تبصرۂ کتب

دینی مدارس: عصری معنویت اور جدید تقاضے

اس کتاب میں علماء دارالعلوم دیوبند، علمائے فرنگی محل،  علمائے بریلی اور علمائے خیر آبادکا بھی تعارف تفصیل سے کرایا گیا ہے اور مختلف مدارس میں پڑھائے جانے والے مضامین اور کتب کا بھی جائزہ لیا گیا ہے۔

مزید پڑھیں >>

محمد مختار وفاؔ: جدیدیت اور مابعد جدیدیت کی امتزاجی آواز

خدا کرے اگلے ہی برس ان کی نظموں کا مجموعہ اور متفرقات بھی طبع ہوکر سامنے آجائیں اور پڑھنے والوں کو یہ فیصلہ کرنے میں آسانی ہو کہ نصف صدی کی ریاضت کا جو سرمایہ ہے، وہ سفر رائیگاں نہیں ہے۔ میں ایم۔ایم۔وفا کے پہلے شعری مجموعے کی اشاعت پر انھیں مبارک باد پیش کرتا ہوں ۔

مزید پڑھیں >>

آثار قلم

 آثار قلم استاذ محترم کی ان شاہکار تحریروں کا مجموعہ ہے جو انہوں نے مختلف ادوار و اوقات میں آسمان صحافت کے اپنے وقت کے ماہ تمام و بدر کامل اور ریاست مہاراشٹرا کے عظیم الشان بافیض ادارے معہد ملت مالیگاؤں کے ترجمان پندرہ روزہ گلشن کے لئے دینی، علمی، اصلاحی اور دیگر متنوع موضوعات پر حوالہء قرطاس کئے تھے۔

مزید پڑھیں >>

آبِ حیات

عمیرہ کا اندازِبیان پاکستان کی ایک اور مقبول ناول نگار نمرہ احمد سے ملتا جلتا ہے۔ بلکہ اکثر لوگ عمیرہ احمد اور نمرہ احمد کے ناموں کے حوالے سے کنفیوژن کا شکار ہوتے ہیں کہ شاید یہ دونوں سگی بہنیں ہیں جبکہ ایسا کچھ بھی نہیں ہے۔ ناول میں پروف ریڈینگ کے حوالے سے خصوصی احتیاط برتا گیاہے،چند جزوی غلطیوں کے علاوہ ناول پروف کی غلطیوں سے پاک ہے۔ ورنہ اکثر کتابوں میں پروف کی غلطیوں کا انبار ہوتا ہے جس سے یقینا کتاب کے معیار میں گراوٹ آتی ہے۔

مزید پڑھیں >>

منزل ما دور نیست

طلباء کی ایک خاص نہج پر تربیت کی جارہی ہے جو انہیں وسعت نظری کے اعلانیئے کے باوجود تنگ نظری کا اسیر بناسکتی ہے۔ اسلاف سے رشتے کا انقطاع ایک طرح کی ہلاکت کے مترادف ہوسکتا ہے۔ اس برج کورس کی تیاریاں، مقاصد سب متبرک سہی لیکن اس طرح کی سوچ شدید نقصان کا باعث بھی بن سکتی ہے جس سے پہلو تہی یا چشم پوشی کی کوئی گنجائش نہیں ہونی چاہیئے۔

مزید پڑھیں >>

تمثیل نو: ادبی صحافت کا نقش

یہ کتاب ماہنامہ ’’تمثیل نو‘‘ کے تعلق سے ایک دستاویز کی حیثیت رکھتی ہے۔ اس کی روشنی میں جہاں بہت سے ادبی رویوں اور رجحانات سے واقفیت ہوتی ہے وہیں اردو ادب میں گروہ بندیوں کا بھی پتہ چلتا ہے۔ اس کی ترتیب کے لیے ڈاکٹر ابرار احمد اجراوی قابل مبارکباد ہیں۔ امام اعظم نے ان سے یہ کام لے کر اہل ذوق کی خدمت میں ایک قابل قدر تحفہ پیش کیا ہے۔ اس کے لیے امام اعظم اور ابرار احمد دونوں مبارکباد کے مستحق ہیں۔

مزید پڑھیں >>

سہ ماہی ‘لوح’

پیش لفظ اور آخری چند صفحات میں انہوں نے اپنے اردو افسانے کے 115 سالہ سفر پر بے لاگ تبصرہ کیا ہے .میں مانتی ہوں کہ ہمارے نقاد گروپ اور تحریکوں کے شکار رہے ہیں .ہر نقاد نے فکشن کے نام پر صرف اپنے پیمانے گڑھے ہیں . اس لئے یہاں یہ آزادی ہے کہ ہم خود ہر دور کے جایزہ سے گزریں اور فکشن کے نقادوں کے گمراہ کن  بیانات کو خارج کریں کہ اردو افسانہ کمزور ہے ..یا اردو میں اچھے افسانے نہیں لکھے  جا رہے.

مزید پڑھیں >>

ہندو مذہبی کتابوں میں ذکر رسولﷺ: ایک تحقیقی مطالعہ  

جیسا کہ نسل انسانی کی ابتدا سے حضرت آدم علیہ السلام نے جو تعلیم اور دین دیا وہ اسلام ہی تھا جس کے بنیادی اصول یہی تھے جو آج بھی اسلام کا بنیادی عقیدہ ہے، جیسے خدا کی ہستی اور عقیدہ ٔ توحید، عقیدہ ٔ وحی و رسالت، آخرت یعنی دنیاوی زندگی کے نیک و بد اعمال کی جزا و سزا کا عقیدہ۔ اس طرح آ ج بھی ہندوؤں کی مذہبی کتابوں میں خدا کی ہستی اور اس کی توحید کے عقیدے جن میں مورتی پوجا کو سختی سے منع کیا گیا ہے۔ لیکن توحید خالص شکل میں موجود نہیں اس لئے کہ توحید کے ساتھ ساتھ مشرکانہ اشلوک بھی موجود ہیں۔

مزید پڑھیں >>

’پیام صبا‘میرے مطالعہ کی روشنی میں

کامران غنی صباؔ صرف ایک اچھے شاعر ہی نہیں ہیں بلکہ ایک اچھے استاد بھی ہیں اور ویشالی کے ایک اسکول میں معلم ہیں ۔ صحافت، شعر وشاعری، درس و تدریس سارا کام ایک ساتھ انجام دے رہے ہیں جو سب کے بس کا نہیں ہے۔ روز نامہ پندار کے ادبی صفحات کے بھی انچارج ہیں ۔ اردو نیٹ جاپان کے مدیر اعزازی بھی ہیں ۔ ابھی پی ایچ۔ڈی پٹنہ یونیورسیٹی سے کر رہے ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

ماہنامہ رہنمائے تعلیم

’’رہنمائے تعلیم کا آغاز  1905  میں پنڈی کھیپ سے ہوا۔ ماسٹر جگت سنگھ نے اس کا پہلا شمارہ انتہائی افلاس و بے سرو سامانی اور کسمپرسی کی حالت میں شائع کیا۔ وسائل کی بے حدکمی تھی اور ان کی تنخواہ صرف بیس روپے ماہوار تھی۔ ماسٹر صاحب تمام مضامین خود لکھتے اور اسکول سے فراغت کے بعد ان کا تمام وقت رسالے کی اشاعت اور فروخت کی نذر ہو جاتا‘‘۔

مزید پڑھیں >>