گجرات کا مینڈیٹ: بی جے پی کو حکومت دی، خود کو ایک اپوزیشن دیا

رويش کمار

گجرات میں 5 لاکھ 51 ہزار 605 ووٹروں نے نوٹا کا استعمال کیا ہے. قریب ساڑھے پانچ لاکھ ووٹروں نے بی جے پی یا کانگریس میں سے کسی کو ووٹ دینے کے قابل نہیں سمجھا. اگر اتنے ووٹ کسی ایک پارٹی کی طرف پڑتے تو اس کے اکاؤنٹ میں 25 سیٹیں اور شامل جاتیں. سیاسی پارٹیوں کو نوٹا کے اکاؤنٹ میں جانے والے ان ووٹروں کے بارے میں سوچنا چاہئے، ہو سکتا ہے انہیں امیدوار پسند نہیں آیا ہو، تقریر پسند نہیں آئی ہو، سیاست کا طریقہ ہی پسند نہ آیا ہو. گجرات کے نتائج کو دیکھیں تو بی جے پی ہارتے ہارتے جیت گئی ہے اور کانگریس جیتتے جیتتے ہار گئی ہے. 22 سال بعد بی جے پی دوبارہ حکومت بنا رہی ہے. جیت بھلے ہی عمومی فرق سے ہو مگر یہ جیت تاریخی بھی ہے. مسلسل چھٹی بار حکومت بنا لینا آسان نہیں ہوتا ہے. کیوں بنی، کس طرح بنی یہ تجزیہ کا موضوع ہے. نتائج کے دن ایک بار نتائج کو بھی مجموعی طور پر دیکھ لینا چاہئے. بحثیں بہت ہو چکی ہیں. ہوتی بھی رہیں گی.

– گجرات نے بی جے پی کو حکومت دی ہے تو خود کو ایک اپوزیشن بھی دیا ہے.

– گجرات نے مودی کو روکا تو نہیں مگر ان کے رتھ کی رفتار کو سست کر دیا ہے.

– گجرات نے راہل کے رتھ کو منزل نہیں دی مگر اس کی رفتار کو تیز کر دیا ہے.

– گجرات نے جگنیش میواني اور الپیش ٹھاكر جیسے نئے نوجوان لیڈروں کو بھی چنا ہے.

گجرات نےستا اور اپوزیشن کے درمیان جو خوبصورت توازن پیدا کیا ہے وہ بہت کمال کا ہے. یہ ایک ایسا نتیجہ ہے جس سے کسی کا دل نہیں جلے گے. بھلے کسی کے تمام خواب پورے نہ ہوئے ہوں. بی جے پی کو پیغام دیا کہ آپ خود کو ٹھیک کیجیے اور کانگریس کو پیغام دیا کہ آپ تھوڑی اور کوشش کیجیے. راہل گاندھی اس انتخاب سے لیڈر بن کر ابھرے ہیں تو نریندر مودی اس الیکشن سے فاتح بن کر نکلے ہیں کہ وہ آخری گیند پر چھکا مار کر میچ جتا سکتے ہیں.

18 دسمبر کے نتیجہ کا یادگار لمحہ صبح 9 سے 10 بجے کے درمیان جب اچانک رجحانات میں کانگریس اور بی جے پی ایک دوسرے آگے پیچھے ہونے لگے. ہم نے اپنے پروگرام کا آغاز ایک ایسے گرافکس سے کیا تھا جو بتا رہا تھا کہ بی جے پی کے حکومت بنانے کے 90 فیصد چانس ہیں اور کانگریس کے 10، رجحانات نے اس گرافکس کو کچھ وقت کے لئے تبدیل کر دیا اور ایک وقت پر ظاہر ہونے لگا کہ کانگریس اور بی جے پی کے حکومت بنانے کے چانس 50-50 پرسینٹ ہیں. پھر یہ گرافکس بدلنے لگا کہ بی جے پی کے حکومت بنانے کے چانس کا فیصد بڑھنے لگا. تقریبا ایک گھنٹے کا یہ لمحہ انتہائی کشیدگی اور مہم جوئی بھرا ہوا تھا. دونوں کے لئے، بی جے پی کے لئے بھی اور کانگریس کے لئے بھی. دونوں جماعتوں کے رہنماؤں اور صحافیوں کی ساںسیں پھنس گئیں. لگنے لگا کہ نتیجہ کچھ بھی ہو سکتا ہے. مگر آخر میں بی جے پی کے لئے سب اچھا ہوا. رجحانات اب بی جے پی کی جانب مڑ چکے تھے.

