فقہ

آپ کے شرعی مسائل اور ان کا حل

گیارہویں میں یوم وفات منانا، کسی کام کے لئے دن متعین کرنا، عبادت کے نام پرمخصوص محفل قائم کرنا، فضول چراغاں کرنا، عید کی طرح عمدہ لباس و پکوان اور عبادت کا اہتمام کرنا، عورت ومرد کا اختلاط ہونا، رقص وسرود کرنا، غیراللہ کے نام سے نذر ماننا، غیراللہ کی عبادت کرنا، بےایمان و بدعمل قوالوں کا شرکیہ کلام پڑھنا اور رات بھر من گھرنت قصے کہانیاں ، جھوٹی باتیں ، مصنوعی اور بے سروپا باتیں عبدالقادر کی طرف منسوب کرنا اور ان کا درجہ اللہ اور اس کے رسول سے بھی بڑھا دینا یہ سب باتیں دین وایمان کے منافی ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

آپ کے شرعی مسائل اور ان کا حل

احرام حج یا عمرہ میں داخل ہونے کی نیت کو کہتے ہیں اور اسے احرام کا کپڑا نہیں اتارنا چاہئے تھا اسی کپڑے میں علاج کراتا۔ بہر حال وہ ابھی تک محرم ہے، اسے دوبارہ احرام باندھنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اپنی جگہ سے احرام کا لباس لگاکر عمرہ کرنے چلا جائے اور اس سے پہلے احرام کی ممنوعات میں سے جس کا ارتکاب کیا ہے وہ جہل کی بنیاد پر ہے اس وجہ سےاس پر کوئی فدیہ نہیں ہے۔

مزید پڑھیں >>

جنازہ کے چالیس اہم مسائل(تیسری قسط)

آج کے ترقی یافتہ دور میں بڑی سہولت ہوگئی ہے، اگر کسی انجان جگہ پر لاوارث لاش ملے اور ظاہری آثار و علامات سے مسلم وغیر مسلم ہونے کا پتہ نہ چلے تو ترقی یافتہ دور کی طبی سہولیات سے فائدہ اٹھانے میں کوئی حرج نہیں ہے۔ آج لاشوں کی تحقیق وپوسٹ مارٹم کی جدید ترین ایجادات مثلا ڈی این اے ٹسٹ، فنگر پرنٹس، باڈی اسکین، بلڈ گروپ ٹسٹ وغیرہ سے بآسانی معاملہ حل کرسکتے ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

جنازہ کے چالیس اہم مسائل( دوسری قسط )

ایک شخص کی وفات ہوگئی, رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس کی عیادت کو جایا کرتے تھے, چونکہ ان کا انتقال رات میں ہوا تھا اس لیے رات ہی میں لوگوں نے انہیں دفن کر دیا اور جب صبح ہوئی تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو خبر دی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ( کہ جنازہ تیار ہوتے وقت ) مجھے بتانے میں ( کیا ) رکاوٹ تھی؟ لوگوں نے کہا کہ رات تھی اور اندھیرا بھی تھا۔ اس لیے ہم نے مناسب نہیں سمجھا کہ کہیں آپ کو تکلیف ہو۔ پھر نبی صلی اللہ علیہ وسلم اس کی قبر پر تشریف لائے اور نماز پڑھی۔

مزید پڑھیں >>

سوشل میڈیا پہ آپ کے مسائل اور ان کا شرعی حل

اگر یہودی مصنوعات کا بدل موجود ہے جو مسلمانوں کی تیار کردہ ہے تو اسے استعمال کرنا بہتر ہے تاکہ مسلم تجارت کی مدد ہو لیکن بدل نہیں موجود ہے کافروں کی تیار کردہ ہے تو یہودی یا ہندو یا دوسرے کافر سارے اسلام کے دشمن ہیں، مجبوراان سب کا حلال سامان استعمال کرسکتے ہیں۔ ہاں اگر یہودی سے متعلق سارے مسلمان کسی خاص پس منظر میں مثلافلسطینی مسلمان پرظلم کے پس منظر میں اس کی مصنوعات کا بائیکاٹ کرنا چاہئے تو ہمیں ایک دوسرے مسلمان کا ساتھ دیتے ہوئے یہودی مصنوعات کابائیکاٹ کرنا چاہئےتاکہ تجارتی گھاٹے سے یہودی کو سبق ملے۔

