مذہبی مضامین

موبائل و انٹرنِٹ کے ذریعے ایمان کی آزمائش

ندیم احمد انصاری

 مومن ہونے کے لیے ضروری ہے کہ انسان اللہ تعالیٰ کی ذات و صفات، حضرت محمد ﷺ کی رسالت اور موت کے بعد اٹھائے جانے یعنی آخرت پر ایمان رکھے۔ مومن ہونے کے لیے ضروری ہے کہ اس کا یہ پختہ عقیدہ ہو کہ دنیا کی زندگی کے بعد آخرت کی زندگی آنے والی ہے اور روزِ قیامت باری تعالیٰ کے حضور ہر ایک کی پیشی ہونی ہے۔ وہ اللہ جس کا علم تمام ظاہر و پوشیدہ کو محیط ہے، اس سے کسی کا کوئی قول و فعل چھپا نہیں رہ سکتا۔ اللہ سبحانہ و تعالیٰ کا ارشاد ہے:بے شک! میں آسمانوں اور زمین کے بھید جانتا ہوں اور جو کچھ تم ظاہر کرتے ہو اور جو کچھ چھپاتے ہو، مجھے اس سب کا علم ہے۔ (البقرۃ)قرآن مجید میں ایک مقام پر فرمایا:اگر تم کوئی بات بلند آواز سے کہو ( یا آہستہ)، تو وہ چپکے سے کہی ہوئی باتوں کو، بلکہ اور زیادہ چھپی ہوئی باتوں کو بھی جانتا ہے۔ (طہ) ایک مقام پر فرمایا:وہ غائب و حاضر تمام باتوں کا جاننے والا ہے، اس کی ذات بہت بڑی، اس کی شان بہت اونچی ہے۔ (الرعد) اور فرمایا:کیا تم نہیں جانتے کہ آسمان اور زمین کی تمام چیزیں اللہ کے علم میں ہیں ؟ یہ سب باتیں ایک کتاب میں محفوظ ہیں، بے شک! یہ سارے کام اللہ کے لیے بہت آسان ہیں۔ (الحج)نیز باری تعالیٰ کا فرمانِ عالی شان ہے :وہی ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو چھے دن میں پیدا کیا، پھر عرش پر استوا فرمایا۔ وہ ہر اس چیز کو جانتا ہے جو زمین میں داخل ہوتی ہے اور جو اس سے نکلتی ہے۔ اور ہر اس چیز کو جو آسمان سے اترتی ہے اور جو اس میں چڑھتی ہے۔ اور تم جہاں کہیں ہو وہ تمھارے ساتھ ہے، اور جو کام بھی تم کرتے ہو اللہ اس کو دیکھتا ہے۔ (الحدید)

  اللہ تعالیٰ ہر موقع پر بندے کے ساتھ ہوتے ہیں، بھلے ہی انسان کو اس کا ادراک نہیں ہو پاتا۔ قرآن مجید میں فرمایا گیا:کیا تم نے نہیں دیکھا کہ آسمانوں اور زمین میں جو کچھ ہے، اللہ اسے جانتا ہے؟ کبھی تین آدمیوں میں کوئی سرگوشی ایسی نہیں ہوتی جس میں چوتھا وہ نہ ہو، اور نہ پانچ آدمیوں کی کوئی سرگوشی ایسی ہوتی ہے جس میں چھٹا وہ نہ ہو۔ اور چاہے سرگوشی کرنے والے اس سے کم ہوں یا زیادہ، وہ جہاں بھی ہوں، اللہ ان کے ساتھ ہوتا ہے۔ پھر وہ قیامت کے دن انھین بتائے گا کہ انھوں نے کیا کچھ کیا تھا؟ بے شک! اللہ ہر چیز کو جاننے والا ہے۔ (المجادلہ)یہ جو فرمایا کہ قیامت کے دن بتائے گا کہ تم نے کیا کچھ کیا ہے، اس کی وضاحت یوں فرما دی کہ مونہوں پر مہر لگا کر، انسان کے اعضا سے پوچھا جائے گا کہ ان سے کیا اعمال کروائے گئے۔ ارشاد فرمایا گیا:آج ہم ان کے مونہوں پر مہر لگا دیں گے اور ہم سے ان کے ہاتھ کلام کریں گے اور ان کے پاؤں اس کی گواہی دیں گے، جو کچھ وہ کیا کرتے تھے۔ (یٰس)

