آئینۂ عالم

بھوک سے آزاد ی کا خواب آخر کب شرمندۂ تعبیرہوگا؟

اب وقت آگیا ہے جب ملک کو بھوک سے آزاد کرانے کی کوشش شروع ہو۔ باہمی اتحادو مدد کے نظام کو مضبوط کیا جائے، اناج کی بربادی کو روک کر اس کی تقسیم کو بہتر بنایا جائے۔ اس میں پائے جانے والے کرپشن سے سختی سے نمٹنا جائے تاکہ کوئی غریب بھوک سے یا کسی معمولی بیماری سے موت کا شکار نہ ہو۔ عام آدمی ملک کی مضبوط ہوتی معیشت کے جشن میں تبھی شامل ہو پائے گا جب اس کا پیٹ بھرا ہوگا۔

مزید پڑھیں >>

فری میسن (free mason): تعارف وتجزیہ

مسلم دنیا کو یہودیوں کی چالبازیوں اور مکاریوں کو اچھی طرح جاننے کی ضرورت ہے تا کہ فوراً تدارک کیا جاسکے۔ ہمارے پاس کلام پاک کی صورت ایک بلند مینارہ نور ہے۔ ہمیں اس سے راہنمائی لینا ہو گی۔ ’’مومنو! کسی غیر مسلم کو اپنا راز دار نہ بنانا۔ یہ لوگ تمہیں نقصان پہنچانے میں کسی طرح کوتاہی نہیں کرتے اور چاہتے ہیں کہ جس طرح ہو تمہیں تکلیف پہنچے۔ ان کی باتوں سے دشمنی ظاہر ہو چکی ہے اور جو کینہ ان کے دلوں میں مخفی ہے وہ کہیں زیادہ ہے۔ اگر تم عقل رکھتے ہو تو ہم نے اپنی آیتیں کھول کھول کر سنا دی ہیں

مزید پڑھیں >>

امار سونار بنگلہ (قسط اول)

ڈھاکہ شہرہندستان کی راجدھانی دلی کی طرح نہیں ہے۔ تین سو سال گزرنے کے آثار شہر میں نظر آتے ہیں۔ پرانا شہر ایسا بھی نہیں ہے کہ اسے قدیم کھنڈروں کا نمونہ قرار دیا جاسکے۔ چار پانچ منزلہ عمارتیں اس علاقے میں بھی موجود ہیں، کشادگی کم ہے مگر دلی کی تنگ گلیوں کا گمان نہیں گزرتا۔ بھیڑ اور شور اسی طرح سے ہے جیسے ایک زندہ علاقے میں ملنا چاہیے۔

مزید پڑھیں >>

غربت کاخاتمہ: ایک خواب!

  اس دنیامیں اور کل انسانیت کو غربت سے نکالنے کاایک ہی راستہ ہے کہ عدل کی بنیادپر دولت کی تقسیم کی جائے، صدقات کا بہت بڑانظام دیانتداری کی بنیادوں پر قائم کیاجائے، سودکوجڑ سے اکھیڑ پھینکاجائے اور سود کی بنیادپر قائم ہونے والی معیشیت کے لیے اس دنیامیں کوئی جگہ باقی نہ رہے، سود خور کو اجتماعی نفرتوں کا نشانہ بنایاجائے اورہر وہ فرد جس کے پاس ضرورت سے زائد مال ہو ایک نظام کے تحت اس سے ایک خاص حصہ ایک مخصوص مدت کے بعد وصول کرلیا جائے ۔

مزید پڑھیں >>

مکافات عمل

  ہمین یقین ہے کہ ان کے علاوہ کچھ چھوٹے واقعات بھی ہوتے ہونگے جو میڈیا مین رپورٹ نہ ہوتے ہونگے یا دبا دئے جاتے ہونگے کبھی ایک کتاب پڑھی تھی جس مین امریکی تھنک ٹینکس کا مختصر تعارف تھا۔۔اس مضمون میں ہم نے امریکی قوم کو لاحق مختلف عوارض کا ذکر کیا ہے۔ہماری قوم کے لال بجھکڑ اکثر امریکی قوم کی تعریف مین رطب اللسان رہتے ہیں خاص طور پر وہ جو امریکہ رٹرن ہو جاتے ہیں۔ ہم نے کہیں پڑھا نہ سنا کہ جو پے درپے واقعات وہاں پیش آرہے ہیں اس کے تدارک کے لئے بھی کوئی تھنک ٹینک وجود میں لایا گیا ہو۔