مزید پڑھیں >>

بین مذہبی نکاح: اسلام کی نظر میں

دوبکریوں کو کھونٹا میں باندھ دینے کا نام نکاح نہیں ہے۔ بلکہ نکاح چند بلند ترین مقاصد کے حصول کے لئے عمل میں آنے والے دیرپا اور مقدس رشتہ کا نام ہے۔ انہی مقاصد کے پیش نظر اسلام نے نکاح کو نفلی عبادت سے افضل اور تجرد کی زندگی سے بہتر قرار دیا ہے۔ صرف شہوت رانی نکاح کا مقصود نہیں ہے۔

مزید پڑھیں >>

عورت کی نماز مسجد سے افضل گھر میں ہے

عورت کی نماز اس کے اپنے گھر میں پڑھنا افضل ہے اور اسی میں اس کے لئے زیادہ خیروبھلائی، عفت وعصمت سے حفاظت اور فتنہ وفساد سے عافیت ہے۔ ساتھ ہی یہ بات بھی یاد رہے کہ مسجد میں نماز پڑھنے کا جو اضافی ثواب ہے اگر عورت مسجد میں نماز ادا کرے مثلا مسجد نبوی یا مسجد حرام تو وہ اضافی ثواب کا مستحق ہوگی۔ ان شاء اللہ

مزید پڑھیں >>

جنازہ سے متعلق چالیس اہم مسائل (پہلی قسط)

بیماری اللہ تعالی کی طرف سے مومن کے لئے آزمائش ہے، اس پر صبر کرنے والا اجر کا مستحق ہوتاہے،یہ درجات کی بلندی اور گناہوں کی تلافی کا سبب ہے۔ جائز طریقے سے علاج کرنا توحید وتوکل کے منافی نہیں ہے تاہم دوا کو بذات خود نافع نہ سمجھے بلکہ شفا اللہ کی طرف سے ہے اس پر ایمان رکھے۔ ایک مسلمان کا دوسرے مسلمان پر حق ہے کہ وہ مریض کی عیادت کرے، اسے بھروسہ دلائے اور صبر وثبات کی تلقین کرے۔ ابن ماجہ میں ہے کہ نبی ﷺ کو بیماری لاحق ہوئی اور آپ اسی بیماری میں وفات پاگئے۔

مزید پڑھیں >>

عیدین کی نماز کا مسنون وقت

عید الفطر کی نماز یکم شوال اور عیدالاضحی کی نماز دس ذوالحجہ کو ادا کی جائے گی، ان دونوں نمازوں کا وقت فجر کی نماز کے بعد جواز کا وقت ہے جو سورج نکل جانے کے بعد سے شروع ہوتا ہےزوال تک یعنی ظہر کے وقت سے کچھ پہلے تک رہتا ہے۔ دونوں عید کی نماز کا وقت ایک ہی ہے اوران دونوں کے اوقات میں صحیح حدیث سے کوئی فرق ثابت نہیں ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

جانوروں کے خون سے علاج 

ان دونوں آیات کا مطلب یہ ہوا کہ انسان کے لئے کسی قسم کا بہنے والا خون حلال نہیں ہے اس لئے کبوتر کے خون سے فالج کی بیماری کا علاج کرنا جائز نہیں ہے حالانکہ کبوتر کا گوشت اپنی جگہ کھانا حلال ہے مگر اس کا بہتا ہوا خون حلال نہ ہونے کی وجہ سے اس سے علاج کرنا جائز نہیں ہے خواہ علاج کا طریقہ کھانے یا پینے یا ملنے (لگانے) جیساکہ ہو۔

مزید پڑھیں >>