پچیس دسمبر ہے مرا یومِ ولادت

احمد علی برقیؔ اعظمی

پچیس دسمبر ہے مرا یومِ ولادت
ہو میرے لیے آج کادن وجہہِ سعادت

جو بیت گئی عمرِ گذشتہ کی ہے میت
اللہ کی کرتی رہے ہر سانس عبادت

سوغات ہے ماں باپ کی میرے لیے یہ روز
احباب کو ہے یاد، یہ ہے ان کی عنایت

جمعیتِ خاطر ہے مجھے ہدیۂ تبریک
یہ جذبۂ الفت رہے تاعمر سلامت

اشعار میں ہے داغؔ و جگرؔ کا یہ تصرف
شیرینئ گفتار میں ہے جو بھی حلاوت

اقبالؔ کی ہو جراء ت رندانہ میسر
کرتے تھے جو تا عمر روایت سے بغاوت

احباب کا ممنون ہے احمد علی برقیؔ
فیضانِ نظر برقؔ کا ہے جس کے فراست

تبصرے بند ہیں۔