باپ

پروفیسر سنتوش بھدوريه

( شعبہ ہندی، الٰہ آباد یونیورسٹی، پریاگ راج)

مترجم : ڈاکٹر صالحہ صدیقی

باپ ہونا آسمان ہونا ہے-

نیلا آسمان ابدیت تک پھیلا ہوا ہے،

اور بے شمار ستاروں جیسی نعمتیں

جو چاندنی راتوں میں برکتیں پھیلاتے ہیں،

باپ ہونا برگد ہونا ہے

لاپرواہی کا نرم سایہ اور آفت کی بارش کو روکتا ہے،

اپنی بازوؤں کو سہلاتے ہوئے عزم مسمم کرنا سکھاتا ہے،

باپ ہونا نیم ہونا ہے

آپ کیسے  صحت مند رہیں گے

اس کی تاکید کرتے ہوئے

رونق افروز ہو جانا اپنے ہی آنگن یا دروازے پر

پہروا بن جانا ہے اپنی ہی اولاد کا

باپ ہونا کھیت ہونا ہے

اور کسان ہونا بھی

تھوڑی نمی اور زرا سی روشنی ہونا

جس سے بیج ہو انکُریت اور لہلہائیں فصلیں

گھر سونا ہو جائے، خوشیاں چہکیں گوریّا کے مانند آنگن میں

۔

باپ ہونا قرضدار ہونا ہیں

اپنے بزرگوں کی محنت اور ایمان کا

اُن کی تکلیفوں اور غربت کے پہاڑوں کو دور کرنے کے لیے

کرنی ہیں کوئی عمدہ تجویز

لانے ہونگے روشن ایام

۔

باپ ہونا صبر و تحمل  کی زمین ہونا ہے

مصیبتوں کو اوڑھے ہوئے، طے کرنی ہے ، انسانی مذہب کی ڈگر

بھٹکنا نہیں ہے

کیونکہ انسان بنے رہنا ہی سب سے بڑا امتحان ہے

۔

باپ ہونا ساگر ہونا ہے

دولت محبت اور اس کی تمام تر نمی کو خود میں سمیٹے ہوئے

دکھوں میں غوطہ لگا تے ، لانے ہیں سکھ اور مساوات کے موتی

پھر دکھ تو مانجھتا ہے

ایسا کہہ گیا ہے پرکھا کوی

اور اس طرح

باپ ہونا سب کچھ ہونا ہیں۔

سمندر، زمیں اور آسمان۔

جواب دیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا