عبادات

دعا مومن کا ہتھیار ہے لیکن۔۔۔۔!

دعا کے بارے کہا گیا ہے کہ یہ مومن کا ہتھیار ہے اور اللہ سے قربت کا ذریعہ بھی ۔ آج کے دور میں ہم ہر معاملہ میں دعا تو کرتے ہیں ۔لیکن ہماری دعائیں قبول نہیں ہو رہی ہیں ۔ ہم آہ و زاری بھی کرتے ہیں اللہ کو اس کی رحمت کا واسطہ دے کر بھی دعائیں کی جارہی ہیں لیکن حالات بدل ہی نہیں رہے ۔دعا کی قبولیت کی شرائط میں سے چند باتیں بتائی گئی ہیں ان میں حلال رزق بھی ایک ہے۔

مزید پڑھیں >>

ایسی نماز سے گزر ایسے امام سے گزر

جب ہم اپنا قیمتی وقت خرچ کرتے ہی ہیں تو نمازوں کو سنوارنے کی کی بھی فکر کریں اور ائمہ کو تو اور بھی محتاط ہونا چاہیے کیوں کہ وہ خود کے علاوہ مقتدیوں کی نماز کے بھی ضامن ہیں اور ان پر مقتدیوں کے اصلاح کی ذمہ د اری بھی ہے۔ اللہ پا ک ہم سب کو عمل کی توفیق عنایت کرے۔ آمین! 

مزید پڑھیں >>

تصور حج: ہندوستانی تناظر میں

۔یہ حج وہ طریق عبادت ہے جو بندے کو خدا اور انسانوں سے مضبوطی سے جوڑے رکھتا ہے۔اس عظیم عبادت کے ذریعہ خدا اپنے بندوں کو بلا کر اس تربیت سے گذارتا ہے جس کے بعد ان کی زندگیاں خدا کی مرضی کے مطابق گذرنے لگتی ہیں اور بندگان خدا سے ان کاتعلق محبت اور خدمت کی بنیادوں پر قائم ہوجاتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

حج: جذبۂ اطاعت ومحبت سے لبریز عظیم عبادت

حج کے مبارک سفر پر جانے والے خوش نصیب افراد کو یہیں سے اپنے ذہن و دل کو اطاعت و فنائیت کی طرف مائل کردینا چاہیے۔اور مکمل فرماں برداری کے ارادوں کو پختہ کرلینا ضروری ہے۔تاکہ خالی ہاتھ جاکر دامن ِمرادکو بھر کر لاسکیں۔

مزید پڑھیں >>

حج کی دُعائیں: ایک نظر میں!

یاد رہے کہ دعا کا پڑھنا مقصد نہیں دعا مانگنا مقصود ہے اس لئے جو لوگ عربی نہیں جانتے وہ ترجمہ دیکھ کر دعا کا مطلب سمجھ کر مانگیں تو بہتر ہے یہ نہ ہوسکے تو اس وقت ان دعاؤں کے پڑھنے سے بھی قبولیت کی پوری امید ہے۔ ان دعاؤں کے ساتھ جو کچھ اپنی اور اپنے اہل و عیال، متعلقین و احباب کی اور عام مسلمانوں کی ضرورتیں معلوم ہیں ان کیلئے بھی دعاء اپنی ہی زبان میں مانگیں ۔

مزید پڑھیں >>

شوال کے چھ روزے

ان روزوں کاایک فائدہ یہ بھی ہے کہ ایک مہینہ مسلسل روزہ رکھنے کی وجہ سے معدہ بھوک سہنے کا عادی ہوگیاہے، اچانک کھانے پینے کے نتیجہ میں اسے نقصان ہوسکتاہے؛ اس لئے ان چھ روزوں کے ذریعہ معدہ کے بھوک سہنے کی عادت کوختم کیاجاتاہے؛ تاکہ نقصان سے بچاجاسکے۔

مزید پڑھیں >>

شوال کے چھ روزے: فضائل ومسائل

اللہ عزوجل یہ چاہتے ہیں کہ بندہ ہر دم میری طرف متوجہ رہے ، میری احکام پر ہر دم عمل پیرا ہو ، ابھی رمضان کا سماں قائم تھا، رحمتوں ، برکتوں اور مغفرتوں سے مسلمانوں نے اپنے دامن مراد کو بھر لیا تھا، مختلف عبادتوں روزہ ، ترایح، قیام لیل، اعتکاف ، افطار ، سحر ، شب قدر کی تلاش وجستجو کے ذریعے مسلمانوں کو ایک مہینہ روحانیت کے دور سے گذارا گیا.

مزید پڑھیں >>

شب ِعید اور ہماری غفلت

شب عیدوہ رات ہے جس میں رمضان بھر کے اعمال کی مزدوری دی جاتی ہے ، اجر و ثواب کے خزانے اور مغفرت و رحمت کی بیش بہا دولت بکھیری جاتی ہے۔کس قدر محرومی اور خسارے کی بات ہے کہ پورے مہینے روزے رکھ کر جب اَجر ملنے کا وقت آئے تو اِنسان اُس سے اِعراض کرنے لگ جائے ، یہ تو ایسا ہی ہوگیا جیسے کوئی دن بھر کام کرنے کے بعد شام کو جب مالک کی جانب سے اجرت ملنے کا وقت ہو تو مزدوری لینے سے اِنکار کردے۔

مزید پڑھیں >>

شب ِ قدر: رب کو منانے کی رات ہے!

شب ِ قدر چوں کہ اللہ تعالی کی خصوصی عطا کی رات ہے اس امت کے لئے ،جس کے ذریعہ اللہ اپنے بندوں کو نوازنا اور معاف کرنا چاہتے ہیں اور قصوروارں کو بخشنا اور عفو ودرگزرکامعاملہ فرماناچاہتے ہیں اس کے لئے یہ رات بھی ایک بہانہ ہے ۔اور اس رات میں جو دعا مانگنے کی تلقین کی گئی ہے وہ بھی اسی حقیقت کو واضح کرتی ہے ۔چناں چہ حضرت عائشہ ؓ نے نبی کریم ﷺ سے پوچھا تھا کہ اگر شب ِ قدر نصیب ہوجائے تو کونسی دعا مانگنا چاہئے تو آپ ﷺ نے فرمایا کہ اللہم انک عفو کریم تحب العفو فاعف عنی کے ذریعہ دعا مانگو۔

مزید پڑھیں >>