اس انتخاب کا ایک بڑا مسئلہ تھا جی ایس ٹی اور اس کا گڑھ تھا سورت، جہاں کے ٹیکسٹائل تاجروں نے مہینوں تحریک چلائی. ان کی تحریک میں بھیڑ بھی ہوا کرتی تھی، اس سے کانگریس کو امید ہوئی ہوگی کہ جی ایس ٹی اور ہاردک کے تئیں بڑھتے پٹیلوں کی توجہ کی وجہ سے بی جے پی یہاں ہار سکتی ہے. سورت بی جے پی کا گڑھ رہا ہے. حال کے کئی انتخابات میں بی جے پی جم کر جیتتی رہی ہے.

راہل گاندھی نے جی ایس ٹی کو لے کر تاجروں تک پہنچنے کے لئے گبر سنگھ ٹیکس کا نعرہ گڑھا. راہل گاندھی ٹیكسٹایل فیکٹری میں گئے، تاجروں سے بات چیت کی تب بھی کسی کو نہیں لگ رہا تھا کہ سورت کے تاجر بی جے پی کا ساتھ چھوڑ دیں گے. جی ایس ٹی کو لے کر ناراضگی اس امید کو ہوا دیتی رہی. آخر میں جب نتیجہ آیا تو یہی نکلا کہ تاجروں نے اپنے دھندے میں لاکھوں کروڑوں کا نقصان تو سہا مگر بی جے پی کو سیاسی نقصان نہیں ہونے دیا. یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ بی جے پی نے انتخابات کے درمیان جی ایس ٹی کو لے کر بہت سے سدھار کر دیئے تھے. ہمارے ساتھی مہاویر راوت نے بتایا کہ سورت میں نعرہ چلایا گیا کہ تاجر ناراض ہو سکتا ہے مگر غدار نہیں ہو سکتا. سورت کے تاجروں نے اپنے ہی تحریکوں اور ناراضگی کو شکست دی اور بی جے پی کو جتا دیا. ایسا بہت کم ہوتا ہے، تبھی ہوتا ہے جب رہنما اور پارٹی کے لیے سیاسی مخلص اقتصادی نقصان سے بہت اوپر ہو. ایسی قسمت شاید ہی کسی پارٹی کو حاصل ہوتی ہے.

سورت ضلع میں 16 سیٹیں ہیں. سورت شہر میں تین سیٹیں ہیں. سورت میں بی جے پی کامیاب ہوتی رہی ہے. کانگریس کو یہاں سے دو سیٹیں ملی ہیں. سورت میں کانگریس پچھلی بار سے صرف ایک سیٹ زیادہ حاصل کر پائی ہے. 2012 میں بی جے پی نے منگرول سیٹ 15714، ووٹوں کے فرق سے جیتی تھی. 2017 میں بی جے پی یہ سیٹ 13914، ووٹوں کے فرق سے ہار گئی. 2012 میں مانڈوي میں کانگریس جیتی تھی 24،394 ووٹوں سے. 2017 میں مانڈوي میں کانگریس نے 50776، ووٹوں سے کامیابی حاصل کی ہے.

مانڈوي میں کانگریس نے اپنا ووٹ ڈبل تو کر لیا مگر سورت میں وہ بڑی کامیابی حاصل نہیں کر پائی. سورت نے کانگریس کے رتھ کو روک دیا. بی جے پی کو یہاں 14 سیٹوں پر جیت حاصل ہوئی ہے. سورت کی کچھ سیٹوں پر بی جے پی کے ووٹ میں بہت کمی بھی نہیں آئی، کچھ سیٹوں پر اس جیت کا فرق 2012 کے مقابلے میں بڑھ گیا.