  وہ تو قادر و مالک ہے، اس کے لیے کیسے کوئی کام مشکل ہو سکتا ہے، جب کہ اس کی پیدا کردہ مخلوق نے ایسے ایسے آلات ایجاد کر لیے ہیں جن کی مدد سے دور دراز بیٹھے کسی انسان کی حرکات و سکنات پر نظر رکھی جا سکتی ہے۔ فی زمانہ بعض ایسی موبائل ایپ بھی وجود میں آچکی ہیں، جن کی مدد سے انسان کے قدموں کے اعداد و شمار تک معلوم کیے جا سکتے ہیں۔ تو خدا کی قدرت کا تو کیا کہنا!اس لیے گنہ گار کو دھیان پیدا کرنا چاہیے کہ میرا اللہ ہر وقت مجھ پر نگاہ رکھے ہوئے ہے، میرا کوئی قول و عمل ایسا نہیں، جس کی اسے خبر نہ ہو۔ باری تعالیٰ کا فرمان ہے :اور بے شک ہم نے انسان کو پیدا کیا اور ہم جانتے ہیں ان وسوسوں کو جو اس کے جی میں آتے ہیں اور ہم اس کی شہ رگ سے بھی زیادہ اس سے قریب ہیں۔ اس وقت بھی جب (اعمال کو) لکھنے والے دو فرشتے لکھ رہے ہوتے ہیں، ایک دائیں جانب اور دوسرا بائیں جانب بیٹھا ہوتا ہے۔ انسان کوئی لفظ زبان سے نکال نہیں پاتا، مگر اس پر ایک نگراں مقرر ہوتا ہے، ہر وقت (لکھنے کے لیے ) تیار۔ (ق) اس کے باوجود افسوس ہے ہم گنہ گاروں پر کہ ہم گناہ کرتے ہوئے انسانوں سے تو شرماتے ہیں کہ کوئی ہماری الٹی سیدھی بات کوئی نہ سن لے، غلط چیٹ (chat) نہ پڑھ لے، غلط کاری میں ملوث نہ دیکھ لے، لیکن اس خداوندِ قدوس سے نہیں شرماتے، جس کا ارشاد ہے :یہ لوگوں سے تو شرماتے ہیں، اور اللہ سے نہیں شرماتے، حالاں کہ وہ اس وقت بھی ان کے پاس ہوتا ہے جب وہ راتوں کو ایسی باتیں کرتے ہیں جو اللہ کو پسند نہیں اور جو کچھ یہ کر رہے ہیں اللہ نے اس سب کا احاطہ کر رکھا ہے۔ (النساء)اسی لیے رسول اللہ ﷺنے ارشاد فرمایا تھا: جہاں کہیں بھی ہو اللہ سے ڈرو اور برائی کے بعد بھلائی کرو تاکہ وہ اسے مٹا دے، اور لوگوں سے اچھے اخلاق کے ساتھ پیش آؤ۔ (ترمذی)

