آئینۂ عالمسیر و سیاحت

بھوٹان: سادگی کا شان

فطرت کی گود میں بسا بھوٹان ایک ایسا ملک ہے جو خوشحالی پر زور دیتا ہے. جہاں پوری دنیا کا زور جی ڈی پی یعنی "مجموعی گھریلو مصنوعات” پر ہوتا ہے، وہیں بھوٹان آپ ناگركو کی زندگی "مجموعی قومی خوشی” سے پر ہے. یہ ایک بڑا فرق ہے جو بھوٹان کو پوری دنیا سے الگ کرتا ہے. بھوٹان کی ہواؤں میں آکسیجن کی مقدار اتنی زیادہ ہے کہ آپ کو پورے وقت فریش محسوس کرتے ہیں، یہاں کی دیواروں اور سڑکوں پر آپ کو اشتہارات نہیں ملےگے اور شہروں میں نہ تو خوبصورت شاپنگ مال ہے اور نہ ہی ٹریفک کی بتیوں کی ضرورت پڑتی ہے.

اس ملک میں فوجیوں سے زیادہ راہب ہے. کوئی بھی شخص جلد بازی میں نہیں دکھائی پڑتا ہے. مادی دنیا سے بے فکر یہ ملک سولو اور اندرونی خوشی کو زیادہ ترجیح دیتا ہے. بھارت اور چین کے درمیان گھرے اس مختصر سے ملک کی آبادی تقریبا پونے 8 لاکھ ہے جس میں زیادہ تر لوگ بدھ مت کو ماننے والے ہیں، بھوٹان میں جمہوریت اور آئینی بادشاہت ہے. بادشاہت یہاں 1907 کی طرف سے ہے لیکن 2008 میں یہاں کے بادشاہ نے خود سے آگے بڑھ کر جمہوریت کا اعلان کیا. شاید یہی وجہ ہے کہ بھوٹانی اپنے بادشاہ کو بہت احترام کی نظر سے ہیں.

بھوٹان کے ‘پارو’ اور ‘تھمپھو’ دو اہم شہر ہیں، جس میں تھمپھو بھوٹان کے دارالحکومت ہے، وہی پارو تو جیسے خواب کا شہر ہے، پرسکون اور ٹھہرا ہوا جو سکون دیتا ہے. پارو وادی سے نظر آنے والی خوبصورتی آپ کو مدہوش کر دیتی ہے، یہ ایک ایسا شہر ہے جہاں کی سادگی کے شان میں آپ کو کھو سکتے ہیں. پارو میں بھوٹان کا اکلوتا ہوائی اڈہ بھی ہے. پارو میں گھستے ہی ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے آپ کو وقت میں کہیں پیچھے چلے گئے ہوں، یہ جاکر کسی قدیم شہر کا احساس ہوتا ہے. پورے شہر کے ساتھ ایک دریا بھی بہتی ہے بالکل صاف، شفاف اور پرسکون. پارو شہر کی خاصیت یہاں کی ہریالی پہاڑی گھاٹيا ہے. یہ ایک بے فکر شہر ہے جہاں کثیر المنزلہ مکان نہیں ہے اور شہر میں ہی کھیتی بھی ہوتی ہے. پارو آپ پراسرار ٹائیگر گھوںسلا کے لئے بھی مشہور ہے، 3120 میٹر کی اوچايپر بنا ٹائیگر گھوںسلا بھوٹان کے سب سے مقدس بدھ مت خانقاہوں میں سے ایک ہے پارو شہر سے خانقاہ کی چڑھائی شروع کرنے کی جگہ تقریبا 12 کلو میٹر دور ہے یہ خانقاہ پارو سے شمال میں 12 کلومیٹر کی دور تاكسگ نامی جگہ پر ہے، یہاں سے شیر گھوںسلا تک جانے کے لئے پیدل چلنا پڑتا ہے آدھے راستے تک گھوڑے کا بھی انتیجام ہیں. لمبی چڑھنے کے بعد ٹائیگر گھوںسلا تک پہچنے پر آپ کو منفرد امن اور دلچسپ احساس ہوتا ہے خانقاہ پر پہنچ کر منفرد کا احساس ہوتا ہے.

بھوٹانی اپنی ثقافت اور ماحول کو لے کر بہت حساس ہیں، یہ شاید دنیا کا اکیلا کاربن یہاں کی منفی ملک ہے جہاں کی 70 فیصد زمین درخت پودوں سے ڈھکی ہے. ان پالیسیوں اور عادات دونوں میں ماحولیاتی تحفظ پر زور دیا جاتا ہے. بھوٹان کے آئین کے مطابق یہاں کے زمین کا 60 فیصد حصہ جنگلات اور درخت پودوں کے لئے محفوظ رکھنا لازمی ہے، یہاں قدرتی خوبصورتی اور املاک کے بد لے اقتصادی فوائد کو اہمیت نہیں دی جاتی ہے. سال 1999 سے یہاں پلاسٹک کی تھیلیاں بھی محدود ہیں. بھوٹانواسي بھی ماحول کو لے کر بہت ہوش ہوتے ہیں. ماحول سے محبت انہیں بچپن سے ہی سکھایا جاتا ہے.

