آس پاس

ہلکاتشدد؟

سیدعرفان احمد، لاہور
سوال یہ ہے کہ میاں بیوی کارشتہ احساس کاہے یاتشددکا؟ پہلے قانون بنانے والوں نے حقوق نسواں کے نا سے بیوی پرہاتھ اُٹھانے والے شوہر کوتھانے،عدالت اورپھرجیل تک جانے کاپیغام دیاپھراسلامی نظریاتی کونسل نے شوہرکوبیوی پرہلکاتشددکرنے کی اجازت دے دی،سوچنے کی بات یہ ہے کہ میاں بیوی کارشتہ احساس ومحبت پرقائم ہوتاہے یاپھرتشددپر؟ تشددمیاں کرے یابیوی ہرحال میں قابل مذمت سمجھاجاناچاہے، اس بحث میں آگے بڑھنے سے پہلے ذرہ قانون بنانے والوں اوراسلامی نظریاتی کونسل سے یہ نہ پوچھ لیاجائے کہ کیاملک میں اس وقت سب سے پیچیدہ مسئلہ میاں بیوی کاہے؟ کیاتھانے،عدالتیں اورہسپتال میاں بیوی کے درمیان قانون کی دیوارکھڑی ہونے کے بعد ٹھیک کام کریں گے؟ کیاکرپشن،اختیارات کے غلط استعمال،رشوت،سفارش،مہنگائی اوربیروزگاری کا میاں بیوی کے آپسی اختلافات کے خاتمے سے قبل کوئی حل نہیں؟ کیاقانون بنانے والوں کوتھانوں،عدالتوں اورہسپتالوں میں ذلیل ہوتے عوام نظرنہیں آتے ؟کیااُن کومعلوم نہیں کہ کسی بھی سرکاری دفترمیں جائزکام بھی رشوت اورجھوٹ کے بغیرناممکن ہے؟کیا اسلامی نظریاتی کونسل کونہیں پتاکہ ملک میں سودی نظام رائج ہے؟کیامولاناصاحب نے صدر مملکت کی فریاد نہیں سنی جس میں انہوں نے کہاتھاکہ سودکوجائزقراردینے کاکوئی طریقہ دریافت کیاجائے؟ کیااسلامی نظریاتی کونسل کوملک میں پھیلی لاقانونیت نظر نہیں آتی؟ قانون بنانے والوں اوراسلامی نظریاتی کونسل میں فرق عورت اورمردکاہے،سیاسی حکمران عورت کوبااختیار بناناچاہتے ہیں جبکہ اسلامی لفظ استعمال کرنے والے مردکوعورت پرتشددکی اجازت فراہم کرکے اپنے موقف کودرست ثابت کرناچاہتے ہیں ،جبکہ حقیقت میں میاں بیوی کے رشتے میں نہ توکسی اسمبلی کے قانون کی ضرورت ہے اورنہ ہی مولاناکے فتوے کی،میاں بیوی کارشتہ محبت اوراحساس کی بنیادپرقائم ہوتاہے دنیا کاکوئی بھی شخص یاقانون میں بیوی کے درمیان محبت واحساس بحال کرسکتاہے اورنہ ہی ختم کرنے پرقادرہے، بیوی جوکم عمری میں اپنے ماں باپ،بہن بھائی اورگھرچھوڑکرشوہرکا گھرآبادکرنے سسرال چلی جاتی، بھری دنیامیں بیوی کے پاس ایک ہی شخص بچتاہے اورپھروہ دن رات اپنے شوہراوردیگرسسرالیوں کوخوش رکھنے کی کوشش کرتی ہے ،شوہرکی ہرضرورت کاخیال رکھنے والی بیوی سے کوئی غلطی سرزدہوجائے توفورااُس پرتشددکس لہٰاظ سے جائزہے؟بیوی پرہلکے تشدد کافتویٰ دینے والے مولاناصاحب کیایہی اختیاراپنی بیٹی کے شوہرکودینے کیلئے تیارہیں؟مولاناصاحب کوبیوی پرتشددکرنے کی اجازت دینے سے قبل یہ سوچ لیناچاہے تھاکہ کیایہ معاشرہ مکمل طورپراسلامی تعلیمات پرعمل پیراہے؟ حیرت کی بات ہے کہ یہاں عورت کی ہروپ میں تذلیل ہورہی اوراُس پر تشددکاجوازپیش کرکے اسلام کے کھاتے میں ڈال دیاگیا، راقم کا اسلامی نظریاتی کونسل کومشورہ ہے کہ اللہ ،نبی ﷺکے واسطے میاں بیوی کوتھانے اورعدالتوں میں پہنچانے سے قبل سودی نظام کے بارے میں سوچیں ،کیامولاناصاحب یہ نہیں جانتے کہ سودکالین دین کرنے والوں کیخلاف اللہ تعالیٰ اوررسول اللہ ﷺ نے اعلان جھنگ فرمایاہے؟ سودکاگناہ درجنوں بارزناکرنے سے زیادہ ہے؟بیوی یاشوہرسے کوئی غلطی سرزدہوجانے پر معافی کی گنجائش ہے جبکہ سودکالین دین کرنے والوں کیلئے کہیں معافی کاذکرنہیں ملتاجب تک کہ سودکالین دین چھوڑنہ دیں ۔میاں بیوی کے درمیان ہونے والے 95فیصد جھگڑوں کی وجہ مالی مشکلات ہیں اور عوام کیلئے روزگارکے بہترمواقع پیداکرناحکومت کی ذمہ داری کیااسلامی نظریاتی کونسل یاقانون بنانے والوں نے اس پہلوپربھی غورکیاہے؟ملک میں دن بدن بڑھتی مہنگائی اوربیروگاری کی روک تھام کیلئے بھی غوروفکر کی ضرورت ہے، سودی نظام نے امیراورغریب کے درمیاں ایسی بلنددیوارکھڑی کررکھی کہ امیرلوگوں کومیاں بیوی کے رشتے پربھی اعتبارنہیں جبکہ غریب کے پاس اس رشتے کے سواکچھ بھی نہیں۔ مولاناصاحب سیاست دانوں کوتونظر ہی نہیں آتاپرحیرت ہے کہ جناب بھی سودی نظام کے بجائے میاں بیوی کے رشتے کوختم کرناچاہتے ہیں، بیوی شوہرپریاشوہربیوی پرتشدد کرے موقع کی مناسبت سے حل تلاش کیاجاتاہے جبکہ سودکے خاتمے کیلئے قومی سطح پرجہاد کی ضرورت ہے، اسلامی نظریاتی کونسل واقع ہی ملک کی بہتری چاہتی ہے توفوری طورپرحکومت کوسودی نظام کے کاتمے کابل پیش کرے۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close