 اس تمہید کے بعد عرض یہ کرنا ہے کہ آج ہمارا ایمان موبائل اور انٹرنٹ کے ذریعے آزمایا جا رہا ہے۔ ہم جلوت میں تو نیک ہوتے ہیں، لیکن خلوت میں ہمارا حال دوسرا ہوتا ہے۔ ہم خدا کی ادنیٰ مخلوق یہاں تک کہ چھوٹے بچوں کے سامنے گناہ کرنے میں تو عار محسوس کرتے ہیں، لیکن اللہ کے سامنے گناہ کرنے سے نہیں ڈرتے۔ ہمارا ماننا تو یہ ہے کہ ہم جو کچھ کرتے ہیں وہ سب خدا کو معلوم ہے، لیکن پھر بھی تنہائی اور خلوت میں اللہ کی نافرمانیوں میں مبتلا ہونے سے نہیں چوکتے ؟غلط سائٹس، فحش تصویروں اور نامناسب باتوں میں ہم اس وقت ہرگز مشغول نہیں ہوتے، جب ہمارے استاذ، والدین بلکہ کسی کے بھی دیکھ لینے کا اندیشہ ہو، لیکن اللہ کے موجود ہوتے ہوئے سارے گناہ کرتے رہتے ہیں ؟ہم اپنے موبائل کی ہسٹری تو ڈلیٹ کر سکتے ہیں، لیکن اپنے نامۂ اعمال کی سیاہی دھونا اس طرح ممکن نہیں ؟کتنے افسوس کی بات ہے کہ اگر ہم کسی گناہ میں ملوث ہوں اور ہوا کے جھونکے سے پردہ بھی ہِل جائے، تو ہم ڈر جاتے ہیں، لیکن اس قادر و قہار کا عرش ہِل جائے، اس کی ہمیں پروا نہیں ہوتی! ہمیں سماج و معاشرے میں تو اپنی شبیہ اور امیج خراب ہونے کا ڈر ستاتا ہے، لیکن قیامت کے دن کی رسوائی سے ہم بے فکر ہوئے بیٹھے ہیں ؟

رسول اللہ ﷺکا پیارا ارشاد ہے : میرے دوستوں میں سب سے قابلِ رشک وہ شخص ہے جو کم مال والا، نماز میں زیادہ حصہ رکھنے والا، اور اپنے رب کی اچھی طرح عبادت کرنے والا ہے، نیز یہ کہ جو خلوت میں بھی اپنے رب کی اطاعت کرے، لوگوں میں چھپا رہے، اور اس کی طرف انگلیوں سے اشارے نہ کیے جائیں، اس کا زرق بہ قدر کفایت ہو، اور وہ اسی پر صبر کرتا ہو۔ پھر حضرت نبی کریم ﷺ نے دونوں ہاتھوں سے چٹکیاں بجائیں اور فرمایا؛ اس کی موت جلدی آئے اور اس پر رونے والیاں کم ہوں اور اس کی میراث بھی کم ہو۔ (ترمذی)حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ حضرت نبی کریم ﷺ سے روایت کرتے ہیں کہ آپ ﷺنے فرمایا: سات آدمیوں کو اللہ تعالیٰ اس دن اپنے عرش کے سائے میں رکھے گا، جس دن اس کے عرش کے سائے کے سوا کوئی اور سایہ نہ ہوگا(۱)عادل بادشاہ (۲)وہ شخص جس کا دل مسجدوں میں لگا رہتا ہو(۳، ۴)وہ دو اشخاص جو باہم صرف اللہ کے لیے دوستی رکھیں، جب جمع ہوں تو اسی کے لیے، اور جب جدا ہوں تو اسی کے لیے (۵) وہ شخص جس کو کوئی منصب اور جمال والی عورت زنا کے لیے بلائے اور وہ یہ کہہ دے کہ میں اللہ سے ڈرتا ہوں، اس لیے میں ایسا کام نہیں کر سکتا (۶)وہ شخص جو پوشیدہ صدقہ دے، یہاں تک کہ اس کے بائیں ہاتھ کو بھی معلوم نہ ہو کہ اس کے داہنے ہاتھ نے کیا خرچ کیا (۷)وہ شخص جو خلوت میں اللہ کو یاد کرے اور اس کی آنکھیں آنسوؤں سے تر ہوجائیں۔ (بخاری)

٭٭٭

مزید دکھائیں

ندیم احمد انصاری

ڈائریکٹر الفلاح اسلامک فاؤنڈیشن، انڈیا اسلامی اسکالر و صحافی

متعلقہ

Back to top button
Close