سیاست

اُمت مسلمہ کی معاشی ابتری کا ازالہ

دورِ حاضر میں قوت کا اہم جزو معاشی استحکام بھی ہے؛ لیکن معاشی جدوجہد کے خالص دنیوی میدان میں بھی مسلمان سماج اپنے طرز عمل سے شہادت کے حق کا فریضہ انجام دیتا ہے۔ دعوت کی مصنوعی حاشیہ طرازی نہیں ہے جس کو زندگی کی عام جدوجہد میں جوڑ دیا گیا ہو بلکہ مومن ہر حال میں داعی ہوتا ہے۔ حق کا شاہد ہوتا ہے، اس کی زبان اور قلم ہی نہیں بلکہ اس کی چلت پھرت بھی پاکیزہ اخلاقی اصولوں اور اقدار کی گواہ ہوتی ہے۔

مزید پڑھیں >>

مجلس اتحاد المسلمین: ایک متبادل

سیکولر لیڈروں میں اتنی ہمت بھی نہیں ہو تی کہ مسلمانوں کے مسائل کو کسی بھی فورم (میونسپل، اسمبلی یا پارلیمینٹ) پر ز ورو شور سے اٹھا سکیں۔ اس معاملے میں مجلس اتحاد المسلمین کی کارکردگی لوک سبھا و ودھان سبھا کے ایوانوں میں بے مثال ہے۔

مزید پڑھیں >>

تاملناڈو میں آئین اور جمہوریت کا مذاق

یہ تو جمہوریت اور آئین کا سراسر مذاق ہے۔ اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ ایم ایل اے میں زیادہ تعداد ایسے لوگوں کی ہے جو جرائم پیشہ ہیں جنھیں آئین اور دستور کا کوئی پاس و لحاظ نہیں ہے۔ آئین ان کیلئے وہی ہے جو ان کے مطابق ہو اور ان کے فائدے میں ہو۔

مزید پڑھیں >>

چنئی: سیاسی اتھل پتھل اوربالادستی کاحصول

پنیر سیلوم اماں کے معتمد خاص رہے ہیں اور ششی کلازندگی بھر اماں کی ہمدم اور ہمراز رہی ہیں۔ دونوں کا پارٹی پر دعوی بھی غلط نہیں ہے اور اماں کی وفاداری کی تئیں دونوں پر شبہ بھی بجا نہیں ہوسکتا مگر بالادستی کے لیے جب سیاست میں کوئی چیز نہیں بچتی تو جذبات اور الزام بہت کام کر جاتے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

اویسی کاعروج اورمسلم ذہنیت کازوال

اویسی میرارشتہ دارنہیں ، میری ان سے کبھی ملاقات بھی نہیں ہوئی، صرف ان کی چند تقریریں سنی ہیں اورچندویڈیوزدیکھی ہیں، میں ان سے ملاقات کاخواہش مندبھی نہیں، میں اویسی کو اللہ کاولی نہیں سمجھتااورمیں اس سے ہرگزیہ توقع بھی نہیں رکھتاکہ وہ حضرت ابوبکرصدیق،حضرت عمرفاروق اعظم اورحضرت عمربن عبدالعزیزرضی اللہ تعالیٰ عنہم اجمعین کی طرح مسلمانوں کے ساتھ انصاف کرے گا مگر مجھے اس سے ہمدردی ہے اوریہ ہمدردی میرے ایمان کاتقاضاہے۔

مزید پڑھیں >>

احتجاج پولیس کے خلاف ہونا چاہیے!

اب یہ دستور بنانے والوں کی غلطی ہے یا ہندوستان میں پہلی حکومت بنانے والوں کی کہ انھوں نے پولیس مینول اور جیل مینول وہی رکھے جو انگریزوں نے بنائے تھے۔ اور برابر یہ دیکھا جارہا ہے کہ اس کی وجہ سے انصاف ایک مذاق ہوگیا ہے۔

مزید پڑھیں >>

انتخابات اور ہم 

ہندوستانی جمہوریت ابھی اتنی بالغ نہیں ہوئی کہ رائے دہی کا صحیح شمار کر سکے یہاں وہی سکندر کامیاب ہوتا ہے جو سب سے زیادہ ووٹ حاصل کرتا ہے ہماری جمہوریت میں اس کے خلاف پڑے ووٹوں کے تناسب کی کوئی اہمیت نہیں ہے یہاں یہ بھی نہیں دیکھا جاتا کہ جیتنے والے امیدوار نے اپنے مخالف ووٹوں کو تقسیم کر نے کے لئے کتنے جعلی امیدوار میدان میں اتارے تھے ؟

مزید پڑھیں >>

مسلم نوجوانوں  کے ناکردہ گناہوں کی سزا کب تک ملتی رہے گی؟

گزشتہ کئی سال سے پولس جب جہاں چاہتی ہے مسلم نوجوانوں کو فرضی قسم کے الزامات کی بنیاد پر گرفتار کرلیتی ہے۔ برسوں مقدمہ چلتا رہتا ہے۔ جب بیس پچیس سال یا اس سے بھی زیادہ کا عرصہ گزر جاتا ہے تو جج صاحبان گرفتار شدہ نوجوانوں کو بری کر دیتے ہیں اور پھر اخباروں میں خبریں آتی ہیں کہ ’’ہندستان میں انصاف زندہ ہے‘‘ اگر اسی کا نام انصاف ہے تو آخر نا انصافی یا ظلم و زیادتی کس چیز کا نام ہے؟

مزید پڑھیں >>