮧ ﻣﺒﺬﻭﻝ ﮨﻮﺋﯽ۔ دعوتی نشر و اشاعت  ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﻣﻠﺖ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ دینی اشاعت یہ  ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﺌﯽ ﻧﺴﻞ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﯾﻦ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺑﮍﮬﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﺍﮌﮬﯿﺎﮞ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺭﮐﮭﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ، ﺑﺮﻗﻌﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﮩﻨﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﻤﺎﺯﯾﮟ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﮍﮬﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﭘﮩﻠﻮ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮐﮯ ﺍﻣﮑﺎﻧﺎﺕ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮨﻨﺪﻭﺗﻮ ﻗﻮﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﭘﺴﻨﺪ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﭨﯿﻢ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﻘﻮﻕ ﮐﯽ ﭘﺎﻣﺎﻟﯽ ﺭﻭﮐﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﭘﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﮔﺠﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﯾﮧ ﮔﺮﻭﮦ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﺮﮔﺮﻣﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔

ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﺎﺭﮐﺮﺩﮔﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺍﻣﮑﺎﻧﺎﺕ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﻭﻗﺖ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﺌﯽ ﺍﮨﻢ ﻣﯿﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﺧﺎﻝ ﺧﺎﻝ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺏ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺻﺤﺎﻓﺖ، ﺗﺠﺎﺭﺕ، ﺻﻨﻌﺖ ﻭ ﺣﺮﻓﺖ، ﺍﻧﻔﺎﺭﻣﯿﺸﻦ ﭨﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ، ﺫﺭﺍﺋﻊ ﺍﺑﻼﻍ، ﻧﺸﺮ ﻭﺍﺷﺎﻋﺖ، ﺻﺤﺖ ﮨﯿﻠﺘﮫ ﺳﯿﮑﭩﺮ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﯿﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﺎ ﭘﺘﮧ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﺑﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﻥ ﻣﯿﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻧﻮﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺗﺌﯿﮟ ﺟﻮ ﺳﻨﺠﯿﺪﮔﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﺍﻣﯿﺪﯾﮟ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﮐﯽ ﺟﺎﺳﮑﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔

ﻣﺎﺿﯽ، ﺣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﺑﺎﻻ ﮔﺰﺍﺭﺷﺎﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻢ ﺍﺱ ﻣﻘﺎﻡ ﭘﺮ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﻠﺖ ﺍﺳﻼﻣﯿﮧ ﮨﻨﺪ ﮐﮯ ﻋﺮﻭﺝ ﻭ ﺯﻭﺍﻝ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﭘﺮ ﺗﻮﺟﮧ ﮐﺮﺳﮑﯿﮟ۔

ﻋﺮﻭﺝ ﯾﺎﺯﻭﺍﻝ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ :

ﻋﺮﻭﺝ ﯾﺎ ﺯﻭﺍﻝ ﮨﻤﮧ ﺟﮩﺘﯽ ﺗﺼﻮﺭ ﮨﮯ۔

ﻋﻤﻮﻣﺎً ﺟﺐ ﮨﻢ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺎﺿﯽ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮﺫﮨﻦ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻗﻮﺕ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻋﺮﻭﺝ ﯾﺎ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﺩﯾﮕﺮ ﭘﮩﻠﻮﻭٔﮞ ﻣﺜﻼً ﻋﻠﻢ، ﻣﻌﯿﺸﺖ ﻭ ﺍﺧﻼﻕ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻭﮦ ﻗﻮﻣﯿﮟ ﺍﭼﮭﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻗﻮﺕ ﮐﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﮨﻮﮞ۔ ﺟﺐ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺮﻭﮦ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮨﺮ ﭘﮩﻠﻮ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺩﻭﺭ ﺯﻭﺍﻝ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺗﻤﺎﻡ ﭘﮩﻠﻮﻭٔﮞ ﺳﮯ ﮔﺮﺍﻭﭦ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻗﻮﻡ ﻋﻠﻢ، ﺍﺧﻼﻕ، ﻣﻌﺎﺷﺮﺕ، ﻣﻌﯿﺸﺖ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﯿﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﮯ ﮔﯽ ﺗﻮ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻗﻮﺕ ﮐﯽ ﻓﺮﺍﮨﻤﯽ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﺗﻨﺎﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻗﺪﻡ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﯿﮟ ﮔﮯ۔

ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﺩﻭ ﺳﻮ ﺳﺎﻟﮧ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺍﻣﺖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﮭﻮﺩﯾﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮔُﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮭﻮﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﮯ ﺣﺼﻮﻝ ﮐﯽ ﺁﺭﺯﻭ ﻧﮯ ﻣﻀﻄﺮﺏ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﭽﺮ ﮐﻤﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﺎﻥ ﮨﻨﺪ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺩﺭﺝ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﺫﺍﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺧﺮﺍﺏ ﮨﻮ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﻓﺮﻕ ﺑﮩﺖ ﺍﮨﻢ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺍﻣﺖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﺴﺘﯽ ﮐﻮ ﺑﺠﻨﺴﮧ ﻗﺒﻮﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﻣﺖ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺯﯾﺎﮞ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻋﻼﻣﺖ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﯽ ﺿﻤﺎﻧﺖ ﮨﮯ۔ ﻣﻠﺖ ﺍﺳﻼﻣﯿﮧ ﮨﻨﺪ ﮐﺎ ﻋﺮﻭﺝ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺭﺳﺖ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﺩﺭﺍﮎ ﻣﯿﮟ ﻣﻀﻤﺮ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﺍﻋﯽ ﺍﻣﺖ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﻭﺟﻮﺩ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﭘﻨﺎ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺳﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﮐﯽ ﻓﻼﺡ ﻭ ﺑﮩﺒﻮﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﺮﮔﺮﻡ ﻋﻤﻞ ﮨﻮﻧﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ مرکزی تنظیموں، ملی قیادتوں ﮐﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﻗﻮﻣﯽ ﮐﺸﻤﮑﺶ ﺳﮯ ﺑﭻ ﮐﺮ ﺍﻣﺖ ﮐﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻡ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﺩﻻتے ﺭہیں۔

اور موجودہ دور کے مسابقاتی تقاضوں کے مطابق ملت اسلامیہ ہند کے لئے ایک ایسا  روڈمیپ تیار کریں جو ملت کی دینی و عصری، سیاسی و سماجی، انفرادی و اجتماعی، تعلیمی و اقتصادی  زندگی کے تمام میدانوں کے لئے منارہ نور بن کر ان کی بےنور و مایوس زندگیوں میں امید کی کرن پھونک سکے اور فرقہ فرقہ کھیل کو ختم کرکے ملی مفادات کے لئے ذاتی اغراض کو قربان کرنے کا جذبہ بیدار کرسکے.

ﺯﻭﺍﻝ پذیری ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﮐﯿﻔﯿﺖ ﮐﮯ ﻋﺮﻭﺝ پذﯾﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮨﻮﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﯾﮩﯽ ﺭﺍﺯ ﮨﮯ۔

اس یوم آزادی پر ہماری موجودہ حالت کا گزشتہ  ۲۰۰ سالہ تاریخ کے ساتھ  موازنہ کرکے مستقبل کے لئے لائحہ عمل تیار کرنا ہی ہماری جانب سے شہدائے آزادی و تحریک اسلامی کـو سچی اور حقیقی خراج عقیدت ہوگی.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close