زندگی درد کی دوا ہے کیا 

0

جمیل اخترشفیق

زندگی  درد   کی دوا  ہے  کیا

تجھ کو ایسا کبھی لگا ہےکیا

دل تڑپتا ہےان سے ملنےکو

آج  موسم ہرا بھرا ہے کیا

آپ بلکل مجھے نہیں تکتے

کوئی شکوہ،کوئ گلہ ہےکیا

دوست میرابھی مل کےدشمن سے

اس  کی  باتوں  میں  آگیا ہے  کیا

ہوگیا مجھ پہ ہے سحرطاری

عشق جادو ہے تو بلا ہے کیا

رات بھر کروٹیں بدلتے ہو

کوئ مصرع نیا ہوا ہے کیا

دیکھ کرمجھ کوہوگئےچپ کیوں

بولیے!  اور   کچھ   بچا  ہے   کیا

مستقل داد مل رہی ہے مجھے

شعر  اچھا  کوئ  ہوا  ہے  کیا

بند کیوں ہے شفیق کاکمرہ

آج جلدی ہی سوگیا ہے کیا

Close Bitnami banner
Bitnami