بھوٹان میں بہت کم تعداد میں نجی گاڑی ہے، زیادہ تر لوگ پبلک ٹراسرپوٹ کا استعمال کرتے ہیں. بھوٹان میں چاروں طرف ہریالی ہی ہریالی ہے اس کے باوجود بھی لوگ اپنے گھروں میں الگ سے باغ لگاتے ہیں اور اس میں طرح طرح کے رگبرگي پھول اگاتے ہیں. بھوٹانی لوگ فطرت کا بہت احترام کرتے ہیں. ان کا فطرت کے فی محبت محسوس کیا جا سکتا ہے. وہ ان پہاڑوں سے دل سے جڑے ہوئے ہیں. آپ نوعیت کے فی محبت اور تحفظ کو لے کر فخر کرتے ہوئے کوئی بھی عام بھوٹانی آپ کو یہ بتاتے ہوئے مل جائے گا کہ ‘وہ کس طرح اپنے ملک کے زیادہ تر جیو-حصہ میں درخت پودوں کے ہونے کے باوجود ان کا استعمال کرنے کے بدلے مسلسل نئے درخت لگا رہے ہیں اور جب ان کے بادشاہ کے گھر بچے کی پیدائش ہوئی تو پورے ملک نے 2 کروڑ درخت لگائے. ‘بھوٹانی فطرت سے جتنا لیتے ہیں اس سے کئی گنا زیادہ اس لوٹانے کی کوشش کرتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ ان کا ملک كابرن اخراج سے مکمل طور سے آزاد ہے جو دنیا کے دوسرے ملکوں کے لئے ایک مثال ہے.

ملک میں وسائل کم ہونے کے باوجود حکومت لوگوں کی بنیادی ضروریات کے تئیں حساس ہے اور تعلیم، صحت جیسی بنیادی سہولیات پر خصوصی توجہ دیتی ہے. یہاں قانون بھی کافی اچھی ہے اور جرائم کی شرح اور بدعنوانی بھی بہت کم هےكانون پر سختی سے عمل بھی کیا جاتا ہے.بھوٹان کے لوگ بہت ملنسار ہوتے ہیں. وہ مددگار بھی ہوتے ہیں. لیکن ان کا ہندوستانیوں کے تئیں ایک الگ ہی اپنا پن اور منسلکہ دیکھنے کو ملتا ہے. وہ ہندوستانیوں کو اپنے سے الگ نہی مانتے ہیں. اس کی اہم وجہ بھوٹان کا ہندوستان کے ساتھ پرانے ثقافتی رشتہ ہے. بھوٹان میں زیادہ تر جروتر کے سامان بھی بھارت سے آتے ہیں.

اسی سال مئی کے مہینے میں مجھے بھوٹان جانے کا موقع ملا. میں نے بھوٹان میں بہت سے لوگوں سے هیپپينیس انڈیکس کے معاملہ میں بات کی جس کو لے کر ان کا کہنا تھا کہ ‘بھوٹان کے لوگوں کی خوش رہنے کی بڑی وجہ یہ ہے کہ وہ جسمانی اشیاء کے بدلے قدر کو زیادہ اہمیت دیتے ہیں.’ ان کا کہنا تھا کہ ‘ یہاں ہمیں بچپن سے ہی سکھایا جاتا ہے کہ آپ کے پاس جو نہیں ہے اس سے پریشان رہنے کی جگہ آپ کے پاس جو ہیں اس میں ہی اطمینان اور خوشی تلاش کی جائے. ‘یہاں خاندانی تعلقات اور رشتوں کو زیادہ اہمیت دی جاتی ہے. ایک نوجوان لڑکی نے بتایا کہ "میرا بچپن کا خواب ہے کہ میں ایيرهوسٹیج بنوں، اس کے لیے میں دیرینہ تیاری بھی کر رہی تھی اور کچھ دن پہلے اس کے لئے انٹرویو بھی دے کر آئی ہوں لیکن ایيرهوسٹیج کے صرف 3 عہدے ہیں جس کے لئے 500 لڑکیوں نے انٹرویو دیا ہے۔ تو میرا اس میں منتخب نہیں ہوتا تو مجھے دکھ تو ہوگا مگر میرا خیال ہے کہ ہر انسان کو پیدا ہوا ہے اس کے لئے قدرت نے کچھ نہ کچھ کردار سوچی ہوئی ہے تو میں مان کر چلوںگی کہ اس سے بھی اچھی نوکری یا مستقبل میرے لئے ہے اور یہ سوچ کر زندگی میں آگے بڑھ جاگي. "

