سیرت نبویﷺ

 تاجدار انبیاء: غیر مسلموں کی نظر میں!

ان اشخاص کی عقیدت سے حضور سرور کائناتﷺ کی آفاقیت اور مرکزیت بھی ثابت ہوتی ہے کہ آپﷺ پوری کائنات کے مرکز نگاہ ہیں  اور ہر شخص آپﷺ کی داد رسی کا منتظر رہتا ہے ۔ان لوگوں نے جس ہستی بالا صفات کو خراج عقیدت پیش کیا اس کی عزت و عظمت کا سورج تاابد روشن رہے گا۔ بلکہ آنے والے ہر دور میں جو شخص بھی ہٹ دھرمی، تعصب اور بغض سے ہٹ کر سیرت النبیﷺ کا مطالعہ کرے گا وہ عظمت رسولﷺ کاپاسبان بن جائے گا اور سید کائناتﷺ کی آفاقیت اور مرکزیت کا قائل نظر آئے گا۔

مزید پڑھیں >>

محبت رسول کامیابی کا ضامن!

ہماری عزت و حشمت کو کیوں چار چاند لگ گیا؟ہمارا کارواں نیل کے ساحل سے لیکر کاشغر کی خاک تک کیوں کامیابی و سرفرازی کے جھنڈے گاڑتا ہوا بڑھتا ہی رہا؟ہماری شان و شوکت کیوں نقطۂ عروج تک پہونچ گئی؟کیا سبب تھا ان عظمتوں اور رفعتوں کا ؟کیا وجہ تھی ان سربلندیوں اور کامیابیوں کی؟صرف ایک سبب تھا صرف ایک وجہ تھی…اور وہ تھی …صحابۂ کرام کی رسول عربی سے بے پناہ محبت و الفت اور ا نکی بارگاہ کے تئیں کامل وفاشعاری.

مزید پڑھیں >>

وہ نبیوں میں رحمت لقب پانے والا

جس طرح اللہ تبارک و تعالیٰ کی ربوبیت کا فیض ساری مخلوق کےلئے عام ہے اسی طرح سے آپ کی صفت رحمت کا فیضان بھی دونوں عالم کومحیط ہے۔ سب سے پہلے تو حضور پاک کی تشریف آوری کا فیضان یہ ہوا کہ ایک طرف قحط سالی سے دوچار سر زمین عرب سر سبز و شاداب، سیراب و خوشحال ہو گئی،تو دوسری طرف کفر و شرک کی گھٹاٹوپ تاریکیاں کافور ہوکر ایمان و ایقان کی صبح تجلی نمودار ہوئی،آپ ﷺ رحمت و شفقت کا پیکر ِبے مثال  بن کر ظہور پذیر ہوئے، آپ کی اس صفت عظیم کا قران کریم نے ان الفاظ میں نقشہ کھینچا ہے :اور ہم نے آپ کو تمام جہانوں کے لئے رحمت ہی بناکر بھیجاہے

مزید پڑھیں >>

رسول اللہ ﷺ کی شانِ رحمت

اللہ تعالی نے قرآن کریم میں  ارشاد فرمایا: وما ارسلنک الا رحمۃ للعالمین۔ اور اے محبوب ہم نے تم کو نہ بھیجا سوائے تمام جہانوں  کے لئے رحمت۔ قرآن کریم کی اس آیت میں  اللہ تعالی نے اپنے محبوب ﷺ کی اس قدر عظمت کا ذکر کیا ہے جس کا اندازہ اور احاطہ انسانی عقل سے ماورا ہے۔ اللہ تعالی نے جب اپنی ربوبیت کا اعلان فرمایا تو ارشاد فرمایا: الحمد للہ رب العالمین۔ تمام تعریفیں  اللہ تعالی کے لئے ہیں  جو مالک تمام جہانوں  کا۔ 

مزید پڑھیں >>

نبی رحمت ﷺ کی دعائیں دشمنوں کے لئے

طائف کے ان بدبخت لوگوں نے اپنے اس معزز و مکرم مہمان کو اپنے یہاں سے اس طرح رخصت کیا۔ نبی رحمت ﷺ جب طائف شہر کے باہر پہنچے تو آپ کا دل ان کے ظالمانہ سلوک سے از حد مغموم تھا۔ سارا جسم زخموں سے بھرا تھا۔ جسم مبارک سے خون بہہ رہا تھا۔ قریب ہی ایک باغ تھا۔ آپ ﷺ اس میں تشریف لے گئے اور انگور کی ایک بیل کے نیچے بیٹھ گئے۔ نبی رحمت ﷺ نے جو مناجات اس وقت اپنے رحیم و کریم رب کی بارگاہ میں کی اسے باربار پڑھئے، غور کیجئے، شاید آپ ﷺ کی رفعتوں کا کچھ اندازہ ہوسکے۔ دیکھئے، پڑھئے سیرت کی کتابیں ۔

مزید پڑھیں >>

حضور ﷺ نے انسانیت کو کیا دیا؟

حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے امن و عدل پر مبنی حکومت کی داغ بیل ڈالی ،معاشرت و حکومت میں ہم آہنگی،معیشت ومملکت میں پختگی ،نوجوانوں کی بے کاری و بے روزگاری کے بجائے محنت وجد وجہد اور ایمانداری کی رزق کا بندوبست ،ساتھ ہی صنف ضعیف کے حقوق کو تحفظ فراہم کیا ،جہاد واجتہاد کی گرماہٹ رگوں میں دوڑادی اورعلم جہاد کے علاوہ جنگ و جدل اور قتل و غارت گری کو حرام قرار دیا،حلت و حرمت کی تمیز اور خدا پرستی کے ساتھ انسان دوستی ،خود اعتمادی اور عمرانی صلاحیت میں مقام رشک تک پہونچادیا،

مزید پڑھیں >>

عہدنبویؐ میں نظام تشریع و عدلیہ 

سوال کا پہلا جزو غلط ہے کیونکہ اسلامی مملکت میں غیر مسلموں پر اسلامی قانون نافذ نہیں کیا جاتا۔ عہد نبوی میں قرآن مجید کے احکام کے تحت ہر مذہبی جماعت کو (عیسائیوں ، یہودیوں وغیرہ ) کو داخلی خود مختاری حاصل تھی، عقائد اور عبادات ہی کے متعلق نہیں بلکہ قانون و عدلیہ کے متعلق بھی۔ غیر اسلامی ممالک میں ایک مسلمان پر ایک غیر اسلامی قانون نافذ ہوگا۔ یہ نہیں ہونا چاہئے۔ لیکن چونکہ غیر اسلامی ممالک اس رواداری اور فرخ دلی کا مظاہرہ اب تک نہیں کرسکے جو اسلام میں ہے کہ ہر قوم کو داخلی خود مختاری دی جائے لہٰذا اگر ہم غیر مسلم علاقے میں رہنا چاہیں تو یہ سوچ اور سمجھ کر، معلومات حاصل کرکے رہیں ، کہ ہم پر وہاں یہ پابندیاں عائد ہوں گی۔ لیکن ایک سوال پیدا ہوتا ہے کہ مثلاً ایک فرانسیسی، ایک جرمن آج کیا کرے؟ ظاہر ہے کہ اگر اسے آپ ہجرت کراکے اپنے ملک میں بلانا چاہیں تو دنیا کے کتنے ملک ہیں جو آج اس پر آمادہ ہوں کہ غیر ممالک کے لوگ جب چاہیں ، یہاں پر بس جائیں ۔ اس دشواریوں کا سوائے اس کے جواب دیا جائے۔

مزید پڑھیں >>

کامیابی کے لئے آنحضرتؐ کو نمونۂ زندگی بنانا ضروری ہے !

احسان کا معنی ہوتا ہے کسی کام کو کمال حسن و خوبی سے انجام دینا یہاں اس سے مراد یہ ہے کہ امت کے جن لوگوں نے مکمل اخلاص اور راست روی کے ساتھ صحابہ کی پیروی کی صحابہ ہی کی طرح اپنا مال نچھاور کیا اللہ کی رضا کو اپنا مقصد بنایا کسی موقع پر کسی مصلحت کا شکار نہ ہوئے نازک سے نازک موقع پر بھی قدم پیچھے نہ ہٹایا ہر قربانی بے دریغ پیش کی ان کا مقام صحابہ کرام کے بعد ہے اللہ تعالیٰ دونوں کی تحسین فرما رہا ہے اور اپنی رضا کے سرٹیفیکٹ سے نواز رہا ہے۔ 

مزید پڑھیں >>

محبت رسول ﷺ کی کچھ جھلکیاں

سب جانتے ہیں کہ تمام صحابہ کرام رضوان اللَّهُ اجمعین کو نبی ﷺ سے ملاقات کا شرف حاصل ہوا تھا، لہذا انہوں نے جیسا رسول اکرم ﷺ کی سیرت کا مشاہدہ کیا ہمارا مطالعہ اس نوعیت کا کبھی نہیں ہوسکتا ہے، صحابہ کرام آپ ﷺ کے فرمودات کو سنتے تھے اور اس پر کس طرح عمل بجا لاتے تھے، سیرت کی کتابوں سے اس کے کچھ نمونے پیش کرنے کی جسارت کر رہا ہوں اس نیت کے ساتھ کہ اللَّهُ رب العزت ہمارے اندر بھی اپنے نبی اکرم ﷺ کی کچھ محبت پیدا ہو ۔

مزید پڑھیں >>

ائے محب صادق! یہ ہمارے حبیب محمدﷺ ہیں!

سیرت نبوی میں اپنی اچھوتی طرزِنگارش اور جدید طرز تحریر اور واقعات کو ترتیب دینے کے نئے طریقے اور دیگر تنظیم وتریتب کے حوالے سے رعایت کئے ہوئے امور کی وجہ سے دیگر سیرت نبوی پر لکھی جانے والی کتابوں پر فوقیت رکھتی ہے، ساتھ ہی ساتھ اس کتاب کو یہ امتیاز بھی حاصل ہے کہ یہ کتاب عشق نبوی میں ڈوب کر لکھی گئی ہے، اس کتاب کے نام سے لے کر اس کے تمام مشتملات مصنف کے نبی کریم ﷺ کے ساتھ عشق ومحبت اور آپ ﷺ کی ذات سے خصوصی لگاؤ اور وابستگی پر دلالت کرتے ہیں ۔

مزید پڑھیں >>