عباداتمذہب

اعتکاف کیجیے، لیکن اس کی روح کے ساتھ!

محمد رضی الاسلام ندوی

اعتکاف قرآن مجید سے ثابت ہے _ اللہ تعالٰی نے حضرت ابراہیم اور حضرت اسماعیل علیہما السلام کو حکم دیا تھا کہ وہ خانہ کعبہ کو طواف ، اعتکاف اور رکوع و سجدہ کرنے والوں کے لیے پاک رکھیں (البقرۃ : 125) _ عام مسجدوں میں بھی اعتکاف کا ذکر ہے _ (البقرۃ :187)

اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم نے پابندی سے اعتکاف کیا ہے _ آپ ہر رمضان میں 10 دن اعتکاف کرتے تھے _ آپ نے ابتدائی 10 دنوں میں اعتکاف کیا ہے اور درمیانی 10 دنوں میں بھی، لیکن پھر آخری 10 دنوں میں اعتکاف کا معمول بنا لیا تھا ، اس لیے کہ ان میں آپ شبِ قدر کو تلاش کرتے تھے _ آخری برس آپ نے 20 دن کا اعتکاف کیا تھا _آپ کے ساتھ بعض ازواج مطہرات اور بعض دیگر صحابہ بھی اعتکاف کیا کرتے تھے _

لیکن دل چسپ بات یہ ہے کہ اعتکاف کی فضیلت میں صحیح احادیث مروی نہیں ہیں _ جو احادیث پیش کی جاتی ہیں وہ عام طور سے ضعیف ہیں _ مثلاً ایک حدیث یہ بیان کی جاتی ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا ہے :
مَنِ اعتَکَفَ عَشْراً فِی رَمَضانَ حَجَّتَیْنِ وَ عُمْرَتَینِ، یعنی کانَ کَحَجَّتَینِ وَ عُمْرَتَینِ (شعب الایمان للبیہقی)
"جس شخص نے رمضان میں دس دن اعتکاف کیا اس نے گویا دو حج اور دو عمرے کیے _”
اسے محدثین نے ضعیف قرار دیا ہے _

اعتکاف کی روح یہ ہے کہ آدمی ہر طرف سے کٹ کر صرف اللہ تعالی سے جڑے اور صرف اسی سے لَو لگائے _ وہ تمام دنیاوی مشاغل سے قطع تعلق کرلے اور اللہ تعالٰی کی عبادت کرنے اور اس کا تقرِب چاہنے کے لیے خود کو وقف کردے _ اعتکاف سے قبل اس کا رابطہ دوسرے انسانوں سے رہتا ہے ، وہ ان سے معاملات کرتا ہے _ اعتکاف کی صورت میں وہ خود کو مسجد میں قید کرلیتا ہے _ اس طرح اس کا رابطہ دوسرے تمام انسانوں سے کٹ جاتا ہے اور صرف اللہ تعالی سے جڑ جاتا ہے _ اس لیے دورانِ اعتکاف میں آدمی کو صرف وہ کام کرنے چاہیے جن سے اللہ تعالٰی سے اس کا تعلق مضبوط سے مضبوط تر ہو _ مثلاً وہ نوافل پڑھے ، قرآن مجید کی تلاوت کرے ، احادیث پڑھے ، ذکر کرے ، اوراد و تسبیحات پڑھے ، دعاؤں کا اہتمام کرے ، توبہ و استغفار کرے ، دینی کتابوں کا مطالعہ کرے ، مسجد میں ہونے والے دینی خطبات و مواعظ سے فائدہ اٹھایے، وغیرہ _

لیکن دیکھا یہ گیا ہے کہ آج کل اعتکاف کرنے والوں کی جو سرگرمیاں اعتکاف سے قبل رہتی ہیں ، وہی دورانِ اعتکاف میں بھی جاری رہتی ہیں _ کویی شخص کسی ادارہ یا تنظیم کا ذمے دار ہے تو اس کا دفتر اعتکاف خانے میں اٹھ آتا ہے ، وہ وہاں رہتے ہوئے تمام تنظیمی معاملات ڈیل کرتا ہے ، تمام ضروری کاغذات پر دستخط کرتا ہے _ کوئی ڈاکٹر ہے تو دورانِ اعتکاف میں مریضوں کو دیکھتا ہے ، کوئی منتظم ہے تو اعتکاف خانے میں اپنے ماتحتوں کے ساتھ میٹنگ کرتا ہے ، کوئی دوکان دار یا تاجر ہے تو دورانِ اعتکاف میں خرید و فروخت کے معاملات ڈیل کرتا ہے ، کوئی کسی کمپنی کا ڈائرکٹر یا منیجر ہے تو اپنے ماتحتوں سے رابطہ رکھتا اور ان کو ہدایات صادر کرتا ہے _ الغرض اعتکاف کرنے والے کے ، دورانِ اعتکاف میں ، دوسرے انسانوں سے روابط میں ذرا بھی کمی نہیں آتی اور وہ حسبِ سابق جاری رہتی ہیں _

آج کل موبائل کی وجہ سے معاملہ اور بھی بگاڑ کا شکار ہوگیا ہے _ دورانِ اعتکاف میں آدمی موبائل کے ذریعے اپنی تمام پسندیدہ شخصیات اور تمام پسندیدہ کاموں سے جڑا رہتا ہے _ وہ دوسروں کو فون کرتا ہے اور ان کے فون ریسیو کرتا ہے ، اس کے علاوہ فیس بک ، واٹس ایپ اور ملٹی میڈیا کے دیگر وسائل سے بھی محظوظ ہوتا ہے _

اعتکاف کی روح یہ ہے کہ آدمی دورانِ اعتکاف میں صرف اللہ تعالی سے اپنا رابطہ جوڑے اور غیر اللہ سے رابطہ محدود کرلے _ اس لیے بہتر تو یہ ہے کہ اعتکاف کرنے والا یا تو اپنے پاس موبائل رکھے ہی نہ ، یا رکھے تو اسے سایلنٹ کرلے ، دوسروں کے فون ریسیو نہ کرے اور خود جب بہت ضروری ہو تب ہی کسی کو فون کرے _

اعتکاف کرنا ہر شخص کے لیے ضروری نہیں _ اس لیے صرف وہی شخص اس کا ارادہ کرے جو نو دس دنوں تک اپنے تمام دنیاوی تعلقات سے کنارہ کش ہونے کی سکت رکھتا ہو _

مزید دکھائیں

محمد رضی الاسلام ندوی

ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی معروف مصنف اور دانش ور ہیں۔ موصوف تصنیفی اکیڈمی، جماعت اسلامی ہند کے سکریٹری اور سہ ماہی مجلہ تحقیقات اسلامی کے نائب مدیر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close