بھوٹان کے لوگ بدھ کے درمیانے راستے کے خیال کو مانتے ہیں اسی وجہ سے وہ نہ ہی بہت ساری چیزوں کی چاہت رکھتے ہیں اور ایسا بھی نہیں ہوتا کہ ان کے پاس کچھ بھی نہیں ہے. یہی وہ توازن سے جسے بھوٹانيو نے اختیار کر رکھا ہے. هےپپينےس انڈیکس کے مرکز میں بھی یہی خیال ہے جسے 1972 میں وہاں کے شہنشاہ جگمے سگيے واگچك سامنے لائے تھے. اس کے بعد بھوٹان نے طے کیا کہ ان کے ملک میں خوشحالی کا پیمانہ جی ڈی پی نہیں بلکہ ان چیزوں کو بنایا جائے گا جو ناگركو کو خوشی و انسان اور فطرت کو ہم آہنگی دیتے ہوں. یہ ایک زبردست خیال تھا لیکن یہ وقت کی دفعہ کے برعکس بھی تھا جس پوری دنیا نوعیت کا وحشیانہ استحصال کرتے ہوئے سرمایہ کمانے کو ترقی مانتی ہے. لیکن اس ترقی نے فطرت کی اپورنيي نقصان ہے اور غیر برابری کی کھائی کو بھی بہت وسیع کر دیا ہے. اس ترقی کے ماڈل کی ایک حد اور بھی ہے، یہاں صرف جسمانی خوشحالی پر ہی زور ہے. لیکن یہی کافی نہیں ہے، ضروری نہیں ہے کہ پیسے سے سب کچھ خرید جا سکے. ہم اپنے آس پاس ہی امیر لوگوں کو دکھ، عدم اطمینان، ڈپریشن اور مایوسی میں ڈوبے اور خودکشی کرتے ہوئے دیکھ سکتے ہیں.

بھوٹان نے اپنے مجموعی قومی خوشحالی میں ماپنے کے طور پر سماجی ترقی، ثقافتی تحفظ، ماحولیاتی تحفظ اور گڈگورنےس جیسی باتوں کو شامل کیا ہے. بھوٹان میں 1972 سے گراس هےپپينےس انڈیکس نافذ ہوا ہے تب سے وہاں رہنے کی شرح بڑھ کر تقریبا دگنی ہو گئی ہے اور تعلیم و صحت جیسی بنیادی سہولیات کے پہنچ تقریبا پوری آبادی تک ہوئی ہے. مستقبل کے لئے بھوٹان کی منصوبے کم مؤثر نہیں ہے جس میں 2030 تک نیٹ گرین ہاؤس گیس کو زیرو پہنچانے اور زیرو فضلہ پیدا کرنے جیسے ہدف رکھے گئے ہیں. اس کے لئے قابل تجدید توانائی جیسے- بائیو گیس، ہوا، اور سولر توانائی پر زور دیا جا رہا ہے اور تمام گاڑیوں کو الیکٹرک گاڑیوں سے تبدیل کیا جانا ہے. نئے درخت لگانے کا پروگرام تو ہے ہی.

لیکن بھوٹان کی سب سے بڑی کامیابی تو کچھ اور ہے. آہستہ آہستہ ہی سہی ترقی اور خوشی کو لے کر دنیا کا نظریہ بدل رہا ہے.اب دنیا بھوٹان کے خیالات پر توجہ دے رہی ہے. ترقی کا پیمانوں اور اصلی خوشحالی کی اہمیت کو سمجھا جا رہا ہے. 2010 میں برطانیہ میں بھی ‘ویل بييگ اینڈ هےپپينےس انڈیکس’ کے آغاز کی گئی ہے. سال 2011 میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے قرارداد منظور کر هےپپينےس انڈیکس کے خیال کو اپنے ایجنڈے میں شامل کیا ہے اور ہر سال "20 مارچ” کو پوری دنیا میں هےپپينےس ڈی منانے کا فیصلہ لیا گیا ہے. اسی طرح 2013 میں وینزویلا میں ‘منسٹری آف هےپپينےس’ کر دیا گیا ہے. یو اے ای نے ‘هےپپينےس اور ٹلرےس منسٹری’ ​​بنائی ہے. بھارت میں مدھیہ پردیش اس طرح کا محکمہ بنانے والا ملک کا پہلا ریاست بن گیا ہے جہاں ‘هےپپينےس ڈپارٹمنٹ یعنی لطف محکمہ’ کھولنے کا اعلان کیا گیا ہے.

آج دنیا جس راستے پر چل رہی ہے وہ تباہی کا راستہ ہے. پورے کائنات میں زمین ہی ایک ایسا سیارا ہے جہاں زندگی کے پھلنے پھولنے کا ماحول ہے. لیکن اس نیلے سیارے کی سب سے عقل مند مخلوق ہی زمین کے توازن کو بگاڑتا جا رہا ہے. زمین سے متعدد مخلوق ناپید ہو گئے ہیں، اگر یہی حالت رہے تو آنے والے سالوں میں اور مخلوق اس زمین سے ختم ہو سکتی ہیں جس خود انسان بھی شامل ہے. بھوٹان کا ماڈل دنیا کے لیے مستقبل ہے. اسے اپنانا آسان نہیں ہے، لیکن کوئی چارہ بھی تو نہیں بچا ہے. اگر کبھی بھوٹان جانے کا موقع ملے تو وہاں فطرت سے ہم آہنگی بنا کر خوش رہنے کا سبق لینا مت بھوليےگا.

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close