مذہب

قرآن میں  ہو غوطہ زن اے مرد مسلماں!

امت مسلمہ کی موجودہ ابتر حالت کو دیکھ کر اگر دیکھا جائے تو یہی محسوس وہوتا ہے کہ ہم نے صرف اس قرآن کی تعلیمات پر عمل کرنا چھوڑ دیا ہے بلکہ اس کے پیغام امن و سلامتی کو ہم نے بھلا دیا ہے ، جس کی وجہ سے ہم آج ہر جگہ ذلیل وخوار ہو کر رہ گئے ہیں ۔ جب تک نہ آج انسان اس قرآن میں غوطہ زن ہو جائے گا تب تک کسی انقلاب اور کسی تبدیلی کا خواب دیکھنا بھی ایک لاحاصل مشق ہو گی۔ دنیا میں موجود انسان بحیثیت انسان اُس پیغام کے منتظر ہیں جس میں امن وسلامتی کا پیغام ہے لیکن ان تک یہ پیغام پہنچانے والے ہی اس پیغام الٰہی سے کوسوں دور جا بیٹھے ہوئے ہیں ۔ مسلمان غوطہ زنی کرے اور امن وسلامتی کا ماحول قائم نہ ہو جائے یہ ناممکن ہے۔

مزید پڑھیں >>

مکالمہ بین المذاہب سے مرتب ہونے والے اثرات

موجودہ دور میں جہاں قیام امن ،بین المذاہب ہم آہنگی اور ملکی استحکام کے خواب کو شرمندہ تعبیر بنانے کیلئے تمام تر توانائیوں کو بروئے کار لایا جا رہاہے لیکن مذہبی رواداری کا فروغ اور بین المذاہب ہم آہنگی کا …

مزید پڑھیں >>

ہِندو دھرم کیا ہے؟  (تیسری قسط)

تحریر: مولانا انیس احمد فلاحی مدنی… ترتیب:عبدالعزیز ہندو دھرم کے مصادر:                  ہندومت کی مقدس کتابیں نو ہیں: (۱) وید، (۲)اپنشد، (۳) پُران، (۴)مہابھارت، (۵)شریمد بھگوت گیتا، (۶)رامائن، (۷)یوگ واششٹھ، (۸)ویدانت، (۹)دھرم شاستر۔                  (۱) وید: وید سنکسرت لفظ ہے …

مزید پڑھیں >>

گرم پانی سے وضو اور غسل کا حکم

کچھ لوگ یہ کہتے ہیں کہ اللہ نے قرآن میں پانی نہ ملنے پر یابیمارکو پانی مضرہونے پر تیمم کا حکم دیا ہے پھر وضو اور غسل کے لئے پانی گرم کرنے کی بات کہاں سے پیدا ہوتی ہے ؟ان کی نظر میں خاص طور سے ایسے شخص کا مسئلہ ہوتا ہے جو سخت تھنڈی کے موسم میں رات کو جنبی یا محتلم ہوگیا وہ فجر کے وقت کیا کرےجبکہ سرد پانی اس کو نقصان پہنچارہاہو؟ اس سلسلے میں علماء کی رائے یہ ہے کہ وہ پانی گرم کرکے غسل کرے ،اگر پانی گرم کرنے کی سہولت نہ ہوتو تیمم کرلے ۔ اس مسئلہ کی وجہ سے بعض لوگوں کے ذہن میں جومذکورہ اشکال پیدا ہواہے اس کے کئی جوابات ہیں۔

مزید پڑھیں >>

ہِندو دھرم کیا ہے؟ (2)

انسانوں کی اصلاح کیلئے خدا کا انسانی شکل میں پیدا ہونا یا زمین پر اترنا اوتار کہلاتا ہے۔ شری دیا نند گوپال نے اوتار کی تعریف یوں کی ہے: ’’پردۂ غیب سے محسوس صورت میں خدا کا ظہور‘‘۔ اور یہی تعریف زیادہ صحیح ہے، اس لئے کہ خدا نے صرف انسانوں کا قالب ہی نہیں اختیار کیا بلکہ ہندو دھرم کی رو سے وہ مچھلی، سور وغیرہ کی شکل میں نمودار ہوا ہے۔ ہندوؤں کا یہ عقیدہ ہے کہ ایشور اگر چہ ہر وقت موجود ہے پھر بھی وہ ضرورت کے مطابق مختلف اوقات میں زمین پر مختلف شکلوں میں خود اپنی یوگا مایا سے پیدا ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

ہِندو دھرم کیا ہے؟

ہندو مذہب ایک مشرکانہ مذہب ہے جسے ہند کی اکثریت مانتی ہے اور جس کی تشکیل پندرہویں صدی قبل مسیح سے لے کر موجودہ دور تک ہوتی رہی۔ یہ ایک اخلاقی، روحانی اور ہمہ گیر جامع نظام حیات کا حامل مذہب ہے۔ مختلف خداؤں پر یقین رکھنے والا ہر عمل اور علاقہ کا جدا جدا خدا کا قائل مذہب ہے۔ ہندو دھرم کو قدیم زمانے میں برہمنی مت، آریہ دھرم اور سناتن دھرم بھی کہا جاتا تھا۔ اس مناسبت سے لفظ برہمن اور آریہ کی تحقیق نذر قارئین کی جارہی ہے۔

مزید پڑھیں >>

بے حیائی کی حمایت کرنے والوں سے دو باتیں

اسلام کی اخلاقی تعلیم و تربیت کا خلاصہ یہ ہے کہ وہ حیا کے اسی چھپے ہوئے مادّے کو فطرتِ انسانی کی گہرائیوں سے نکال کر علم و فہم اور شعور کی غذا سے ا س کی پرورش کرتی ہے اور ایک مضبوط حاسّۂ اخلاقی بناکر اس کو نفس انسانی میں ایک کوتوال کی حیثیت سے متعین کردیتی ہے

مزید پڑھیں >>

رب کہتا ہے “مجھے پکارو، میں تمہاری دعائیں قبول کروں گا”۔

دعا آدمی صرف اس ہستی سے مانگتا ہے جو کو وہ سمیع و بصیر اور فوق الفطری قتدار (Supernatural powers) کا مالک سمجھتا ہے اور دعا مانگنے کا محرک در اصل آدمی کا یہ اندرونی احساس ہوتا ہے کہ عالم اسباب کے تحت فطری ذرائع و وسائل کی کسی تکلیف کو رفع کرنے یا کسی حاجت کو پورا کرنے کیلئے کافی نہیں ہیں یا کافی ثابت نہیں ہورہے ہیں، اس لئے کسی فوق الفطری اقتدار کی مالک ہستی سے رجوع کرنا ناگزیر ہے

مزید پڑھیں >>