عالمی یوم سیاحت پر خصوصی پیش کش

0

راکیش کمار مالویہ

کیا سیاحت کا مطلب محض کہیں چھٹی کے دن گزارنا ہے ؟

 سیاحت کو اب انگریزی کے ٹورزم لفظ سے سمجھنا زیادہ آسان ہو گیا ہے. جب ہم ٹورزم کہتے ہیں تو کچھ دن اور رات کے پیکج کے ساتھ کسی دور کی جگہ پر وقت گزارنا ٹورزم ہو جاتا ہے. اس کا مرکزی اظہار آج کے دن کے تناظر میں یہ ہے کہ روز روز کے کام اور خاندانی زندگی سے تھوڑی فرصت نکال کر کہیں وقت گزارنا ، جو زیادہ تر قدرتی خوبصورتی کے درمیان ہوتا ہے. اس میں کوئی برائی بھی نہیں ہے، لیکن ترقیافتہ  ممالک میں سیاحت  کو محض یہیں تک محدود دیکھنے پر تشویش ضرور ہونی چاہئے. جس ملک میں ٹورزم یا سیاحت سے بھی پہلے گھومنے پھرنے کی روایت  موجود ہو اور جس کا اس  سماج سے قریب کا رشتہ ہو، ان روایات کا ایک دوسری روایت میں تبدیل ہونا تھوڑا تکلیف تو دیتا ہی ہے. وہ بھی ایسے وقت میں، جب ٹورزم کرانے والے کی توجہ ملکی و غیر ملکی سیاح بڑھانے اور اسی تناظر میں فائدہ نقصان کا حساب لگانےمیں زیادہ لگتا ہو.

 کیا واقعی میں سیاحت سے سماج کا واسطہ ہے ؟ کیا سیاحت کا مطلب صرف پانچ ستارہ ہوٹل، ریزورٹ اور ہوائی دورے ہی ہیں ؟ کیا سیاحت کی ایک پالیسی بناتے وقت معاشرے، اس کی حفاظت، سیاحت علاقوں کے ذریعہ سماج کو جاننے اور سمجھنے کی کوشش نہیں کی جاتی ؟ کیا سیاحت کا مطلب محض چھٹی کے کچھ دن گزارنا ہے ؟ جس طرح کی تشہیر  آج کی جاتی ہے، اس سے تو یہی لگتا ہے کہ سیاحت کا مطلب  صرف سرمایہ دار سیاحوں اور ان کی عیش و آرام کی ضرورت کو ہی پوری کرنا ہے.

 ہندوستان بنیادی طور پرسیاحتی چہل پہل والا ملک ہے، جہاں لوگ ایک خاص مقصد سے سفر کرتے رہے ہیں. یہاں کی روایات اور رسوم و رواج میں براہ راست ظاہرہی نہیں ہوتا  کہ یہ سیاحت ہی ہے.  چاہے وہ مذہبی زیارتوں  کے بہانے ہو یا افسانوی کہانیوں کے. وہ ہمیں سبق بھی دیتا ہے اور اطمینان بھی. پیدل اور اجتماعی دورے کرنا، تاکہ مقام اور معاشرے کو جڑوں سے جانا جا سکے. کس ملک میں کون سی فصلیں ہیں، کس دریا کے پانی کی کیا خاصیت ہے، کن جنگلوں میں کون سے درخت پودے اور پھل خاص ہیں، یہ چھوٹی چھوٹی چیزیں ترجیحات سے خارج ہیں۔  صحیح معنوں میں سکون اور امن سے کیا گیا سیاحت ہی لطف دیتا ہے.

 سیاحت محض اچھا کھانا کھا لینا ہی نہیں ہے، سیاحت اے سی  کمرہ اور سمندر کا کنارہ بھی نہیں ہے. مشکل یہ آتی ہے کہ اب کشمیر سے لے کر گوا تک چاينيذ کھانا آسانی سے مل جاتا ہے، لیکن اگر آپ ان سے کچھ اس علاقے  کے کھانے  کا مطالبہ  کر بیٹھیں تو ہاتھ کھڑے کر دیتے ہیں. مقامی ماحول اور رسم و رواج کو جانے بغیر کیا ایک سفر مکمل ہو سکتا ہے. ایسی چیزیں سامنے بھی آتی ہیں، تو وہ مارکیٹ کے ایجنڈے کے طور پر ہی سامنے آتی ہیں.

ہندوستان میں سال 2013 میں 114 کروڑ مقامی سیاحتی زیارتیں ہوئیں، جبکہ یہاں غیر ملکی سیاحوں کے دوروں کی تعداد 1.99 کروڑ رہی. غیر ملکی کرنسی کے طور پر 18.5 ارب ڈالر ہندوستان کو حاصل ہوئے.  آج ملک کے پورے لین دین میں سیاحتی مقامات کے ذریعہ تقریبا سات لاکھ کروڑ روپے کا لین دین ہوا ہے۔

 یہ ایک بڑی رقم ہے، اور ہندوستان  میں اسے بڑھائے جانے کے بے پناہ امکانات بھی ہیں، لیکن اس کے لئے ضروری یہ ہے کہ یہ دیکھا جائے کہ پالیسیوں میں اسے کس طور پر سوچا سمجھا جا رہا اور اس کی تشہیر کی جا رہی ہے. اگر ہم دنیا  قدرتی خوبصورتی سے ملک طرف متوجہ ہوتی ہےاور ان خوبصورت  علاقوں کے ارد گرد کی ثقافت اور معاشرے کے بارے میں ٹھیک طریقے سے سوچتے سمجھتے ہوئے اسے ہم  مرکز میں اپنی پالیسیوں میں جگہ نہیں  دیتے ہیں تو، یہ ہماری محدود سوچ ہے. لیکن ہمیں یہ بھی سوچنا ہوگا کہ سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے ساتھ ساتھ  کیا معاشرے کے اصل اقدار کا تحفظ بھی کیا جا رہا ہے یا نہیں.

اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ سال 2002 میں ہندوستان میں 27 کروڑ گھریلو سیاحوں تھے جو سال 2014 میں بڑھ کر 114 کروڑ ہو گئے ہیں، جو آنے والے سالوں میں اور بڑھیں گے، لیکن کیا اس کے متوازی بھی سوچا جا رہا ہے کہ سیاحوں کی علاقے نئے سیاحوں کا بوجھ اٹھا پانے کے قابل ہے بھی یا نہیں …؟ یا اسے بھی منظم کئے جانے کی ضرورت ہے، تاکہ مقامی ماحولیات، ماحولیاتی اور بنیادی ڈھانچے پر اس تعداد کا کوئی برا اثر نہ پڑے

سیاحت میں ایک مسئلہ سیکورٹی کا بھی ہے. جب تک ہم اپنی اندرونی سیکورٹی کے نظام کو چاک چوبند نہیں کر لیتے، سیاحت کو محفوظ اور قابل احترام نہیں بنا دیتے، سیاحوں کے تعداد اس رفتار سے نہیں بڑھے گی.

اور اس سیاحت کی حالت تو بالکل ہی بد لنی چاہئے، جسکے لئے  دنیا کے دوسرے ممالک میں  اسے جانا جاتا ہے. جب کوئی غیر ملکی سیاح ہندوستان  میں غریب لاچار لوگوں کی تصاویر لیتا ہے، پرورش سے محروم بچوں کی تصاویر اتارتا ہے، سڑک پر بھیک مانگتے لوگوں کو رحمت کا مستحق سمجھتا ہے، ڈھابو-ہوٹلوں میں بچوں کو ٹیبل صاف کرتے دیکھتا ہے، تو وہ سمجھتا ہے یہی ہندوستان  ہے. ایسے ہندوستان پر ہم کو بھی رحم آتا ہے. ہم چاہتے ہیں کسی بھی سیاح کو ایسا ہندوستان تلاش کرنے سے بھی نہ ملے.

( مضمون نگار این ایف آئ کے فیلو اور معروف سماجی تجزیہ نگار ہیں)

تبصرے