تاریخ و سیرت

ہند میں اسلامی دور حکومت کا منصفانہ کردار

 اسی ہندوستان کی سر زمین پر سیکڑوں برس مسلمانوں کی حکمرانی رہی۔ اُن کے دور حکومت امن و سلامتی اور مسلم و غیر مسلم کے درمیان رواداری و انصاف کا آئینہ تھے۔ ان ہی حکمرانوں میں سلطان قطب الدین ایبک بھی ایسے ہی ایک نیک اور انصاف پسند حاکم تھے۔ انھوں نے اپنے محل کے باہر زنجیرِ انصاف لٹکا رکھی تھی کہ اگر کسی کی حق تلفی ہوتی ہے یا اس پر ظلم کیا جاتا ہے تو مظلوم بلا جھجک اوربے خوف و خطر سلطان تک انصاف کی گہار لگاسکے۔ یہی وہ انصاف پسند مسلم فرمانروا تھا جس نے جرم کی پاداش میں اپنے ہی بیٹے کو قصور وار پائے جانے پر اسلامی احکامِ انصاف پر عمل کرتے ہوئے سر عام کوڑے لگائے اور سزا دے کر اسلامی انصاف کی مثال پیش کی۔

مزید پڑھیں >>

قرن اول کی صدا

یہ قانون قدرت ہے کہ  طلوع آفتاب سے قبل سپیدہ  سحرنمودار ہوجاتی ہے، بران رحمت سے پہلےٹھنڈی ہوائیں موسم پر شگال کا پتہ دیتی ہیں  اسی طرح جوں جوں آپکی عمر بڑھتی جاتی اور نبوت کا قریب آتاجارہاتھاآپکے مزاج میں غیر معمولی تغیر نمایا ہورہا تھا اور روح ایک لامعلوم شئ کے لیے بے قرار بے چین تھی، دھیرے دھیرے آپکی طبیعت عزلت نشینی کی طرف مائل ہوتی جارہی تھی، آپ سامان خورد ونوش لیے مکہ سے باہرغار حرا میں دنیا کے نگاہوں سے الگ مجاہدہ وریاضت اور مراقبہ میں مشغول رہتے تھے، جب قلب فیضان الہی کو قبول کرنے کے قابل ہوگیا تب نبوت کے آثار ظاہر ہونا شروع ہوگے۔

مزید پڑھیں >>

محبت رسول کامیابی کا ضامن!

ہماری عزت و حشمت کو کیوں چار چاند لگ گیا؟ہمارا کارواں نیل کے ساحل سے لیکر کاشغر کی خاک تک کیوں کامیابی و سرفرازی کے جھنڈے گاڑتا ہوا بڑھتا ہی رہا؟ہماری شان و شوکت کیوں نقطۂ عروج تک پہونچ گئی؟کیا سبب تھا ان عظمتوں اور رفعتوں کا ؟کیا وجہ تھی ان سربلندیوں اور کامیابیوں کی؟صرف ایک سبب تھا صرف ایک وجہ تھی…اور وہ تھی …صحابۂ کرام کی رسول عربی سے بے پناہ محبت و الفت اور ا نکی بارگاہ کے تئیں کامل وفاشعاری.

مزید پڑھیں >>

تعلیمات مسیح ابن مریم علیہماالسلام

’’مسلمان ہوں ، یہودی ہوں ، مسیحی ہوں یاصابی ہوں جوکوئی بھی اﷲ تعالی پر اور قیامت کے دن پر ایمان لائے اورنیک عمل کرے ان کے اجر انکے رب کے پاس محفوظ ہیں اور ان پر نہ تو کوئی خوف ہے اور نہ ہی کوئی اداسی وغم‘‘۔ قرآن مجیدکی سورہ بقرہ کی اس باسٹھ نمبر آیت میں اﷲ تعالی نے یہ واضع کیا ہے کہ اﷲ تعالی کی رحمت پر کسی مذہب والوں کی ٹھیکیداری نہیں ، کسی بھی مذہب سے تعلق رکھنے والااگر اپنا عقیدہ و عمل درست کر لے تو اس کے لیے اﷲ تعالی کی رحمت کے دروازے کھلے ہیں ۔ اورظاہرہے کہ عقیدہ و عمل کی درستگی صرف انبیاء علیھم السلام کی تعلیمات سے ہی ممکن ہے۔

مزید پڑھیں >>

کرسمس کی تاریخ: ابتدا اور موجودہ حالت

  کرسمس (Christmas) دو الفاظ کرائسٹ (Christ) اور ماس (Mass) سے مل کر بنا ہے۔ کرائسٹ مسیح علیہ السلام کو کہتے ہیں اور ماس اجتماع? اکٹھا ہونے کو، یعنی مسیح کے لیے اکٹھا ہونا، میسحی اجتماع یا یومِ میلادِ مسیح علیہ السلام۔یہ لفظ تقریباً چوتھی صدی کے قریب قریب پایا گیا، اس سے پہلے اس لفظ کا استعمال کہیں نہیں ملتا۔ دنیا کے مختلف خطوں میں کرسمس کو مختلف ناموں سے یاد کیا جاتا ہے۔ (کرسمس کی حقیقت بترمیم)’وکی پیڈیا‘ میں ہے کہ عیدِ ولادتِ مسیح یا بڑا دِن، جس کو کرسمس بھی کہتے ہیں جو یسوع مسیح (اسلامی نام: عیسیٰ) کی ولادت کا تہوار ہے۔

مزید پڑھیں >>

سعودی عرب: ماضی، حال اور مستقبل

حاسدین و شیعوں کے سارے خدشات اور قیاس آرائیاں سوائے جھوٹ کے پلندوں کے کچھ نہیں، کیونکہ پانچ چھ سالوں کی مکمل تیاری و ٹھوس ثبوتوں کے ذریعہ سے کرپشن پر جس طرح ہاتھ ڈالا گیا ہے اسے بدعنوانی و کربشن کے سدباب میں ایک اہم اور قابل تعریف قدم کہا جا سکتا ہے -تاکہ ہر شہری مطمئن رہے اور ظلم و زیادتی سے محفوظ ہو کر پر امن طریقے سے اپنی زندگی کی نیا کو آگے بڑھائیں -بلکہ ایک  اسلامی اور پاک و صاف معاشرہ برسوں کی روایاتی اقدار کے ساتھ اپنے آگے کا سفر کامیابی و کامرانی کے ساتھ طئے کرے -

مزید پڑھیں >>

حضرت عیسیٰ علیہ السلام: قرآن و حدیث کی روشنی میں (قسط ششم)

 امام جعفر صادق علیہ السلام سے روایت ہے کہ ایک دفعہ ایسا ہواکہ جبرئیل چالیس روز تک حضرت رسول خدا  ﷺپر نازل نہیں ہوئے تو جبرئیل نے اللہ سے عرض کیا:خدایا!میں تیرے نبی کے دیدار کا شدت سے مشتاق ہوں۔ مجھے اجازت دیں کہ میں تیرے رسول کی خدمت باریابی کا شرف حاصل کرسکوں۔

مزید پڑھیں >>

سرزمین فلسطین قرآن کریم کی روشنی میں

یہ سرزمین جس کے تقدس اور تبرک کا تذکرہ قرآن کریم بار بار آیا ہے، جس کے مسلمانوں کے بطور وارث ہونے کا تذکرہ قرآن مجید نے کیا ہے، یہ سرزمین مسلمانوں کے یہاں نہایت متبرک اور مقدس گردانی جاتی ہے، لیکن افسوس صد افسوس کہ اس مقدس اور پاک سرزمین پر ناپاک یہودی اپنے قدم جمانے اور اس کو اپنی ملک اسرائیل کا دار الحکومت بنانے کے ناپاک عزائم بناچکے ہیں اور منصوبہ پر عمل در آمد کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، ساری دنیا میں اس کے خلاف احتجاج جاری ہے، جلسے جلوس ہورہے ہیں ، مسلمانوں کو اس کے تقدس کو سمجھنا اور اس بیت المقدس کی بازیابی کے لئے اور اس پا ک سززمین پر ناپاک قدم پڑنے روکنے کے لئے ہرممکن کوشش کرنی چاہئے۔

مزید پڑھیں >>

حضرت عیسیٰ علیہ السلام: قرآن و حدیث کی روشنی میں (قسط پنجم)

امام جعفر صادق علیہ السلام کا ارشاد ہے کہ رسول خدا  ﷺ کے فرامین کا اتباع کرواور جو کچھ خداوندتعالیٰ کی طرف سے نازل ہوا ہے اس کا اقرار کرو۔ ہدایت کی نشانیوں کی پیروی کرو کیونکہ یہی امانت اورتقوای الٰہی کی علامت ہے۔ جان لو کہ جوشخص عیسیٰ ابن مریم کا انکار کرے اور آپ کے علاوہ تمام انبیاء کااقرا ر کرے پھربھی وہ دائرہ ایمان سے خالی ہے۔

مزید پڑھیں >>

وہ نبیوں میں رحمت لقب پانے والا

جس طرح اللہ تبارک و تعالیٰ کی ربوبیت کا فیض ساری مخلوق کےلئے عام ہے اسی طرح سے آپ کی صفت رحمت کا فیضان بھی دونوں عالم کومحیط ہے۔ سب سے پہلے تو حضور پاک کی تشریف آوری کا فیضان یہ ہوا کہ ایک طرف قحط سالی سے دوچار سر زمین عرب سر سبز و شاداب، سیراب و خوشحال ہو گئی،تو دوسری طرف کفر و شرک کی گھٹاٹوپ تاریکیاں کافور ہوکر ایمان و ایقان کی صبح تجلی نمودار ہوئی،آپ ﷺ رحمت و شفقت کا پیکر ِبے مثال  بن کر ظہور پذیر ہوئے، آپ کی اس صفت عظیم کا قران کریم نے ان الفاظ میں نقشہ کھینچا ہے :اور ہم نے آپ کو تمام جہانوں کے لئے رحمت ہی بناکر بھیجاہے

مزید پڑھیں >>