نعت گوٸی کے شہنشاہ  ذکی طارق بارہ بنکوی

پریم ناتھ بسملؔ

حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مدحت، تعریف اور ان کے اوصاف و خصوصیات کو شاعری میں بیان کرنے کو  نعت گوئی کہتے ہیں۔ صنفِ نعت ایک نازک ترین فن ہے اس کے باوجود اردو زبان میں نعت کا دامن بہت وسیع ہے۔

اردو شاعری کی دنیا میں اس وقت بہت زیادہ موضوعِ تذکرہ رہنے والا نام ” ذکی طارق بارہ بنکوی “۔ جس نے اپنی شاعری کے ذریعے بہت کچھ کہا ہے اور مسلسل کہے جا رہے ہیں۔ان کا دل  بے حد کشادہ ہے.انہوں نے جہاں اپنے گرد و نواح کی مختلف زبانوں کے الفاظ کو اپناتے ہوئے اپنے آپ کو عام فہم بناتے ہوئے خود کو دوسری زبانوں کے مختلف الفاظ سے مالا مال کیا ہے وہیں  دوسری زبانوں کے ادب میں رائج مختلف اصنافِ سخن کو اپناتے ہوئے ان پر خوب طبع آزمائی کی  ان کی شاعری میں آمد کی جھلک  صاف صاف دکھائی دیتی ہے۔ ان کی نظموں اور غزلوں میں انسانی زندگی اور سماج کے مسائل پر کافی سنجیدہ  بحث ملتی ہے۔ وہ ان مسائل کو حل کرنے اور اور سماج میں پھیلی ہوٸی ان گنت برائیوں کو اپنی شاعری کے ذریعے دور کرنے کی جگہ جگہ کوشش کرتے ہیں۔یہ بےحد ذہین ہیں ویسے تو جناب  ذکی طارق غزل  اور نظم کے شاعر ہیں لیکن نعت گوئی میں بھی ان کو مہارت حاصل ہے۔ بلکہ یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ شاعری کی ایسی کوئی بھی صنف نہیں جس پر انہوں نے  طبع آزمائی نہ کی ہو ان کی تخلیق کی ہوٸی حمد ، نعت ، منقبت ، قوالی ، گیت اور غزل وغیرہ ہمیشہ ہی اخباروں اور رسائل میں شائع ہوتی رہتی ہیں۔  لیکن یہاں پر ہم صرف ان کی نعت گوئی کے متعلق بات کریں گے۔

نعت گوئی ہر کس و ناکس کے لیے ممکن نہیں ہے۔ اس میں بہت ہی احتیاط اور ادب و احترام کے ساتھ قلم اٹھانی ہوتی ہے۔ اگر ذہن میں  تھوڑا سا بھی بھٹکاؤ ہوا تو  پھر نتیجہ  بالکل ہی  خطرناک رخ اختیار کر سکتا ہے۔ مگر ذکی طارق صاحب کو  نعت گوئی میں ایسی مہارت حاصل ہے کہ وہ ان سب چیزوں سے  بالکل ہی خوف نہیں کھاتے اور ذکر مصطفی کا حق ادا کرتے ہوٸے کہتے ہیں

ہو  جس سے نبی کی شفاعت عطا

ہے بے شک ”ذکی“ وہ خطا محترم 

آیئے پڑھ لیں درودِ پاک برکت کے لیے

اپنے ایمان و یقین کی زیب و زینت کے لیے

جب مرے سرکار ہیں میری شفاعت کے لیے

پھر مجھے فکرو تردّد کیوں ہو جنت کے لیے

بے شک!  یہ نبی کا ہی کرم ہے کہ ذکی طارق اتنی بے فکری کے ساتھ نعت گوئی کرتے ہوئے چلے جاتے ہیں اور  راہِ مصطفی میں اپنا فرض ادا کرتے ہیں؎

کرم آمیز دل آویز کیف انگیز کتنا ہے

مرے آقا کا اسمِ پاک راحت خیز کتنا ہے

کسی سے عُقدہء ماَ اَقرَ و، حل ہو نہیں پایا

کہ اُس اُمّی کا اک اک لفظ معنیٰ خیز کتنا ہے

خوشاہر ہر قدم پر نور کے دریا امڈتے ہیں

زمین طیبہ ہر ذرہ ترا ذرخیز کتنا ہے

مشکل ترکیبوں صنعت لفظی اور عبارت آرائی سے پرہیز کرتے ہوٸے وہ  اپنی نعتیہ شاعری میں بالکل ہی عام فہم سادہ اور سلیس زبان کا استعمال کرتے ہیں جس کی وجہ سے مشکل سے مشکل مضمون بھی سمجھنے میں آسانی ہوتی ہے۔؎

ہر کام  میں  سنت ہو جینا  ہو تو ایسا ہو

ہو  صلی علٰی لب  پر  مرنا  ہو تو ایسا ہو

کونین  ہو  شاہی میں رتبہ  ہو تو ایسا ہو

اور  فاقے پہ ہو  فاقہ تقو یٰ ہو تو ایساہو

سر کا رِ  مدینہ کے  کر د ا ر  کا  کیا  کہنا

قا ٸد  ہو  تو  ا یسا  ہو آ قا ہو تو ایسا ہو

سنتے ہی خبر اپنے دانتوں کو  اکھاڑا  ہے

جو عشقِ محمد  کا  سودا  ہو تو ایسا ہو

ذکی صاحب کو نعت گوئی سے وہی نسبت ہے جو زندگی کو سانس سے۔ موجودہ دور کے نعت گو شعرا میں  ان کا نام خاص اہمیت رکھتا ہے۔ذکی صاحب کی نعتیہ شاعری سرکارِ دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم سے ان کے بے پناہ اور والہانہ عشق اور سچّی محبت کا آئینہ ہے۔ وہ اس کا اظہار کرتے ہوٸے کہتے ہیں

