ذاکر حسین

ذاکر حسین

الفلاح فرنٹ (کنوینر: مشن بائیکاٹ مہم )

کیا شبلی کالج کے منتظمین اور طلباء مسلمانوں کے تعلق سے سنجیدہ ہیں؟

شیلا دیکشت کا خیر مقدم کرنے والوں کو شیلا دیکشت سے یہ بھی پوچھنا چاہئے تھا کہ ۱۹۶۴میں جب گجرات میں مسلم کش فساد ہوا اس وقت مرکز اور ریاست میں کانگریس کی حکومت تھی لیکن کانگریس مسلمانوں کو تحفظ فراہم کرنے میں ناکام رہی نتیجے کے طور پر پانچ ہزار مسلمان شر پسندوں کے ہاتھوں کیوں اپنی جان کھو بیٹھے ؟پھر گجرات میں ہی ۱۹۸۵ میں مسلم کش فساد ہواپھر سے کانگریس کی مرکزاور ریاست میں حکومت۔ لیکن مسلمان کا لہواور مسلمانوں عورتوں کی عصمتیں شدت پسندوں کے ہاتھوں کیوں نیلام ہوتی رہیں ؟

مزید پڑھیں >>

ٹھٹھرتی رات میں کیوں سسک رہی ہے انسانیت؟

اگر ہم آج عالمی سطح پر نظر ڈالیں تو ہر جگہ غریب، امیر کے درمیان ایک ناانصافی اور نا برابری کی خلیج حائل ہے۔ اس معاملے میں ایسے ممالک سر فہرست ہیں جو جمہوری نظام کو تقویت پہنچانے اور مساوات پر عمل پیرا ہونے کا دعوی کرتے ہیں ۔ایسے ممالک کے بارے میں یہی کہا جا سکتا ہیکہ جمہوری نظام کے نفاذ کی بات کرنے والے افراد کہیں نہ کہیں جمہوری نظام کی آڑ میں سرمایادارنہ نظام کو تقویت پہنچا رہے ہیں ۔بیشک جمہوری نظام مساوات، انصاف، سب کے ساتھ یکساں سلوک اور تمام وسائل کی لوگوں کے درمیان منصفانہ تقسیم کی نظریے کی بات کرتاہے۔

مزید پڑھیں >>

مشن بائیکاٹ مہم: مسلمان کوامریکی اور اسرائیلی مصنوعات کا بائیکاٹ کریں

اقوام ِ متحدہ بیت المقدس پر اسرائیل کی حاکمیت کو تسلیم نہیں کرتااور اس کا ماننا ہیکہ یہ متنازع علاقوں میں شامل ہے، جس پر اسرائیل قابض ہے۔ فلسطین سمیت پوری دنیا کے مسلمان کسی طر پربیت المقدس کو اسرائیل کا دارالخلافہ تسلیم کرنے کیلئے تیار نہیں ہے۔ اب مسلمانوں سے سوال یہ ہیکہ کیاآپ اپنے فلسطینی مسلمانوں اور مسجدِ اقصی ٰکے تحفظ کیلئے ہم اسرائیلی اور امریکی مصنوعات کا بائیکاٹ نہیں کر سکتے۔

مزید پڑھیں >>

راہل گاندھی اور ملک کے مسلمان

راہل گاندھی کو سب سے پہلے آرٹیکل 341 پر لگی مذہبی پابندی ہٹانے کیلئے کوشش کرنی چاہئے اوردہشت گردی کے جھوٹے الزام میں بندمسلم نوجوانوں کے مسائل کا حل نکالنے کی بھی کوشش کرنی چاہئے۔ملک کے مسلمانوں کی بد قسمتی ہیکہ انہیں ترقی کے زینے طے کرتے ہی دہشت گردی کے جھوٹے الزام میں جیلوں میں ڈال دیا جاتاہے یاپھر ان کا فرضی انکائونٹر کر دیا جاتاہے۔ ہمیں یہ بھی امید ہیکہ راہل گاندھی کے صدر بننے پر لڈو اورمٹھائیاں تقسیم کرنے والے مسلم بھائی بھی راہل گاندھی کی کی چمچہ  گری کرنے کے بجائے ان کے سامنے قوم کے سلگتے مسائل پیش کرتے ہوئے ان کے حل کا مطالبہ کریں گے۔

مزید پڑھیں >>

روہنگیا پناہ گزینوں کیلئے عالمی برادری کا بین الاقوامی اجلاس

روہنگیا مسلمانوں کا سب سے اہم اور سنجیدہ مسئلہ ان کا میانمار کی شہریت نہ ملنا، اس پر بھی عالمی برادری غور کرے اور اس کے حل کیلئے سنجیدہ کو شش کرے۔میانمار میں مسلمانوں کے قتلِ عام میں ملوث بودسٹ شدت پسندوں کے خلاف عالمی عدالت میں مقدمہ چلے اور انہیں سزادی جائے۔ بودسٹ طبقے کو دہشت گرد قرار دے کر ان کے خلاف سخت اور ٹھوس اقدام کئے جائیں۔

مزید پڑھیں >>

جہیز کی آڑ میں جائداد پر قبضہ

 آیئے ہم سب عہد کریں کہ جو بھی شادی دھوم دھام سے ہوگی اور جس شادی میں جہیز کا لین دین اور بارات آئے گی یا جائے گی، اس میں ہم شامل نہیں ہونگے بلکہ اس طرح کی شادیوں کا ہم بائیکاٹ کریں گے اور بیٹیوں کو وراثت سے ان کا جائز حق دیں گے۔ اس معاملے میں خاکسار طفلِ مکتب ہے، اسلئے ہو سکتا ہیکہ تحریڑ میں کہیں غلطی ہو ئی ہو۔ اگر ایسا ہوا ہو تو برائے مہربانی میری اصلاح کیجئے گا۔

مزید پڑھیں >>

 مسلمانوں کا کانگریس اور سیکولر سیاسی جماعتوں سے ایک سوال

ہم آرٹیکل 341 پر کانگریس کے ذریعے عائد کی گئی مذہبی پابندی کے خلاف آواز بلند کرنے والے یونائیٹیڈ مسلم مورچہ اور  ڈاکٹر ایم اعجاز علی ، راشٹریہ علماء کونسل اور مولانا عامر رشادی سمیت دیگر جماعتوں اور شخصیات کا شکریا ادا کرتے ہیں کہ آپ نے اس آئینی نا انصافی کے خلاف آواز بلند کی۔

مزید پڑھیں >>

ہم نے سوچا ہی نہیں تھا، ایسا بھی کچھ ہوگا!

ویسے بھی بیٹی کی سسرال والوں کی جانب سے ڈھیر سارے مطالبات کئے گئے تھے، لیکن ہم نے کہہ دیاکہ ہم صرف دو سو باراتی برداشت کر سکیں گے اور جہیز تو سمجھو کچھ بھی نہیں ، بس ایک فریج، ایک واشنگ مشین، ایک کلر ٹی وی، بیڈ، صوفہ، الماری، پانچ لاکھ کا زیور اور گاڑی تو بس ایک ادنیٰ سی ایک لاکھ کی بائک دے رہے ہیں ، اکلوتی بیٹی کے والدین کے درمیان جاری گفتگو کے دوران برابر والے کمرے سے لڑکی کی منمنانے کی آواز آتی ہے۔

مزید پڑھیں >>

کیا عمران پرتاپ گڑھی صاحب ان سوالوں کے جواب دیں گے ؟

گزشتہ دنوں ناندیڑ بلدیاتی انتخابات میں شاعر اور نصف سیاست داں عمران پرتاپ گڑھی نے کانگریس کی حمایت میں انتخابی تشہیر چلائی۔  ہمارا ماننا ہیکہ ناندیڑ میں عمران پرتاپ گڑھی نے نہ صرف ایم آئی ایم بلکہ مسلم قیادت کی مخالفت کی ہے۔ موصوف نے انتخابی تشہیر کے دوران ناندیڑ میں کی گئی تقریر سے صاف ظاہر ہو رہاتھا کہ انہیں کانگریس کی حمایت میں کم اور مسلم قیادت ایم آئی ایم کے بارے میں زیادہ بولنا ہے۔ انہوں نے جو کیا، وہ ان کا اپناذاتی فیصلہ تھا اور ان کاسیاسی نظریہ شاید مسلم قیادت کو قبول نہ کرتا ہو۔ لیکن ملک کے عوام اور قوم کے مستقبل کی خاطر ہم سب کو اپنے نظریہ اور فیصلے پر نظرثانی کرنی چاہئے۔

مزید پڑھیں >>

جہیز لینے اور بارات لے جانے والوں کا سماجی بائیکاٹ ہونا چاہئے!

ضروری ہے تاکہ سماج میں امیر غریب کے درمیان جو بھیانک کھائی حائل ہے اس کا خاتمہ کیا جاسکے۔ راقمِ سطور کے پاس انگنت ڈھیروں ایسی مثالیں ہیں، جن کے گھروںمیں شادیاں اسلئے نہیں ہو رہی ہیں کہ ان کے پاس پیسے نہیں ہیں۔ اگر ہمارے معاشرے میں بارات اور جہیز جیسی لعنت کا رواج نہیں ہوتا تو کیا ان گھروں میں اب تک شادیاں نہی ہوتیں؟

مزید پڑھیں >>