چورياسي سیٹ پر بی جے پی نے 67638، ووٹ سے جیتا تھا، اس بار 1819،10، ووٹ سے کامیابی حاصل کی ہے. 2012 میں ماجرا سیٹ پر 71556، سے جیت ملی تھی، اس بار 85827، ووٹوں سے جیت ہوئی ہے. 2012 میں ادھنا سیٹ پر بی جے پی 32754،ووٹوں سے جیتی تھی، اس بار528 42، ووٹوں سے جیتی ہے. مغربی  سورت میں 72169، سے جیتی تھی، اس بار 77882، ووٹوں سے جیتی ہے. سورت وسطی اور سورت شمال میں بی جے پی کے ووٹ کم ہوئے مگر جیت اسے ہی ملی. سورت میں جی ایس ٹی کا مسئلہ نہیں چلا. سورت ضلع بی جے پی کے ساتھ چٹان کی طرح کھڑا رہا.

گجرات میں شہری سیٹوں کی تعداد 59 مانی جاتی ہے. یہاں بی جے پی کے حق میں 1 فیصد کا سوئنگ ہو گیا یعنی اس کا ووٹ بڑھ گیا. بی جے پی نے شہروں میں اپنا نقصان روک لیا. صرف دو سیٹوں کا نقصان ہوا. وزیر اعظم نریندر مودی نے اس جیت پر راحت کی سانس لی اور ہماچل پردیش اور گجرات کی فتح کا جشن منانے پارٹی کے ہیڈکوارٹر آئے. اس بات سے بے فکر کہ سیٹوں کا فرق کم ہوا ہے، دراصل یہ موضوع تجزیہ کاروں کے ہوتے ہیں، سیاستدان کے لئے صرف جیت ہوتی ہے اور فتح ہو چکی تھی.

کیا کانگریس نے جی ایس ٹی کے مسئلے کو غلط سمجھا. راہل گاندھی بار بار کہتے رہے کہ انہوں نے گجرات کے لوگوں سے بات کر کے مسئلہ طے کئے ہیں. جی ایس ٹی کے مسئلے پر تکلیف کے بعد بھی سورت نے جس طرح سے بی جے پی کا ساتھ دیا ہے وہ بے مثال ہے. کانگریس نے صرف سوراشٹر میں اچھی کارکردگی کی. سوراشٹر علاقے میں 56 سیٹیں ہیں، یہاں کانگریس کو 32 سیٹیں ملی ہیں اور بی جے پی کو 23 ملی ہیں. سوراشٹر میں بی جے پی کو 15 سیٹ کا فائدہ ہوا ہے اور بی جے پی کو 13 سیٹ کا نقصان ہوا ہے.

کانگریس سوراشٹر کی برتری باقی علاقوں میں نہیں بنا سکی. اس کے تینوں اہم چہرے شکتی سنگھ گوہل، ارجن موڈواڈيا اور سدھارتھ پٹیل الیکشن ہار گئے. بی جے پی حکومت بنانے کی ٹرافی لے کر جا چکی ہے. کانگریس چاہے تو اس بات سے اطمینان کر سکتی ہے کہ وزیر اعظم کی جائے پیدائش وڈنگر جس اسمبلی حلقہ میں ہے، اوجھا اسمبلی سے بی جے پی ہار گئی ہے. 1995 کے بعد پہلی بار یہاں سے ہاری ہے.

1995 – 121

1998 – 117

2002 – 127

2007 – 117

2012 – 115

2017 میں 99

1995 سے لے کر پانچ انتخابات تک بی جے پی نے گجرات جیت لیا ہے اور ہر بار 100 سے زائد سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے. 2017 میں پہلی بار 100 سے کم سیٹیں آئی ہیں. وزیر اعظم نے اپنی تقریر میں 1995کے 121 کا تو ذکر تو کیا مگر باقی کا صرف ذکر کیا، نشستوں کی تعداد کا ذکر نہیں کیا. اس کے بعد بھی وزیر اعظم نے گجرات بی جے پی کے کارکن، رہنما سب کو مبارک باد بھی دی. گجرات کی عوام کو بھی مبارک ہو.

2017 میں بی جے پی کو 49.1 فیصد ووٹ ملا ہے. سیٹیں کم ہوئی ہیں مگر بی جے پی نے ووٹ فیصد میں اضافہ کیا ہے. ووٹ فیصد کانگریس کا بھی بڑھا ہے اور نشستیں بھی بڑھی ہیں. کانگریس نے 1990 کے بعد پہلی بار اتنا اچھا کیا. کانگریس کو 1990 میں 33 سیٹیں ملی تھیں، اس کے بعد کے چار انتخابات میں 45 سے 61 کے درمیان ہی سیٹیں ملتی رہیں. 2017 میں پہلی بار کانگریس کو 80 سیٹیں ملی ہیں. کانگریس صدر راہل گاندھی کے لئے بھی موقع تھا کہ وہ جوابی تقریر کرتے مگر انہوں نے صرف ٹویٹ کیا.

وزیر اعظم مودی جیت کے بعد اپنے کارکنوں کے درمیان آکر خطاب کر رہے تھے، کارکردگی راہل کی پارٹی کی بھی خراب نہیں رہی، وہ بھی اس موقع پر اپنے کارکنوں کا حوصلہ بڑھا سکتے تھے. وزیر اعظم نے پھر سے کہا کہ ایک بھی گجراتی ان سے الگ نہیں ہو سکتا ہے. انہوں نے آہوان کیا کہ دوبارہ مل جل کر کام کرتے ہیں. وزیر اعظم نے امت شاہ کی بھی جم کر تعریف کی.

بی جے پی نتیجہ آنے کے بعد کانگریس پر نسل پرستی پھیلانے کا الزام لگاتی رہی مگر آپ ٹکٹوں کی تقسیم دیکھیں تو دونوں جماعتوں نے ذات کے حساب سے ٹکٹ دیے. پٹیل تحریک کی وجہ سے ایک بار لگا کہ بی جے پی کی بنیاد کھسک رہی ہے. پٹیل اکثریتی علاقے میں کانگریس کو فائدہ تو ہوا مگر بی جے پی نے بھی اچھا کیا ہے. ہاردک پٹیل بھلے وی ایم مشین سے چھیڑ چھاڑ کرنے کی بات کر رہے ہیں مگر نتائج بتا رہے ہیں کہ پٹیلوں نے ہاردک کا ساتھ نہیں دیا. وسنگر جہاں سے پٹیل تحریک شروع ہویی تھی وہاں سے بی جے پی جیتی ہے. گھٹولڈا سیٹ آنندی بین پٹیل کی تھی، انہوں نے الیکشن نہیں لڑا مگر ان کی سیٹ پر بھی بی جے پی بھاری ووٹوں سے جیتی ہے.

گھٹولڈيا سے بی جے پی کے بھوپیدربھاي پٹیل نے کانگریس کے ششی كانت پٹیل کو 1،17،750، ووٹوں سے شکست دی. چورياسي سے ہتیش پٹیل نے کانگریس کے یوگیش پٹیل کو 110819، ووٹوں سے شکست دی. منی گر سے بی جے پی کے سریش پٹیل نے کانگریس کے برهمبھٹ شویتابین نریندر بھائی کو 75199، ووٹ سے شکست دی.