ٹوٹ کر شیشہء نازک سا بکھر جاٶں گا

آپ جو روٹھے نبی پھر کہاں جی پاٶں گا

        ذکی صاحب کی قادرالکلامی سے ان کی سچّی روحانی پاکیزگی اور والہانہ عشق رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا اظہار ہوتاہے ۔ ان کی نعتوں میں کافی احتیاط اور وارفتگی جگہ جگہ دیکھی جا سکتی ہے۔؎

مقصد مری حیات کا عشقِ رسول ہے

عشقِ رسول ہی سے ملے گا خدا مجھے

جو عشقِ نبی کی تڑپ میں ملے

وہ غم محترم  وہ قضا محترم

بہر وقت ہے گفتگوٸے مدینہ

خوشازندہ باد آرزوٸے مدینہ

دیدی اپنے نام کی نسبت ہمارے نام کو

کس قدر مضبوط ہے رشتہ ہمارا آپ کا

عشقِ نبی کا یوں بھی کرشمہ دکھاٸی دے

ہر شٸے میں مجھ کو عکسِ مدینہ دکھاٸی دے

انھیں کا نام مرے واسطے وظیفہ ہے

ہمیشہ لب پہ رہے جو وہ تذکرہ ہیں نبی

براٸے دیدِ مدینہ خود کو بہت سجاتی ہیں میری آنکھیں

بہ اہتمام آنسوٶں سے اکثر وضو بناتی ہیں میری آنکھیں

        ذکی طارق دور جدید کے منفرد شاعر ہیں ۔ان کی نعت گوئی کا امتیازی وصف ان کی سادگی ہے۔ وہ سہل الممتنع شاعر نظر آتے ہیں۔ انہوں نے روز مرہ کے محاورے اور تشبیہات و استعارات کے انتخاب میں اپنے ذوق شعری کا مکمل ثبوت پیش کیا ہے۔ وہ ہر موضوع پر بڑی خوبصورتی سے اشعار پیش کرنے کا ہنر جانتے ہیں۔ اکثر و بیشتر ان کی شاعری تہذیب و تمدن اور سماج  کے رسم ورواج سے بھی واقفیت کراتی ہے۔ وہ اپنے گرد وپیش اپنے ماحول و تجربات و مشاہدات سے جو مواد اخذ کرتے ہیں انہیں  ہو بہو اپنی شاعری میں ڈھالنے کی کوشش کرتے بےشک نعت گو کا سب سے بڑا کمال یہ ہے کہ نعت رسولؐ لکھتے ہوئے کبی بھی ان کے قلم میں لغزش نہیں آئے  جناب ذکی طارق اس کمال میں پوری طرح کھرے اترتے ہیں ۔ ساتھ ہی اپنی نعتیہ شاعری کے ذریعے یہ پیغام دینے کی کو شش بھی کرتے ہیں کہ مسلمانوں کی موجودہ پستی کا بنیادی سبب یہ ہے کہ انہوں نے رسول ﷺ کے بتائے ہوٸے راستوں سے انحراف کیا اور نبی کی سنتوں کو ترک کیا ہے۔حضرت محمد ﷺ کو اپنی امت سے جو  محبت تھی اس کا بہترین اظہار ان کی شاعری میں دیکھنے کو ملتا ہے۔؎

ترک کرے سنت کو ہم نے اتنا جانا ہے

اپنی زندگی کی ہی مشکلیں بڑھانا ہے

نبیء اکرم کے رحمتہ اللعالمیں اور شافعء محشر ہونے کے یقین کو دیکھٸے کس آسانی اور سلیقے کے ساتھ اپنی نعت کے ایک شعر میں نظم کیا ہے

یہ ہیں گناہ یہ ہے رحمتِ نبی پہ یقیں

لے مولا ساری حیات آج روبرو کردی

حشر کی دھوپ بدن چھیل رہی ہے میرا

آج کملی میں مجھے اپنی چھپالو آقا

   نعت پاک کے مطلع میں اور ایک شعر میں کہتے ہیں کہ

نبی نے ختم زمانوں کی جستجو کردی

کہ لب ہلاتے ہی تکمیلِ آرزو کر دی

نہ پو چھو حشر میں کتنا ذلیل ہوتا میں

وہ کہٸے آقا نے محفوظ آبرو کر دی

جیسا تھاصحابہ کوجیسا کہ تھا خلفاء کو

سرکارِ  دو عالم سے  رشتہ  ہو تو ایسا ہو 

ان کی نعتوں میں خلوص صداقت اور جذبات و احساسات کی شدت ہے۔ انہوں نے اپنی نعت گوئی کے ذریعے  محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے اوصاف کو نہایت فطری انداز میں عمدگی کے ساتھ پیش کیا ہے۔ نئے دور کے ہر فن مولا شاعر جناب ذکی طارق صاحب شعری کائنات میں ایک چمکتے ہوٸے تارے کی حیثیت رکھتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا