فقہ

شش عیدی روزی اور اس کے مسائل

چھ روزے اگر شوال میں نہ رکھ سکے تو اس کی قضا دوسرے مہینوں میں نہیں ہے کیونکہ یہ روزہ شوال سے ہی متعلق ہے البتہ کسی نے بعض روزے رکھے مثلا پانچ اور ایک روزہ کسی عذر شرعی کی وجہ سے چھوٹ کیا تو بعد والے مہینے میں ایک مکمل کرلے اور اللہ تعالی سے رحمت کی امید رکھے ۔

مزید پڑھیں >>

رمضان المبارک سے متعلق سوالات و جوابات!

ختم قرآن پر مٹھائی تقسیم کرنے کا عمل کتاب وسنت میں موجود نہیں ہے اس لئے اس سے بچنا اولی وافضل ہے ۔اگر کہیں تکلف اور کسی خاص رسم ورواج سے بچتے ہوئے یونہی سادہ انداز میں کسی نے نمازیوں کے درمیان مٹھائی تقسیم کردی تواس میں کوئی حرج نہیں ۔بعض جگہوں پر ختم قرآن پہ تقریب، کھانے پینے میں افراط اور مختلف قسم طور طریقے رائج ہیں ،ان چیزوں کی شرعا گنجائش نہیں ہے ۔

مزید پڑھیں >>

صدقۃ الفطر: فضائل،احکام اور مسائل!

رمضان المبارک میں ادا کی جانے والی مالی عبادتوں میں سے ایک ’’صدقۃ الفطر‘‘ بھی ہے،اگرچہ اس کی ادائیگی کا وقت عید الفطر کی صبح سے شروع ہوتا ہے، تاہم اس مقصد سے کہ غرباء کے گھروں میں بھی عید کی رونقیں آجائیں ، اس لئے صدقۃ الفطر کو رمضان کے آخر میں ہی ادا کر دیا جاتا ہے،جو کہ صحابہ کے دور میں بھی یوں ہی ادا کیا جاتا رہا جیسا کہ بخاری کی روایت ہے :حضرات صحابہ کرام عید الفطر سے ایک یا دو دن پہلے ہی صدقۃ الفطر دے دیا کرتے تھے۔

مزید پڑھیں >>

صدقۃ الفطر اور اس کے مسائل!

فطرانے کی مقدار ایک صاع ہے ۔ایک صاع چار مُد ہوتا ہے ۔گرام کے حساب سے صاع کی تعیین میں کافی اختلاف ہے ۔شیخ ابن عثیمین نے دوکلو چالیس گرام بتلایا ہے ۔ بعض نے دوکلو ایک سو، بعض نے پونے تین سیر یعنی ڈھائی کلو تقریبا،بعض نے دو کلو ایک سوچھہتر، بعض نے دو کلو سات سو اکاون کہا ہے ۔ شیخ ابن باز نے تین کلو بتلایا ہے ۔

مزید پڑھیں >>

زکٰوۃ: ایک اہم فریضۂ خداوندی!

زکوۃ ایک نہایت ہی اہم فریضہ اور معاشرے میں مال کی منصفانہ اور عادلانہ تقسیم کا ذریعہ ہے ،اس کے ذریعہ جہاں امیروں میں غربیوں کی تئیں ہمدردی اور ان پر رحم وکرم اور ان کے ساتھ مساوات وبرابری کے جذبات پیدا ہوتے ہیں وہیں وہیں غریبوں کی غربت، افلاس کا خاتمہ ہوتا ہے اور اس کی ضروریات کی تکمیل کا سامان ہوجاتاہے ، اس طرح سارا معاشرہ خوش بختی اور خوش حالی اور فارغ البالی کا نمونہ بن جاتا ہے ، جہاں امیروں اور غریبوں کے درمیان کھینچا تانی اور جنگ کا سا ماحول نہیں ہوتا۔

مزید پڑھیں >>

نماز وتر اور اس کے مسائل!

وتر اور فجر کی دو سنت بہت اہم ہیں جنہیں نبی ﷺ نے سفر و حضر میں ہمیشہ پڑھنے کا اہتمام کیا۔اس لئے ہمیں بھی سدا اس کا اہتمام کرنا چاہئے ۔ کبھی کبھار وتر چھوٹنے کا مسئلہ نہیں ہے کیونکہ یہ سنت مؤکدہ ہے مگر برابر چھوڑنے والا بہت سے علماء کے نزدیک ناقابل شہادت ہے ۔

مزید پڑھیں >>

زکوٰۃ کے بنیادی مقاصد و اجتماعی نظام!

اسلامی زندگی میں زکواۃ کا مفہوم تزکیہ، پاکیزگی، صفائی، آفزائش، نشونما اور فلاح کے ہیں ۔ اسلام کے ارکان اربعہ میں سے زکوۃ جو ایک عظیم رُکن ہے قرآن و حدیث و شریعت نے تفصیل سے احکامات بیان کئے ہیں ۔ زکواۃ کے داخلی اسرار و احکام کے بارے میں آئمہ اسلام نے مستقل کتابیں اور ابواب تحریر کئے ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

نماز تراویح کے  احکام ومسائل!

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے پوچھا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رات کی نماز رمضان میں کیسی تھی۔ انہوں نے جواب دیا کہ رمضان میں اور اس کے علاوہ دونوں میں گیارہ رکعتوں سے زیادہ نہ بڑھتے تھے۔ چار رکعتیں پڑھتے تھے۔ ان کے طول و حسن کو نہ پوچھو۔ پھر چار رکعتیں پڑھتے جن کے طول و حسن کا کیا کہنا۔ پھر تین رکعتیں پڑھتے تھے۔

مزید پڑھیں >>

روزہ داروں کے اقسام واحکام!

رمضان میں بغیر عذر کے قصدا روزہ چھوڑنے والا گناہ کبیرہ کا مرتکب ہے ۔ اسے اولا اپنے گناہ سے سچی توبہ کرنا چاہئے اور جو روزہ چھوڑا ہے اس کی بعد میں قضا بھی کرے ۔ اور اگر کوئی بحالت روزہ جماع کرلیتا ہے اسے قضا کے ساتھ کفارہ بھی ادا کرناہے ۔کفارہ میں لونڈی آزاد کرنا یا مسلسل دو مہینے کا روزہ رکھنا یا ساٹھ مسکینوں کو کھانا کھلانا ہے ۔

مزید پڑھیں >>

روزہ کے جدید طبی مسائل!

اللہ تعالی نے دین اسلام کو اپنے بندوں کی خاطر آسان بنا دیا ہے ، حسب سہولت یعنی بقدر استطاعت دین پر عمل پیرا ہونا ہماری اولین ذمہ داری ہے ۔ جہاں اللہ تعالی نے مسافروں ، مریضوں اور معذوروں کو رخصت دی ہے وہاں رخصت پر عمل کرنا ہی افضل ہے اور رخصت پر عمل کرتے ہوئے دل میں ذرہ برابر بھی تنگی کا احساس نہ پیدا ہونے پائے جیسا کہ بعض مخصوص طبقوں میں یہ دیکھا جاتا ہے ۔

مزید پڑھیں >>