الیکشن کمیشن نے کہا ہے کہ تین کروڑ ووٹروں نے وي وي پیٹ سے ووٹ دیا ہے. سب نے دیکھا کہ ان کا ووٹ کسے پڑا ہے تو ای وی ایم سے چھیڑ چھاڑ کس طرح ہو سکتا ہے. گجرات انتخابات نے کسی کو مایوس نہیں کیا. بی جے پی کو اقتدار دیا ہے تو کانگریس کے طور پر اپوزیشن. یہی نہیں جگنیش میواني اور الپیش ٹھاكر کو بھی اسمبلی بھیج دیا ہے. جگنیش آزاد امیدوار کے طور پر انتخاب لڑ رہے ہیں. جگنیش نے لوگوں سے چندہ لے کر انتخاب لڑا اور کامیابی حاصل کی ہے. بناس كانٹھا کے وڑگام سیٹ سے جگنیش نے بی جے پی کے وجے كمار کو قریب 20000، ووٹوں سے شکست دی. رادھن پور سے الپیش ٹھاكر نے بی جے پی کے لونگ جی ٹھاكر کو 15000 ووٹوں سے شکست دی ہے.

کانگریس کے کئی بڑے لیڈر نقصان اٹھانے والے ہیں تو بی جے پی کے رہنماؤں میں شنکر چودھری، دلیپ ساگھني، آتمارام پرمار، چمن بھائی سپريا اور جيناراين ویاس ہار گئے ہیں. اس الیکشن میں کئی ایسی نشستیں تھیں، جہاں ہار جیت کا فاصلہ بہت کم ووٹوں سے ہوا. 22 سیٹوں پر 3000 سے کم پر فیصلہ ہوا ہے. ویسے ہر الیکشن میں ہوتا ہے پھر بھی آج جیتنے والوں کا دن ہے، جتنے کا ذکر ہو جائے، اتنا ہی اچھا رہے گا.

گودھرا سے بی جے پی کے سی کے رالجي نے کانگریس کے راجندر سنگھ پرمار کو 258 ووٹوں سے شکست دی. مودسا سے کانگریس کے راجندر سنگھ ٹھاكور نے بی جے پی کے بھكوں سنگھ جی پرمار کو 147 ووٹوں سے شکست دی. كاپرڈا سے کانگریس کے جيتو بھاي چودھری نے بی جے پی کے امیدوار کو 170 ووٹ سے شکست دی. ڈھولكا سے بی جے پی کے بھوپندر سنگھ چداسما نے کانگریس کے اشون بھائی راٹھور کو 327 ووٹوں سے شکست دی. منسا میں کانگریس کے سریش پٹیل نے بی جے پی کے امت بھائی چودھری کو 524 ووٹوں سے شکست دی.

گجرات میں اس بار خواتین ممبران اسمبلی کی تعداد 11 ہو گی ہے. بی جے پی کے ہرش شیام جی سب سے کم عمر رکن اسمبلی ہوں گے. کئی بار لگتا ہے کہ وزیر اعظم کے جارحانہ مہم سے نتائج پر فرق پڑا.

ایگزٹ پول کی بھی پول کھلی ہے اسی بار. کسی بھی ایگزٹ پول میں بی جے پی کے لئے سب سے زیادہ ٹڈے چانکیہ نے 135 کا اندازہ بتایا تھا، سب سے کم سی ووٹر نے 108، انڈیا ٹی وی نے 104-114 دیا تھا، یعنی کسی بھی ایگزٹ پول نے بی جے پی کے لئے 100 سے کم سیٹ کا اندازہ نہیں بتایا تھا. حکومت بننے کا رجحان ضرور صحیح ثابت ہوا مگر نمبر کی صورت میں ایگزٹ پول فیل رہے. اس وقت جب میں پرائم ٹائم پڑھ رہا ہوں بی جے پی کو ایک سو سے کم سیٹیں آئیں ہیں. ایگزٹ پول میں کانگریس کو 42، 47، 64، 65، 66، 68 نشستیں دی تھیں. تمام غلط ثابت ہوئے. گجرات انتخابات کے آغاز کانگریس کے وکاس پاگل ہو گیا ہے سے شروع ہوا. وزیر اعظم مودی نے اس انتخاب کا اختتام ترقی کے نعرے سے کیا. اپنے کارکنوں سے نعرہ لگوا کر.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

تبصرے بند ہیں۔