مزید پڑھیں >>

این ایچ پی سی: ایسٹ انڈیا کمپنی کا جدید روپ

این ایچ پی سی نے ریاست میں ایسٹ انڈیا کمپنی کی صورت اختیار کی ہے۔ ریاست کے ہند نواز سیاست دان اقتدار میں آکر اس بات کو بھول جاتے ہیں کہ ریاستی مفادات کا استحصال کرکے ہی وہ حکومت میں آئے ہیں۔  برعکس وہ کشکول لے کر پیکیجز کی بھیک مانگنے دہلی کے طواف کرتی رہتی ہے۔ وسائل کی فراوانی کے باوجود ریاستی نوجوان بے روزگاری اور یہاں کے باشندے غربت کی زندگی گذارنے پر مجبور کردئے گئے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

روہنگیا مسلمان ماضی اور حال کے تناظر میں

اللہ رب العالمین سے دعا ہے کہ دنیا میں جہاں کہیں بھی مسلمان چھوٹی بڑی تعداد میں موجود ہوں ان کے درمیان محبت والفت اور مضبوط اتحاد پیدا فرما، تاکہ باطل طاقتوں کو پوری قوت کے ساتھ جواب دے سکیں ہر تمام اقوام عالم کو برما و دیگر جگہوں پر ہو رہے ظلم پر فوری مثبت ٹھوس کاروائی کیا جائے اور متاثرین کو تمام وسائل فراہم کئے جائیں اور انکے نقصانات کی بھر پائ  کیے جائے تاکہ ان مظلوموں کی زندگی معمول پر آسکے -آمین

مزید پڑھیں >>

اخوانو فوبیا اور متحدہ عرب امارات

یہ محض ایک بیان نہیں ہے بلکہ ایک حقیقت ہے ، نہایت تلخ حقیقت کہ اسلامی کاز کے لیے وقت کی سب سے بڑی اور منظم تحریک کو سب سے زیادہ دشمنی کا سامنا کسی مغربی یا غیر اسلامی ملک سے نہیں کرنا پڑ رہا ہے بلکہ صرف اور صرف ان کی طرف سے کرنا پڑ رہا ہے جو اپنے آپ کو مسلمان اور اپنی حکومتوں کو مسلم یا اسلامی حکومت کہتے ہیں ۔ عرب امارات کا ولی عہد محمد بن زاید اور سعودیہ کا ولی عہد محمد بن سلمان اس سلسلے میں ساری حدوں کو پار کر تے جارہے ہیں ۔حقیقت یہ ہے کہ ڈکٹیٹر شپ کا کوئی مذہب نہیں ہوتا، ڈکٹیٹرس کا مذہب صر ف اور صرف ظلم و فساد ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

مظلوم روہنگیا اورخودساختہ امن کی فاختہ سوچی

نہتے لوگوں پر ظلم و زیادتی، امتیازی سلوک، ظالمانہ تعصب اور پر تشدد جارحیت کا دور جاری رہنے کی وجہ سے چار لاکھ سے زیادہ افرادکیمپوں میں رہنے پر مجبورہیں ، جس سے علاقائی استحکام کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے‘‘جہاں ایک طرف عالمی لیڈران اورہیومن رائٹس واچ نے میانمارکی حکومت اورفوج پر سخت پابندی کا مطالبہ کیاہے وہیں دوسری جانب امن نوبل ایوارڈیافتہ آنگ سان سوچی نے عذرگناہ بدترازگناہ کرتے ہوئے اس انسانیت سوزنسل کشی کا ذمہ خود انہیں مظلومین کے سرمنڈھنے کی کوشش کی ہے

مزید پڑھیں >>

21/ستمبر:عالمی یوم امن!

اقوام متحدہ نےدوہزارایک(2001) میں اکیس ستمبر کوعالمی یوم امن کے طورپر منانے کا اعلان کیا تھا اوراس فیصلےکے تحت پہلا عالمی یوم امن 21 ستمبر 2002 ء کو منایا گیا تھا ، اس موقع پراقوام عالم سے اپیل کی گئی تھی کہ یہ دن عدم تشدد اور جنگ بندی کے دن کے طورپر منایا جائے۔تب سے لےکر آج تک  21ستمبر کو ’’انٹرنیشل پیس ڈے یعنی عالمی یوم امن ‘‘کے طور پرمنایا جاتاہے جوجنگ، تشدد کے خاتمے اور عالمی امن کو برقرار رکھنے کیلئے وقف کردیا گیاہے ؛جس کا مقصدپوری دنیا کے لوگوں میں امن کی اہمیت اور جنگوں کی بربادی اور نقصان کے بارے میں آگاہی دینا  نیزبرداشت، ہم آہنگی، انسانیت کا احترام جیسی روایات کو پروان چڑھانے اور نوجوان نسل میں اس حوالےسے شعوراجاگر کرنا ہے۔                       

مزید پڑھیں >>