سالک جمیل براڑ

سالک جمیل براڑ
نوجوان افسانہ نگار و شاعر سالک جمیل براڑ کا تعلق پنجاب کے شہر مالیرکوٹلہ سےہے۔ آپ نے بچوں کے لیےکہانیوں کی متعدد کتابیں لکھی ہیں۔ سالک کی کہانیوں پر انہیں بھاشاوبھاگ کی طرف سے ایوارڈ سے بھی سرفراز کیا گیا ہے۔ ان دنوں سالک پنجابی یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کررہے ہیں۔

از راہِ ثواب

۔وہ بے چاری بیوہ ہے اور اس کے چھوٹے چھوٹے بچے ہیں۔ تم لوگ تو جانتے ہی ہوکہ میری پینشن آٹھ ہزار روپے ہے۔۔۔۔۔۔۔اور پھر میں آج ہی تھوڑی مرنے والا ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔میرے ساتھ رہے گی تو۔ ۔۔۔۔۔ بیچاری کی باقی کی زندگی آرام سے گزر جائے گی۔بچے پال لے گی۔۔۔۔۔۔‘‘

مزید پڑھیں >>

دوسری جیب

سالک جمیل براڑ وہ شہرمیں بالکل اجنبی تھا۔ دوران سفر کسی نے اس کا پرس مارلیاتھا۔ جس میں نقدی کے علاوہ دوسرے ضروری کاغذات اورڈرائیونگ لائیسنس بھی تھا۔ وہ تواس کی دور اندیشی تھی کہ اس نے کچھ روپے اپنی …

مزید پڑھیں >>

غلطی کا احساس

سالک جمیل براڑ دیکھتے ہی دیکھتے عارف اورعمران کی بیس سال پرانی دوستی دشمنی میں بدل گئی۔  ’’آخراس کی کیاوجہ تھی…… …!‘‘ عارف سے کسی نے پوچھا۔ ’’یار…………مجھ سے ایک غلطی ہوگئی تھی؟‘‘ عارف نے ٹھنڈی آہ بھرتے ہوئے کہا۔ …

مزید پڑھیں >>

اولاد

سالک جمیل براڑ شہرکے مین بازار میں اسلم کی چھوٹی سی چائے کی دوکان اپنی مثال آپ تھی۔ اسلم کی دوکان جتنی چھوٹی تھی اس کی شہرت کا دائرہ اتنا ہی وسیع تھا جہاں وقت بے وقت چھوٹی موٹی محفل …

مزید پڑھیں >>

تلاش

سالک جمیل  براڑ ایک ہفتے میں ہی سنیل کے پریوارکی زندگی کتنی بدل گئی تھی۔ اس کی بیوی اوربچے اس نئے گھرکوپاکربے حد خوش تھے۔ انہیں ایسے محسوس ہورہاتھا۔ جیسے وہ دوزخ سے نکل کر جنت میں آگئے ہوں۔ اس …

مزید پڑھیں >>

دیدار

سالک جمیل براڑ رات کا تقریباً ایک بج رہاتھا۔ پورا شہر سناٹے میں ڈوباتھا۔ ایسے میں شہرسے باہر بائی پاس پردوتین چائے کی دوکانیں کھلیں تھیں۔ انہی دوکانوں میں سے ایک دوکان بنسی چائے والے کی تھی۔ بنسی کی یہ …

مزید پڑھیں >>

شکست

سالک جمیل براڑ لیاقت علی خاں کورٹ کی عمارت سے باہرآکرٹہلنے لگے۔ وہ اپنی آج کی جیت پر بے حد خوش تھے۔ اب انھیں انتظار اپنے حریف اشرف علی خاں کا تھا۔ جیسے ہی اشرف خاں باہر آیاوہ اس سے …

مزید پڑھیں >>

مریض

سالک جمیل براڑ ہاں آج بھی مجھے گرمیوں کی وہ دوپہر یادہے۔ مئی کامہینہ ابھی ختم نہیں ہواتھا۔ موسم کی سختی سے دنیاپریشان تھی۔ دوپہر کے تقریباً دوبج رہے تھے۔ میں کسی ضروری کام سے اپنی موٹر سائیکل پرسوار ہوکر …

مزید پڑھیں >>

ملاقات

سالک جمیل براڑ ہمارے شہرمیں شاعرتو درجنوں کے حساب سے ہیں۔ مگر نثرلکھنے والے اکادکاہی ہیں۔ جن کوانگلیوں پر گناجاسکتاہے۔ اس کی کیاوجہ ہے۔ یہ تومجھے بتانے کی ضرورت نہیں کہ نثرلکھنا آسان کام نہیں۔ نثرلکھنے کے لیے وقت چاہیئے۔ …

مزید پڑھیں >>

خواہشات کی صلیب

سالک جمیل براڑ رات کے تقریباً بارہ بج رہے تھے۔ چاندنی رات تھی۔ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا چل رہی تھی۔ ہوا کے تیز جھونکے رمیش کی ٹوٹی پھوٹی کھڑکی کو باربارہلارہے تھے۔ کھڑکی کے جھروکوں سے چاندنی چھن چھن کررمیش کی …

مزید پڑھیں >>